سفر وادئ سوات کا

یونس نے 'اراکین کے سفرنامے' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 14, 2013

  1. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    آغازِ سفر

    یہ 28اگست2013 کی روشن صبح تھی ۔۔۔

    سی این جی اسٹیشن کے دفتر کے باہر کرسیاں ڈال کر بیٹھے ہوئے کچھ لوگ باقی ساتھیوں کا بڑی بے چینی سے انتظار کر رہے تھے۔وقفے وقفے سے ایک آدھ مزید ساتھی ہاتھ میں بیگ اٹھائے نمودار ہوتا اور رسمی سلام دعا کے بعدان انتظار کرنے والوں میں شامل ہوجاتا۔ پروگرام کے مطابق سب کو چھ بجے صبح یہاں پہنچنا تھا لیکن اب ساڑھے سات بجے تک بھی کورم پورا نہیں ہوا تھا۔۔۔ وادئ سوات کی سیر کیلئے جلدی تو سب کو تھی‘ لیکن وقت پر گھر سے نکلناشایدسب کیلئے مشکل ترین مرحلہ رہا ہوگا ! بہرحال۔ کچھ ہی دیر میں استاد جمیل اپنے ٹویوٹا ہائی ایس ’’شراٹا ٹائم‘‘کے ساتھ نمودار ہؤا۔ رفتہ رفتہ باقی ساتھی بھی آ گئے۔اور گاڑی کے سلنڈر فُل ہونے تک سامان رکھے جانے کا مرحلہ مکمل ہو چکاتھا۔

    قریباً ساڑھے آٹھ بجے دعائے خیر کے ساتھ سفر کا آغاز ہوا۔

    اگر آپ کوصوبہ سرحد(اب خیبر پختون خواہ)‘ میں کبھی پبلک ٹرانسپورٹ کے سفر کا تجربہ ہوا ہو تو آپ کو یاد ہوگا کہ ڈرائیور سیٹ پر براجمان ہوتے ہی’’ دعائے خیر اوکا‘‘ یعنی ’’دعائے خیر کرلیجئے‘‘ پکارتا ہے۔ اور اس سے پہلے کہ آپ ہاتھ اٹھا کرمسنون دعائے سفر کے الفاظ ادا کرنے لگیں‘ ڈرائیوراپنی دعامکمل کرنے کے بعد‘ ہاتھوں کو منہ پر پھیرکے ‘گاڑی اسٹارٹ کرکے ‘اسے گیئر میں ڈال کے ‘ اسٹیئرنگ سنبھال چکا ہوتا ہے!

    سفر کے دوران نماز کے معاملے میں بھی پختون بھائی خاصے تیز واقع ہوئے ہیں (یا پھر ہم پنجابی بہت ہی سست ہیں!)‘دورانِ سفر نماز کا وقت ہونے پر گاڑی سڑک کنارے روکی‘ نماز کا اعلان کیا ‘ ندی چشمے وغیرہ پر گئے‘ وضو کیا‘ قصر کی نیت باندھی‘ نماز شروع کی‘ اور اگلے ہی لمحے السلام علیکم و رحمتہ اللہ کے بعد جوتے پہنتے ہوئے پکار رہے ہوتے ہیں ’’ بھائی جلدی کرو بہت دیر ہو گیا‘‘ یقین مانئے ہمارے جیسے اس وقت تک بمشکل جائے نمازتک ہی پہنچتے ہیں ۔ بلکہ زیادہ تر تو ابھی وضو کے آخری مراحل طے کر رہے ہوتے ہیں ۔۔۔

    ہماری دعا اس قدربرق رفتاربہرحال نہیں تھی‘ جو بھی کسی کو یاد تھا‘ آرام سے پڑھ لیا گیا۔
     
    • زبردست × 5
    • پسندیدہ × 2
    • معلوماتی × 1
    • پر مزاح × 1
    • متفق × 1
  2. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    دھرتی پنج دریاواں دی

    ہمار سفربذریعہ جی ٹی روڈشروع ہو چکا تھا اوراب ہم دریائے راوی سے گزر رہے تھے۔ دریائے راوی کا قدیم نام ہندو ویدوں کے مطابق دریائے ایراوتی تھا‘ اس کا منبع بھارت میں ہماچل پردیش کے ضلع چمبہ میں واقع ہے۔وہاں سے ایک لمبا سفر کرتے ہوئے امرتسر اور پھر پاک بھارت سرحد کے ساتھ ساتھ گزرتے ہوئے یہ دریا لاہور میں داخل ہو جاتا ہے۔سنا ہے لاہور میں راوی کبھی بہتا بھی تھا ! اور اس کی لہروں کا جوش و خروش دیدنی ہوا کرتا تھا مگر آج کل توبے بسی سے لاہور کے قریب سے رینگتا ہوا گزر جاتا ہے۔اب کے برس ذرا انگڑائی لی تو لاہور کے گرد و نواح زیرِ آب آگئے تھے۔ اس لئے جیسے بھی چلتاہے‘ٹھیک ہے !

    لاہور سے نکل کر آگے بڑھتا ہوا کمالیہ کے قریب قدرے خم کھاکر احمد پور سیال کے جنوب میں دریائے چناب میں شامل ہو جاتا ہے۔یوں اس کا کل سفر تقریباً 720کلو میٹر بنتاہے ۔ چلتے چلتے یہ بھی جان لیجئے کہ اس دریا میں کل 2294 یگاواٹ بجلی (ہائیڈرو پاور) پیدا کرنے کی صلاحیت ہے اور بھارت میں اس پر بند باندھ کراب تک 198میگاواٹ‘540میگاواٹ‘ 600میگاواٹ‘ اور 300میگاواٹ۔ یعنی کل 1638 میگا واٹ بجلی پیدا کی جارہی ہے ۔ ۔۔ ذراسوچئے ہم کس مقام پر کھڑے ہیں ؟!

    خُدا نے آج تک اُس قوم کی حالت نہیں بدلی
    نہ ہو جس کو خیال آپ اپنی حالت کے بدلنے کا

    پُل سے گزرتے ہوئے بائیں طرف نیچے دریا کے درمیان میں ایک جزیرہ سا نظر آتا ہے ۔ اس میں مغلوں کے دور میں لاہور میں بنائی جانے والی سب سے پہلی عمارت کامران کی بارہ دری واقع ہے۔ اسے مغل بادشاہ ہمایوں کے بھائی اور اس وقت کے لاہور کے حکمران مرزا کامران نے پندرہ سو تیس عیسوی میں ایک باغ کے وسط میں تعمیر کروایا تھا۔ تب راوی آج کل کے مینار پاکستان کے بالکل قریب سے گزرتا تھا اور یہ باغ لاہور سے باہر راوی کے اُس پار تھا ۔ باغ تو راوی کی تند و تیز لہروں کی نذر ہو گیا مگربارہ دری کو معمولی نقصان ہی پہنچ سکا۔ اسی بارہ دری میں مغل شہنشاہ جہانگیر کے خلاف اس دور میں ہونے والی بغاوت کے سرغنہ اس کے بیٹے خسرو ‘ اور اس کے تین سو ساتھیوں کو زنجیروں میں جکڑ کر پیش کیا گیا تو شہنشاہ جہانگیرنے باغیوں کوسزائے موت سنائی تھی ‘ اور اپنے بیٹے کی آنکھیں نکال دینے کا حکم صادر فرمایاتھا ۔

    ۔۔۔ اور اس موقع پر یہ تاریخی جملہ بھی کہا تھا کہ ’’بادشاہ کا کوئی رشتہ دار نہیں ہوتا ! ‘ ‘۔

    دو تین دھائیاں پیشترایل ڈی اے نے کامران بارہ دری کی مرمت وغیرہ کروائی اور اسے سیاحت کے نقطہ نظر سے موزوں بنایا۔

    تقریباًکامونکی سے گزرنے پر گاڑی میں طاری سکوت ٹوٹ چکا تھا اور اب اس کے مسافروں کے درمیان ہلکی پھلکی گپ شپ کی ابتداء ہو چکی تھی۔ گوجرانوالہ پہنچ کر اچانک استاد جمیل نے گاڑی سڑک کے کنارے روکی اورسڑک کے اُس پارجا کر ایک خاتون کے پاس کھڑا ہو گیا۔ گاڑی میں چہ میگوئیاں ہو رہی تھیں کہ اپنی کسی عزیزہ سے ملنے گیا ہے۔ واپس لوٹا توہا تھوں میں کوک‘ سپرائیٹ کی چندجمبوسائز بوتلیں‘ ڈسپوزیبل گلاس اورنمکو‘ بسکٹ وغیرہ کے پیک تھے۔ پتہ چلا کہ ملنے والی کوئی عزیزہ نہیں بلکہ اس کی عزیز از جاں رفیقۂ حیات تھی۔ اور اس نے ہماری مہمان نوازی کے طور پر یہ اشیاء بھجوائی تھیں۔ یہ اندازِ مہمان نوازی بہت بھلا لگا !

    گوجرانوالہ سے نکل کراب رچنا دوآب کا آخری حصہ شروع ہو چکا تھا ۔ دوآب‘ دو دریاؤں کے درمیانی علاقہ کو کہا جاتا ہے۔ بیاس اورراوی دو دریاؤں کا درمیانی علاقہ (بیاس کی ’با‘ اور راوی کی ‘ری‘ ) باری دوآب کہلاتا ہے۔یہ مرکزی پنجاب کا خطہ ہے۔اوراس خطہ کی پرانی آبادیاں ما جھہ کے نام سے جانی جاتی ہیں ان میں بھارتی پنجاب سے امرتسر‘ گرداس پوراور ترن تارن‘ جبکہ ہماری طرف سے لاہور‘ قصور‘اوکاڑہ‘ساہیوال‘ خانیوال اور ملتان شامل ہیں۔اسی طرح لاہور کی طرف سے راوی پار کرنے کے بعددریائے چناب تک (راوی کی ’ر‘ اور چناب کی’چنا‘ ) رچنا دوآب کا علاقہ ہے۔اس میں نارووال‘سیالکوٹ‘گوجرانوالہ‘ شیخوپورہ‘ فیصل آباد شامل ہیں۔ اوراب ہم رچنا کی سرحدیعنی دریائے چناب عبور کر رہے تھے۔ اس دریاکا نام دو الفاظ ’چن‘ بمعنی چاند اور’ آب‘ بمعنی پانی پر مشتمل ہے۔ قدیم زبانوں میں اس کانام ’اسکمتی‘ ہندو ویدوں کے مطابق اور’آچے سائنز ‘یونانیوں کے حوالے سے ملتا ہے۔ اس کے پانیوں کا ماخذ بھی راوی کی طرح ہماچل پردیش ہے اوریہ جموں کے علاقے سے بہتا ہوا پنجاب کے میدانوں میں داخل ہوتا ہے۔ضلع جھنگ میں تریموں کے مقام پردریائے جہلم سے ملتا ہوااور پھر راوی کو ساتھ ملاتا ہوا اوچ شریف کے مقام پردریائے ستلج کے ساتھ پنجند بناتا ہے۔پھر مٹھن کوٹ کے مقام پر یہ دریا سندھ میں شامل ہو جاتے ہیں۔یوں اسکی کل لمبائی960 کلومیٹر کے قریب بنتی ہے۔

    دریائے چناب کے کناروں کے ساتھ پنجابی زبان و ادب کی دواہم لازوال لوک رومانوی داستانیں ’ہیر رانجھا‘ اور’سوہنی مہینوال‘ بھی وابستہ ہیں۔ اسی کے سبزہ زاروں میں اچھے اچھے شرفاء گھرانوں کے سپوتوں میاں مراد بخش دھیدو رانجھا اور مرزا عزت بیگ مہینوال نے عشق کے ہاتھوں مجبور ہو کر بھینسیں چَرائیں‘ اسی دریا کی گزر گاہ کے قریب جھنگ میں ہیر آسودۂ خاک ہوئی اور اسی چناب کی لہروں نے سوہنی کو اپنی آغوش میں ابدی نیند سلایا ۔۔۔
    چناب پار کرنے کے بعد اب ہم ایک نئے دوآب میں داخل ہو چکے تھے۔ چناب کی’چ‘ اور جہلم کی’ج‘ ملا کراس خطے کا نام ’جچ‘ یا ’چج‘ دوآب رکھا گیا ۔یہ گجرات‘سرگودھا‘ منڈی بہاؤالدین‘ ملکوال‘ شاہ پور‘ پھالیہ‘سرائے عالمگیر اور کھاریاں پر محیط ہے۔ پھالیہ کے بارے میں ایک دلچسپ حقیقت یہ ہے کہ اس کا نام سکند راعظم کے محبوب گھوڑے ’بیوسی فالس‘ کے نام پر رکھا گیا تھا ۔جو یہاں آکر مر گیا تھا اور اس کی یاد میںیہاں ایک یادگار تعمیر کی گئی تھی۔ بیوسی فالس کے نام کا ایک حصہ فالس مقامی زبان میں ڈھل کر پھالیہ ہو گیا۔ اسی خطے میں 326قبل مسیح میں سکندراعظم اور راجہ پورس کی فوجیں ٹکرائیں تھی۔پورس بڑی بے جگری سے لڑا لیکن شکست کھائی ۔اور اسے قید کر کے سکندر اعظم کے سامنے پیش کیا گیا۔اس موقعہ پر ان کے درمیان جو مکالمہ ہوا وہ بھی تاریخ کا حصہ بن گیا۔

    ۔۔۔ مفتوح راجہ پورس‘ فاتح سکندر کے دربار میں قیدی بنا کھڑا تھا۔

    فاتح نے رعونت آمیز لہجے میں پوچھا :
    ’اب بتاؤ تمہارے ساتھ کیا سلوک کیا جائے ؟‘
    ’وہی جو بادشاہ بادشاہوں کے ساتھ کیا کرتے ہیں !‘
    اسی لہجے میں جواب دیا گیا۔۔۔

    کہتے ہیں سکندر اس برجستہ جواب سے اس قدرمتاثرہوا کہ اس نے اسے با عزت رہا کردیا !

    ۔۔۔ اور سکندر کی فوجیں اس خطے سے آگے پیش قدمی بھی نہیں کر پائیں۔

    ہمارااگلا پڑاؤ لالہ موسیٰ کے مقام پر ہوا۔ یہاں رکنے کی بنیادی وجہ یہ ہوئی کہ کولڈڈرنکس کی باقی ماندہ جمبو بوتلیں اب ’کولڈ‘ نہیں رہی تھیں ‘لہٰذاپروگرام یہ بنا کہ ایک عدد واٹر کولر خریدا جائے۔جس میں برف بھر لی جائے۔ اور جہاں ’دل مانگے اور۔۔۔‘ وہیں ’چِل‘ کر لیا جائے۔ سو میاں بشارت اور کچھ ساتھی اس کام کیلئے‘ کچھ استاد جمیل کے ہمراہ گاڑی کے آڈیو ویڈیو سسٹم کیلئے فلیش ڈرائیو فُل کروانے نکل کھڑے ہوئے‘ اور کچھ وہیں گاڑی کے پاس سستانے لگے۔ جب کولر میں برف ‘ اورفلیش میں موسیقی‘ اچھی طرح سے بھر لی گئی توپھر سے سفر شروع ہوا۔

    چلتے چلتے فرنٹ سیٹ پر بیٹھے میاں بشارت نے ہانک لگائی ’ ہاں بھئی۔ ۔۔ لیگ پِیس آؤن؟!‘ سارے حیران کہ میاں صاحب نے لیگ پیس کہاں چھپا رکھے تھے ‘جو اب کھلانے لگے ہیں۔۔۔ اور پھر یوں ہوا کہ بُھنے ہوئے چنوں کا ایک ڈبہ فرنٹ سیٹ سے درجہ بادرجہ پیچھے کی طرف پہنچادیا گیا۔۔۔ اورمیاں صاحب گویا ہوئے ’ہم اپنے دفتر میں انہیں لیگ پِیس کے نام سے ہی پکارتے ہیں۔۔۔‘

    کھاریاں‘ سرائے عالمگیر سے گزرتے ہوئے اب ہم دریائے جہلم پر سے گزررہے تھے۔ دریائے جہلم‘ پانچ دریاؤں کی سرزمین کا مغربی سمت کا آخری مگر سب سے بڑادریا ہے۔یہ مقبوضہ کشمیر میں سری نگرکے قریب چشمہ ویری ناگ سے نکلتا ہے‘اور وولر جھیل میں سے گزرتا ہواڈومل‘ مظفرآباد پہنچتا ہے جہاں اس میں اس کا سب سے بڑامعاون دریا نیلم شامل ہو جاتا ہے۔یہاں سے میر پور سے گزرتا ہوا پنجاب کے میدانوں میںیہ دریا ’جچ دوآب‘ اور’سندھ ساگر دوآب‘کو باہم تقسیم کرتا ہے۔پھر تریمو کے مقام پر دریائے چناب میں جا گرتا ہے۔اس کی لمبائی قریباً 813کلومیٹر ہے۔ یاد رہے دریائے ستلج‘ راوی اور جہلم تینوں بنیادی طور پرچناب کے معاون دریا ہیں۔جبکہ بیاس‘ ستلج کا معاون ہے اوربھارتی پنجاب میں اس سے مل جاتاہے۔

    پنجاب‘ انہی پانچ دریاؤں بیاس ‘ ستلج‘ راوی‘ چناب اورجہلم‘ کے دم سے ’دھرتی پنج دریاواں دی‘ کہلاتاہے۔
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 14, 2013
    • زبردست زبردست × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    پہلا پڑاؤ

    اب وہ وقت آن پہنچا تھا کہ مہر عقیل کے گھر سے آئے ہوئے آلو والے پراٹھوں کی طرف توجہ کی جائے‘ سو طے یہ پایا کہ سڑک کنارے کوئی مناسب چارپائی ہوٹل ڈھونڈا جائے۔جہاں پراٹھوں کے لئے دہی و دیگر لوازمات مل سکیں اورباسہولت کھانا چائے وغیرہ کا کورس مکمل ہو سکے۔ ہماری یہ تلاش اور جستجو کہیں روات جاکررنگ لائی۔گاڑی سے اتر کر ہوٹل کی چارپائیوں پر براجمان ہوئے ۔میاں بشارت اچارکا ایک ڈبہ بھی ساتھ لائے تھے۔ پراٹھے‘ دہی‘ اچار‘ سلاد‘دال ماش‘ روٹیاں‘ چائے‘ اچھاخاصامینو ہوگیا۔ کھانے سے فارغ ہو کر نمازِظہر پڑھی۔ اور کچھ دیر سستانے لگے۔
    اسی دوران جمیل گاڑی کے ارد گرد چکر لگا کر اپنے طریقۂ کار کے مطابق گاڑی کو چیک کرنے لگا۔

    راستے میں پٹرول ڈلواتے وقت استاد جمیل کو ہر کوئی کہہ رہا تھا ’ ٹینکی کا خیال رکھنا‘۔ کہیں پٹرول کی بو محسوس ہوئی توہرطرف سے یہی آواز آئی ’ٹینکی کا خیال رکھنا‘۔ باتوں کے دوران کوئی خاموشی کا وقفہ آیا تو۔۔۔ ’ٹینکی کا خیال رکھنا‘۔ یہ بات ہماری سمجھ سے بالا تر تھی ۔۔۔ اور پھر کھانا کھانے کے بعد جب جمیل سچ مچ گاڑی کے پٹرول ٹینک کی طرف گیا تو تجسس مزید بڑھ گیا ‘ ہم سے رہا نہیں گیا اور آخر ہم نے پوچھ ہی لیاکہ یہ کیا ماجرا ہے؟ پتہ چلا کہ پچھلے ٹور کے دوران راستے میں جب حفظِ ماتقدم کے طور پرپٹرول ٹینک فُل کروایا گیا تھا توپہاڑی علاقہ شروع ہونے سے ذرا پہلے‘ جہاں اس کی اصل ضرورت تھی‘ ٹینک لیک ہونے کی وجہ سے خالی ہو چکا تھا۔۔۔ اور ساراپٹرول راستے میں سڑک پر بہایا جاچکا تھا !

    ایک صاحب کی بیوی کا انتقال ہو گیا۔جنازہ ‘ جنازگاہ کی طرف جا رہا تھا کہ چارپائی اُٹھانے والوں کی غلطی سے راستے میں بجلی کے ایک کھمبے سے ٹکرا گیا۔میّت چانک ہڑ بڑا اُٹھی‘ مجھے کہاں لے جا رہے ہو؟ یہ سب کیا ہے؟پتہ چلا کہ موصوفہ پر سکتہ طاری ہوا تھا‘ موت نہیں۔خیر خوشی خوشی(یا بادل نخواستہ!) اسے گھر واپس لے آئے۔ ازدواجی زندگی کا پھر سے آغاز ہوا۔ ۔۔ کچھ عرصہ بعد موصوفہ کاایک بارپھرانتقال ہو گیا۔ اب کے شوہربیچارہ جنازہ لے کے جانیوالوں کوپکارپکار کر کہہ رہا تھا ’کھمبے سے بچا کے بھئی ۔۔۔ کھمبے سے بچاکے!‘

    بہر حال اس دفعہ واقعی ’ کھمبے سے بچ گئے تھے‘ یعنی استاد جمیل نے پٹرول ٹینک کو چیک کرکے اطمینان کر لیا تھا ۔۔۔اور اس کے بعد سب لوگ ایک با ر پھرجس ترتیب سے گاڑی سے اترے تھے۔ اسی ترتیب سے بیٹھ گئے اور سفر کا اگلا مرحلہ شروع ہو گیا۔

    کھانا کھانے کے بعد ہر ایک پربقدرِ ظرف خُمارِ گندم کا اثرطاری رہاسوائے استاد جمیل کے ۔وہ نہایت ذمہ داری سے ڈرائیونگ میں مصروف رہا۔نیند اوربیداری کی ملی جلی کیفیت میں ہم ٹیکسلااور حسن ابدال سے گزر گئے۔اب سندھ ساگر دوآب اور صوبہ پنجاب کے تقریباً آخری علاقے میں تھے۔سامنے دریائے سندھ دکھائی پڑ رہا تھا۔دریائے سندھ پاکستان کا سب سے بڑا اوربراعظم ایشیا کاایک اہم دریا ہے۔اس کا منبع سطح مرتفع تبت کی ایک جھیل مانسرور کے قریبواقع ہے۔ سطح مرتفع تبت‘تبت اور چین کے صوبہ چنگھائی اور کشمیر کے علاقے لداخ تک پھیلا ہوا مشرقی ایشیا کا عظیم ترین‘ بلکہ دنیا بھرمیں سب سے بڑاسطح مرتفع ہے ۔اسے ’دنیا کی چھت‘ بھی کہا جاتا ہے۔ کیونکہ اس کی اوسط اونچائی4500میٹر ہے۔اور رقبہ پچیس لاکھ مربع کلو میٹر ۔۔۔
    ہمارا دریائے سندھ‘ دنیا کی اسی چھت سے نکلتا ہے۔

    دریائے سندھ کے کئی نام ہیں۔جہاں سے نکلتا ہے‘ وہاں اسے ’شیر دریا‘ کہا جاتاہے۔عربی میں ’نہرالسند‘کہتے ہیں۔ فارسی میں ’رودِ سند‘کہلاتا ہے۔ ترکی میں اس کا نام نیلاب‘ہے۔ ہندی میں ’سندھو ندی‘کے نام سے پکارا جاتا ہے۔ اور پشتو میں اسے کہتے ہیں’ اباسین‘ یعنی دریاؤں کا باپ! دریائے سندھ لداخ‘ گلگت اور بلتستان سے گزرتا ہے اورپاکستان بھرمیں جنوب کی سمت اپنا سفر جاری رکھتے ہوئے کراچی کے قریب بحر ہند میں جا گرتا ہے۔ یوں اس کی لمبائی3180کلومیٹر بنتی ہے اور یہ پاکستان کا سب سے لمبا دریابھی ہے۔

    دریائے سندھ پار کرتے ہوئے ہم اب اٹک کے پل پر سے گزر رہے تھے ۔اور صوبہ خیبر پختون خواہ میں داخل ہو رہے تھے۔

    اٹک کے پل کی وجہ تسمیہ اس کا ’اٹک ‘کے علاقے میں واقع ہونا ہے۔اٹک کے نام کے بارے میں کچھ روایات کے مطابق اکبراعظم نے یہ نام اس لئے رکھا کہ وہ خودیہاں سے دریائے سندھ کو بمشکل عبور کر پایا تھا۔یعنی اس کی فوجیں یہاں ’اٹک ‘کر رہ گئی تھیں۔ ویسے مقامی آبادی خود اس علاقے کو اٹک کے نام سے پکارتی تھی کیونکہ یہاں اُس دور میں چند کشتیاں جوڑ کرپُل بنایاجاتاتھا اور جب پہاڑوں کی برف پگھلنے سے دریا میں طغیانی کا سماں ہوتا تویہ پُل ٹوٹ جاتا اوراِدھر کی آبادی اِدھر اور اُدھرکی اُدھر اٹک کر رہ جاتی۔تب فوجی اور انتظامی نقط�ۂ نظر سے یہ مقام نہایت اہمیت کا حامل تھا ۔کیونکہ افغانستان کی طرف سے آنے والے اس راستے کے علاوہ اور کہیں سے گزر نہیں سکتے تھے۔اسی اہمیت کے پیش نظریہاں’قلعہ اٹک‘ اکبر اعظم کے دورِحکومت میں خواجہ شمس الدین خوافی کے زیرِنگرانی1581ءسے1583ء کے دوران دریا کے بائیں کنارے پر تعمیر کیا گیا تاکہ دریائے سندھ پار کر کے اِس طرف آنیوالوں پر کڑی نظر رکھی جا سکے۔ اوربوقت ضرورت مکمل دفاع کیا جاسکے۔ یہی وجہ ہے کہ اسی مقام پر شاہراہ کے دوسری طرف ایک اور’ قلعہ خیرآباد ‘بھی بنایا گیا جو اکبر اعظم یاشایدنادرشاہ کا تعمیر کردہ ہے۔

    کامرہ ائیربیس کے سامنے واقع ’شمس آباد‘ شمس الدین خوافی ہی کا بسایا ہوا قصبہ ہے۔اور اُسی دور میں بسایا گیا تھا۔

    اٹک سے آگے نکل کرجہانگیرہ اوراکوڑہ خٹک کے بعدنوشہرہ پہنچے۔یہاں آکرکولڈڈرنک کا نیا اسٹاک لیا گیا۔ استاد جمیل ایک چوک میں گاڑی روک کرڈیوٹی پر موجودٹریفک پولیس سارجنٹ سے راستہ پوچھنے لگا تھا کہ اُس ظالم نے جھٹ چالان بک نکال لی اور ڈھیروں منت سماجت کے باوجودچالان کر دیاکہ گاڑی یہاں کیوں روکی؟ خیراُسی کو چالان کی ادائیگی کی‘اور گاڑی میں بیٹھ گئے۔اب پتہ نہیں کس نے سارجنٹ صاحب سے ان کا نام پوچھ لیا۔ موصوف کا پارہ ایک بارپھر انتہائی حدوں کو چھونے لگا۔نہ جانے یہ اُنکی کوئی دُکھتی رگ تھی‘ یاپھر دُم پر کسی کاپاؤں آ گیاتھا ! خدا خدا کرکے اُن سے جان چھڑوائی اورآگے کو روانہ ہوئے۔اب ہمیں مردان بائی پاس سے گزرتے ہوئے تخت بھائی کی طرف جانا تھا۔یہاں بائی پاس کے قریب ایک با ر پھر وہی غلطی دہرائی گئی۔۔۔ یعنی چوک میں گاڑی روک کر ڈیوٹی آفیسر سے راستہ پوچھا گیا۔ نتیجہ پھر و ہی ایکشن ری پلے ! چالان !

    ایک سردار جی کسی کام کے سلسلے میں جلدی جلدی اپنے گھر سے باہر نکلے تو قریب ہی راستے میں کیلے کا چھلکا گِرا پڑا دکھائی دیا۔بے دھیانی میں چلتے چلتے اس پر سے پاؤں پھسلا اوردھڑام سے گر گئے۔ کپڑے جھاڑتے اورجوڑ سہلاتے ہوئے اُٹھے۔مگر لباس کی حالت زیادہ خراب ہو چکی تھی‘سو واپس گھر گئے‘ لباس تبدیل کیا‘ اور پھرسے سفر پر نکلے۔ لیکن دیر بھی بہت ہو گئی ‘مزا بھی کرکرا ہو گیا‘اور سارا دن جسم درد الگ۔اگلے دن پھراچانک کوئی ضروری کام پڑ گیا۔ تیار ہو کر گھر سے نکلے تو راستے میں پھرایک کیلے کا چھلکا نظرآگیا۔پہلے چھلکے کی طرف دیکھا اورپھر اپنے صاف ستھرے لباس کی طرف دیکھتے ہوئے بے بسی سے گویا ہوئے ’’ لگدا اے اج فیر ڈِگنا پَؤ ‘‘۔۔۔۔ !

    ۔۔۔یہاں ہمارے ساتھ بھی یہی ہوا تھا !

    تخت بھائی پہنچ کر رات کا کھاناکھانے کی فکردامن گیر ہوئی۔ سنا تھا یہاں کے چپلی کباب نہایت عمدہ ہوتے ہیں۔سو چپلی کباب ہی کھائے۔ ہمیں توکچھ جلے جلے سے لگ رہے تھے ‘ لیکن شاید وہاں ایسے ہی پسند کئے جاتے ہوں۔۔۔ ویسے بھی کہتے ہیں:
    When in Rome, do as the Romans do.

    کھانا کھانے کے بعدشیر گڑھ‘ سخا کوٹ‘ درگئی‘بٹ خیلہ‘چک درہ‘باری کوٹ کے راستے کچھ سوئے اور کچھ جاگتے سفر جاری رہا۔ یہاں تک کہ یہ سفر جوآج صبح سے جاری و ساری تھا‘آخر کار اپنے منطقی انجام کو پہنچا اور ہم الحمدللہ بخیر و عافیت مینگورہ پہنچ گئے۔
     
    • زبردست زبردست × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    وادئ سوات

    مینگورہ‘مینگاورہ‘ یا منگورہ ضلع سوات کادریائے سوات کے کنارے واقع سب سے بڑا شہر اورایک زمانے میں بہت بڑاسیاحتی مقام تھا۔ ‘ ملکہ الزبتھ نے اسے اس دور کی اپنی سلطنت کے سوئٹزرلینڈ کا نام دیا تھا۔ آج بھی اس کے ارد گرد کی برف پوش چوٹیاں‘ سرسبز باغات‘ْ قدرتی چشمے‘ دریائے سوات کا صاف شفاف ٹھاٹھیں مارتا ہواپانی‘ حد نگاہ تک سبزے سے ڈھکے پہاڑ‘وسیع و عریض وادیاں سب کودعوت نظارہ دیتی ہیں اور لوگ کشاں کشاں ادھر چلے آتے ہیں۔ہم بھی اسی قدرتی حسن کے نظارے کیلئے اپنا گھر بار‘ کاروبار چھوڑ چھاڑ کرہفتہ بھر کیلئے ان وادیوں میں ڈیرہ جمانے کو آگئے تھے۔ کہ اُس مالک الملک‘خالق کائنات کی صناعی کو جی بھر کر دیکھیں۔ جو کہتا ہے:

    ’کیا یہ لوگ نہیں دیکھتے کہ اونٹ کو کیونکر تخلیق کیا گیا؟اور آسمان کو کس طرح بلند کیا گیا؟اورزمین کو کیسے ہموار بنایا گیا؟‘
    ’کیا ہم نے زمین کو بچھونا نہیں بنایا؟اور پہاڑوں کو اس کی میخیں‘
    ’اور بادلوں میں سے زوردارپانی برسایا تاکہ ہم اس(زمین)میں سے اناج اور سبزہ‘اور گھنے باغات اگائیں‘
    ہم یہی کچھ دیکھنے آئے تھے‘ وادئ سوات کی سیر کا مقصد اس کے سوا کچھ اور نہیں تھا ۔۔۔
    یہاں پہنچتے ہی سب سے پہلا کام اب یہی تھا کہ شب بسری کیلئے کچھ انتظام ہو جائے۔سو بس اڈے کے قریب ہی ایک مناسب ہوٹل مل گیا۔سوات میں ان دنوں ڈینگی کا بڑا چرچا تھا۔سو میاں بشارت کہیں سے مچھر مار کوائل لے کر آئے اوراسے لائٹر سے جلا کر خود ہر کمرے میں جا کر لگایا‘ہوٹل کے کمرے مناسب طور پر ہوادار تھے۔ اس سے رات کو موسم خوشگوار ہو گیا تھا‘ ہم جو سارا دن گرمی میں سفر کرتے رہے تھے۔اب خاصا سکون محسوس کر رہے تھے۔ کھانے کی طلب تو اب تھی نہیں‘ کچھ پھل وغیرہ کھائے‘صبح کیلئے پروگرام کا خاکہ بنایا اور بستروں پر دراز ہو گئے۔ نیند تو جیسے اسی بات کی منتظر تھی‘جلد ہی سب کو اپنی آغوش میں لے لیا۔۔۔

    پے خاور‘ پے خاور‘پشورے‘پشورے‘پشورے‘ چکدرئے‘ چکدرئے‘ ۔۔۔

    ۔۔۔ رات کے آخری پہر میں گہری نیند سوتے ہوئے کانوں میں اس نوعیت کی کچھ عجیب و غریب آوازیں آنے لگیں‘ جو پرندوں کی بولیاں توبہرحال نہیں تھیں۔۔۔ ! ہم پریشان سے ہوگئے‘ یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے؟یہ کس قسم کی آوازیں ہیں؟ کیا بولیاں ہیں؟ کیا ہو رہا ہے؟ ہم کہاں ہیں؟ذرا آنکھیں کھلیں‘اوسان بحال ہوئے تو پتہ چلا کہ مینگورہ کے ہوٹل میں ہیں اور اس ہوٹل کے بالکل سامنے لاری اڈا ہے۔ اور صبح کاذب کے وقت ہی بسوں ویگنوں کی آمدورفت شروع ہو جاتی ہے !

    خیر‘کچھ دیر مزید بستر میں ہی لیٹے لیٹے اذان کا انتظا کرتے رہے۔ کمرے میں ہی نماز پڑھی۔اورپھرتیاریاں شروع ہوگئیں۔سب واش روم مصروف ہوگئے‘ ادھر ایک نہا نے کے لئے تولیہ صابن ہاتھ میں لئے پھر رہا ہے ‘ تو دوسراشیو بنانے کے لئے بھاگ دوڑ کر رہا ہے۔میاں بشارت کو اور کچھ نہ سوجھا توساجد کو آئینہ پکڑا کر سامنے کھڑا کر لیا اورشیوبنانے لگے! اس دوران جوان مراحل سے فارغ ہو چکے تھے ‘اپنے اپنے کیمرے چیک کر رہے تھے ۔ کسی کی شیو بناتے ہوئے تصویر‘کسی کی آنکھیں ملتے ہوئے تصویر‘کسی کی تصویر اس طرح کہ پس منظر میں لاری اڈا بھی آئے ‘مسجد بھی آئے‘اور پہاڑ بھی!غرض یہ کہ تصویر‘ تصویر‘ اور تصویر۔۔۔

    تیاری مکمل ہونے کے بعد اب ہینڈی کیم کیلئےDV کیسٹ ‘اور اپنے لئے ناشتے کی تلاش کا مرحلہ تھا ‘ لہٰذا مینگورہ شہر میں گھومنے لگے‘ جلد ہی کیسٹ بھی مل گئی۔اور ناشتے کیلئے ایک سواتی چنے والا ہوٹل بھی۔چنے خاصے لذیذ تھے ‘اور ساتھ گرم گرم خمیری روٹیاں‘ دل لگا کے ناشتہ کیا۔واپس ہوٹل آئے۔سامان کو گاڑی میں ڈالاگیا‘ اورگاڑی کوبحرین روڈ پر ڈال دیا گیا۔پروگرام یہ تھا کہ راستے کے قابلِ دید مقامات دیکھتے ہوئے آج شام تک کالام پہنچ جایا جائے۔ اور رات گزارنے کے بعد صبح جھیل مہوڈنڈ کی سیر کی جائے۔

    اس راہ میں پہلا قابلِ دید مقام ‘بحرین روڈ پرمینگورہ شہر سے نکلتے ہی چار پانچ کلو میٹر کے فاصلے پر دریائے سوات کے کنارے ’ٖفضاگٹ پارک‘ ہے۔یہ خوبصورت مناظرِ فطرت اوردریائے سوات سے نکلی ہوئی ندیوں میں تین اطراف سے گھرا ہوا ہے۔فضا گٹ کا پرانا نام’ قضا گٹ‘ تھا۔ پشتو میں’ قضا ‘موت کو اور’ گٹ‘ چٹان کو کہتے ہیں‘ یعنی موت کی چٹان۔ ان دنوں دریائے سوات کے کنارے باقاعدہ سڑک نہیں تھی۔اور بالائی سوات سے منگورہ آنے جانے والوں کودریا کے ساتھ ہی واقع بلندپہاڑکی چوٹی پر سے پُر پیچ اور تنگ راستے سے سفر کر نا پڑتا تھااور پاؤں کی معمولی لغزش سے آدمی سینکڑوں فٹ کی بلندی سے نیچے گر کر دریائے سوات کی تند و تیز لہروں کا شکارہو جاتا تھا۔اس لئے اس مقام کا نام قضا گٹ پڑ گیا۔خیر‘اب حالات بہت مختلف ہیں۔ فضاگٹ کو باقاعدہ پارک کی شکل 1984میں دی گئی۔یہاں‘ اس سیر کے دوران پہلی مرتبہ‘ ہم نے مختلف زاویوں سے اپنے اپنے ذوق اوردلچسپی کے مطابق تصویریں بنائیں اور بنوائیں۔ اور مناظرِ فطرت کواپنے کیمروں میں سمونے کی بھرپور کوشش کی۔

    ہماری اگلی منزل مالم جبہ تھی۔۔۔
     
    • زبردست زبردست × 5
  5. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    مالم جبہ

    مالم جبہ ‘ مینگورہ سے کوئی 42 کلو میٹرکے فاصلے پر ہے‘ مینگلور پل کے قریب اس کا راستہ‘ مدین اوربحرین کے راستے سے الگ ہوجاتا ہے۔اس کی سڑک کے ایک طرف سرسبز پہاڑ‘ درخت اور دوسری طرف ایک چھوٹی سی ندی بہتی ہے۔جس میں پڑے ہوئے بڑے بڑے دیوہیکل پتھر جا بجادکھائی دیتے ہیں۔مالم اورجبہ دو الگ الگ مقامات ہیں‘ مگراتنے قریب کہ ’مالم جبہ ‘ ایک ہی جگہ کو کہاجاتا ہے۔یہ مری کی طرح پہاڑ کی چوٹی پر واقع ہے۔سطح سمندر سے اس کی بلندی 9500فٹ‘ اور رقبہ250ایکڑ پر محیط ہے۔کہیں کہیں سڑک خاصی پُر پیچ‘ دشوار گزار اورمسلسل چڑھائی پر مشتمل ہے۔مالم جبہ دسمبر سے مارچ تک برف پوش رہتا ہے۔اس عرصہ میں یہاں بارہ سے سولہ فٹ تک برف پڑتی ہے۔سردیوں میں درجۂ حرارت منفی دس ڈگری تک جبکہ گرمیوں میں دس سے پچیس ڈگری رہتا ہے ۔ سرسبز پہاڑوں‘ اور دلکش مناظر کی وجہ سے مالم جبہ نہایت پرفضا مقام کی حیثیت رکھتا ہے۔ اس کے قرب و جوار میں جنگلات وسیعقطعہ اراضی پر پھیلے ہوئے ہیں۔جگہ جگہ مختلف النوع‘ رنگ برنگے اورخوبصورت پھول کھلے ہوئے ہیں۔مالم جبہ مجموعی طور پر اُوپر تلے ڈھلانوں پر مشتمل ہے۔ڈھلانوں اور برف کی وجہ سے یہ پاکستان کا واحد سکی انگ ٹریک بھی ہے۔ اس ٹریک کی لمبائی آٹھ سو میٹر ہے۔اسے حکومت آسٹریاکے تعاون سے رولر سکیٹنگ ‘ آئس سکیٹنگ ‘ سکی انگ پلیٹ فارم‘ چیئرلفٹ ‘ اور برف ہٹانے کیلئے جدید سہولیات سے آراستہ کیا گیا تھا۔ یہاں پاکستان ٹورازم ڈیویلپمنٹ کارپوریشن کاخوبصورت ہوٹل بھی موجود تھا لیکن دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جہاں ہم نے بہت کچھ کھو دیا‘ وہیں اس ہوٹل اور دیگر سہولیات کی قربانی بھی دینا پڑی۔

    ہم جب مالم جبہ پہنچے تو وہاں کا موسم خاصا خنک تھا۔ٹھنڈی ٹھنڈی ‘مدہوش کن‘معطر ہوائیں ہما رے استقبال کو موجود تھیں۔چشموں کا ٹھنڈا یخ اورمیٹھا پانی پینے کو ملا۔کچھ دیر اِدھر اُدھر چل پھر کر تصویریں وغیرہ بناتے رہے۔پھروہاں ہمیں ایک بزعم خودگائیڈ بھی ملا۔ جس نے ہماری کچھ تصویریں اور ویڈیوبنا کر‘کچھ دیر اونچے نیچے راستوں پر خوار کروا کرمِس گائیڈ کرنے کا حق ادا کردیا !پہلے یہیں کھانا کھانے کا پروگرام بھی بنا لیکن پھر گائیڈ والے تجربے ‘ ہوٹل والوں کی چرب زبانی‘ اورکھانے کی چیزوں کی قیمتوں کی وجہ سے ارادہ بدل دیا گیا اور نیچے شہر میں جا کر کھانا طے پایا۔مالم جبہ میں ابھی کچھ دیر مزید گھومنے کو دل چاہ رہا تھا۔ مگر یہاں دیر کرنے کا مطلب تھا کہ کالام کا سفر جو سڑک کی ٹوٹ پھوٹ کی وجہ سے پہلے ہی خطرناک ہے‘ خطرناک تر ہو جائے گا۔ سو ہم نے بادلِ ناخواستہ واپسی کی ٹھانی۔

    واپس مینگلور پُل پہنچ کر بحرین روڈ پرچلتے ہوئے چار باغ کے راستے خوازہ خیلہ پہنچے۔یہاں کھانے کیلئے ہوٹل ڈھونڈنا مشکل نہیں تھا‘لیکن کھانوں کا اندازاور ذائقہ ہم لاہوریوں کیلئے ذرابس یونہی سا تھا۔ چکن کڑاہی بنوائی گئی تو ۔۔۔۔۔‘ خیر ! اندازِ میزبانی میں کھانے کے آخر میں تھوڑا تھوڑا شہد‘بالائی‘ مکھن‘میوہ وغیرہ پیش کیا جانا اچھا لگا۔ کھانے کے بعد حسب روائیت چائے تھی۔خوازہ خیلہ میں چائے پیتے ہوئے زبان ایک نئے ذائقے سے آشنا ہوئی ! ہم لاہوریئے عام طور پر اچھی چائے ’دودھ پتی‘ کا عمدہ ذوق رکھتے ہیں۔ کہیں کہیں چائے کی دستاربندی کا رواج بھی ہے۔۔۔ میری مراد ’ پگ والی چاء ‘ سے ہے۔ چائے کے کپ کے اوپر گاڑھی گاڑھی سفید ’ ملائی‘ چائے کا ظاہری اور باطنیحسن دوبالا کر دیتی ہے۔ اس پَگ کا ایک اور ہم معنی لفظ اس وقت سننے میں آیا جب ایک ہوٹل پر دودھ پتی کا آرڈر دیا تو وہ ظالم چائے کپ میں ڈالنے کے بعدگویا ہوا ’بھاء جی لینٹر وی پاء دیاں ؟‘ ہم حیران تھے کہ یہاں چائے کے کپ کے اوپر کونسی چھت اور کہاں کا لینٹر ! لیکن اس کے مسکراتے ہوئے ملائی کی طرف اشارہ کرنے سے بات سمجھ میں آ ہی گئی ۔ ۔ ۔ ویسے یہ گئے زمانوں کی باتیں ہیں۔ اب خالص ملائی ایک تو ملتی نہیں دوسرے ڈاکٹر حضرات کو اس بیچاری سے خدا واسطے کا بیر ہے !اس سے کولیسٹرول اورکیلوریزمیں ممکنہ اضافے ‘ اس کے نقصانات اورمضرتوں کے بیان کرنے میں یہ لوگ کوئی کسر نہیں چھوڑتے۔ ان بھلے مانسوں کوکیسے بتائیں کہ جب لوگ دودھ ملائی وغیرہ کا استعمال زیادہ کرتے تھے تو بیماریاں کم اور عمریں لمبی ہوا کرتی تھیں۔ ۔۔ مگر۔۔۔ ہماری کوئی سنتا ہی کب ہے !

    بات ہو رہی تھی خوازہ خیلہ کی چائے کی۔ اس میں نیا ذائقہ(اچھے بُرے کا فیصلہ ہم آپ پر چھوڑتے ہیں!) جو وہاں چکھنے کو ملا‘ کوکونٹ یعنی ناریل کا تھا۔ دوسرے لفظوں میں انہوں نے چائے پر ناریل کے برادے کا لینٹر ڈال رکھا تھا !

    خوازہ خیلہ سے ایک بار پھر سفر شروع ہوا۔ مدین اور بحرین کے راستے وادئ کالام کا سفر‘ ٹوٹا پھوٹاناہموار راستہ‘ ایک طرف اونچے پہاڑ‘ دوسری طرف نیچے گہرائی میں دریائے سوات کا ٹھاٹھیں مارتاپانی‘ ایسی بلندی ایسی پستی ! پھر ٹویوٹاوین اور اس میں سامان کے علاوہ گیارہ نفوس‘ تھوڑی دیر کے بعد گاڑی ہانپتے ہانپتے رک جاتی‘ اور آگے بڑھنے کی بجائے پیچھے لڑھکنے لگتی‘ کچھ لوگ اس میں سے جلدی جلدی نیچے اترتے‘ ٹائروں کے پیچھے پتھر رکھتے‘ اور آ گے بڑھنے میں’شراٹا ٹائم‘کی مدد کرنے کیلئے دھکا لگاتے!استاد جمیل اس صورتحال پر خاصا پریشان دکھائی دے رہا تھا کہ الیکٹرانک فیول انجیکشنEFI سسٹم لگوانے کے باوجود ایسا کیوں ہو رہا ہے؟اور پھر جلد ہی اس کاذہنِ رسا معاملے کی تہ تک پہنچ گیا‘کہ انجن کی ائیر اِن لیٹ Air Inletکی ایڈجسٹمنٹ درست نہیں ہے۔ اس نے ایڈجسٹمنٹ درست کی‘ اورگاڑی بھرپور انداز میں طاقت لگاتے ہوئے سفر طے کرنے لگی۔رستے کی ناہمواری ‘ جگہ جگہ چھوٹے بڑے پتھر‘اور پھر اب رات کا سماں‘ گاڑی کی ہیڈلائٹس کے علاوہ ارد گرد کہیں روشنی نہیں‘لگ رہا تھا کہ وادئ کالام زبانِ حال سے یہ کہہ رہی ہے ؂

    انہی پتھروں پہ چل کے اگر آسکو تو آؤ‘
    میرے گھر کے راستے میں کوئی کہکشاں نہیں ہے!

    سفر تو جیسے تیسے ختم ہو گیا لیکن ہم استاد جمیل کی مشاقانہ ڈرائیونگ کے قائل ہو گئے !
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    کالام

    وادئ کالام میں پہنچے‘ تویہاں قیام کیلئے جوہوٹل پسند آیا ‘ اس کا نام ’بنگش پیلس‘ تھا۔صاف ستھرے کشادہ کمرے اور نہائیت مناسب کرایہ‘ معاملات طے کرنے کے بعد سامان کمروں میں شفٹ کیا۔اور کھانا کھانے کیلئے چل دیئے۔ایک لاہوری ہوٹل اس کام کیلئے منتخب ہوا۔ذائقہ اچھا تھا ‘ سو پسند آیا۔کھانا کھا کر بستر پر پڑے‘ اور سو گئے۔ صبح اٹھتے ہی ناشتے سے پہلے کی فوٹوگرافی کا راؤنڈ مکمل کیا‘ پھر رات والے ہوٹل میں ہی ناشتہ کیا۔ اور جھیل مہوڈنڈ کے سفر کیلئے کمربستہ ہوئے۔ یہاں بنگش پیلس والوں نے ایک صائب مشورہ دیا کہ مہو ڈنڈجانے کیلئے آپ کی ٹویوٹا وین مناسب نہیں ‘ آپ کو 4WDگاڑی لینی چاہئیے۔سوانہی ہوٹل والوں کی ایک لینڈ کروزرمناسب کرائے پر بمعہ ڈرائیور لے لی گئی۔اور اگلی منزل جھیل مہوڈنڈ جانے کیلئے وادئ کالام سے روانہ ہوئے۔
    کالام اپنی آبشاروں‘ جھیلوں‘سرسبز و شاداب پہاڑوں‘ دل موہ لینے والے قدرتی مناظر ‘ اور جدید سہولیات کی وجہ سے ایک سیاحتی مقام کے طورپربہت مشہورہے۔مینگورہ سے اس کا فاصلہ تقریباً 94کلومیٹر ہے۔سطح سمندر سے کوئی 6800فٹ بلند اس وسیع وادی کے ارد گرد نہائیت بلند و بالا پہاڑ موجود ہیں۔کالام کی وجہ تسمیہ کے بارے میں خیال کیا جا تا ہے کہ ہزاروں سال قبل یہاں ایک خاندان آباد تھا ‘جس کا نام’ کال ‘بیان کیا جاتا ہے۔کوہستانی زبان میں ’لام ‘گاؤں کو کہتے ہیں۔اس وجہ سے اس علاقے کا نام ’کالام‘یعنی ’کا ل کا گاؤں‘ رکھا گیا ۔کال کی نسل کے لوگ آج بھی کالام میں موجود ہیں اور’کال خیل‘کہلاتے ہیں۔کالام کی سرحدیں دیر‘ چترال‘ گلگت ‘ تانگیر اورانڈس کوہستان سے ملتی ہیں۔یہاں کی بلند ترین چوٹی ’فلک سیر‘ ہے۔ جس کی بلندی چوبیس ہزار فٹ ہے۔یہ بلند پہاڑ ایک طرح سے سوات اور چترال کے درمیان قدرتی حد بندی بھی ہے۔دریائے سوات کے کنارے‘ میدانوں کی شادابی‘ مسحور کن فضااور دیدہ زیب فطری مناظر کی وجہ سے اس وادی کو کشمیرِ ثانی کہا جائے تو بے جا نہیں۔وادئ کالام کو دوحصوں میں تقسیم کیا جا سکتا ہے۔ بالائی وادی اور زیریں وادی۔

    زیریں وادی دریا کے دائیں طرف واقع ہے ‘ جہاں کالام کا قدیم گاؤں آباد ہے۔کچے پکے مکان اوران میں نمایاں طور پر لکڑی کا کام‘ قدیم و جدید کا حسین امتزاج پیس کرتے ہیں۔یہاں دریا کے کنارے لکڑی کی بنی ہوئی کم از کم تین صدیاں پرانی ایک مسجد ہے۔ جس میں کوئی سوفٹ لمبے دیوہیکل شہتیراستعمال کئے گئے ہیں۔بھاری بھرکم دروازے‘ شہتیر‘ لکڑی پرکندہ کاری کا خوبصورت کام‘ اور پہلی منزل پر صرف ایک درمیانی ستون پر ٹھہرائی گئی لکڑی کی نقش و نگار سے مزین خوبصورت چھت‘ دیکھنے سے تعلق رکھتے ہیں۔عقل دنگ رہ جاتی ہے کہ اُس زمانے میں‘ ایسے دورافتادہ گاؤں میںیہ سب کچھ کیسے ممکن ہوا؟۔منفرد طرزِتعمیر اورقدامت کی وجہ سے یہ مسجد ہمیشہ سیاحوں کی توجہ کا مرکزبنی رہتی ہے۔ہم نے بھی مسجد کو بہت دلچسپی سے گھوم پھر کر دیکھا‘تصویریں بنائیں اور وہاں موجود ایک بزرگ سے اس مسجد کی تاریخی حیثیت کے بارے میں معلومات حاصل کیں۔

    بالائی کالام‘ دریا کے بائیں طرف واقع ہے۔اس کو ’کس‘ کے نام سے بھی پکارا جاتا ہے۔یہ وادی‘ زیریں وادی کینسبت خاصی جدید ہے اور تقریباً تمام جدید تعمیرات‘ سرکاری محکمہ جات کے دفاتر‘ پی ٹی ڈی سی موٹل‘کئی ہوٹل اورمین بازار اس طرف موجود ہیں۔بالائی کالام سے زیریں کالام کا نظارہ نہایت دلفریب‘پر کیف‘ دلکش اور جاذب نظر ہے۔

    وادئ کالام سے جھیل مہوڈنڈ کے راستے میں پہلے آنے والا مقام ’اوشو‘ہے۔قریباً دس کلومیٹر کی مسافت پر۔یہ وادی بھی قدرتی حسن و جمال کا ایک دلنشین منظر پیش کرتی ہے۔دریا کے عین کنارے پر ’اوشو ہوٹل‘ اور رسیوں اور لکڑی کے تختوں سے بنا ہوا پل‘ اس منظر کی دلکشی میں مزید اضافہ کرتے ہیں۔ یہاں کولڈڈرنکس کو ٹھنڈا رکھنے کیلئے ایک اچھوتی تکنیک دیکھنے میں آئی کہ پہاڑوں سے آنے والے چشموں کا ٹھنڈا پانی پائپوں کے ذریعے ترتیب سے سجائی گئی بوتلوں پر فواروں کی شکل میں گرایا جاتا ہے ۔جس سے بوتلیں یخ بستہ رہتی ہیں۔

    اوشو سے تین کلومیٹر کے فاصلے پر’ مٹلتان‘ واقع ہے۔یہ چاروں طرف سے آسمان سے سرگوشیاں کرتے ہوئے سر سبز وشاداب پہاڑوں میں گھری‘ دلکش و حسین‘ مہکتی ہوئی وادی ہے۔برف سے ڈھکے پہاڑ‘ اور ان کی چوٹیوں پر اُڑنے والے سفید و سیاہ بادل‘ ایک طلسماتی منظر تخلیق کرتے دکھائی دیتے ہیں۔مٹلتان کی وجہ تسمیہ بھی کافی دلچسپ ہے۔’ مٹل‘کوہستانی زبان میں سفید مٹی کو کہتے ہیں۔ اور یہاں اس مٹی کی بہتات ہے۔اس لئے اسے مٹلتان کہا جاتا ہے۔یہاں سردیوں کے موسم میںآتش دانوں میں آگ مسلسل جلتی رہتی ہے جس سے مکانوں کی دیواریں سیاہ ہو جاتی ہیں۔ اس مٹل کا ایک کام چونے کی شکل میں گھروں کو اُجلا رکھنا بھی ہے۔مٹلتان کے ایک طرف دریائے اوشو بڑی بڑی چٹانوں سے ٹکراتا ہوااپنا جلال دکھا رہا ہے تو دوسری جانب اُچھلتی کودتی ایک ندی اِس سے ملنے کو بے قرار ہے۔یہیں ان دونوں کا سنگم ہوتا ہے اور پھر یہ کالام پہنچ کر دریائے سوات سے جا ملتے ہیں۔

    مٹلتان کے قریب ہی ایک آبشار ہے‘ جہاں پہاڑوں کی چوٹیوں سے بہتا ہوا پانی آن گرتا ہے‘اتنی بلندی سے ایک منحنی سی دھار کی شکل میں بہتا پانی نیچے آتے آتے ایک طاقتور جھرنے کا روپ اختیار کر لیتا ہے۔ پتھروں سے اٹھکیلیاں کرتی یہ آبشارماحول کوایک نئی خوبصورتی عطا کرتے ہوئے نیچے دریا میں شامل ہو جاتی ہے۔ان تمام مقامات پر کچھ وقت گزارتے ہوئے‘ اپنے کیمروں میں انکے خوبصورت مناظر محفوظ کرتے ہوئے‘ ہم جھیل مہوڈنڈ کی جانب گامزن تھے۔جو ابھی یہاں مٹلتان سے بیس کلو میٹر دور تھی۔
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    جھیل مہوڈنڈ

    مہوڈنڈ پہنچے توسب سے پہلے ٹھنڈی ہوا نے ہمیں خوش آمدید کہا۔ یہ چھوٹا سا قطعہ اراضی اپنے موسم‘ محل وقوع‘ جھیل اور کشتی کے رُومانوی مناظر کی وجہ سے حقیقتاًسراپاحُسن ہے۔ جھیل کا نام ’مہو‘بمعنی مچھلی اور ’ڈنڈ‘بمعنی جھیل سے مرکب ہے۔ یعنی مچھلیوں والی جھیل۔اس جھیل میں ٹراؤٹ مچھلی کثرت سے پائی جاتی ہے۔ٹراؤٹ عمومی طور پرشفاف‘ اور دس سے سولہ ڈگری سینٹی گریڈتک کے ٹھنڈے چشموں اور جھیلوں میں رہنا پسند کرتی ہے۔ پانی کے بہاؤ کے خلاف سفر کرنے والی یہ نازک اندام مگر طاقتور مچھلی جب دریا کی تہہ میں پتھروں پر جلوہ فگن ہوتی ہے توایسا معلوم ہوتا ہے جیسے کوئی شہسوار گھوڑے کی پیٹھ پر جم کر بیٹھا ہو !

    آج سے بیسیوں سال پہلے یہ مچھلی یورپ سے کشمیر لائی گئی پھر کشمیر سے اس کی افزائش نسل کاغان میں کی گئی۔ابدوسرے پہاڑی علاقوں میں بھی اس کی پرورش کی جا رہی ہے۔یہ مچھلی تقریباً دس سے سولہ انچ لمبی ہوتی ہے۔اس کے منہ میں تیز دانت ہوتے ہیں جن کی مدد سے یہ دیگر مچھلیوں کے علاوہ چھوٹی ٹراؤٹ مچھلیوں کو بھی ہڑپ کر جاتی ہے۔ اسے قدرت نے کیموفلاج یابھیس بدلنے جیسی خوبی سے بھی نواز رکھا ہے یعنی شفاف چشموں اور جھیلوں میں سفید و سیاہ چتکبرے پتھروں کے درمیان رہنے والی ٹراؤٹ کا رنگ وروپ عموماً اسی طرح کاچتکبرا ‘ جبکہ سمندر یا فارم میں پلنے والی ٹراؤٹ کا رنگ نقرئی‘سلیٹی اور سیاہی مائل ہوتا ہے۔ اگرچشموں کی چتکبری ٹراؤٹ کوفارم میں لا کر رکھا جائے تو اس کارنگ حیرت انگیز طور پر آہستہ آہستہ بدل کرنقرئی‘ سلیٹی اور سیاہی مائل ہو جاتا ہے۔ یہ مچھلی ‘ذائقے اورلذت کے اعتبار سے دنیا کی چندمشہور مچھلیوں میں شمار کی جاتی ہے۔اور دنیا بھر میں انسانوں کے علاوہ بھورے ریچھ‘ اور عقاب جیسے شکاری پرندے اسے بڑی رغبت سے کھاتے ہیں۔

    سرسبزپہاڑوں میں گھری ایک حسین سی وادی‘ اس وادی میں خوبصورت سی جھیل ‘اور اس جھیل میں کشتی کا سفر‘ کس قدر سہانا تخیل ہے ! سو ہم نے دو کشتیاں بک کروائیں۔آدھے ایک میں سوار ہوئے‘ آدھے دوسری میں‘ اورپھر کشتیاں جھیل میں اُتر گئیں۔ جھیل کا پانی نہایت شفاف اورحیرت انگیز حد تک ٹھنڈا تھا‘ذرا دیر کو اس میں ہاتھ ڈالا توانگلیاں سُن ہو کر رہ گئیں۔ہمارے حصے میں آنے والی کشتی میں کوئی فنی خرابی تھی۔بڑی مشکل سے اسٹارٹ ہوتی‘ کچھ دیر رینگتی اور پھر بند ہو جاتی۔دوسری کشتی والے ساتھیوں کے مذاق کا نشانہ تو بنے‘ مگردل یہی چاہتا تھا کہ زیادہ سے زیادہ وقت جھیل کے اندر گزرے۔ ویسے بھی بقول احسان جذبیؔ :

    جب کشتی ثابت و سالم تھی‘ ساحل کی تمنا کس کو تھی
    اب ایسی شکستہ کشتی پر ساحل کی تمنا کون کرے !

    خنک موسم اور جھیل میں کشتی کی سیر کے بعداب طلب ہو رہی تھی اچھی سی چائے کی!۔چائے کی چسکیوں اور گپ شپ کے بعدشائد موسم کی ادا دیکھتے ہوئے میاں بشارت کچھ گُنگنانے کے موڈ میں لگ رہے تھے۔ساجد موقع شناس نکلا‘جھٹ سے بولا ’پرات لاؤں ؟‘ کہنے لگے نہیں میز ہی ٹھیک ہے (شاید پہلے طبلہ کے طور پر’پرات‘لازمی استعمال ہوتی ہو گی !)۔اور پھر اپنے ہاتھوں سے میز بجاتے ہوئے گانے لگے:

    گھائل من کا پاگل پنچھی‘ اُڑنے کو بے قرار
    پنکھ ہیں کومل‘ آنکھ ہے دھندلی‘ جانا ہے ساگر پار
    اب تو ہی اسے سمجھا‘ کہ آئیں کون دِشا سے ہم
    تو پیار کا ساگر ہے‘ تیری اِک بوند کے پیاسے ہم
    لوٹا جودیا تو نے‘ چلے جائیں گے جہاں سے ہم !

    کہتے ہیں رونا اور گانا سب کو آتا ہے۔ ایک ہم ہیں جنہیں گانا تو کیا آتا‘ڈھنگ سے رونا بھی نہیں آ سکا۔ کبھی دل ٹوٹاکبھی توڑ دیا گیا‘کبھی خود کو بہت تکلیف پہنچی‘کبھی کسی کی زبان کے گہرے زخم کھائے‘کبھی اندر سے ٹوٹ پھوٹ گئے۔۔۔ مگر پلکیں تک نہیں بھیگیں۔ ۔۔ اور کبھی باترجمہ قرآنِ کریم پڑھتے وقت ‘کبھی تاریخی واقعات کے مطالعہ کے دوران ‘کبھی دردبھری غزلیں سنتے ہوئے‘ کبھی اُداس شاعری پڑھتے ہوئے‘کبھی معاشرتی اونچ نیچ پر‘اورکبھی بالکل عام سی باتوں پربھی اپنے آنسو ضبط نہ کر پائے !

    حقیقت یہ ہے کہ میاں بشارت کونہ صرف گانا بہت اچھا آتا تھا‘ بلکہ ذوقِ انتخاب بھی نہایت عمدہ تھا۔

    جھیل مہوڈنڈ کو الوداع کہتے ہوئے اب ہمارا واپسی کا سفر شروع ہو چکا تھا۔ ٹراؤٹ کھانے کا پروگرام تو وہیں بن رہا تھا لیکن پھر صرف چائے پر اکتفا کیا گیا۔اور یہ طے پایا کہ اوشو پہنچ کر ٹراؤٹ کھائی جائے ۔ اوشو ہوٹل والوں سے ٹراؤٹ کا معاملہ ٹھیک سے طے نہ ہوسکا اورپھر چکن پر ہی گزارا کیا گیا۔اوشو سے کھانا کھا کر کالام سے کچھ پہلے اُس جگہ پہنچے جہاں ہمیں بتایا گیا تھا کہ درختوں کے اُگنے کی ایک خاص ترتیب کی وجہ سے اسم مبارک’اللہ‘لکھا ہوا ہے۔ وہاں کچھ دیر کورُکے اور مختلف پہلوؤں سے منظر کی تصویر کشی کی۔

    مجھے یہ احساس ہو رہا تھا کہ ہم اس بات کے منتظرکیوں ہوتے ہیں کہ ہمیں خود اُس کانامِ پاک قدرتی طورپر کہیں لکھا ہوا ملے۔اور ہم بڑے اہتمام سے اسکی تصویریں بنا کردوسروں کو دکھائیں۔۔۔ کیا ہمیں ہر ہر قدم پراللہ کی قدرت ‘اُس کی صناعی‘اُس کی تخلیق‘ دکھائی نہیں دیتی۔یا پھر شاید ہم دن رات یہ سب کچھ دیکھ دیکھ کر اتنے عادی ہو چکے ہیں کہ اِن میں اُس ذات کا عکس ہمیں دکھائی ہی نہیں دیتا‘ ہمیں لگتا ہی نہیں کہ یہ تخلیقات کوئی معجزہ ہیں‘حالانکہ اس کائنات کا ذرہ ذرہ پُکار پُکار کر اپنے خالق کی حمد و ثنا بیان کر رہا ہے ! درخت کو ہی دیکھ لیں ۔ایک معمولی بیج میں سے ایک ننھی سی‘ نازک سی‘ کونپل کا بیج کو پھاڑ کر نکلنا۔پھراس کی مدد کیلئے زمین کے اندرونی تمام وسائل‘ نمکیات وغیرہ کا باہم اشتراک‘ پھراس کا زمین کی مٹی میں سے باہر آنا۔یہاں اس کیلئے آب و ہوا‘موسم اور دیگر قدرتی عوامل کامدد کیلئے ہردم کارفرما ہونا‘ اس کا پودے کی شکل اختیار کرنا‘ جڑوں کے ذریعے زمینی نمکیات اورپانی کاسورج کی روشنی سے مل جُل کر نہایت پیچیدہ انداز میں‘مگرنہایت احسن طریقے سے بلند و بالا درخت کی چوٹی تک کے ہر ہر پتے میں پہنچنا‘ کیایہ سب یونہی ہوگیا ؟بلکہ ہزارہا سال سے اسی طرح بغیر کسی غلطی کے ہوتا چلا آرہا ہے‘اس کے پیچھے جو نادیدہ قوت کارفرما ہے‘ ہم اس کا ادراک کیوں نہیں کر پاتے؟اللہ تعالیٰ ہمیں غور و فکر کی توفیق عطا فرمائے۔

    آج رات ہمیں پھرکالام میں ٹھہرنا تھا‘ اور صبح ناشتہ کے بعد واپسی کا سفر جاری رکھنا تھا۔ یہاں آتے ہوئے تو رات کا سماں تھا اس لئے ارد گرد ٹھیک سے دیکھ نہیں پائے۔واپسی پرراستہ تو وہی ناہموار اور ٹوٹا پھوٹاتھا ‘لیکن مناظرِفطرت ہمیں بار بارگاڑی روک کر تصویر کشی پر مجبور کرتے رہے۔ایک جگہ آڑوؤں کا باغ نظر آیا۔ اس کے اندرجا کر پودوں کے ساتھ کھڑے ہوہوکر‘ آڑوؤں کو پکڑپکڑ کرتصویریں بنوائی گئیں۔۔۔یوں بھی دن کا یہ سفر‘ خراب سڑک کے باوجود‘رات کی نسبت اتنا خطرناک نہیں لگ رہا تھا۔ اور ویسے بھی اب ہم اترائی کی طرف ہی جا رہے تھے۔

    ۔۔۔ اور ہماری اگلی منزل مدین کاٹراؤٹ پارک ٹھہری تھی۔
     
    • زبردست زبردست × 7
  8. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    ٹراؤٹ پارک

    کالام سے واپسی کے سفر میں بحرین سے گزرتے ہوئے تقریباً بیالیس کلومیٹر طے کرلینے کے بعداب ہم مدین کے مقام پر تھے جہاں سے بائیں طرف جانے والی سٹرک پر محض ایک کلو میٹرکے فاصلے پرٹراؤٹ فش فارم واقع ہے۔یہاں فشریز ڈیپارٹمنٹ کے ڈپٹی اور اسسٹنٹ ڈائریکٹرز کے دفاتر ‘ ٹریننگ سنٹر ‘ایک بڑا سا فش فارم اورہیچری‘ اس سے ملحق خوبصورت’ ٹراؤٹ پارک ‘اور ایک ریسٹورنٹ موجود ہیں۔فارم‘پارک اور ریسٹورنٹ سڑک کے بائیں طرف نیچے ایک خاصی بڑی ندی کے بالکل کنارے پر بنائے گئے ہیں جس سے پارک کا حسن نکھر کر سامنے آتا ہے۔

    یہاں پہنچتے ہی سب سے پہلے ٹراؤٹ مچھلی پسند کرکے تیار کرنے کا آرڈر دیا گیا۔اس دوران ہلکی پھلکی فوٹوگرافی جاری رہی۔یہاں واش روم کی طرف جاتے ہوئے ایک چھوٹی سی بچی نے ٹوکا ’ماما ! کسان دی پہ کے‘ مطلب یہ کہ ماموں ادھر مت جائیں‘ واش روم میں کوئی ہے۔ یہ اندازِ تخاطب بہت اچھا لگا۔ پختون ثقافت میں والدین کے ہم عمر مردوں کو عموماً ماما کہہ کر بلایا جاتا ہے۔ کوئی آپ کو اپنی ماں کے بھائی کے طورپرمخاطب کرے ‘ تواس میں اپنائیت کی ایک خاص جھلک نظر آتی ہے۔ ہمارے یہاں لاہوری سٹائل میں تویہ خوبصورت رشتہ باقاعدہ ایک گالی کی شکل اختیار کرچکا ہے۔کراچی میں بھی’ماموں بنانا‘ کسی کو دھوکہ دینے اور بیوقوف بنانے کا مترادف ہے۔ہمیں اس پاکیزہ رشتے کی توہین سے اجتناب برتنا چاہئے۔

    بات کدھر سے کدھر نکل گئی۔ ذکر ہو رہا تھا ٹراؤٹ کا۔ جو اَب ہمارے سامنے پلیٹوں میں سمٹی سمٹی سی‘ بل کھائی ہوئی پڑی تھی۔کچھ اس کا سائز ویسے ہی چھوٹا تھا اور کچھ فرائی ہونے سے سکڑ گئی۔ لیکن بہرحال ذائقہ میں لذیذ تھی۔ کھانا کھانے کے بعد مزید کچھ تصاویر ندی کے بیچوں بیچ پتھروں پر کھڑے ہو کراوربیٹھ کربنائی اوربنوائی گئیں۔

    یہاں سے چلے تو میاندم جا ٹھہرے۔
     
    • زبردست زبردست × 7
  9. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    میاندم

    میاندم‘ مینگورہ سے بتیس کلو میٹر کے فاصلے پرواقع ایک سحر انگیزاورگل رنگ وادی ہے‘ سطح سمندر سے چھ ہزار فٹ بلند اس وادی کی غیر معمولی دلکشی اس کے ارد گرد ایستاد ہ برف پوش پہاڑوں‘ گھنے جنگلات‘ معتدل موسم‘معطر فضااورصحت بخش آب و ہوا کی مرہونِ منت ہے۔اس کے نام کے بارے میں مشہور ہے کہ پہلے پہل اس علاقے میں میاندم نام کی کوئی جگہ موجود نہیں تھی۔جو مقام اب میاندم کہلاتا ہے‘ وہ یہاں کے دو دیہات ’گوجر کلے‘ اور’سواتی کلے‘کے درمیان حدِفاصل تھا۔ایک بار یہاں سید خاندان کے ایک بزرگ تشریف لائے اور موجودہ بس اڈے کے قریب رہائش پذیر ہو گئے۔وہ مختلف تکالیف اور بیماریوں کا علاج قرآنی دم کے ذریعے کرتے تھے۔ان کا نام تو میاں عثمان تھا لیکن علاقے کے لوگ انہیں احتراماً میاں جی کہا کرتے تھے۔ رفتہ رفتہ میاں جی کے دم کی شہرت ہر طرف پھیل گئی اور اس علاقے کو ہی ’میاں دم ‘کے نام سے پکارا جانے لگا۔یہاں تک کہ اس علاقے کے دوسرے مشہور مقامات بشمول ’گوجر کلے‘ اور’سواتی کلے‘ بھی’ میاندم‘ کی مرکزی شناخت میں ضم ہو کر رہ گئے۔ میاندم میں خالص سواتی شہد اور مختلف موسمی پھل از قسم املوک‘ جاپانی پھل(جسے یہاں ’بڑا املوک ‘کہا جاتا ہے)‘ ناشپاتی ‘آڑو‘اخروٹ‘ انجیروغیرہ بکثرت پائے جاتے ہیں۔آلو‘ مکئی‘اورمشروم یعنی کھمبی یہاں کی خاص پیداوار ہے اورمختلف قیمتی‘نادر و نایاب جڑی بوٹیوں کیلئے بھی میاندم خاص شہرت رکھتا ہے۔ بلکہ اس مقصد کیلئے ورلڈ وائڈ فنڈ(WWF)کی جانب سے اسے باقاعدہ طور پر دوائیوں میں استعمال ہونے والی جڑی بوٹیوں کی فارمنگ کیلئے موزوں خطہ کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے۔

    ہم میاندم پہنچے تو شام کا سماں تھا‘ہوٹل کی تلاش کیلئے کچھ تگ و دو نہیں کرنا پڑی۔ سامنے ہی نظر آنے والاہوٹل میاندم پیلس بہت مناسب لگا۔سامان کمروں میں رکھ کر ہم لوگ بازار کی طرف چل دئیے۔ اب مشورہ یہ ہونے لگاتھا کہ یہاں بازار سے سامان خرید کر ہوٹل لے جایا جائے۔ گیس سلنڈر‘ چولھا‘ دیگچی وغیرہ پہلے سے گاڑی میں موجود تھا۔ اورحکیم شفیق ‘ رانا اسد اور ساجد اسے پکانے کی خدمت سرانجام دیں کہ یہ تینوں اس معاملے میں خاصے تجربہ کار تھے۔ اگلا سوال یہ تھا کہ کیا پکایا جائے۔لے دے کے بات انڈوں کے آملیٹ پر ختم ہوئی۔ گھی‘ مرچ مصالحے وغیرہ خریدے جارہے تھے کہ خیال آیا کہ اتنا سامان لے کر اگر صرف ایک دفعہ ہی کوکنگ کرنی ہے تو ۔۔۔۔۔ کھانا بازار سے ہی کھا لیا جائے ! چنانچہ اب اُسی دکان کے برابروالے ریسٹورنٹ کی طرف نظر گئی۔ پتہ چلا کہ رات ہونے کہ وجہ سے بند ہو چکا ہے لیکن اگر آپ چاہیں تو متعلقہ افرادکو گھر سے بلوا کرہمارے لئے کھانا پکوانے کا انتظام کیا جا سکتا ہے۔ اس قدر پرخلوص اور فراخ دلانہ پیشکش کو ہم ٹھکرا ہی نہیں سکے۔ اورریسٹورنٹ والوں کو چکن کڑاہی کا آرڈر دے کر خود گپ شپ کیلئے بیٹھ گئے۔دفعتاً کسی نے یاد دلا دیا کہ گذشتہ روز میاں بشارت کا گلا کچھ ٹھیک نہ ہونے کی وجہ سے وہ عنائت حسین بھٹی کے گیت نہیں سنا سکے تھے لہٰذا’ اب ہو جائے‘۔ سو میاں بشارت ایک با ر پھرمیز بجاتے ہوئے شروع ہوگئے۔
    تک دلبریاں دلبر دیاں‘ اینویں پج پا کے رُس بیہنا‘ ۔۔۔ اور جب طبیعت میں روانی آگئی تو پھر ۔۔۔ ہم نے جفا نہ سیکھی ان کو وفا نہ آئی‘ تو پیار کا ساگر ہے‘ آپ نے یاد دلایا تو مجھے یاد آیا‘

    اِدھر میزپریہ محفل جاری تھی اور اُدھر چولھے پر کڑاہی تیاری کے آخری مراحل میں تھی۔اور رانا اسداور حکیم شفیق پکانیوالے کو اپنے قیمتی مشوروں ے نواز رہے تھے۔ان کے کھڑے کھڑے اس شریف آدمی نے اس میں گلاس بھر پانی ڈال دیا۔ اور یہ سب ایک دوسرے کا منہ تکتے ہی رہ گئے !اُس نے دلاسہ دیا کہ فکر نہ کرو چکن بہت اچھا بنے گا‘۔۔۔۔ اور واقعی کڑاہی تو نہیں البتہ شوربے والا اچھا سالن بنا !کھانا کھایا‘ اللہ کا شکر اور بنانے والے کا شکریہ ادا کیا۔ ہوٹل جا کر کیمرہ کے کارڈوں کی تصویریں لیپ ٹاپ میں منتقل کیں۔اور سو رہے۔۔۔

    صبح تیار ہو کر ہوٹل سے نکلے۔ رات والے ریسٹورنٹ سے چنے ‘آملیٹ وغیرہ کا ناشتہ کیا۔اور سیر کیلئے چل دئیے۔پہلے پی ٹی ڈی سی موٹل دیکھا‘ کچھ تصویریں بنائیں۔پھر ایک ندی کی طرف جانے والے راستے پر گام زن ہوئے۔ راستے میں ناشپاتیوں کے درخت دیکھ کر کئی ساتھیوں کے منہ میں پانی بھر آیا‘ ان سے رہا نہیں گیا‘ اوراُچک اُچک کر ناشپاتیاں توڑ کر کھانے لگے۔ جلد ہی ندی نظر آ گئی‘ یہاں کی منظر کشی پر کچھ وقت صرف کیا۔ کچھ دیر مزید اِدھر اُدھر گھومتے رہے۔پتہ چلا کہ یہاں ایک ’عقلمند لوہار‘ بھی ہے ! ثبوت کے طورپر اس کی دکان کی تصویر بھی لے لی گئی۔۔۔

    ۔۔۔ اور پھر واپسی کے لئے ’شراٹا ٹائم‘ میں جا بیٹھے ۔
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    واپسی

    میاندم سے واپسی‘ دراصل گھر کی جانب واپسی تھی۔۔۔ اللہ کا نام لیکر سفر شروع ہو چکاتھا۔خوازہ خیلہ‘ مینگورہ بائی پاس‘سے ہوتے ہوئے جا رہے تھے کہ کوٹہ ‘ نواں کلے سے گزرتے ہوئے آڑوؤں کا ایک باغ دکھائی پڑا۔ کھانے کیلئے کچھ خریدنے کا پرو گرام بنا۔ اور پھرفیصلہ کیا گیا کہ سوغات کے طور پر یہ آڑو گھروں کیلئے بھی لے لئے جائیں۔ سوحسب ضرورت ڈبے خرید کرگاڑی کی چھت پرباندھ لئے۔یہاں سے اب نان سٹاپ سفر شروع ہو گیا یعنی سی این جی یا نماز کے علاوہ گاڑی کہیں نہیں روکی گئی۔

    بٹ خیلہ سے کچھ پہلے دریائے سوات کا ساتھ چھوٹ گیا۔۔۔ وہ دریا جس نے جاتے ہوئے مینگورہ سے کالام اور مہوڈنڈ تک ہمارا سا تھ دیا تھا۔اور ہم اس کی محبت میں ایسے ایسے دشوار راستوں سے گزرے تھے کہ جوڑ جوڑ دکھنے لگ گیا تھا ؂
    رستے بڑے دشوار اور کوس کڑے تھے‘
    لیکن تیری آواز پر ہم دوڑ پڑے تھے !
    واپسی کا سفر بھی انہی رستوں پر رہا‘ دریا کبھی کبھی نظروں سے اوجھل ضرور ہوا مگراس نے ہمارا‘ اور ہم نے اس کا ساتھ نہ چھوڑا۔دریائے سوات کا منبع کو ہِ ہندوکُش میں ہے۔وہاں سے جھیل مہوڈنڈ‘وادئ کالام سے ہوتا ہوا ضلع سوات میں آتا ہے۔ اس کے بعد بٹ خیلہ کے قریب سے رُخ بدلتے ہوئے ضلع لوئر دیر سے گزرتا ہے۔اور ضلع چارسدہ کے قریب جا کر دریائے کابل میں شامل ہو جاتا ہے۔ قدیم تاریخ کے حوالے سے اس کا ذکر ہندوؤں کی مقدس کتاب’ رگ وید‘ میں آتا ہے۔جس میں اس کا نام ’سواستو‘ ملتا ہے۔

    ۔۔۔ اب ہماری اور دریائے سوات کی راہیں جدا ہو چکی تھیں !

    مالا کنڈ کی پہاڑیوں کو دیکھ کر آخری بار پھر ان مناظر کو کیمرے میں محفوظ کرنے کا خیال آیا۔ سو ایک مناسب جگہ رک کر سورج غروب ہونے سے قبل تصاویر بنا لی گئیں۔اس کے بعدپھر چل دئیے۔اوراگلا پڑاؤ راولپنڈی قرار پایا‘ کھانا کھانے کیلئے۔۔۔ اس دوران کچھ ساتھیوں کی طرف سے مری کی سیر کا مشورہ پیش کیا گیا ‘ سو طے یہ پایاکہ کھانے کی میز پر ووٹنگ کی جائے گی۔ اور’ خالص جمہوری عمل ‘سے فیصلہ کیا جائے گا۔کھانے کی تلاش میں پیرودھائی اورفیض آباد گھومے‘ مگرپسند کا کھانا نظر نہیں آیا۔لہٰذا سیور فوڈز گورڈن کالج روڈسے بریانی کھائی اور بس ! ’جمہوری عمل‘ بھی رہ گیا۔۔۔ شاید ہم سب میں واپس گھر جانے کی تمناہر بات پر حاوی ہوچکی تھی۔بالکل اسی طرح جیسے وطنِ عزیز میں حکمران اپنے گھربار‘ اپنے اقتدار‘ اپنی انا کی خاطر جمہوریت کو پسِ پشت ڈال دیتے ہیں۔ اور جمہوری عمل‘ جس کے لیے دن رات تقاریر کرتے نہیں تھکتے‘ یکسر بھول جاتے ہیں ۔۔۔

    رات آدھی بیت چکی تھی۔ نیند کا وقت بھی تھا‘ اورخمارِ گندم بھی‘ راولپنڈی کے بعد زیادہ تر ساتھی وقتاًفوقتاً نیند کی وادی کی سیر کرتے رہے‘ صرف استاد جمیل تھا جو پوری لگن سے اپنے کام میں جُتا رہا۔واپسی پرنہ جانے کیوں جھیل مہوڈنڈ کا منظر میری چشم تصور میں ابھر آیا۔ جب میاں بشارت کی آواز اس خوبصورت فضا میں مسحور کن نغمے بکھیر رہی تھی ۔ اور میں سوچ رہا تھا کہ اس گیت کے بولوں میں کس قدر سچائی ہے ؂

    اِدھر جھوم کے گائے زندگی‘ اُدھر ہے موت کھڑی
    کوئی کیا جانے کہاں ہے سیما‘ اُلجھن آن پڑی

    ایک طرف زندگی اپنی تمامتر رعنائیوں‘ رنگینیوں اورامنگوں کے ساتھ موجود ہوتی ہے اور دوسری طرف موت کا مہیب سناٹااور ہولناک خاموشی۔کوئی نہیں جانتاکہ ان کے درمیان حد فاصل‘ وہ لکیرکون سی ہے ۔کہ جس کے بعد موت کی عمل داری شروع ہو جاتی ہے؟ وہ کونسی سانس ہے کہ جس کے بعد سانسوں کی ڈوری ٹوٹ جاتی ہے؟ وہ کونسی دھڑکن ہے کہ جس کے بعددھڑکن رُک جاتی ہیں ؟ زندگی کے اختتام اور موت کی ابتدا کا نقطہ نامعلوم ہے‘ اور نامعلوم رہے گا۔

    یہی اس کائنات کاسب سے بڑاسچ ہے !
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. جیہ

    جیہ لائبریرین

    مراسلے:
    15,025
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bitched
    زبردست ۔ اپنے علاقے کی سیر کی روداد پڑھ کر بہت اچھا لگا۔ آپ پوسٹ کرتے جارہے تھے اور میں پڑھتی جارہی تھی۔
    بہت خوبصورت انداز بیان۔ مزاح کی ہلکی سی چاشنی مزا آیا پڑھ کر
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    یونس بھائی کیا زبردست روداد سفر لکھی ہے۔ یقین کریں بہت مزہ آیا۔ پڑھتے ہوئے تصور میں میں بھی ساتھ ساتھ تھا اور وہی کچھ دیکھ رہا تھا۔

    قرطاس پر اتار لیا ہے۔ بچوں کو بھی پڑھنے کے لیے دوں گا کہ بہت ہی معلوماتی روداد ہے۔

    جزاک اللہ خیر۔
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بہت شکریہ ! اس کا مطلب ہے کہ علاقے کی تعریف و توصیف اور معلومات میں جو کسر باقی رہ گئی ہے وہ آپ کے ذمہ ہوئی ۔ ۔ ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بہت شکریہ ! کچھ تصویریں بھی شیئر کروں گا ان شاء اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,840
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    نہ صرف معلومات سے بھرپور بلکہ تاریخ اور جغرافیہ بھی ساتھ ساتھ۔ بہت اچھا لگا پڑھ کر۔ تصاویر بھی ہو جاتیں تو لطف دو بالا ہو جاتا :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  16. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بہت شکریہ ! تصویریں ارسال کرنے کی کوشش کر رہا ہوں ۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    ’’سفر سوات کا‘‘ تصویری شکل میں۔

    ان میں سے بعض تصاویر چلتی ہوئی گاڑی میں بنائی گئی ویڈیوز میں سے لی گئی ہیں۔ اس لئے کوالٹی بس یونہی سی ہے۔۔۔ صرف تسلسل قائم رکھنےکے لئے شامل کردی گئی ہیں۔

    سفر کی تیاریاں اور ’شراٹا ٹائم‘
    [​IMG]

    دریائے راوی
    [​IMG]

    راوی پل
    [​IMG]

    پتن چناں دا ۔۔۔
    [​IMG]

    جہلم دے پُل تے ۔۔۔
    [​IMG]

    اٹک کے پُل سے قلعہ اٹک کا منظر
    [​IMG]

    مینگورہ بازار میں سواتی چنے کا ناشتہ
    [​IMG]

    فضا گٹ پارک اور دریائے سوات سے پہلا تعارف
    [​IMG]

    دریا یہاں خاصا پرسکون تھا
    [​IMG]

    فضاگٹ پارک کے کچھ مناظر
    [​IMG]
    [​IMG]

    مالم جبہ
    [​IMG]

    مالم جبہ کی چوٹی پر گھومتی ہوئی ایک خوبصورت گائے ۔ ۔ ۔
    [​IMG]
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 14, 2013
    • زبردست زبردست × 5
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  18. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت خوبصورت، بہت زبردست۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  19. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    وادئ کالام کے راستے میں

    [​IMG]
    [​IMG]
    بکریوں کا ریوڑ پہاڑوں سے اترتے ہوئے‘ شدید سرد موسم سے پہلے اور عیدالاضحیٰ پر فروخت کے لئے لے جایا جارہا ہے‘ پاپی پیٹ کی خاطر ایک کٹھن‘ دشوار گزار اور پیدل سفر!
    [​IMG]
    [​IMG]
    کالام گاؤں کی طرف اترنے والا لکڑی کےتختوں کی مدد سے بنایا گیاعارضی پل (اصل پل تعمیرکے مراحل میں تھا)
    [​IMG]
    کالام گاؤںمیں لکڑی سے تیار کردہ تاریخی جامع مسجد کا منظر
    [​IMG]
    مسجد کی دوسری منزل کی چھت اوراس کا واحد سہارا ایک ستون ! تین صدیاں قبل تخلیق کیا گیا ایک شاہکار ۔ ۔ ۔
    [​IMG]
    چھت کی اندرونی طرف بنائی گئی خوبصورت نقاشی
    [​IMG]
    چھت کا دیوہیکل شہتیر‘ کوئی سو فٹ لمبائی کا حامل۔
    [​IMG]
    اندرونی منظر
    [​IMG]
    بیرونی منظر
    [​IMG]
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 14, 2013
    • زبردست زبردست × 8
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. یونس

    یونس محفلین

    مراسلے:
    303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    کالام سے مہو ڈنڈجھیل کی طرف جاتے ہوئے راستے میں درختوں سے لفظ اللہ کا تصور
    [​IMG]
    راستہ میں ایک آبشاربھی تھی ۔۔۔
    [​IMG]
    [​IMG]
    بادلوں میں گھری پہاڑوں کی چوٹیاں
    [​IMG]
    [​IMG]
    اوشو کاایک پُل
    [​IMG]
    وادئ اوشو
    [​IMG]
    وادئ اوشو ‘ بائیں طرف اوشو ہوٹل نظر آ رہا ہے
    [​IMG]
    خالص شہد‘ سلاجیت‘ جوس ‘ نمکو‘ کولڈڈرنکس‘ انرجی ڈرنکس کا ڈسپلے ۔ ۔ ۔
    [​IMG]
    خوبصورت منظر
    [​IMG]
    برف پوش’فلک سر‘ چوٹی۔ اسم بامسمیٰ ۔۔۔
    [​IMG]
    دریاءے سوات کا پرجوش ٹھاٹھیں مارتا پانی
    [​IMG]
    کولڈڈرنکس کو ٹھنڈا رکھنے کا قدرتی طریقہ ! پہاڑوں کےچوٹیوں پر موجود چشموں سے بہہ کر آنے والا پانی فوارے کی شکل میں ان پر برسایا جارہا ہے ۔ ۔ ۔
    [​IMG]
    خوبصورت منظر اور کچا رستہ
    [​IMG]
    [​IMG]
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 14, 2013
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر