1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

مجید امجد ::::: اب کے تمھارے دیس کا یہ روپ نیارا تھا ::::: Majeed Amjad

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 27, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    غزلِ
    مجید امجد

    اب کے تمھارے دیس کا یہ روپ نیارا تھا
    بِکھرا ہُوا ہَواؤں میں سایا تمھارا تھا

    گُم سُم کھڑے ہیں اُونچی فصِیلوں کے کنکرے
    کوئی صدا نہیں! مجھے کِس نے پُکارا تھا

    رات آسماں پہ چاند کی منڈلی میں کون تھا
    تم تھے کہ اِک سِتار بجاتا سِتارہ تھا

    اُن دُورِیوں میں قُرب کا جادُو عذاب تھا
    ورنہ تمھارے ہجر کا غم بھی گوارا تھا

    دِل سے جو ٹیس اُٹھی، میں یہ سمجھا پُجاریو
    پتّھر کے دیوتا کا تڑپتا اِشارہ تھا

    تالی بجی تو سامنے ناٹک کی رات تھی
    آنکھیں کھُلیں، تو بُجھتے دِلوں کا نظارہ تھا

    پھر لوٹ کر نہ آیا، زمانے گزُر گئے
    وہ لمحہ جس میں ایک زمانہ گزُارا تھا

    بہتی ندی کے پاٹ سے اوجھل رہے وہ گاؤں
    ساحِل کی اوٹ جن کا دُھواں آشکارا تھا

    دُنیا کے اِس بھنور سے جب اُبھرے دُکھوں کے بَھید
    اِک اِک اتھاہ بَھید خود اپنا کِنارہ تھا

    مجید امجد
     

اس صفحے کی تشہیر