ملزمان کو ہتھکڑیاں لگانا غیر شرعی ہے، اسلامی نظریاتی کونسل

جاسم محمد نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 4, 2019

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,269
    ملزمان کو ہتھکڑیاں لگانا غیر شرعی ہے، اسلامی نظریاتی کونسل
    ویب ڈیسک جمعرات 4 اپريل 2019
    [​IMG]
    الزام ثابت ہونے تک ہتھکڑیاں لگانا غلط فعل ہے، قبلہ ایاز، فوٹو: فائل

    اسلام آباد: اسلامی نظریاتی کونسل نے ملزمان کو ہتھکڑیاں لگانے کے عمل کو غیر شرعی قرار دیدیا۔

    اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل قبلہ ایاز نے کہا کہ نیب پولیس یا کوئی بھی ادارہ ملزمان کو ہتھکڑیاں نہ لگائیں کیونکہ ہتھکڑی صرف ملزم کی طرف سے تشدد کی صورت میں لگ سکتی ہے اور الزام ثابت ہونے تک ہتھکڑیاں لگانا غلط فعل ہے اس لیے نیب کی جانب سے ملزموں کو ہتھکڑیاں پہنانا پاکستانی اور شرعی قوانین کی خلاف ورزی ہے، انہوں نے کہا کہ آئین میں طے کوئی قانون قرآن و سنت کے خلاف نہیں بنایا جاسکتا۔

    چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل نے مغرب میں اسلامو فوبیا کے خطرناک رحجان پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یورپ، امریکا اور دیگر ممالک مسلمان اقلیتوں کو تحفظ فراہم کرنے میں کردار ادا کریں۔

    اسلامی نظریاتی کونسل نے کراچی میں معروف عالم دین مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملہ کی مذمت بھی کی۔
     
  2. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    ہاتھ کاٹنا اور سنگسار کرنا بھی غیر قرانی ، غیر اسلامی اور غیر شرعی ہے۔ اس بارے میں اسلامی نظریاتی کونسل کیا کہتی ہے؟
    ٹیکس یعنی زکواۃ کی مٓقدار 20 فی صد ہے، جو کماتے ہی واجب الادا ہے، اس بارے میں اسلامی نظریاتی کونسل کیا کہتی ہے۔
    حدود اللہ صرف اور صرف چند معاملات کے لئے نہیں، ان باقی معاملات کے بارے مٓیں یہ کونسل کیا کہتی ہے۔

    یہ بے کار کی باتوں میں وقت ضائع کرتے ہیں۔ ان کو لیڈر شپ کی سخت ضرورت ہے۔ :)
     
    • غیر متفق غیر متفق × 4
  3. La Alma

    La Alma محفلین

    مراسلے:
    1,673
    محترم فاروق سرور خان صاحب!! مجرموں کے ساتھ تو نرمی اور رعایت کا معاملہ اور ایک عام آدمی کے اوپر زکوٰة کے نام پر اتنا معاشی دباؤ۔۔۔ایسا کیوں؟
    بالفرض کسی کے گھر چوری ہو جائے اور چور ان کی عمر بھر کی جمع پونجی لوٹ کر فرار ہو جائیں تو مالی نقصان کے علاوہ جس خوف اور ذہنی اذیت سے گھر والے گزریں گے، اس کے سامنے تو ہاتھ کاٹنے کی سزا بہت معمولی لگتی ہے۔ البتہ یہ بات بحث طلب ضرور ہے کہ وہ کون سے حالات اور عوامل ہیں جہاں پر یہ سزا واجب العمل ہوگی۔ اگر کوئی نادانی میں کسی کی معمولی سی چیز اٹھا لے تو اسے عمر بھر کے لیے اپاہج تو نہیں کیا جا سکتا۔ شرعیت میں اس کے لیے کوئی نہ کوئی حد تو یقیناً مقرر ہو گی۔
    ہر کمائی پر زکوٰة کی شرح 20 فیصد؟ ۔۔۔ معاف کیجئے یہ زکوٰة کم اور بھتا وصولی زیادہ لگ رہی ہے۔ یعنی اگر کوئی ایک لاکھ روپیہ مہینہ کماتا ہے تو 20000 ہزار اسے بہر صورت ہر ماہ ادا کرنے ہوں گے۔ پھر تو کسی غریب رشتہ دار، ہمسایہ یا ملازم کی لاٹری نکل آئے گی کہ ہر مہینے بغیر تگ و دو کیے، بیٹھے بٹھائے اضافی رقم مل جائے گی۔ پھر بھلا کس کو پڑی ہے کہ محنت کر کے اپنے لیے رزقِ حلال کمائے۔
    ویسے بھی حاجت مندوں کی امداد صرف اور صرف زکوٰة کی رقم سے ہی کیوں۔۔۔؟ اسلام میں صدقہ و خیرات کی تو انتہائی ترغیب دی گئی ہے اور اس کی کوئی شرح بھی مقرر نہیں۔ اگر کوئی چاہے تو اپنی مرضی سے ہر کمائی پر 20 فیصد چھوڑ، سو فیصد بھی خدا کی راہ میں خرچ کرنا چاہے تو کر سکتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  4. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    قران حکیم سے کوئی حوالہ عطا فرماسکتے ہیں؟
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 15, 2019
  5. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    کیا زکواۃ غریب غرباء کا حق ہے یا حکومت وقت کا حق ہے؟ اگر حکومت وقت کا کوئی حق نہیں تو پھر حکومت کیسے چلے گی اور سابقہ حکومتیں کیوں ٹیکس وصولتی رہیں ہیں؟ عمر رضی اللہ تعالی عنہہ کو کیا ضرورت تھی کے زکواۃ کے نا دہندگان کے خلاف تلوار اٹھاتے؟
     
  6. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    صدقہ اور خیرات، جتنا چاہے دیجئے، حکومت وقت کا کیا حق ہے، کیا زکواۃ ، ٹیکس ہےِ؟ یا حکومت وقت کو کچھ بھی ادا نہیں کیا جائے گا؟
     
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,269
    جی مخیر حضرات پر حکومت کا ٹیکس ہے۔
     
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  8. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    6,513
    آپ کو غلط فہمی ہوئی ہے فاروق صاحب ۔۔۔! موصوفہ کبھی کبھار تبصرہ فرماتی ہیں ۔۔۔ بھائی کا لفظ آپ کو بہرصورت ہٹانا پڑے گا ۔۔۔! :)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. La Alma

    La Alma محفلین

    مراسلے:
    1,673
    شرعی سزاؤں کے نفاذ کا مقصد معاشرے کی اصلاح اور درستگی ہے، لوگوں پر ظلم و زیادتی کرنا ہر گز نہیں۔ اور نہ ہی سزاؤں پر عمل درآمد کرنے سے معاشرے میں کسی قسم کی بے چینی اور تشویش پیدا کرنا مقصود ہے بلکہ لوگوں کو شرپسندوں کے آزار سے محفوظ رکھنا ہے۔
    اسلام میں چور کی سزا قطع ید ہی ہے۔
    وَ السَّارِقُ وَ السَّارِقَۃُ فَاقۡطَعُوۡۤا اَیۡدِیَہُمَا جَزَآءًۢ بِمَا کَسَبَا نَکَالًا مِّنَ اللّٰہِ ؕ وَ اللّٰہُ عَزِیۡزٌ حَکِیۡمٌ ﴿۳۸﴾
    چوری کرنے والے مرد اور عورت کے ہاتھ کاٹ دیا کرو یہ بدلہ ہے اس کا جو انہوں نے کیا ، عذاب اللہ کی طرف سے اور اللہ تعالٰی قوت و حکمت والا ہے.
    (سورة المائدة, آیت: 38
    تاہم یہاں معاشرتی رویوں کا بھی نہایت عمل دخل ہے ۔
    نسائی کی ایک حدیث ہے۔
    "سزاؤں کو آپس ہی میں معاف کر دیا کرو، کیونکہ جو معاملہ مجھ تک پہنچ جائے گا، اس میں سزا دینا لازم ہو جائے گا۔''
    ارشاد باری تعالٰی ہے ۔
    إِنَّ اللّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ
    بیشک اللہ‎ انصاف اور احسان کا حکم دیتا ہے۔
    یعنی انصاف کے ساتھ ساتھ احسان اور بھلائی کی بھی تلقین کی ہے ۔ احسان اضافی حکم ہے جس کا مطلب نرمی اور رعایت سے کام لینا ہے۔ انصاف ایسا ہونا چاہیے جس سے مزید بگاڑ کا اندیشہ نہ ہو۔
    ایک مرتبہ کسی شخص کو نبی کریمؐ کی خدمت میں پیش کیا گیا۔ اس نے چوری کا ارتکاب کیا تھا۔ جب حضورؐ کو یہ بتایا گیا کہ اس سے یہ جرم سرزد ہوا ہے تو آپؐ کے چہرہ اقدس کی رنگت شدتِ غم سے متغیر ہو گئی۔ آپؐ نے فرمایا۔ ''میں اس پر سزا نافذ کرنے سے کیسے رک سکتا ہوں، جبکہ تم خود اپنے بھائی کے خلاف شیطان کی مدد کرنے والے ہو۔ اللہ تعالیٰ معاف کرنے والے ہیں اور معاف کرنے کو پسند کرتے ہیں۔ حکمران کے سامنے جب سزا سے متعلق کوئی معاملہ پیش ہو جائے تو اس کے لیے سزا کو نافذ کرنا ہی مناسب ہے۔''
    لہٰذا کچھ ذمہ داری معاشرے کے افراد پر بھی عائد ہوتی ہے کہ جرم کی سنگینی کے لحاظ سے ہی مقدمہ عدالت یا پنچائیت میں پیش کیا جائے۔ جہاں صرف تنبیہ، سرزنش اور ہلکی پھلکی سزا سے ہی اصلاح ممکن ہو، وہاں اس حد تک جانے کا آخر کیا جواز بنتا ہے۔
    زکوٰة کا تعلق عبادات اور تزکیہِ نفس سے ہے اور اس کی شرح مقرر ہے۔ جبکہ ٹیکس کی ادائیگی سوشل سسٹم کا ایک حصّہ ہے اور اس کی مقدار حسبِ ضرورت گھٹتی اور بڑھتی رہتی ہے۔
    غلط!!
    گویا لاکھوں کی تعداد میں جو مسلمان غیر اسلامی ریاستوں میں سکونت پزیر ہیں وہاں کی حکومتوں کو ٹیکس ادا کرنے سے ان کی زکوٰة بھی ادا ہو جائے گی؟
    یا پھر آپ کے خیال میں ان کے لیے کوئی اور قانون ہے اور اسلامی معاشرے میں بسنے والے مسلمانوں کے لیے اور قانون؟
    ایک مہذب اور ذمہ دار شہری ہونے کی حیثیت سے ہر شخص کا یہ قومی اور اخلاقی فریضہ ہے کہ وہ حکومتِ وقت کو اس کا عائد کردہ ٹیکس ادا کرے تاکہ ملکی معاملات احسن انداز میں سر انجام دیے جا سکیں۔ اسلام میں مسلم حاکم کی اطاعت ویسے بھی لازم ہے جب تک وہ شریعت کے خلاف حکم نہ دے۔
    یٰۤاَیُّہَا الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡۤا اَطِیۡعُوا اللّٰہَ وَ اَطِیۡعُوا الرَّسُوۡلَ وَ اُولِی الۡاَمۡرِ مِنۡکُمۡ ۚ فَاِنۡ تَنَازَعۡتُمۡ فِیۡ شَیۡءٍ فَرُدُّوۡہُ اِلَی اللّٰہِ وَ الرَّسُوۡلِ اِنۡ کُنۡتُمۡ تُؤۡمِنُوۡنَ بِاللّٰہِ وَ الۡیَوۡمِ الۡاٰخِرِ ؕ (النساء:۵۹)
    ترجمہ: اے ایمان والو! اللہ کی اطاعت کرو اور اس کے رسول کی اطاعت کرو اور حکام وقت کی جو تم میں سے ہوں۔ پھر اگر کسی معاملے میں تم میں تنازعہ واقع ہوجائے تو اس کو اللہ اور اس کے رسول کی طرف پھیر دو اگر تم اللہ اور یوم آخرت پر ایمان رکھتے ہو.

    جو لوگ صدقہ و خیرات کے مستحق ہیں وہی زکوة کے حقدار بھی ٹھہرتے ہیں۔ زکوٰة کے مصارف درج ذیل ہیں۔
    إِنَّمَا الصَّدَقَاتُ لِلْفُقَرَاءِ وَالْمَسَاكِينِ وَالْعَامِلِينَ عَلَيْهَا وَالْمُؤَلَّفَةِ قُلُوبُهُمْ وَفِي الرِّقَابِ وَالْغَارِمِينَ وَفِي سَبِيلِ اللَّهِ وَاِبْنِ السَّبِيلِ فَرِيضَةً مِنْ اللَّهِ وَاللَّهُ عَلِيمٌ حَكِيمٌ)
    ترجمہ: صدقات تو صرف فقیروں اور مسکینوں کے لیے اور [زکاۃ جمع کرنے والے]عاملوں کے لیے ہیں اور ان کے لیے جن کے دلوں میں الفت ڈالنی مقصود ہے اور گردنیں چھڑانے میں اور تاوان بھرنے والوں میں اور اللہ کے راستے میں اور مسافر پر (خرچ کرنے کے لیے ہیں)،یہ اللہ کی طرف سے ایک فریضہ ہے اور اللہ سب کچھ جاننے والا، کمال حکمت والا ہے۔ [التوبة:60]
    اگر حکومتی سطح پر زکوة کی کولیکشن اور تقسیم کا خاطر خواہ انتظام موجود ہو تو یہ رقم وہاں بھی جمع کرائی جا سکتی ہے۔
    جیسا کہ واضح ہے کہ زکوة کا ایک مصرف " فی سبیل اللہ‎ " بھی ہے۔ لہٰذا مساجد اور درسگاہوں کا قیام، رفاہِ عامه کے پراجیکٹس، ہسپتالوں کی تعمیر ، دفاعی نظام، عوام الناس کی بھلائی کے تمام منصوبے، زلزلے، سیلاب ، جنگ اور کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے کیے گئے اقدامات وغیرہ وغیرہ، یہ سب فی سبیل اللہ‎ کے زمرے میں آتے ہیں ۔ اگر ان کاموں میں زکوة کی رقم سے حکومت کا ہاتھ بٹایا جا سکتا ہے تو کیوں نہیں۔ لیکن جہاں حکمرانوں کو اپنی عیش و عشرت سے ہی فرصت نہ ہو، وہاں زکوة کے مصارف کا انتخاب خوب سوچ سمجھ کر کرنا ہی بہتر ہو گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  10. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
    پہلے آپ ظہر کی چار فرض کا قرآن سے حوالہ عطا فرمائیں۔۔۔
    نیز ظہر کی نماز کی فرضیت بھی قرآن سے ثابت کریں اور اس کی ادائیگی کا طریقہ بھی!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  11. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    میں بے کار کی بحث میں نہیں پڑتا، آپ خود ریسرچ کرلیجئے :)
    لگتا ہے کہ آپ کا یقین ہے کہ قرآن میں آپ کی مرضی کی کوئی بات نہیں ہے؟
     
  12. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    یہ اسلامی معاشرہ کیا ہوتا ہے؟ اس معاشرے میں جہاں چوری ہو، جھوٹ ہو، حق تلفی ہو، عورتوں پر ہر طرح کی پابندی ہو، بے غیرتی سے عورتوں کو غیرت کے نام پر قتل کردیا جائے، تجارت جھوٹی ہو، مال نقلی ہو؟ پاکستان کیا اسلامی ملک ہے؟
    یا ان سب کا الٹ ، جیسا کہ اسلامی معاشرہ کی درست تعریف، امریکہ جیسی جگہ؟

    معیشیت کو ترقی دینے کے لیئے اکاؤنٹس پے ایبل رقم ہے زکواۃ ، جو کہ حکومت وقت کو ادا کرنا فرض ہے۔ فرض
    صداقات ، حکومت کے ریسیو ایبل رقمات، جو حکومت وصولتی ہے، یعنی حکومت کا ریوینیو

    یہ آپ لوگوں کی انفرادی تعریفوں سے بہت ہی تنگ آیا ہوں۔ اگر دین صرف فرداَ فرداَ ہی ہوتا تو رسول اکرم کو رب کریم کو غار حرا سے باہر نہیں نکالتا، غار حرا میں عبادت کافی تھی۔ مکہ پر 10 ہزار کا لشکر لے کر چڑھائی نا ہوتی۔

    اگلے مراسلے کا انتظار کیجئے، اب زکواۃ کی آیات کے لئے ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  13. La Alma

    La Alma محفلین

    مراسلے:
    1,673
    مذہبی نظریات اور اعتقادات کی بنیاد پر کلاسیفیکیشن کا کوئی اور طریقہ ہے تو بتائیں۔ یہ بالکل الگ موضوع ہے کہ کسی مخصوص معاشرت میں صحیح اسلامی نظام رائج ہیں یا نہیں۔ جن برائیوں کا آپ نے تذکرہ کیا ہے، وہ مختلف صورتوں میں قریب قریب ہر خطے، ہر تمدن میں پائی جاتی ہیں۔ البتہ کہیں کہیں مادی ترقی اور معاشی آسودگی نے ان برائیوں پر پردہ ڈال رکھا ہے۔
    آخر زکوٰة اور ٹیکس کے ملغوبے سے حاصل کیا ہو گا۔
    "خرد کا نام جنوں پڑ گیا جنوں کا خرد"
    اگر زکوٰة کو زکوٰة اور ٹیکس کو ٹیکس ہی رہنے دیا جائے تو اس میں حرج ہی کیا ہے۔
    یہ تو حکومتوں کی صوابدید پر ہے کہ وہ ٹیکس کے ضمن میں کیا قانون سازی کرتی ہیں۔
    یہاں بھی سیونگ اکاؤنٹس پر رمضان کے اوائل میں زکوٰة کی آٹومیٹک ڈیڈکشن ہوتی ہے۔
    آپ زکوٰة کی ادائیگی کےحوالے سے دینی احکامات کو جس نظریے سے دیکھتے ہیں اس کے پسِ پردہ یقینًا کوئی مثبت جذبہ ہی کار فرما ہو گا۔ ہو سکتا ہے ایسے نظام سے وقتی طور پر کچھ معاشی فوائد بھی حاصل ہو جائیں۔ لیکن یقین مانیے، آہستہ آہستہ روحانیت کا عنصر مکمل طور پر غائب ہو کر رہ جائے گا۔ زکوٰة جیسے مقدس دینی فریضے کی اہمیت کسی طور دیگر کاروبارِ حیات سے بڑھ کر نہیں رہے گی۔ اگر سب کچھ حکومت کے کھاتے میں ڈال دیا جائے تو اپنے بل بوتے پر دوسروں کی مدد کرنے کی تحریک میں نمایاں کمی آئے گی۔ معاشرے میں بے حسی اور بے نیازی بڑھے گی۔ آپ آزما کر دیکھ لیجئے۔ اگر ہر ایک کی خود کار طریقے سے زکوٰة کٹتی رہے چاہے اسے ناگوار ہی کیوں نہ ہو، تو ایسی ادائیگی کا شمار مالی عبادات میں کس طرح ممکن ہے ۔ کیونکہ عبادات کا تعلق نیت، ارادے، اور عمل سے ہے اور سزا و جزا کا تصور اسی پر قائم ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  14. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
    ہمیں اپنی کم علمی کا اعتراف ہے۔۔۔
    برسوں کی تحقیق کے باوجود ہمیں ظہر کی نماز کا تو نام تک نہ مل سکا۔۔۔
    رکعات کی تعداد، وقت کا ابتداء و اختتام، ادائیگی کا طریقہ، کس طرح نماز ٹوٹ جاتی ہے، سجدہ سہو کی تفصیلات کچھ بھی قرآن پاک میں نہ مل سکا۔۔۔
    اسی لیے تو آپ سے رجوع کیا ہے۔۔۔
    مگر آپ اسلام کے اس سب سے بڑے اور سب سے اہم فرض کا علم حاصل کرنے کو بے کار کی بحث کہہ رہے ہیں ۔۔۔
    فرض نماز کا علم بے کار کی بحث ہے تو اس کے آگے باقی دینی علوم کی کیا حیثیت رہ جاتی ہے!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 1
  15. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    جو آپ جاننا چاہتے ہیں ، اس کی ریسرچ کہیں اور کیجئے، میرے پاس ان میں سے کسی بات کا جواب نہیں ہے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  16. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,269
    ہر قسم کے اکاؤنٹ پر فرض نہیں ہونی چاہئے۔ بینک بیلنس کے مطابق کٹنی چاہئے کیونکہ زکوٰۃ صرف مخیر لوگوں پر فرض ہے۔
     
  17. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    1,792
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    لیکن مسئلہ یہ ہے کہ آپ کسی کے اختلاف رائے پر اپنے مؤقف کو بھی واضح نہیں کرپا رہے۔ آپ اور دیگر رفقا عموما مذہبی طبقے پر اعتراض کرتے آتے ہیں کہ یہ سوال کرنے کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں، لیکن دیکھا جاسکتاہے کہ آپ ہی لوگ سوال کو یہ کہہ کر برداشت نہیں کر پاتے کہ یہ آپ کا مسئلہ ہے، خود تحقیق کریں۔
    اگر یہی رویہ ہی اختیار کرنا ہے تو الگ لڑی میں اپنا مؤقف بیان کیا کریں، بحث کی ضرورت ہی کیا رہ گئی۔ اگر آپ کوئی جواب پہلے ہی دے چکے ہیں تو اس کا حوالہ ہی دے دیا کریں۔ بحث میں چاہے آپ پر کتنا ہی بھاری کیوں نہ گزرے، وضاحت لازم ہو جاتی ہے۔
    بقول ہاکنگ: ایک جواب مزید کئی سوالات کو جنم دیتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 17, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  18. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
  19. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    یہان بات کچھ ہو رہی ہے اور آپ اس سیارے کے بارے میں سوال کررہے ہیں جو ابھی دریافت نہیں ہوا۔ ٹاپک پر فوکس رہیں۔ اور ایک بات اچھی طرح سمجھ لیجئے، آج تک موجود کسی بھی روایت کی کتاب میں نماز کا طریقہ موجود نہیں۔ بلکہ کتب روایات کا کوئی وجود 700 ہجری تک نہں ملتا، سنی سنائی پر آپ یقین کیجئے لیکن سنی سنائی پر کوئی بھی عدالت یقین نہیں کرتی ہے۔ لہذا ، اس مذہنب کو اس رسول ، اس اللہ اور اس کتاب تک محدود رکھئے جس پر سب کا ایمان ہے۔ آپ کے سوال کا میں ککیا جواب دوں، جب کہ آپ خود جانتے ہیں کہ قرآن حکیم میں اس کا کوئی تذکرہ نہیں ۔ اب جن نکات کا واضح تذکرہ ہے ، ان نکات کو آپ کیا اس لئے جھٹلائیں گے کہ ظہر کی نماز کی رکعتوں کی تعداد قرآن حکیم میں نہیں۔

    اب آپ کی بات کا جواب۔ جو معاملہ اجتماعی حیثیت رکھتا ہے یعنی زکواۃ ، جس میں ایک سے زائید افراد متاثر ہوتے ہیں ، کیا اس معاملہ کا تعلق ایسے معاملے سے ہو سکت ہے جو صرف اور صرف حقوق اللہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ نماز ، روزے اور حج کو رب کریم معاف کردے گا لیکن جو حقوق العباد ہم کھا جائیں گے ان کا حساب معاف نہیں ہوگا بلکہ اس کے جواب میں آپ کو اپنی نیکیاں ادا کرنی ہوں گی۔


    تو آپ سے سوال یہ ہے کہ آپ کیوں زکواۃ جیسے حق العباد سے بھاگنا چاہتے ہیں؟ اور کیوں آپ حوصلہ شکنی کررہے ہیں کہ ہم اس موضوع پر بات نا کریں۔

    سوال کیجئے پر ٹاپک پر رہ کر کیجئے، مدیران حضرات سے درخواست ہے کہ وہ عمران صاحب اور میرے وہ مراسلے جن کا تعلق اس دھاگے سے نہیں ہے، پلیز حذف کردیجئے۔ بہت شکریہ۔
     
  20. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,779
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    Accounts Payables
    Accounts Receivables

    زکواۃ سب پر، جو کماتے ہیں ، فرض ہے ، تمام اسلامی حکومتوں نے زکواۃ وصولی، ہے، یہ ہی اسلامی ٹیکس ہے ، جس کی مقدار آمدنی کا پانچواں حصہ قرآن کے مطابق ہے۔ یعنی 20 فی صد، حکومت وقت کو واجب الادا۔ ڈھائی فی صد کا سراغ کہیں سے نہیں ملتا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر