غالبِ خستہ

سیدہ شگفتہ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 1, 2006

  1. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    غالبِ خستہ

    از

    جمیل حیدر زیدی




     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    غالب کے کچھ شعر سنئے

    ابنِ مریم ہوا کرے کوئی
    مرے دُکھ کی دوا کرے کوئی

    سنبھلنے دے مجھے اے نا اُمیدی کیا قیامت ہے
    کہ دامانِ خیالِ یار چُھوٹا جائے ہے مجھ سے

    فریاد کی کوئی لَے نہیں ہے
    نالہ پابندِ نَے نہیں ہے

    رگوں میں دوڑنے پھرنے کے ہم نہیں قائل
    جب آنکھ ہی سے نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

    آگے آتی تھی حالِ دل پہ ہنسی
    اب کسی بات پر نہیں آتی​

    غالب کے مشہور شعروں میں سے یہ محض چند شعر ہیں جنہیں روزمرہ گفتگو میں استعمال کیا جاتا ہے لیکن دیکھنا یہ چاہیے کہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    ان شعروں کو گفتگو میں استعمال کرنے والے ان شعروں کے ذریعے کن جذبات و کیفیات کا اظہار کر رہے ہیں۔ آیا ان اشعار کے ذریعے واقعی اپنے گہرے جذبات اور اہم کیفیات کی ترجمانی کی جا رہی ہے یا ان کے استعمال سے گفتگو میں محض شعر کا مزہ لیا جارہا ہے اور گفتگو کرنے والے ان اشعار کی معنوی گہرائی تک پہنچنے کی نہ قدرت رکھتے ہیں اور نہ کوشش کرتے ہیں یعنی یہ شعر جن جذبات اور کیفیات کی ترجمانی کرنے کا حق ادا کر سکتے ہیں انہیں سمجھنے کی بجائے انہیں محض سرسری انداز میں پیش کر دیا جاتا ہے۔ درحقیقت اگر ہم اپنے آس پاس نظر ڈالیں تو ہمارے آس پاس بے شُمار لوگ بلکہ شاید ہم خود بھی یہی کر رہے ہیں یعنی ہم نے غالب کے شعروں کو بھی اپنی روز مرہ گفتگو کا حصہ یا یوں کہیے کہ محض Phatic Communication کا ذریعہ بنا لیا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  4. فیضان الحسن

    فیضان الحسن محفلین

    مراسلے:
    157
    سلام
    محترم آپ کی اس کاوش میں کچھ کہنے کے قابل تو نہیں ظاہر کے اب میرا اتنا مطالعہ نہیں ہے این وجہ کے میں کسی قسم کی کوئی بات نہیں کہوں گا بس اتنا ہے کہ آج کل کے اس دور میں کوئی بھی شخص پہلی بات وہ یہ ہے کہ کسی بھی طرح غالب کو نہیں جانتا کیا میں کیا آپ کیوں کہ وہ اس دور کی باتیں تھیں دور حاضر میں تو اردو ہی نہیں رہی بات نکلی نہیں کہ انگریزی چھڑنے لگی قومی زبان ہی سہی مگر شاید کسی میوزیم میں ملے وہ بھی اگر کسی ڈھوس یا کسی مائع حالت میں بدل گئی تو ورنہ تو شاید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خیر یہ ایک بات تھی کہنے کی وہ کیا ہے کہ اردو کا حال ہی سہی "وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے"

    دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں
    روئیں گے ہم ہزار بار کوئی ہمیں ستائے کیوں
    غالب خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں
    روئیے زار زار کیا، کیجئے ہائے ہائے کیوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    شاید یہی وجہ ہے کہ ہم ان شعروں میں چھپے اُس گہرے رنج و غم پر غور ہی نہیں کرتے جس ےن غالب سے ایک تواتر کے ساتھ اس قسم کے شعر کہلوائے۔ ہم اس مایوسی اور ناامیدی پر بالکل بھی توجہ نہیں دیتے جو غالب کے شعروں میں بار بار جھلکتی نظر آتی ہے ۔ ہم اس درد و کرب سے سرسری طور پر گذر جاتے ہیں جس نے غالب کے ہونٹوں سے حقیقی ہنسی چھین لی تھی اور بنا کسی کے ستائے غالب کو رونے پر مجبور کر دیا تھا ۔ ہم غالب کے ایسیے اشعار میں الم پسندی اور یاسیت کو دیکھتے ہوئے بھی توجہ دیئے بغیر گذر جاتے ہیں کہ یونہی سرسری انداز میں بنا غوروفکر کے گذر جانا ہمارے معاشرے کا چلن بن گیا ہے ہم دراصل افادیت پسندی کا شکار ہوچکے ہیں۔ یعنی جب تک ہمیں کسی چیز میں اپنا کوئی فائدہ نظر نہ آئے ہم اس پر توجہ دینا فضول اور تضیح اوقات تصور کرتے ہیں ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    میرے خیال میں
    غالبؔ کے اشعار ایک طرح کا ٹریژر ہنٹ ہیں، پڑھ تو ہر کوئی لیتا ہے، لیکن
    جس طرح قدیم مصری مقبروں کو چوروں کی زد سے بچانے کےلیے اقدامات کیے جاتے تھے ٹھیک ویسے اقدامات غالبؔ نے اپنے اشعار میں مد نظر رکھے
    تاکہ بندر کے ہاتھ ماچس نہ لگے
    اب صورت یہ ہے،
    اول تو جیسے قدرت اللہ شہاب نے شہاب نامے میں اردو کے ماسٹر صاحب اور ان کے تشریح کے انداز کا ذکر کیا
    سادگی و پرکاری، بے خودی و ہشیاری
    حسن کو تغافل سےجرات آزما پایا
    ماسٹر صاحب اس کی تشریح یوں کرتے تھے
    " سادگی تے اسدے نال پرکاری، بے خودی تے اس دے نال ہوشیاری۔ شاعر کہندا اے کہ اس نے حسن نوں تغاف نال جرات آزما پایا۔ لو جی انی جئی گل سی، تے غالبؔ شعر بناندا مر گیا تے میں تشریح کردے کردے مر جانا، پر تہاڈے جئے کوڑھ مغزاں دی سمجھ وچ ککھ نئیں آنا"
    اب اس طرح کے ماسٹر صاحبان ہوں تو کون سمجھے غالبؔ کی عظمت اور ان کی شاعری کو
    دوم یہ کہ
    ہم کچھ زیادہ ہی ظاہر بیں اور ظاہر پرست ہو چلے ہیں، غالبؔ کی عظمت کا تاج محل ایک بوتل کے پیچھے اوجھل پاتے ہیں، ہم خود چاہے اپنے لبرل ہونے پر فخر کریں مگر غالبؔ کا نام آتے ہی ہمارے اندر ایک مولانا بیدار ہو جاتاہے
    سوم یہ کہ
    غالبؔ کے اشعار جیسا کہ میں نے کہا کہ ٹریژر ہنٹ ہیں، شوخیوں، آزادگیوں کی غلام گردشیں راہ میں حائل ہیں، لیکن ہم میں سے اکثر سہل پسند اس مشکل میں پڑنا ہی نہیں چاہتے، شعر سمجھ میں آتا ہے تو ٹھیک نہیں تو بھاڑ میں جائے (یہ ایک عمومی رویہ ہے)
    چہارم یہ کہ
    جیسے کھیل کئی قسم کے ہیں
    جینٹل مین ٹائپ لوگ گولف یا زیادہ سے زیادہ ٹینس ، کرکٹ پر گزارہ کر لیتے ہیں
    وہ بھی کھلاڑی کہلاتے ہیں
    مگر کچھ سرپھرے ایسے بھی ہوتے ہیں جو بقول غالبؔ "اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے"اسکیٹنگ، کوہ پیمائی وغیرہ کا انتخاب کرتے ہیں
    وہ بھی کھلاڑی کہلاتے ہیں
    اسی طرح غالبؔ کو مہم جو طبیعت کے لوگ ہی پڑھ پاتے ہیں، باقی وصی شاہ، فرصت عباس شاہ کو پڑھ کے ہی اپنے اندر چھپے ادبی بچے کو لوری دے لیتے ہیں
    غالبؔ ہی کے بقول " دھمکی میں مر گیا، وہ جو باب ِ نبرد تھا ٭٭ عشق نبرد پیشہ طلبگار مرد تھا" بس کچھ ایسی ہی بات ہے
    غالبؔ کا کلام بھی طلبگار مرد ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  7. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    متفق چھوٹا غالبؔ صاحب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر