غزل: حسیں ہو اور پھر اس پر حسیں معلوم ہوتے ہو ٭ نصر اللہ خان عزیزؔ

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 24, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,511
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    حسیں ہو اور پھر اس پر حسیں معلوم ہوتے ہو
    تم اپنے حسن میں حسنِ یقیں معلوم ہوتے ہو

    بہت ہی دور رہتے ہو تم آغوشِ محبت سے
    مگر پھر بھی مجھے بالکل قریں معلوم ہوتے ہو

    حیا آلود رخساروں سے کر دیتے ہو راز افشا
    نگاہِ شوق کی شرحِ مبیں معلوم ہوتے ہو

    بدل دو گے تم اپنی سب وفاؤں کو جفاؤں میں
    تم ایسے تو ہمیں ہرگز نہیں معلوم ہوتے ہو

    چلے جاتے ہوتم بزمِ تمنا سے مگر مجھ کو
    یہیں معلوم ہوتے ہو، یہیں معلوم ہوتے ہو

    دلِ بیتاب، چشمِ شوق، محرومِ سکوں پہلو
    جہاں ہم چاہتے ہیں تم وہیں معلوم ہوتے ہو

    خدا کی راہ میں اے مشکلاتِ غم کے تلخابو!
    ہمیں تم ایک جامِ انگبیں معلوم ہوتے ہو

    زمانے کی کسی گردش سے یہ عالم نہیں بدلا
    جہاں معلوم ہوتے تھے، وہیں معلوم ہوتے ہو

    بڑے تم حامیِ دینِ متیں بنتے ہو اے واعظ!
    مگر ہم کو تو مارِ آستیں معلوم ہوتے ہو

    اِدھر ہے دامنِ تقویٰ، اُدھر ہے جلوۂ رعنا
    بڑی مشکل میں اے قلبِ حزیں معلوم ہوتے ہو

    عزیزؔ اس دور میں اور شاہدِ حق سے وفاداری؟
    ہمیں تم یوں تو دیوانہ نہیں معلوم ہوتے ہو

    ٭٭٭
    ملک نصر اللہ خان عزیزؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
  2. عرفان سعید

    عرفان سعید محفلین

    مراسلے:
    6,024
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Mellow
    بہت اعلی!
    میرے تو رخسار سرخ ہو گئے یہ پڑھ کر!
    :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر