سقوطِ ڈھاکہ اور "قومی ترانہ"

محمد وارث نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 16, 2020

  1. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    یہ لطیفہ نما واقعہ اُس وقت کے ڈی جی آئی ایس پی آر بریگیڈیر اے آر صدیقی نے جنرل یحییٰ خان پر اپنی کتاب میں لکھا ہے، واقعے سے پہلے کچھ اس کا پس منظر:

    یہ جنوری 1971ء کے اوائل کے دن ہیں، ملک میں پہلے عام اور شفاف انتخابات ہو چکے ہیں۔ عوامی لیگ واضح برتری حاصل کر چکی ہے اور اب قومی اسمبلی کے پہلے اجلاس کا انتظار ہے جس میں ارکان نے حلف اٹھانا ہے اور ملک کے وزیرِ اعظم کا انتخاب کرنا ہے۔ بطور صدر، اسمبلی کا اجلاس بلانے کا اختیار جنرل یحییٰ کے پاس ہے۔ جنرل یحییٰ نے مارچ کے اوائل میں ڈھاکہ میں اسمبلی کا اجلاس بلانے کا اعلان کر دیا ہے اور اسی سلسلے میں مجیب الرحمٰن سے ملنے ڈھاکہ کا دورہ کرتا ہے۔ ڈھاکہ میں جنرل یحییٰ اور مجیب الرحمٰن کے درمیان مذاکرات ہوتے ہیں، مجیب، جنرل کو یہ عندیہ دے دیتا ہے کہ اس کی حکومت جنرل یحییٰ کو بطور صدر اور بطور آرمی کمانڈر ان چیف قبول کر لے گی۔ جنرل یحییٰ ڈھاکہ سے واپسی پر ایئرپورٹ پر ایک سوال کے جواب میں کہتا ہے کہ اس کا جانشین اور اگلا وزیر اعظم اکثریتی جماعت کا لیڈر ہوگا۔ ڈھاکہ میں اس بیان پر خوشی کے شادیانے بج اٹھتے ہیں اور ان کو ایک آس بندھ جاتی ہے کہ اقتدار صحیح معنوں میں عوام کی منتخب قیادت کو منتقل ہو جائے گا۔

    یہاں سے یہ واقعہ شروع ہوتا ہے۔ جنرل یحییٰ ڈھاکہ ایئرپورٹ پر اعلان کر کے کراچی کے لیے روانہ ہو جاتا ہے جہاں سے وہ سیدھا لاڑکانہ پہنچتا ہے۔ لاڑکانہ میں دوسری اکثریتی پارٹی یعنی پیپلز پارٹی کے چیئرمین ذوالفقار علی بھٹو میزبان ہیں اور المرتضیٰ لاڑکانہ میں صدر صاحب کی تین دن کے لیے مہمانداری کی جاتی ہے۔ لاڑکانہ میں جنرل یحییٰ کے دیگر قریبی جنرلز بھی موجود ہیں جن میں جنرل عبدالحمید، جنرل پیرزادہ، جنرل عمر اور جنرل مٹھا وغیرہ شامل ہیں۔

    بھٹو نے جرنیلوں کے لیے شکار اور ضیافتِ طبع کا خوب اہتمام کر رکھا ہے۔ اسی سلسلے میں مختلف فنکاروں کو بھی لاڑکانہ میں مدعو کر رکھا ہے، انہی میں اس وقت کی ایک فلمی ہیروئن "ترانہ" نامی بھی شامل ہے۔ مذکورہ ہیروئن جب المرتضیٰ ہاؤس پہنچتی ہے تو سیکورٹی پر متعین اہلکار ضابطے کے مطابق انتہائی سخت چیکنگ اور سوال جواب کرتا ہے۔ تین دن کے بعد جب وہ ہیروئن وہاں سے رخصت ہو تی ہے تو وہی سیکورٹی گارڈ ہیروئن کو دیکھتے ہی انتہائی مستعدی سے سلیوٹ کرتا ہے۔ ہیروئن حیران ہو کر رویے میں تبدیلی کی وجہ پوچھتی ہے تو وہ کہتا ہے۔ میڈم جب آپ تشریف لائی تھیں تو صرف ترانہ تھیں، اب آپ "قومی ترانہ" ہیں۔ مصنف مذکور کے مطابق یہ لطیفہ چل نکلتا ہے اور پورے ملک میں ہر طرف "قومی ترانہ" کا ہی ذکر ہے۔

    یہ بظاہر ایک معمولی سا واقعہ یا لطیفہ ہے لیکن اس میں سقوطِ ڈھاکہ کے تمام فوجی اور سیاسی کرداروں کی واضح جھلک دیکھی جا سکتی ہے اور ان کا کردار بھی واضح ہوتا ہے۔

    اس کا پیش منظر یہ ہے کہ لاڑکانہ میٹنگ کے بعد، جنرل یحییٰ پہلے مارچ کے شروع میں ہونے والے ڈھاکہ اسمبلی اجلاس کو دو تین ہفتوں کے لیے مؤخر کرتا ہے اور پھر بعد میں غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کر دیتا ہے۔ بھٹو، اقتدار میں شراکت، اجلاس میں جانے والوں کی ٹانگیں توڑنے اور ڈھاکہ کے "ون وے ٹکٹ" کی بات کرتا ہے اور عوامی لیگ یہ کہتی ہے کہ لاڑکانہ میں ان کا مینڈیٹ لوٹ لیا گیا۔ مارچ کے شروع میں اسمبلی کے اجلاس والے دن مجیب الرحمٰن ڈھاکہ میں لاکھوں لوگوں کا جلسہ کرتا ہے اور ایک طرح سے "بنگلہ دیش" کا اعلان کر دیتا ہے۔ 23 مارچ 1971ء کو ڈھاکہ میں یومِ پاکستان کی بجائے یومِ بنگلہ دیش منایا جاتا ہے اور اگلے دن پاکستان آرمی وہاں فوجی آپریشن شروع کر دیتی ہے اور اس سے اگلے دن 'ایسٹ پاکستان رائفلز' کے فوجی بغاوت کر دیتے ہیں جو بعد میں انڈیا کی مدد سے "مکتی باہنی" کہلواتے ہیں۔ اس کے بعد نو ماہ آگ اور خون کی ہولی ہے جو بالآخر 16 دسمبر 1971ء کو سقوطِ ڈھاکہ اور پاکستانی فوجیوں کے ہتھیار ڈالنےتک پہنچتی ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 16, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
    • غمناک غمناک × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    15,310
    جھنڈا:
    Pakistan
    آج کے دن کی مناسبت سے بڑے سانحہ پر بڑی عمدہ تحریر!!!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • متفق متفق × 2
  3. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,746
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    یحییٰ خان کے یہ "لطیفے" سن کر آج بھی یقین نہیں آتا کہ اس قسم کا شخص پاکستان کا سربراہ رہا ہے ۔
    ویسے اب تو اس الکحولک خبیث کے لطیفے بھی بھولتے جارہے ہیں کہ نئے لیڈرانِ کرام نے کچھ اور قسم کے تازہ ہی گل کھلائے ہیں ۔
    قبلہ وارث صاحب اگر جنرل رانی کے بارے میں بھی کچھ جنرل نالج بہم پہنچا دی جائے تو نئی نسل کو کم از کم ان کا تعارف تو حاصل ہوگا۔
     
    • پر مزاح × 3
    • پسندیدہ × 1
    • معلوماتی × 1
    • دوستانہ × 1
    • متفق × 1
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    آپ نے درست کہا ظہیر صاحب قبلہ۔ اس بد بخت جنرل اور اس کے حواریوں کے کرتوت لکھتے ہوئے بھی شرم آ جاتی ہے، انا للہ و انا الیہ راجعون۔
     
    • متفق متفق × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • غمناک غمناک × 1
  5. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    کچھ عرصہ قبل تک فوجی میسز میں کھانے کے ساتھ شراب نوشی ایک معمولی بات تھی کہ ان افسران کی تربیت گوروں کے ہاتھوں میں تھی اور یہ بھی "جنٹلمینی" کے آداب میں شامل تھی۔ لیکن یحییٰ تو صبح ناشتے کے بعد ہی سے شروع ہو جاتا تھا اور رات گئے تک پیتا ہی رہتا تھا۔ آل انڈیا ریڈیو نے جنگ کے دنوں میں اس کا مذاق اڑایا۔ جنرل یحییٰ نے "جہاد" پر ایک لمبی چوڑی تقریر کی، کچھ دیر بعد آل انڈیا ریڈیو سے پیغام نشر ہوا کہ میرے پیارے فوجیو، جہاد کرو اور میرے لیے "جانی والکر" لے کر آؤ۔
     
    • غمناک غمناک × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    15,310
    جھنڈا:
    Pakistan
    ان افسوسناک حالات کے تناظر میں آج ستر سال بعد جائزہ لیا جائے تو کیا لگتا ہے۔ کیا ایک الگ ملک بنانے کے لیے جو کچھ، جس لیے کیا گیا، کیا اسے حاصل کیا گیا؟
    محمد وارث بھائی!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  7. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    یہ ایک لمبی چوڑی بحث ہے مفتی صاحب۔ اب ہم ستر سال آگے آ چکے ہیں اور اس سوال کو یوں بھی دیکھ سکتے ہیں کہ اگر الگ ملک نہ ہوتا تو پھر ہم آج کن حالات میں ہوتے؟ موجودہ حالات سے بہتر ہوتے یا اس سے بھی بد تر؟
     
    • زبردست زبردست × 3
    • متفق متفق × 2
  8. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    15,310
    جھنڈا:
    Pakistan
    ہماری یہی مراد ہے!!!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  9. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    تو پھر "مودی سرکار" اور اس کی ہندوتوا کو دیکھتے ہوئے تو یہی لگتا ہے کہ ہم بدحال ہی سہی لیکن پھر بھی بہتر ہیں۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. بابا-جی

    بابا-جی محفلین

    مراسلے:
    1,404
    کتابِ تاریخ کا ایک بابِ ظُلمت ہے سقوطِ ڈھاکا۔
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • غمناک غمناک × 1
  11. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    15,310
    جھنڈا:
    Pakistan
    علیحدگی کا کام عزت و وقار سے کیا جاتا تو شاید کنفیڈریشن ہی قائم رہتا!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  12. بابا-جی

    بابا-جی محفلین

    مراسلے:
    1,404
    یہ تو فکرِ ساحرانہ ہوتی تو مُمکن تھا، یہاں تو فکرِ 'ترانہ' کا غلبہ رہا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • غمناک غمناک × 1
  13. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    29,937
    سارا وقت صرف پاکستانی جرنیلوں کو ہر چیز کا ذمہ دار ٹھہرانا قومی کھیل بن چکا ہے۔ اسی شرابی کبابی جرنیل نے ملک کے پہلے صاف شفاف الیکشن کروائے اور انتخابات جیتنے والی جماعت عوامی لیگ کو اقتدار کی منتقلی کا عندیہ دیا۔
    بعد میں جنرل یحیی جب لاڑکانہ پہنچا تو الیکشن ہارنے والے جمہوری انقلابی بھٹو نے اسے شراب و قومی ترانہ سپلائی کر کے اقتدار کے منصفانہ انتقال سے روکا اور یوں سقوط ڈھاکہ کی بنیاد رکھی۔ جنرل یحیی کا قصور یہ تھا کہ وہ جمہوری انقلابی بھٹو کی باتوں میں آکر مجیب الرحمان سے کئے گئے وعدہ کا پاس نہ رکھ سکا۔ بھٹو کا قصور یہ تھا کہ اس نے عوامی مینڈیٹ کو تسلیم نہیں کیا اور الیکشن نتائج کے مطابق انتقال اقتدار کی نفی کی۔ بھٹو نے یہی کام اس سے اگلے ۱۹۷۷ کے الیکشن میں چالیس سیٹوں پر منظم دھاندلی کر کے کیا۔
    [​IMG]
    [​IMG]
    بس نظام ہی پٹڑی سے اتر جاتا ہے ۔ شبیر بونیری - Daleel.Pk
    آج پاکستان کا بہت بڑا جمہوری انقلابی طبقہ سمجھتا ہے کہ بھٹو کو ناحق سزا ملی۔ جس شخص نے ۱۹۷۰ کے الیکشن نتائج تسلیم نہ کر کے سقوط ڈھاکہ کی بنیاد رکھی اور اس سے اگلے الیکشن میں منظم دھاندلی کی، اس کیلئے پھانسی تو بہت معمولی سزا ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  14. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    26,400
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اتنے بڑے سانحہ کا کوئی تنہا ذمہ دار نہیں ہوا کرتا۔ اس کی بنیادوں کی بہت لوگوں نے آبیاری کی ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
    • متفق متفق × 2
  15. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    17,831
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہت عمدہ تحریر وارث میاں !!!!
    بہت ساری دعائیں جیتے رہیے۔۔۔۔۔
    افسوس صد افسوس کہ ہم نے وہ حصہّ گنوانے بعد کہا اقتصادی بوجھ اُتار پھینکا

    حَسین آنکھوں،مُدھر گیتوں کے سُندر دیس کو کھو کر
    میں حیراں ہوں وہ ذکرِوادئ کشمیر کرتے ہیں
    ہمارے دور کا جالب مداوا ہو نہیں سکتا
    کہ ہر قاتل کو چارہ گر سے ہم تعبیر کرتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
  16. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    آپ اگر غور سے پہلا مراسلہ پڑھتے تو اس میں آپ کو دیگر کردار بھی نظر آ جاتے!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • متفق متفق × 1
  17. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    29,937
    متفق۔ گفتگو کا رخ جنرل یحیی کے خلاف مڑ رہا تھا۔ اسی لئے سقوط ڈھاکہ میں بھٹو کے رول کو اتنی اہمیت نہ دینا تاریخ سے سخت نا انصافی ہے۔ ۱۹۷۰ کے صاف شفاف الیکشن کے نتائج کو تسلیم نہ کرنا اور اس سے اگلے ۱۹۷۷ کے الیکشن میں منظم دھاندلی کرنا کوئی معمولی بات نہیں۔ ان غیر جمہوری رویوں کی بنیاد جمہوری انقلابی بھٹو نے ہی ڈالی تھی۔
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  18. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    یہ "شفاف" الیکشن کروانے کی غلطی اس لیے سرزد ہو گئی کہ اس وقت کی تمام انٹیلی جنس رپورٹس کے مطابق نتائج منقسم ہو کر آنے تھے، کسی پارٹی کو اکثریت ملنے کی توقع نہیں تھی، سو جرنیلوں نے فیصلہ کیا کہ الیکشنز کے ساتھ چھیڑ خوانی نہیں کرنی چاہیئے۔ ورنہ یہی جنرل یحییٰ خان اور یہی جنرل عبدالحمید اور یہی جنرل پیرزادہ تھا جو جنرل ایوب اور اس کے "الیکشنز" کے لیے ہر طرح کا کام کرتے رہے تھے۔ اور باقی رہا عوامی لیگ کو اقتدار سونپنے کا وعدہ تو وہ اس وعدے کے جواب میں کیا گیا تھا کہ عوامی لیگ جنرل یحییٰ کو نہ صرف صدر بلکہ آرمی کمانڈر ان چیف بھی برقرار رکھے گی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  19. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    17,831
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بڑھ بڑھ کے باتیں ایسے کرتے ہیں کہ جیسے سارے دودھ کے دھُلے ہیں۔۔۔۔آمر آمر کہتے منہ نہیں تھکتا :unsure::unsure:
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  20. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,980
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بھٹو کا کرادر کسی طور بھی ان جرنیلوں کے رول سے کم نہیں ہے۔

    اور "باقی ماندہ" پورے ملک میں اصغر خان مرحوم کے علاوہ اور کوئی دوسرا لیڈر نہیں تھا جس نے مطالبہ کیا ہو کہ بھٹو کو اقتدار دینے کی بجائے ملک میں نئے انتخابات کروائے جائیں۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر