حفیظ ہوشیارپوری غم دینے والا شاد رہے، پہلو میں ہجومِ غم ہی سہی - حفیظ ہوشیار پوری

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 4, 2012

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    غزل
    (حفیظ ہوشیار پوری)
    غم دینے والا شاد رہے، پہلو میں ہجومِ غم ہی سہی
    لب اُن کے تبسّم ریز رہیں، آنکھیں میری پُرنم ہی سہی
    گر جذبِ عشق سلامت ہے ، یہ فرق بھی مٹنے والا ہے
    وہ حُسن کی اک دنیا ہی سہی، میں حیرت کا عالم ہی سہی
    ان مست نگاہوں کے آگے، پینے کا ذکر نہ کر ساقی
    میخانہ ترا جنّت ہی سہی، پیمانہ جامِ جم ہی سہی
    ملتا نہیں جب مونس کوئی اس وقت یہی یاد آتا ہے
    اپنا دل پھر بھی اپنا ہے خوکردہ ذوقِ رم ہی سہی
    جب دونوں کا انجام ہے اک، پھر چوں و چرا سے کیا حاصل
    تدبیر کا میں قائل ہی سہی، تقدیر کا تو محرم ہی سہی
    بندوں کے ڈر سے تجھے پوجوں، میں ایسی ریا سے باز آیا
    دل میں ہے خوف ترا یارب! سرپائے صنم پر خم ہی سہی
    آغازِ محبت دیکھ لیا، انجامِ محبت کیا ہوگا!
    قسمت میں حفیظِ بیکس کی آوارگی، پیہم ہی سہی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,836
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ کاشفی، اب حفیظ ہوشیار پوری کی برقی کتاب کا بھی ڈول ڈالنا پڑے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,548
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    واہ بہت خوب، شکریہ کاشفی صاحب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    شکریہ الف عین صاحب! جی بالکل۔ اگر میرے لیئے کوئی حکم ہے تو بتائیں۔
     
  5. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    شکریہ محمد وارث صاحب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. سلمان انصاری

    سلمان انصاری محفلین

    مراسلے:
    21
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    کیا بات ۔ کیا بات ۔ ۔ ۔مزہ آ گیا
     
  7. برگِ صحرا

    برگِ صحرا محفلین

    مراسلے:
    7
    جھنڈا:
    Pakistan
    مزہ آ گیا بہت عمدہ
     

اس صفحے کی تشہیر