فقیر محمد خاں گویاؔ : سرسری نظر

بافقیہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 20, 2020

  1. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    کل آپ کے پسندیدہ اشعار لڑی میں فقیر محمد خاں گویاؔ کا ایک شعر نظر سے گزرا۔ شعر یہ تھا:

    شام کو پڑھنی نمازِ صبح واجب ہوگئی
    روئے عالمتاب سے سرکا جو گیسو یار کا

    اچھل پڑا ۔ دل زور زور سے دھڑکنے لگا۔ چونکہ کلاسیکی ادب کا شیدا ہوں۔ یہ نام دسیوں نہیں سینکڑوں بار نظر سے گزرا۔ لیکن کبھی اس چھاؤں تلے دم نہیں لیا۔ اس شعر نے اس قدر جذب کرلیا کہ ریختہ پر شامل ان کی تمام غزلیں پڑھ لیں۔ پھر کہیں ان کے گیسوئے دراز سے باہر نکلا۔

    محفل پر مایہ ناز شعرا کے ساتھ ادب کے دلدادہ اور اہل ذوق بھی موجود ہیں۔
    میں نے گویاؔ کی شاعری پڑھی ۔ ایک مقناطیسی کشش تھی جو کھینچے چلی جاتی تھی۔ وہ کشش کیوں تھی؟ اس کی کچھ مثالیں پیش کررہا ہوں۔۔۔

    الفت یہ چھپائیں ہم کسی کی
    دل سے بھی کہیں نہ اپنی جی کی

    یہ روئے کہ نامہ بہہ کے پہنچا
    اشکوں نے ہمارے قاصدی کی

    بجلی چمکی تو ابر رویا
    یاد آ گئی کیا ہنسی کسی کی

    اور

    نیم بسمل کی کیا ادا ہے یہ
    عاشقو لوٹنے کی جا ہے یہ

    دود دل کیوں نہ رشک سنبل ہو
    آتش حسن سے جلا ہے یہ

    زلف میں کیوں نہ دل رہے بیدار
    لیلۃ القدر سے سوا ہے یہ

    چومتا ہوں میں اپنے دل کے قدم
    بوسۂ یار کا گدا ہے یہ

    دفن مسجد میں میرے دل کو کرو
    طاق ابرو پہ مر گیا ہے یہ

    طاق ابروئے یار کو دیکھوں
    عین کعبے میں التجا ہے یہ

    قد جاناں نہیں قیامت ہے
    زلف جاناں نہیں بلا ہے یہ

    اور

    قتل عشاق کیا کرتے ہیں
    بت کہاں خوف خدا کرتے ہیں

    خم ابروئے صنم کو دیکھیں
    ہم یہ کعبے میں دعا کرتے ہیں

    مہندی ملنے کے بہانے قاتل
    کف افسوس ملا کرتے ہیں

    جو ہمیں بھول گیا ہے ظالم
    اس کو ہم یاد کیا کرتے ہیں

    ہم بنے چاند کے ہالے گویاؔ
    گرد اس مہ کے رہا کرتے ہیں

    میں تو اس گویا کے دام کا اسیر بن گیا۔ آپ کا فیصلہ آپ کا ذوق کرے گا۔

    اور ایک خاص بات یہ ہے کہ آنجناب ، جناب جوش کے پردادا ہیں۔
    ساتویں پشت ہے شبیر کی مداحی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان کا بھی نام آتا ہے۔ ۱۸۵۰ کی وفات ہے۔ لگتا ہے غالب سے بھی رسم و راہ رہی ہوگی۔
     
    آخری تدوین: ‏فروری 20, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    اس کو مجھ سے رُٹھا دیا کس نے
    میرے دل کو دکھا دیا کس نے

    دام کاکل دکھا دیا کس نے
    مرغ دل کو پھنسا دیا کس نے

    خم ابرو دکھا دیا کس نے
    کعبۂ دل گرا دیا کس نے

    میں گیا اس کے گھر تو کہنے لگا
    گھر ہمارا بتا دیا کس نے

    مانگتے ہی گناہ گار ہوئے
    اس سے بوسہ لیا دیا کس نے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,867
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ماشاءاللہ لگتا ہے کافی نوجوان ہیں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    ہم ازل سے انتظار یار میں سوئے نہیں
    آفریں کہیے ہمارے دیدۂ بے دار پر

    دل جلا ایسا ہوں میرا نام لے بیٹھا جو وہ
    پڑ گئے چھالے زبان مرغ آتش خوار پر

    اٹھ کے بت خانے سے مسجد کو اگر جائے گا تو
    سیکڑوں ٹوٹیں گی تسبیحیں ترے زنار پر

    حیف کوئے یار تک پہنچی نہ میری استخواں
    مدتوں آ کر ہما بیٹھا رہا دیوار پر

    خط اسے اتنے لکھے میں نے کہ واں بہرِ جواب
    بیٹھے رہتے ہیں کبوتر سیکڑوں دیوار پر


    کیا لکھا ہے ظالم نے۔۔۔(y) قریب کوئی بھی نہیں کہ باہم لطف اندوز ہوں۔ ناچار یہیں شراکت کرنی پڑی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  6. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,950
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    فکر نہ کیجے بافقیہ بھائی! یہاں بھی آپ کو وہی پذیرائی ملے گی۔ ان شاء اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,950
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ان کی مکمل غزلیں بھی آپ کی پسندیدہ شاعری میں پیش فرمائیے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    523
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    جی۔۔۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. syed Kashif Rizvi

    syed Kashif Rizvi محفلین

    مراسلے:
    29
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    نواب فقیر محمد خان گویا لکھنوء کے قریب قصبے کنول ہار میں رہتے تھے جو پٹھانوٰ ں کی ایک بستی تھی جسے انکے والد بلند خاں نے آباد کیا تھا، انکا تعلق درہ خیبر کے آفریدی قبایل سے تھا ۔ جوش صاحب انکے بارے لکھتے ہیں کہ اگرچہ پشتو انکی مادری زبان تھی لیکن انہیں اردو پر انہیں اتنی دسترس تھی کہ ناسخ جیسے کٹر شخص نے انہیں اپنے تلامذہ میں لے لیا تھا۔ ایک اور عمدہ جملہ آپ حضرات کے ذوق مطالعہ کی نذر ۔۔۔۔ ہر چند وہ آذاد قبائل کے اکھڑ پٹھان تھے لیکن ان کے محلوں کی سجاوٹ ، ان کے ماکولات و ملبوسات کی نفاست ، انکی بٹیروں اور مرغون کی پالیاں ، انکے مشاعرے ، انکے شبستانوں کے مجرے ، ان کی ادب نوازیاں اور اہل علم پر انکی زرپاشیاں ان میں سے کوئی چیز بھی ایسی نہ تھی جس سے یہ گمان ہوتا کہ وہ دین تہذیب میں ایک نومسلم کی طرح داخل ہوئے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر