جون ایلیا لمحے کو بےوفا سمجھ لیجئے۔ جون ایلیا

شیزان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 26, 2012

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    لمحے کو بےوفا سمجھ لیجئے
    جاودانی ادا سمجھ لیجئے
    میری خاموشئ مسلسل کو
    اِک مسلسل گِلہ سمجھ لیجئے
    آپ سے میں نے جو کبھی نہ کہا
    اُس کو میرا کہا سمجھ لیجئے
    جس گلی میں بھی آپ رہتے ہوں
    واں مجھے جا بہ جا سمجھ لیجئے
    آپ آ جایئے قریب مرے
    مجھ کو مجھ سے جُدا سمجھ لیجئے
    جو نہ پہنچائے آپ تک مجھ کو
    آپ اُسے واسطہ سمجھ لیجئے
    نہیں جب کوئی مدعا میرا
    کوئی تو مدعا سمجھ لیجئے
    جو کبھی حالِ حال میں نہ چلے
    اُس کو بادِ صبا سمجھ لیجئے
    جو کہیں بھی نہ ہو، کبھی بھی نہ ہو
    آپ اُس کو خدا سمجھ لیجئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. شاہد شاہنواز

    شاہد شاہنواز لائبریرین

    مراسلے:
    1,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    فن کے حوالے سے یہ کیا ہے ، کیسی غزل ہے، یہ جون جیسے شاعر کے بارے میں تو کہنا ہی کیا، لیکن آپ ذرا مقطعے پر غور فرمائیے۔۔۔
    یہ ان کی خدا سے متعلق سوچ کا عکاس ہے۔۔۔
    جون کی یہ بات سمجھ سے بالا تر ہے، اس سے پہلے بھی میں ان کو پڑھ چکا ہوں۔
    اے خدا (جو کہیں نہیں موجود)
    کیا لکھا ہے ہماری قسمت میں؟؟
    (میں نے جہاں پڑھا وہاں انہوں نے اسے بریکٹ میں ہی لکھا تھا)
     
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    درست فرمایا۔ مجھے بھی مقطع پڑھ کر عجیب سا محسوس ہوا۔
     
    آخری تدوین: ‏جنوری 8, 2016
  4. عظیم آثم

    عظیم آثم محفلین

    مراسلے:
    7
    جون ملحد تھے۔ کسی خدا پہ یقین نہ رکھتے تھے۔ اس لیے اس میں عجیب کوئی بات نہیں۔ جیسے لوگ خدا کو مانتے ہیں ویسے ہی لوگ خدا کو نہیں بھی مانتے۔ آسان ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر