شاذ تمکنت قیدِ حیات و بندِ غم (نظم) ۔ شاذ تمکنت

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 3, 2019

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,732
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    قیدِ حیات و بندِ غم
    (نظم)

    آخرِ شب کی اداسی نم فضاؤں کا سکوت
    زخم سے مہتاب کے رستا ہے کرنوں کا لہو
    دل کی وادی پر ہے بے موسم گھٹاؤں کا سکوت
    کاش کوئی غم گسار آئے مداراتیں کرے
    موم بتی کی پگھلتی روشنی کے کرب میں
    دکھ بھرے نغمے سنائے دکھ بھری باتیں کرے

    کوئی افسانہ کسی ٹوٹی ہوئی مضراب کا
    فصلِ گل میں رائیگاں عرضِ ہنر جانے کی بات
    سیپ کے پہلو سے موتی کے جدا ہونے کا ذکر
    موج کی، ساحل سے ٹکرا کر بکھر جانے کی بات
    دیدۂ پر خوں سے کاسہ تک کی منزل کا بیاں
    زندگانی میں ہزاروں بار مر جانے کی بات
    عدل گاہِ خیر میں پا سنگِ شر کا تذکرہ
    آئینہ خانے میں خال و خط سے ڈر جانے کی بات

    کاش کوئی غم گسار آئے مداراتیں کرے
    موم بتی کی پگھلتی روشنی کے کرب میں
    دکھ بھرے نغمے سنائے دکھ بھری باتیں کرے

    (شاذ تمکنت)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    13,088
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    بہت خوب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر