عشقِ گریزاں ۔ قیوم نظر

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 25, 2019

ٹیگ:
  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    عشقِ گریزاں

    سرد ہو چکی محفل
    اور تو نے پروانے
    خواہشوں سے بیگانے
    جان سے گزرنے کا
    کھیل ہی نہیں کھیلا
    بجھ گیا ترا بھی دل
    سرد ہو چکی محفل
    آدمی کو جینا ہے
    ہم کنارِ غم ہو کر

    لطفِ زندگی کھو کر
    آج اور کل برسوں
    بے بسی کے بل برسوں
    زہرِ زیست پینا ہے
    آدمی کو جینا ہے
    عمر پر نہ جا اس کی
    یہ طویل مجبوری
    اپنی اصل سے دوری
    وجہِ دردِ ہستی ہے
    ننگ نام و مستی ہے
    عمر ہے سزا اس کی
    عمر پر نہ جا اس کی
    دیکھ رات جاتی ہے
    اٹھ بھی جا لپک کر آ
    بن سنور چمک کر آ
    صبح ہونے سے پہلے
    موت ہی سے دل بہلے
    شمع جھلملاتی ہے
    دیکھ رات جاتی ہے

    (قیّوم نظر)
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر