تبسم مسافرانِ محبت کی داستاں ہے عجیب ۔ صوفی تبسم

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 22, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مسافرانِ محبت کی داستاں ہے عجیب
    جو سو گئی کہیں منزل تو جاگ اٹھے ہیں نصیب

    نہ پوچھ مرحلۂ شوق دور ہے کہ قریب!
    جہاں ہو دشتِ تمنّا وہیں دیارِ حبیب

    دعا نہ مانگ کہ ہو آرزو قبول تری
    دعا یہ مانگ کوئی آرزو ہو تجھ کو نصیب

    نہ جانے زورِ خطابت سے تھک گیا ہے وہ
    نہ جانے عجزِ ندامت سے چُپ ہوا ہے خطیب

    میں خود بتا نہیں سکتا یہ کس کی ہے آواز
    تُو آکے کان ذرا دھر مرے لبوں کے قریب

    تمام عمر کٹی مسجدوں کے سایے میں
    یہ چار دن تو گزر جائیں میکدے کے قریب

    غریقِ گریہ ہو دل، لب رہیں تبسّمؔ ریز
    مگر یہ غم نہیں ہوتا ہے ہر کسی کو نصیب

    (صوفی تبسمؔ)

     
    آخری تدوین: ‏مارچ 24, 2018

اس صفحے کی تشہیر