1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

احسان دانش غزل: نظر فریبِ قضا کھا گئی تو کیا ہوگا؟

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 1, 2017

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,025
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    نظر فریبِ قضا کھا گئی تو کیا ہوگا؟
    حیات موت سے ٹکرا گئی تو کیا ہوگا؟

    بزعمِ ہوش تجلی کی جستجو بے سود
    جنوں کی زد پہ خرد آ گئی تو کیا ہوگا؟

    نئی سحر کے بہت لوگ منتظر ہیں مگر
    نئی سحر بھی جو کجلا گئی تو کیا ہوگا؟

    نہ رہنماؤں کی مجلس میں لے چلو مجھ کو
    میں بے ادب ہوں ہنسی آ گئی تو کیا ہوگا؟

    شبابِ لالہ و گل کو پکارنے والو
    خزاں سرشت بہار آ گئی تو کیا ہوگا؟

    خوشی چھنی ہے تو غم کا بھی اعتماد نہ کر
    جو روح غم سے بھی اکتا گئی تو کیا ہوگا؟

    یہ فکر کر کہ ان آسودگی کے دھوکوں میں
    تری خودی کو بھی موت آ گئی تو کیا ہوگا؟

    لرز رہے ہیں جگر جس سے کوہساروں کے
    اگر وہ لہر یہاں آ گئی تو کیا ہوگا؟

    وہ موت جس کی ہم احسانؔ سن رہے ہیں خبر
    رموزِ زیست بھی سمجھا گئی تو کیا ہوگا؟

    ***
    احسانؔ دانش
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر