احمد ندیم قاسمی غزل: برہنہ پا میں سوئے دشتِ درد چلتا ہوں

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 20, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    26,346
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    برہنہ پا میں سوئے دشتِ درد چلتا ہوں
    میں اپنی آگ میں اپنی رضا سے جلتا ہوں

    مرے مزاج کی چارہ گری کرے گا کون
    چمن کی راہ سے، صحرا میں جا نکلتا ہوں

    اگر جلا نہ سکا مجھ کو آفتاب کوئی
    میں رنگ و بو کی تمازت میں کیوں پگھلتا ہوں

    مجھے تو پیکرِ محسوس سے محبت ہے
    میں صرف ایک تصور سے کب بہلتا ہوں

    سمیٹ لیتا ہے باہوں میں میرا عشق مجھے
    میں جب بھی فکر کی ڈھلوان سے پھسلتا ہوں

    رتوں کے جبر سے آزاد ہو چکا ہوں ندیمؔ
    خزاں میں پھولتا ہوں، آندھیوں میں پھلتا ہوں

    ٭٭٭
    احمد ندیم قاسمی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. لاريب اخلاص

    لاريب اخلاص محفلین

    مراسلے:
    23,352
    عمدہ!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2

اس صفحے کی تشہیر