غزل برائے اصلاح

انیس جان نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 11, 2019

  1. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    373
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    الف عین
    عظیم
    تسلیم لکھنوی کی زمین میں غزل کہنے کی جسارت

    خط وہ رکھتا ہے پکڑ کر زیرپا ؟بالائے سر؟
    دیکھتے رہنا پیمبر زیرپا بالائے سر

    تیری پتھریلی گلی میں آہ شیدا کو ترے
    لگتے ہیں پتھر ہی پتھر زیرپا بالائے سر

    ذرہ ذرہ ہے منور ساقی تیری بزم میں
    دِکھ رہے ہیں مجھ کو اختر زیرپا بالائے سر

    دل تو میں نے دے دیا اب جو بھی درجہ دو اسے
    ہے تری مرضی ستمگر ، زیرپا؟ بالائے سر؟

    وصل کی ہو شب یا چاہے ہجر کی لمبی سی رات
    کاٹتا ہے مجھ کو اجگر، زیرپا بالائے سر

    تو بھی سوجا اے دوانے شب ہے، ناصح نے کہا
    اوڑھ لی ہرشے نے چادر زیرپا بالائے سر

    جنوری ہو جون ہو ازبسکہ جو بھی ہو انیس
    آگ رہتی ہے برابر زیرپا بالائے سر
     
    آخری تدوین: ‏جون 11, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    373
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک اور شعر

    محترم اعجاز صاحب کا سنو شاگرد ہوں
    ہے فصاحت کا سمندر زیرپا بالائے سر
     
  3. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    933
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    بہت خوبصورت،لیکن بڑی مشکل باتیں لکھتے ہو بھائی۔
     
  4. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    373
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    مقطع کا مصرع ثانی یوں

    جلتا رہتا ہوں برابر……
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,114
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    لکھنؤ اسکول کو دوبارہ زندہ کر رہے ہو میاں،
    بعد میں دیکھتا ہوں اسے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  6. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    373
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    جلدی کیجیے استاجی ورنہ شعروں کی تعداد بڑھتی جائے گی مزید دو شعر

    سایئہ طوبیٰ بھی اور مہرِ گیا بھی ہجر میں
    ایک آتش ایک خنجر زیرپا بالائے سر

    کانپتے ہیں چال سے کافر تری چرخ و زمیں
    ہے بپا ہنگامِ محشر زیرپا بالائے سر
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,114
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    لو، ڈر کے مارے ابھی ہی آ گیا کہ مزید اشعار بالائے سر نہ آ پڑیں!
    خط وہ رکھتا ہے پکڑ کر زیرپا ؟بالائے سر؟
    دیکھتے رہنا پیمبر زیرپا بالائے سر
    .... اس زمین میں خط کے دوسرے معنی کی طرف بھی دھیان چلا جاتا ہے! پیمبر بھی کیونکہ پیغمبر کے لیے زیادہ مستعمل ہے، اس لیے ایسے لفظ سے بھی بچنا چاہیے۔ مفہوم کے اعتبار سے بھی شعر پسند نہیں آیا، اسے بدل ہی دو

    تیری پتھریلی گلی میں آہ شیدا کو ترے
    لگتے ہیں پتھر ہی پتھر زیرپا بالائے سر
    .... پتھر ہی پتھر کا یہاں استعمال کچھ درست نہیں لگ رہا ہے
    لگ چکے ہیں کتنے پتھر..... کہا جا سکتا ہے

    ذرہ ذرہ ہے منور ساقی تیری بزم میں
    دِکھ رہے ہیں مجھ کو اختر زیرپا بالائے سر
    ....ردیف یہاں بھی فٹ نہیں لگتی، اسے بھی نکال دیں

    دل تو میں نے دے دیا اب جو بھی درجہ دو اسے
    ہے تری مرضی ستمگر ، زیرپا؟ بالائے سر؟
    ..... شتر گربہ ہو گیا، یوں بھی درجہ دینے کی بات زیادہ جمتی نہیں۔..... تو جہاں بھی رکھ اسے
    یا اس قسم کا کوئی متبادل مصرع بہتر ہو گا

    وصل کی ہو شب یا چاہے ہجر کی لمبی سی رات
    کاٹتا ہے مجھ کو اجگر، زیرپا بالائے سر
    ..... یہ تو داغ اور تسلیم کا ہی شعر لگتا ہے!
    یا چاہے کا 'یچاہے' بن جانا ناگوار لگتا ہے ، لمبی سی
    میں سی بھی بھرتی ہے۔ یہ مصرع بدل دو

    تو بھی سوجا اے دوانے شب ہے، ناصح نے کہا
    اوڑھ لی ہرشے نے چادر زیرپا بالائے سر
    ... درست

    جنوری ہو جون ہو ازبسکہ جو بھی ہو انیس
    آگ رہتی ہے برابر زیرپا بالائے سر
    .. درست
    نئے اشعار
    محترم اعجاز صاحب کا سنو شاگرد ہوں
    ہے فصاحت کا سمندر زیرپا بالائے سر
    .... اس شعر کو تو درست ہی کہوں گا!

    سایئہ طوبیٰ بھی اور مہرِ گیا بھی ہجر میں
    ایک آتش ایک خنجر زیرپا بالائے سر
    ... اصلی لکھنؤ کا شعر، واہ

    کانپتے ہیں چال سے کافر تری چرخ و زمیں
    ہے بپا ہنگامِ محشر زیرپا بالائے سر
    یہ بھی درست
    غزل درست ہو تب بھی اس قسم کی زمینوں میں شاعری پسند نہیں آتی مجھے۔ سارا زور ردیف نبھانے میں لگانا پڑتا ہے، اور نازک خیالی کی جگہ پہلوانی زیادہ نظر آتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  8. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    8
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    کیا خوب جملہ ہے نازک خیالی کی جگہ پہلوانی نظر آتی ہے......
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    8
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    عمدہ اشعار ہوئے ہیں....استاد محتم ک رہنمائ میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,114
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناسخ کا ایک شعر یاد آ گیا حالانکہ وہ پہلواںِ سخن نہیں پہلوانِ عشق کی بات کر رہے ہیں لیکن اظہار کی زبان پہلوانِ سخن کی ہی ہے
    وہ پہلوانِ عشق ہوں ناسخ کہ بعد موت
    برسوں مرے مزار پہ مگدر گھما کیے
     
    • زبردست زبردست × 1
  11. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    373
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    دل کہتا ہے کہ اس زمین میں زور آزمائی کی جائے
     
  12. Misbahuddin Ansari Misbah

    Misbahuddin Ansari Misbah محفلین

    مراسلے:
    8
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful

اس صفحے کی تشہیر