شیر کا نشان، روشن پاکستان

جہانزیب نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 29, 2013

  1. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    گو کہ انتخابات میں، میں ووٹ ڈالنے کا اہل نہیں ہوں لیکن بھرپور طور پر پاکستان مسلم لیگ کی حمایت کرتا ہوں اور دعا گو ہوں کہ انتخابات کے نتائج پاکستان مسلم لیگ کے حق میں آئیں ۔ مندرجہ ذیل وجوہات کی بناء پر میں پاکستان مسلم لیگ کی حمایت کرتا ہوں ۔

    بہترین ٹیم ۔

    پاکستان مسلم لیگ کے پاس اس وقت سب سے بہترین اور آزمائی ہوئی ٹیم ہے جو پاکستان کو ان بدترین حالات سے باہر نکالنے کی اہل ہے، پاکستان مسلم لیگ کو ووٹ دینا اس ٹیم کو ووٹ دینا ہے نہ کہ کسی ایک شخصیت کو ووٹ دینا ۔

    لیڈرشپ ۔
    پاکستان مسلم لیگ کے پاس بلاشبہ ایسی لیڈر شپ موجود ہے جو داخلی اور خارجہ امور میں ذاتی مفادات سے بالا تر ہو کر فیصلہ کرنے کی اہلیت رکھتی ہے ۔ ذیل کے واقعات مثال کے طور پر موجود ہیں ۔
    1999 میں پاکستانی فوج ایک ایک جرنیل کی نادور اندیشی کی وجہ سے کارگل جیسی مہم میں بری طرح پھنس چکی تھی، فوج نے آغاز میں یہ تاثر دیا کہ پاکستان فوج اس مہم جوئی کا حصہ نہیں ہے اور اس بات کا زور و شور سے دنیا میں پرچار کیا کہ مہم جو کشمیری ہیں جو اپنا حق خود ارادیت لینے کے لئے ہندوستانی فوج سے برسر پیکار ہیں ۔ بعد میں جب ہندوستانی فوج نے پیش قدمی کی اور ہمارے فوجی جوانوں کو واپسی کا کوئی محفوظ راستہ نہیں مل رہا تھا اور پاکستان فضائیہ پاکستان فوج کے پہلے موقف کی وجہ سے کاروائی کرنے سے گریزاں تھی جو ہندوستان اور پاکستان میں کھلی جنگ پر ختم ہوتا ۔ میاں محمد نواز شریف نے ایسے حالات میں ذاتی مفادات سے بالاتر ہو کر ممکنہ فوجی شکست کو سیاسی طور پر حل کیا اور پھنسے جوانوں کو محفوظ راستہ سیاسی طور پر مہیا کروایا۔ ایک جرنیل کی نا دور اندیشی کا الزام اپنے سر لے کر افواج پاکستان کے مورال کو گرنے سے بچایا ۔ کارگل میں افواج پاکستان کی شہادتیں 1965 کی جنگ سے زیادہ تھیں ۔
    خارجہ امور میں امریکہ سے تعلقات پاکستان کے لئے اہم ہیں لیکن اپنی خود مختاری اور اصول پر قائم رہنا اس سے بھی زیادہ اہم ہے ۔ امریکہ کی غلامی سے نجات آج کل ویسے بھی ایک مقبول نعرہ ہے۔ پاکستان مسلم لیگ کی لیڈرشپ نے اس زمرہ میں بھی اپنی خودمختاری اور اصولوں پر کسی قسم کا سودا نہیں کیا ۔
    1998 میں نیروبی میں امریکی سفارت خانہ پر حملہ ہوا، اور 250 ہلاکتیں ہوئیں ۔ اسامہ بن لادن افغانستان میں موجود تھا اور امریکہ افغانستان پر فوجیں اتارنے کے لئے تیار تھا اور سمندر سے افغانستان پر بیس مزائل بھی داغ چکا تھا جس سے پاکستان کی فضائی حدود کی خلاف ورزی ہوئی تھی ۔ میاں نواز شریف کے پرزوراحتجاج نے امریکہ کو مزید مہم جوئی سے باز رکھا اور امریکہ کو مذاکرات کی میز پر آنا پڑا ۔
    1998 میں ہی جب ہندوستان جوہری دھماکے کر چکا تھا تو پاکستان مسلم لیگ کی قیادت نے جس احسن طریقہ سے اس کو حل کیا اسکی دنیا میں مثال نہیں ملتی ۔ پاکستان مسلم لیگ کی قیادت نے جلدبازی کی بجائے دنیا اور اقوام متحدہ کو ہندوستانی دھماکوں پر ردعمل کے لئے مناسب وقت دیا اور جب محسوس کیا کہ کہیں سے کوئی شنوائی نہیں ہو رہی اور ہندوستان پر کسی قسم کی پابندیوں کا امکان نہیں تو تمام خدشات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنے جوہری دھماکے کئے اور پاکستان کی سفارتی کوششوں سے پاکستان، آج شمالی کوریا کی طرح عالمی طور پر تنہا نہیں تھا ۔

    معاشی حالات ۔
    جو لوگ پاکستان مسلم لیگ کی قیادت پر اعتراض کرتے ہیں ان کا سب بڑا اعتراض ملک کو بدحالی کے دھانے پر لے جانے کا ہے، لیکن جب ہم حقائق کا جائزہ لیتے ہیں تو وہ اس بات کی چغلی کھاتے ہیں ۔
    پاکستان مسلم لیگ پہلی بار 1990 کے اخیر میں حکومت میں آئی ۔ 1990 میں ملک کا جی ڈی پی 42ء5 تھا جبکہ ایک سال کے قلیل عرصہ میں اگلے ہی سال 1991 میں جی ڈی پی 57ء7 کی حد پر پہنچ گیا ۔ ترقی کی رفتار میں دھچکہ اس وقت لگا جب حکومت کو اڑھائی سال بعد صدارتی فرمان کے تحت چلتا کر دیا گیا ۔
    اپنے دوسرے دور میں پاکستان مسلم لیگ کی ٹیم میں شامل اراکین نے صرف دو سال کی قلیل مدت میں بدترین جی ڈی پی 70ء1 کو 18ء4 تک پہنچا دیا۔ یاد دہانی کے لئے کہ اس دور میں پاکستان جوہری دھماکوں کے باعث اقتصادی پابندیوں کا بھی شکار تھا ۔
    اپنے پہلے دور اقتدار میں دوسال کے قلیل عرصہ میں شرح غربت 4ء37 فی صد سے کم کر کے 7ء25 تک لانے میں کامیاب رہی۔ پیپلزپارٹی کے دور اقتدار میں یہ شرح بڑھ کر دوبارہ 6ء28 فی صد تک چلی گئی اور اپنے دوسرے دور میں پاکستان مسلم لیگ اسے واپس 24 فی صد کی سطح تک لانے میں کامیاب رہی ۔ گوکہ 1999 میں یہ شرح بڑھ کر 32 فی صد تک جا پہنچی تھی لیکن اس دور میں پاکستان جوہری دھماکوں کے باعث بدترین اقتصادی پابندیوں کا شکار تھا ۔ لیکن اس دور میں بھی پاکستان مسلم لیگ کی حکومت کساد بازاری کی شرح کو 4 فی صد تک رکھنے پر کامیاب رہی جو کہ 1990 کی دھائی میں سب سے کم ہے -
    موٹروے جو آج کے پاکستان کی معاشیات میں ریڑھ کی ہڈی جیسی اہمیت رکھتی ہے اور کوئی شخص آج اس سے انکار نہیں کرتا، یہ بھی پہلے دور حکومت میں آٹھ رویہ سڑک منظور کی گئی تھی جسے پیپلزپارٹی نے یہ کہہ کر چار رویہ کر دیا کہ اس منصوبہ کی قوم کو ضرورت نہیں۔ پھر بھی اگلے دور میں پاکستان مسلم لیگ نے دوبارہ مذاکرات کر کے اسے چھ رویہ سڑک پر منظور کروا لیا ۔
    اگر یہ ٹیم ان دو ادوار میں برائے نام حکومت ہوتے ہوئے بھی ایسے نتائج دینے کے قابل تھی تو انشاللہ مستقبل میں بھی روشن پاکستان کی ضمانت پاکستان مسلم لیگ کی قیادت اور ٹیم ہی ہے ۔ دوسرے ابھی جو وعدے کر رہے ہیں پاکستان مسلم لیگ برائے نام حکومت میں بھی وہ سب کر کے دکھا چکی ہے ۔
    1999 کے بعد کی پاکستان مسلم لیگ کی سیاست ملک کے لئے کس طرح بہتر ثابت ہوئی انشااللہ اس پر بعد میں تحریر کروں گا ۔ سوچ سمجھ کر ووٹ دیں نعرے سن کر ووٹ مت دیں ۔
     
    • متفق متفق × 4
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 2
    • غیر متفق غیر متفق × 2
  2. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    نعرے سُن کر ووٹ مت دیں
    [​IMG]
     
    • زبردست × 4
    • پسندیدہ × 1
    • پر مزاح × 1
    • متفق × 1
    • نا پسندیدہ × 1
  3. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
  4. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    چلیں اگر آپ نے اسی طرح کی بحث کرنا ہے تو اس بارے میں عمران خان کے عذر کی وضاحت فرما دیں ۔ کہاوت ذہن میں رکھئے گا "عذر گناہ بدتر از گناہ" صرف اس خوف سے کہ ووٹ کم نہ ہو جائیں کسی غلط کام کو غلط نہ کہہ سکنا؟ کیسی لیڈرشپ ہے یہ ۔
     
  5. زبیر مرزا

    زبیر مرزا محفلین

    مراسلے:
    5,997
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    جہانزیب بھائی ابھی وقت ہے پاکستانی کونسلیٹ چلتے ہیں اس نعرے کے ساتھ
    ہمیں ووٹ کا حق دو
    اُس کے بعد ایک چکرایپل کے اسٹورکالگالیں گے:)اب جوسٹی جائیں گے توکچھ توملے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  6. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    ویسے تو میں ابھی پاکستان سے ہو کر آیا ہوں اور ووٹر لسٹ میں میرا نام بھی درج ہے لیکن اب امریکہ سے ووٹ ڈالنا ممکن نہیں ۔ میری اہلیہ البتہ تحریک انصاف کو ووٹ شائد ڈال آئیں اگر ق لیگ کو نہ دیا تو ویسے امکان غالب یہی ہے کہ ق لیگ کو ووٹ ڈلے گا کیونکہ ہمارے علاقہ میں ق لیگ کا امیدوار اچھی شہرت کا حامل ہے اور ہمارے حلقہ کی سیٹ شائد سرگودھا سے ق لیگ کی واحد سیٹ ہو گی، امیدوار کے ذاتی ووٹ کی بدولت ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  7. پردیسی

    پردیسی محفلین

    مراسلے:
    1,185
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    چلیں اس کو چلتا پھرتا رہنے دیں ۔۔۔ذرا محفل کا نظارا کر لے گا ۔۔ جی بہل جائے گا لڑکے لڑکیوں میں

    [​IMG]
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  8. عظیم اللہ قریشی

    عظیم اللہ قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,583
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    پردیسی جی اتنا ظلم نہ کرو تُسی وی شیر نال او۔۔۔۔۔بروٹس یو ٹو
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  9. ساجد

    ساجد محفلین

    مراسلے:
    7,113
    موڈ:
    Question
    پاء جی اوہ ٹائیگر وے تسی لائن لے کے آ گئے او :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  10. ساجد

    ساجد محفلین

    مراسلے:
    7,113
    موڈ:
    Question
    لیکن جہانزیب اس پورے تجزیے میں مسلم لیگ کے حالیہ دور حکومت یعنی 2008 سے 2013 کا تو ذکر ہی نہیں ہے۔ کیا اس سے یہ نہ سمجھ لیا جائے گا کہ اس دوران میں مسلم لیگ (ن)حکومتی اور سیاسی طور پر مکمل ناکامی سے دوچار ہوئی۔
    گو کہ آپ نے وعدہ فردا کیا ہے لیکن اس بار کا انتخاب 1999 کی کارکردگی پر نہیں 2008 سے 2013 کی کارکردگی دیکھ کر ہو گا۔ آپ اسے پیش کریں تا کہ ہم آپ سے کچھ استفسارات کر سکیں۔
     
    • متفق متفق × 2
    • زبردست زبردست × 1
  11. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    نہیں میں ایسا بالکل بھی نہیں سمجھتا، اور کن وجوہات کی بناء پر میں پاکستان مسلم لیگ کو اس عرصہ میں کامیاب سمجھتا ہوں، ان کے دلائل کے ساتھ اگلے مراسلہ میں حاضر ہوتا ہوں ۔
     
  12. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    ۲۰۰۶ میں جب میاں نواز شریف جبری طور پر ملک بدر تھے تو انہوں نے بےنظیر بھٹو صاحبہ کے ساتھ ایک معاہدے پر دستخط کئے جس کے چیدہ چیدہ مقاصد ماضی کی غلطیوں کو نہ دہرانا، جن کا فائدہ اٹھا کر آمر اقتدار حاصل کرتے رہے، مل کر اس وقت کی حکومت کے خلاف عمل کرنا، آئین کو دوبارہ ۱۹۷۳ کی شکل میں واپس لانا اور افواج پاکستان اور انٹیلجنس ایجنسیوں کے اختیارات کا تعین کرنا تھا ۔ جسے اب ہم چارٹر آف ڈیموکریسی کے نام سے جانتے ہیں ۔
    ۲۰۰۷ میں اسی سلسلے کو جاری رکھتے ہوئی پاکستان کی تمام بڑی سیاسی جماعتوں کی کانفرنس منعقد کروائی جس میں ایم کیو ایم کو عمران خان صاحب کی خواہش پر مدعو نہیں کیا گیا اور ق لیگ کو مشرف حکومت کی حمایت کی بناء پر مدعو نہیں کیا گیا ۔ اس کانفرنس میں بھی تمام سیاسی جماعتوں کو اس بات پر اکٹھا کیا گیا کہ ملک میں جمہوریت کو بحال کیا جائے اور مستقبل میں کسی آمر کو سیاسی جماعتیں اپنا کندھا پیش نہ کریں ۔
    مشرف کے ایمرجنسی کے نفاذ کے بعد جب ججوں کو کام کرنے سے روک دیا گیا تو روز اول سے ہی پاکستان مسلم لیگ کا موقف رہا کہ تمام ججوں کو بحال کروائیں گے، اقتدار میں آنے کے بعد پیپلز پارٹی اور دیگر کئی جماعتیں جو پہلے اس کی حامی تھیں اس موقف سے پیچھے ہٹ گئی تھیں ۔ عمران خان صاحب نے جون ۲۰۰۸ کو ججوں کے بحال ہونے تک دھرنے کا اعلان بھی کیا تھا اور جب تمام ملک سے لوگ اسلام آباد دھرنے کے لئے پہنچے تو نامعلوم وجوہات کی بناء پر دھرنے کو اچانک منسوخ کردیا گیا ۔ پاکستان مسلم لیگ وکلاء کے اصرار پر اس دھرنے میں موجود نہیں تھی کہ وکلا کی جدوجہد کو اس سے سیاسی رنگ دے دیا جائے گا ۔
    اس تناظر میں نواز شریف کی سیاست کو دیکھیں تو ایک بار پھر اندازہ ہوتا ہے کہ ذاتی مفادات سے مقدم انہوں نے ملکی مفاد کو رکھا اور پورا عرصہ ان کا یہی موقف رہا اور اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹے ۔ اسکی مثال جب مارچ ۲۰۰۹ میں پیپلزپارٹی کی حکومت ججوں کو بحال کرنے میں پس و پیش کر رہی تھی اور پنجاب میں حکومت ختم کر کے گورنر راج نافذ ہو چکا تھا اور تمام دیگر جماعتیں اس بات پر لانگ مارچ کی تیاری کر چکی تھیں ۔ لانگ مارچ نواز شریف کی قیادت میں جب گجرانولہ پہنچا تو حکومت نے تمام ججز کو بحال کر دیا ۔ یہ ایسا موقع تھا جس پر پاکستان مسلم لیگ کی حریف جماعتیں طعنہ دیتی ہیں کہ راستہ میں لانگ مارچ چھوڑ دیا، حالانکہ مارچ کا مقصد ججز کو بحال کروانا تھا حکومت گرانا نہیں ۔ نوازشریف کے پاس بھی راستہ تھا کہ ذاتی مفاد کو مدنظر رکھتے اور پنجاب سے گورنر راج ہی ختم کروا لیتے اگر حکومت نہ بھی گراتے ۔ لیکن ملکی مفاد کو مد نظر رکھ کر مارچ وہیں ختم کردیا جہاں ججز بحال کر دئے گئے ۔ اسے کہتے ہیں لیڈرشپ ۔
    باقی الزامات کا بھی جائزہ لے لیتے ہیں، جو جماعتیں مشرف کے این آر او پر شور مچاتی رہیں اور پاکستان مسلم لیگ کو فرینڈلی اپوزیشن کا طعنہ دیتی رہیں انہوں نے سوا باتوں اور بیانات کے اس ذیل میں کیا کیا؟ پاکستان مسلم لیگ نے نہ صرف کہ این آر او کے خلاف اسمبلی میں آواز اٹھائی بلکہ میاں شہباز شریف اسے لے کر عدالت میں گئے جس کا فیصلہ عدالت نے شہباز شریف کے حق میں کیا اور این آر او کے تحت تمام معاف کئے گئے مقدمات کو دوبارہ سے کھولا گیا ۔
    بجلی کا بحران، پیپلزپارٹی کے رینٹل بجلی گھروں کے منصوبہ جات پر زبانی نکتہ چینی میں تو سبھی اپنا حصہ ڈالتے رہے جبکہ پاکستان مسلم لیگ کی جانب سے خواجہ آصف حکومت کو اس معاملہ میں عدالت میں لے گئے اور سپریم کورٹ کے حکم کی وجہ سے اربوں کا سرمایہ ان منصوبہ جات سے باہر آیا ۔
    میمو گیٹ کی مثال بھی سامنے ہی ہے جب ایک قومی رہنما صاحب اسے جلسے میں تو اس وقت بیان کرتے ہیں جب پاکستان بھر میں اس بارے میں کوئی نہیں جانتا تھا اور بعد میں بھی صرف بیانات تک محدود رہتے ہیں یہ پاکستان مسلم لیگ ہی تھی جو میموگیٹ کا معاملہ عدالت تک لے گئی اور دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی سامنے آیا ۔
    حج سکینڈل اور ریلوے میں کرپشن کا معاملہ بھی چوہدری نثار کی سربراہی میں پبلک اکاونٹس کمیٹی نے حل کیا اور خزانے میں ۱۱۵ ارب روپے واپس کروائے ۔ جب کہ پاکستان مسلم لیگ پر تنقید کرنے والے اس دوران صرف اور صرف بیانات دینے میں مصروف رہے ۔
    ترقیاتی کاموں کا صرف ذکر کر دینا مناسب ہو گا ۔
    پنجاب میں ۲۲ نئے سرکاری کالجز کا قیام
    پانج نئے میڈیکل کالجز کا قیام ۔
    ۵۱۵ مڈل اسکولوں اور ۴۲۸۶ ہائی اسکولوں میں کمپیوٹر لیب کا قیام ۔
    سرگودھا میں ۴۰۰ بیڈ کے ہسپتال جبکہ بہالپور میں ۴۱۰ بیڈ کے ہسپتال کا قیام ۔
    ریسکیو ۱۱۲۲ کو تین ضلع سے پھیلا کر پنجاب کے ۳۶ اضلاع تک بڑھانا۔
    سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ماڈل ولجز کا قیام ۔
    دانش اسکولوں کے ذریعے غریب عوام کو موقع کہ وہ بھی اپنے بچوں کو چارٹرڈ اسکولوں جیسی تعلیم دلوا سکیں ۔
    لاہور میں ترقیاتی کاموں کا ذکر اس لئے نہیں کیا کہ ویسے ہی الزامات لگانے والے ان کا اتنا ذکر کر دیتے ہیں کہ مجھے ضرورت ہی نہیں ۔

    ان سب باتوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے، کیا پاکستان مسلم لیگ آئین کو ۱۹۷۳ کی اصل شکل میں بحال کروانے میں کامیاب نہیں ہوئی؟ کیا تمام اختیارات وزیر اعظم کو منتقل نہیں ہوئے؟ کیا پاکستان مسلم لیگ ججوں کو دوبارہ اپنے عہدوں پر بحال کروانے میں ناکام رہی؟ کیا قومی دولت لوٹنے پر پاکستان مسلم لیگ نے صرف زبانی واویلا کیا اور کوئی عملی اقدام نہیں اٹھائے؟

    لیکن اگر کامیابی صرف حکومت گرا کر اپنی حکومت بنانے کا نام ہے تو واقعی کئی مواقع ہونے کے باوجود بھی پاکستان مسلم لیگ ناکام رہی ۔ ماضی میں جب جب پاکستان میں جمہوری عمل کو روکا گیا اس سال آپ ٹرانسپنسی انٹرنیشنل کی رپورٹس گوگل کر کے پڑھ لیں کہ ملک کی اقتصادی حالت اور ترقی کی رفتار میں آیا کمی ہوئی یا زیادتی ۔
    اخیر میں ایک دفعہ پھر یہ کہنے کی جسارت کروں گا کہ ایسے ہی حالات میں بالغ نظر لیڈر کا پتہ چلتا ہے کہ آیا ذاتی مفاد عزیز ہے یا ملکی مفاد اور میری رائے میں پاکستان مسلم لیگ کی قیادت نے ثابت کیا ہے کہ اسے ملکی مفاد عزیز تر ہے باوجود ان بچگانہ نعروں کے "حکومت ہٹاو ملک بچاو"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
  13. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  14. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    اس بہترین ٹیم کی تفصیل بیان کیجیے
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    دھماکوں کے بعد پابندیاں بھارت اور پاکستان دونوں پر لگائی گئیں پاکستان کی اقتصادی امداد بند کر دی گئی ۔ بھارت نے تو دھماکے منصوبہ بندی کے بعد کئے تھے پہلے فارن کرنسی اکاؤنٹ میں وافر رقوم اکٹھی کی تھیں جبکہ آپکی بہترین لیڈرشپ نے بغیر کسی منصوبہ بندی کے دھماکے کئے اور عوام کے فارن کرنسی اکاؤنٹ ہڑپ لئے

    پابندیاں مشرف حکومت کے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں تعاون پر آمادگی پر ہٹائی گئیں ۔
    .
    Apart from the sanctions imposed following the nuclear tests, the United States
    prohibited foreign aid to Pakistan when that country fell into arrears in servicing its debt
    to the United States in late 1998, a prohibition reenforced when Pakistan’s military
    forces overthrew the democratic government in late 1999. Post-September 11
    cooperation between the United States and Pakistan included a rescheduling of the debt
    and new legislation to waive the so-called democracy sanctions. Pakistan thus became
    eligible to receive U.S. foreign assistance through FY2003 when, unless it holds free and
    fair elections, restrictions on foreign aid could be reimposed.
     
    • متفق متفق × 2
    • زبردست زبردست × 1
  16. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    جی ان خبروں کی شہ سرخیوں پر ایک نظر ڈالتے ہی میرے موقف کی تائید سامنے آئی ہے کہ پاکستان آغاز سے اسے کشمیری مجاہدین کی مہم جوئی قرار دیتا رہا ہے جبکہ حقیقت اس کے برعکس تھی کہ پاکستان آرمی یہ آپریشن کر رہی تھی ۔ اس سلسلے میں سہیل وڑائچ کی کتاب پڑھنے کی فرصت ملے تو ضرور پڑھیے گا ۔
     
    • متفق متفق × 1
  17. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    موٹر وے بنانے کے لئے غیر ملکی قرضے حاصل کئے گئے حالانکہ یہ ایک غیر پیداواری منصوبہ تھا جو پاکستان کی معاشی ترقی میں معاون نہیں بن سکا۔ ہاں ن لیگ کے دیگر نمائشی منصوبوں کی طرح سیاسی فائدہ ضرور تھا۔
    Funding for the project: The project was approved by the National Highway Council headed by the Prime minister of Pakistan in 1992 with 60 percent financing by the Government of Pakistan and 40 percent financing through foreign loans. The project was completed in December 1997 at an estimated cost of Rs. 30.5 billion.
    http://www.unescap.org/drpad/vc/conference/ex_pk_7_ali.htm

    ذرا اس بات پر روشنی ڈالئے کہ موٹر وے ہماری معیشت کے لئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت کیسے رکھتی ہے
     
    • متفق متفق × 2
    • غیر متفق غیر متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  18. محسن وقار علی

    محسن وقار علی محفلین

    مراسلے:
    12,013
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    اگر موٹر وے بننی ہی تھی تو تمام صوبوں کو آپس میں ملانے کے لیے بنائی جانی چاہیے تھی
    موجودہ موٹر وے تو "پنجاب وے" ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  19. جہانزیب

    جہانزیب محفلین

    مراسلے:
    2,442
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    جو لوگ پاکستان بچانے نکلے ہیں ان کی کم از کم اتنی تحقیق تو ہونا چاہیے کہ اس طرح کے سوالات پوچھنے پر وقت کا ضیاع نہ ہو کیونکہ وقت کم اور مقابلہ سخت ہے ۔ آپ پاکستان مسلم لیگ کے دونوں ادوار میں جو کابینہ تھی اسے بھلا گوگل میں تلاش کر لیں ۔
    دیکھا آپ نے یہاں میرا جواب دینے سے پہلے ہی اپنا مجھے "سچ بولنے" والا مشورہ بدل ڈالا ہے ۔ بی بی میری ارسال کردہ تحریر میں کہیں دکھا دیں کہ میں نے کہا ہو کہ نوازشریف کے دور میں پابندیاں ہٹا لی گئی تھیں ۔
    رہا دوسرا سوال اکاونٹ ہڑپ لینے کا تو میری بہن پرویز مشرف نے حکومت پر قبضہ کرنے کے اٹھائیس دن بعد نواز شریف کے خلاف مقدمہ درج کروایا تھا اور وہ مقدمہ بھی جہاز اغواء کرنے کا درج کروایا گیا تھا ۔ اب میرا آپ سے سوال ہے کہ جو کام مشرف نو سال میں نہیں کر سکا کہ نواز شریف کے خلاف سپریم کورٹ میں مقدمہ تک قائم نہیں کر پایا اور آپ کے پاس اس کا ثبوت ہے تو عمران خان صاحب کو وہ ثبوت دیں اور عدالت میں جانے کا مشورہ دیں تاکہ ملزم کو قرار واقعی سزا مل سکے ۔ اگر یہ نہیں کر سکتی تو سراسر الزام لگانا بند کریں ۔
     
    • متفق متفق × 2
  20. زرقا مفتی

    زرقا مفتی محفلین

    مراسلے:
    3,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    چونکہ آپ اس ٹیم کی تعریف بیان کر رہے ہیں اس لئے آپ ہی یہاں چیدہ چیدہ افراد کا تعارف پیش کیجیے
    میں نے سچ بولنے کا مشورہ حذف کیا تاکہ ماحول خراب نہ ہو
    آپ نے لکھا کہ
    پاکستان مسلم لیگ کی قیادت نے جلدبازی کی بجائے دنیا اور اقوام متحدہ کو ہندوستانی دھماکوں پر ردعمل کے لئے مناسب وقت دیا اور جب محسوس کیا کہ کہیں سے کوئی شنوائی نہیں ہو رہی اور ہندوستان پر کسی قسم کی پابندیوں کا امکان نہیں تو تمام خدشات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنے جوہری دھماکے کئے اور پاکستان کی سفارتی کوششوں سے پاکستان، آج شمالی کوریا کی طرح عالمی طور پر تنہا نہیں تھا ۔​


    یہ سراسر حقائق کے منافی بیان تھا دیکھ لیجیے​


    مجھے کیا ضرورت ہے میرا اپنا اکاؤنٹ منجمد کیا گیا جن کے اکاؤنٹ منجمد ہوئے اُن سے تو پوچھ کر دیکھیئے
     

اس صفحے کی تشہیر