1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

سر سید کی کہانی سر سید کی زبانی... اپ ڈیٹ

الف عین نے 'اپڈیٹ زون' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 2, 2009

  1. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    جزاک اللہ خیر! اب یہ کتاب مکمل ہو گئی۔ :)
     
    • متفق متفق × 1
  2. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    سعود بھائی ، نوبت رسید
     
  4. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    یہ متفق و غیر متفق کا کیا قصہ ہے بٹیا رانی؟ :)
     
  5. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    کم از کم ہمارے پاس مکمل کتاب ایک جگہ محفوظ ہے، اب کاپی رائٹ کا مسئلہ رہا تو اسے عام نہیں کریں گے اور مسئلہ جاتا رہا تو عام کر دیں گے۔ :) :) :)
     
  6. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    مجھے خیال تھا کہ شاید اس کے کاپی رائٹ کی نوعیت واضح ہو چکی ہے ۔
    جن کتب کے کاپی رائٹ واضح نہ ہوں ان کے بارے میں یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ انہیں کچھ متن چھوڑ کر پیش کیا جائے گا ۔
     
  7. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,174
    یعنی آپ کا کہنا ہے کہ اب اس کو عوام کے لئے مکمل طور پر جاری کیا جا سکتاہے؟ یا پھر سکے کا دوسرا رخ یعنی پوری طرح چھپا دیا جانا چاہئے؟

    انسپائرڈ بائی گوگل بک سرچ! :) :) :)
    ویسے یہ فیچر اپنی لائبریری کی پریزینٹیشن لئیر میں شامل کی جا سکتی ہے لیکن ذخیرے میں تو سبھی کچھ ہونا چاہئے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,464
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایسی کتابوں کے بارے میں میرا خیال ہے کہ آخر کا متن کچھ کم کر دیا جائے۔ میں اصل متن کی بات کر رہا ہوں۔ یوں تو دیوان غالب بھی کاپی رائٹ سے آزاد نہیں رہتا اگر اس میں شمس الرحمٰن فاروقی کا پیش لفظ ہو۔ ایسی صورت میں اس کے بغیر ہی متن فراہم کیا جانا چاہئے۔ ویسے ہمارے اراکین، شگفتہ کے مشورے کے مطابق ہی، ایک ایک لفظ ٹائپ کرتے ہیں۔ بشمول اصل پبلشر کے نام کے۔ میں یہ کئی بار کہہ چکا ہوں کہ اب اصل پبلشر ہم ہیں۔ اسی طرح میں اس سے بھی متفق نہیں کہ املا بھی وہی رکھی جائے جیسی اصل کتاب میں ہے۔ بلکہ کبھی کبھی لگتا ہے کہ املا بدل کر بھی ہم کاپی رائٹ کا مسئلہ حل کر سکتے ہیں!!۔ جان بوجھ کر غلطی کر دی جائے، کہ ثبوت ہو کہ یہ اصل متن نہیں ہے، اصل متن میں مثال کے طور پر م ن ح ص ر لکھا ہے، تو ہم م ن ح ض ر کی اجازت دے دیں!! کلیات کے بارے میں یہ کرتا ہوں کہ مختلف ناموں سے دو تین مجموعے شائع کر دئے جائیں۔کہ کلام پر شاعر کا کاپی رائٹ اکثر نہیں ہوتا، پبلشر کا ہوتا ہے جس کا اطلاق اسی صورت میں ہونا چاہئے جب مکمل متن، بشمول مقدمہ وغیرہ شامل کیا جائے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر