1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

سرحد کے اُس پار

سید عمران نے 'اراکین کے سفرنامے' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 11, 2019

  1. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    باہر بازار تھا۔ دوکانیں تھیں۔ خریداروں کی چہل پہل تھی۔ عصر کا وقت ہورہا تھا۔ تاج محل کے سحر سے نکلے تو اچانک شدید بھوک کا احساس ہونے لگا۔ ایک ریسٹورنٹ میں داخل ہوئے۔ مینو کارڈ دیکھا جو کھانوں کو دو واضح انداز میں تقسیم کررہا تھا۔نارتھ انڈین فوڈز اور ساؤتھ انڈین فوڈز۔ ہم نے چچا کی طرف دیکھا:
    ’’ساؤتھ انڈین فوڈز کیسے ہوتے ہیں؟‘‘
    ’’ذرا بھی اچھے نہیں ہوتے۔ اُدھر دیکھو وہ ساؤتھ انڈینز دال چاول کو مکس کرکے کیسے لڈو بنا کے کھا رہے ہیں۔‘‘
    ہم نے اُدھر دیکھا تو پھر دوبارہ نہ دیکھا گیا۔ نارتھ انڈین فوڈز منگوائے۔ دال چاول۔ مگر لڈو بنا کر نہ کھائے۔ہمارے ذہن میں ساؤتھ انڈینز اور ساؤتھ انڈین فوڈز کا نہایت برا تاثر بیٹھ چکا تھا۔ اس واقعہ کے بہت عرصہ بعد ہم نے مکہ مکرمہ میں جنت المعلیٰ کے قریب ایک چھوٹے سے ہوٹل سے ناشتہ کیا۔ پراٹھے اور آملیٹ مگر دونوں اتنے لذیذ جس کی حد نہیں۔ پھر اسی ہوٹل کے کھانے کھائے وہ بھی نہایت لذیذ پائے۔ معلوم ہوا کہ ہوٹل کا مالک ساؤتھ انڈین کے علاقہ کیرالہ سے تعلق رکھتا ہے۔ ساؤتھ انڈینز کے بارے میں کسی حد تک ہمارا برا تاثر زائل ہوگیا۔ اس کے بھی کافی عرصہ بعد ہمارے ایک آفس میں دو ساؤتھ انڈینز تھے، ایک گجرات کے، ایک مدراس کے۔ انہوں نے جو ساؤتھ انڈین فوڈز مثلاً دال واڑا، اِڈلی چٹنی، مسالہ ڈوسا، چاول کے ساتھ تلا ہوا گوشت ، کھٹی دال اور نہ جانے کیا کچھ کھلایا جو اتنا مزے دار تھا کہ آدمی اپنی انگلیاں چاٹتا رہ جائے۔ اس کے ساتھ ہی ساؤتھ انڈینز اور ساؤتھ انڈین فوڈز کے بارے میں ہمارے رہے سہے تمام برے تاثرات زائل ہوگئے اور اچھے تاثرات قائم ہوگئے!!!
     
    آخری تدوین: ‏اگست 1, 2019
    • زبردست زبردست × 5
  2. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    اِڈلی چٹنی!!!
    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  3. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    مسالہ ڈوسا!!!
    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  4. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    تلا ہوا گوشت!!!
    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  5. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    دال واڑا!!!

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  6. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    کھانا کھا کر ریسٹورینٹ سے باہر آئے تو سوچا دوسری دوکانوں پر بھی نظر کرم فرمالیں مبادا پھر یہ وقت آئے نہ آئے۔ چناں چہ مختلف دکانوں میں قدم رنجہ فرماتے رہے۔ ایک دوکان کی قسمت جاگی اور اس پر کرم و عنایات کی برسات کردی۔ سووینئر کے طور پر ایک شو پیس لیا۔ شیشے کا باکس جس میں تاج محل بنا تھا اور اس کے چاروں طرف چھوٹے چھوٹے رنگین بلب لگے تھے، اور انڈیا کے مختلف علاقوں کی تصویروں پر مشتمل پوسٹ کارڈز ۔ مٹر گشتی کرتے کرتے مغرب کا وقت قریب ہوا تو گائیڈ نے روانگی کا اعلان کردیا۔
    اگلی منزل متھرا کا مندر تھی۔ یہاں پہنچے تو مغرب کا وقت ہوچکا تھا۔ سب لوگ بس سے اترے۔ ہم بھی اتر آئے۔ مندر تو ہم دیوبند میں دیوی کن کا دیکھ چکے تھے مگر متھرا کا مندر اس کے مقابلے میں بہت بڑا تھا۔ باہر سے دیکھا تو یہاں موجود بت بھی قد و قامت کے لحاظ سے بڑے نظر آرہے تھے۔ہمارے گروپ کے ہندو سیاح اندر جانے لگے۔ آنٹی کو بھی شوق اُٹھا۔ مگر دروازے پر موجود پروہت نے برقع دیکھ کر روک دیا:
    ’’مُسلے اندر نہیں جاسکتے۔‘‘
    آنٹی واپس پلٹ آئیں۔ ہم مندر کے عین سامنے بنی جامع مسجد میں چلے گئے۔ مندر اور مسجد ساتھ ساتھ۔ مگر مسجد میں اذان دینے پر پابندی تھی۔ بابری مسجد کا سانحہ ہوچکا تھا۔ وہاں موجود نمازی کافی ڈرے سہمے اور فکر مند نظر آئے، کہیں بابری مسجد کے بعد ان کی مسجد کا نمبر نہ آجائے۔ ہم مغرب پڑھ کر مسجد کی چھت پر کھڑے متھرا شہر کا نظارہ کررہے تھے۔ تبھی وہاں کا ایک نمازی ہمارے ساتھ آکھڑا ہوا۔ ہم نے باتوں کے دوران اس سے کچھ پوچھنا چاہا تو بولا:
    ’’آپ باہر سے آئے ہیں؟‘‘
    ’’جی بہت زیادہ باہر سے، کراچی سے۔‘‘ ہمیں اس بے چارے سے کچھ خوف محسوس نہ ہوا۔ پہلی بار دشمن ملک کی سرزمین پر دھڑلّے سے دشمن ملک کا نام لیا۔
    ’’یعنی پاکستان سے؟‘‘ اس کے لہجے میں کچھ جوش، کچھ بے یقینی تھی۔
    ’’جی۔‘‘
    اس پر وہ دل کی بھڑاس نکالنے لگا۔ سمجھ گیا تھا کہ یہ تو خود باہر سے آیا ہے، پھر اپنا مسلمان بھائی ہے، اس سے کیا خطرہ۔ کہنے لگا:
    ’’جس طرح بابری مسجد کو رام کی جنم بھومی کہہ کر نشانہ بنایا گیا تھا اسی طرح اس مسجد کو کرشنا کی جنم بھومی کہہ کر نشانہ پر رکھا گیا ہے۔ وہ سامنے جو مندر آپ دیکھ رہے ہیں یہ عارضی طور کرشنا کی جنم بھومی کی یادگار کے طور پر بنایا گیا ہے۔ مگر ان کی نظریں مسجد پر ہیں کہ جیسے ہی موقع ملے مسجد کو ڈھا کر مندر بنا دیں۔ پھر کئی اور مسجدیں بھی ان کی نظروں میں ہیں۔ وہ ایک ایک کرکے مسجدوں کے نام گنوانے لگا۔ ‘‘
    اس کی باتیں سن کر ہم اداس ہوگئے۔ ہمیں اداس دیکھ کر ماحول خوشگوار بنانے کے لیے بولا:
    ’’متھرا کے پیڑے بہت مشہور ہیں، آپ نے لیے؟‘‘ ہم نے انکار میں سر ہلادیا۔ اس نے دوکان کا نام لیا کہ اگر پیڑے لینے ہوں تو وہاں سے لیجیے گا۔ ہم نے اقرا ر میں سر ہلادیا۔ اسے کیا بتاتے کہ ہم پردیسی تو آپ کی بس کے آگے بے بس ہیں، جہاں وہ لے جائے چلے جائیں گے۔ کچھ دیر بعد اس سے ہاتھ ملا کر نیچے آگئے۔
    باہر گائیڈ سب کو جمع کررہا تھا۔ سب بس میں سوار ہوئے اور بس آگے بڑھ گئی۔سب کچھ پیچھے رہ گیا۔آگرہ کا قلعہ، تاج محل، متھرا کی جامع مسجد اور وہاں کے سہمے ہوئے مجبور اور بے دست و پا مسلمان!!!
     
    آخری تدوین: ‏اگست 3, 2019
    • زبردست زبردست × 2
    • غمناک غمناک × 2
  7. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    مسجد اور مندر آمنے سامنے!!!

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    اورنگزیب عالمگیر کے زمانے میں بننے والی مغلیہ طرز تعمیر کی جھلک لیے متھرا کی جامع مسجد۔۔۔
    مگر تاج محل کی طرح اس پر جمی زمانہ کی گرد صاف کرنے والا کوئی نہیں!!!

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
    • غمناک غمناک × 1
  9. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    ہم دیوبند پہنچ گئے۔زندگی کا ایک بڑا ارمان پورا ہوگیا۔بھارت یاترا کا مقصد پورا ہوگیا۔کافی کچھ دیکھ لیا، کافی کچھ رہ گیا۔ کشمیر کی وادیاں، دارجلنگ کی صبح، لکھنؤ کی نزاکتیں، علی گڑھ کی یونیورسٹی اور جے پور کا گلابی چہرہ.
    مگر۔۔۔
    ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
    بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

    سارے نہ سہی کئی مقاصد تو پورے ہوگئے تھے۔ وہ جگہ دیکھی جہاں والدین کا بچپن گزرا۔ جہاں سے کئی رشتے دار پاکستان آتے اور وہاں کے قصے سناتے۔ دلّی دیکھی جو اِک عالم کا انتخاب تھی۔ تاج محل دیکھا جو اِک عالم کا خواب تھا۔
    اب ان سب کو خواب و خیال بن جانا تھا!!!

    دیوبند میں روز و شب اکتاہٹ بھرے گزرنے لگے۔۔۔
    وہی اکتاہٹ جس سے جان چھڑا کر یہاں آئے تھے پھر ہمارے پاس آگئی۔۔۔
    اب گھر کی یاد آنے لگی۔ دیارِ غیر میں بیس بائیس دن ہوچکے تھے۔ اتنا عرصہ کبھی گھر سے دور نہیں رہے۔ ابا کا بھی فون آگیا کہ کافی سیر سپاٹے ہوگئے اب بدھو کو چاہیے کہ لوٹ کے گھر کو آئے۔ اماں الگ فکر مند تھیں۔ ایک دن جی کڑا کرکے ناشتہ پر دھماکہ کر دیا:
    ’’اب ہمیں واپس جانا ہے۔‘‘
    ’’کیوں؟ یہاں کیا پریشانی ہے؟‘‘ چچا نے حیرانی سے پوچھا۔ باقی سب کے ہاتھ بھی ناشتہ سے رُک گئے۔ اُداس ہوگئے۔ اُداس تو ہم بھی تھے لیکن پردیسی کو پرائے دیس سے کیا مطلب۔ ایک نہ ایک دن تو جانا ٹھہرا۔
    ’’پریشانی کچھ نہیں ہے۔ لیکن واپس تو جانا ہے، آج نہیں تو کل۔ ‘‘
    ’’کون سا روز روز آنا ہوتا ہے۔ اب آئے ہو تو دو مہینے پورے کرکے جاؤ۔‘‘ چچا نے سمجھایا۔
    اب انہیں کیا سمجھاتے دل کی باتیں۔ سر جھکا کر، نظریں چرا کر یہی کہا:
    ’’گھر یاد آرہا ہے۔ ابھی واپس جانے دیں اگلے سال پھر آجائیں گے۔‘‘ چچا نے بے یقینی سے دیکھا مگر کچھ سوچ کر خاموش ہوگئے۔
    ’’دوبارہ آنا اتنا آسان نہیں۔‘‘ دادی آہستگی سے بولیں۔ مگر ہم نے سن لیا۔ دل بجھ گیا۔ لیکن گھر والوں پر مزید بوجھ بننا بھی گوارا نہ کیا۔
    ’’کم از کم میرے ساتھ ہی واپس چلنا۔‘‘ آنٹی نے سمجھایا۔
    ’’آپ ابھی ایک مہینہ اور ٹھہریں گی۔یہ بہت زیادہ ہوجائے گا۔ کہا تو ہے دوبارہ آجائیں گے۔‘‘ ہم نے آنٹی کی پیشکش کو نرمی سے منع کردیا۔ ایک ماہ ٹھہرنا تو کسی طور سمجھ میں نہیں آیا۔ یہ خود تو گھر گھر رشتہ داروں میں گھومتی پھریں گی، مگر ہم کیا کریں گے۔
    ’’ چلو جیسے اس کی مرضی۔ شام کو واپس آکر سوچتا ہوں۔‘‘ چچا کے لہجہ میں زمانہ بھر کی تھکن اُتر آئی۔ نجانے ہمارا دل اتنا سخت کیوں ہوگیا تھا، کسی کی اداسی کا احساس نہیں کررہا تھا۔
    شام کو چچا واپس آئے تو پوچھا:
    ‘‘کیا پروگرام ہے؟‘‘
    ’’وہی صبح والا۔‘‘ ہم نے جی کڑا کرکے کہا۔ چچا کچھ نہ بولے۔ عجیب نظروں سے دیکھتے رہے۔
    ’’کب جانا ہے؟‘‘
    ’’صبح۔‘‘ چچا کی نظریں مزید عجیب ہوگئیں۔
    اس رات سارے گھر کی گہما گہمی کو اداسی کی دیمک چاٹ گئی۔ کام تو سب ہورہے تھے مگر سلو موشن میں۔ ہم سب سے نظریں چرائے چور بنے اپنا سامان پیک کرنے لگے۔ سامان زیادہ ہوگیا تھا۔ کچھ ہماری شاپنگ، کچھ دوسرے کے لیے تحائف۔ ایک بیگ کا اور اضافہ کرنا پڑا۔
    رات کھانے کا دسترخوان لگا۔ سب بیٹھ گئے۔ مگر چپ چاپ کھا رہے تھے۔ کسی کے پاس کہنے کو کچھ نہ تھا۔ معین کی آنکھوں چمک رہی تھیں نہ شائستہ ہنس ہنس کے دہری ہورہی تھی۔ شگفتہ بھی شام کو نک سک سا تیار نہیں ہوئی تھی اور بابر جو ہمیشہ ہمارے ساتھ بیٹھ کر کھاتا تھا آج چچی کے پاس بیٹھا تھا۔ شاید ابھی سے جدائی کی تیاری کررہا تھا۔
    نہ چچا نے کچھ کہا، نہ آنٹی نے کسی بات پر دانت پیس کے ہمارا بازو نوچا۔ صبا کی باتوں کی پھلجھڑیاں بھی نہیں چھوٹ رہی تھیں۔ آج رات ہم وہ مہمانِ خصوصی بن چکے تھے جس کا صرف احترام کیا جاتا ہے۔ اس سے بے تکلی نہیں برتی جاتی، کہیں کوئی بات ناگوار نہ گزر جائے۔
    رات کو سوتے وقت کزنز ہمارے ارد گرد آکر بیٹھ گئے۔ سب خاموش تھے۔ کہنے کو کسی کے پاس کچھ نہیں تھا، مگر اٹھ کر جانے کو بھی من نہیں تھا۔ اسی عالم میں کافی دیر گزر گئی تب چچی آئیں:
    ’’اٹھو سب یہاں سے۔ بھائی کو سونے دو صبح لمبا سفر کرنا ہے۔‘‘ آج کے دن چچی کی پہلی اور آخری آواز سنائی دی۔ بولتی پہلے بھی زیادہ نہیں تھیں مگر آج تو بالکل ہی چپ لگا لی تھی۔ دادی بھی آج کسی کے گھر نہیں گئیں۔ سارا وقت رہ رہ کے ہمارے آس پاس پھرتی رہیں۔
    کزنز کے جانے کے بعد بھی ہم کافی دیر جاگتے رہے۔ پھر نجانے کس وقت نندیا پور سے پریاں آکر آنکھوں میں نندیا سمو گئیں!!!

    صبح ناشتے کے بعد ہم نے تیار ہو کر سامان ایک جگہ اکٹھا کیا اور سب سے ملنے لگے۔ آج کوئی اسکول کالج نہیں گیا تھا۔ سب اُسی طرح اُسی برآمدے میں کھڑے تھے جہاں آتے وقت ہمارے استقبال میں ہار پھول لیے کھڑے تھے۔ آج کسی کے ہاتھ میں ہار نہیں تھا، سب سرحدوں کے فاصلوں سے ہار رہے تھے۔ ان سرحدوں سے جس کے اُس پار جاکر کوئی واپس نہیں آتا۔ جہاں سے واپسی انتہائی مشکل ہے!!!

    ہم جھک کر دادی سے ملے تو انہوں نے گلے لگالیا۔ چچی سے سر پہ ہاتھ پھروایا، آنٹی سے ہاتھ ملایا۔ معین کے گلے لگے اور باقی سب کو خدا حافظ کہہ کر سامان اٹھایا۔ آتے وقت گھر میں گہما گہمی تھی، خوشیوں بھری چہکاریں تھیں اور اونچی اونچی آوازیں تھیں۔ آج بالکل خاموشی، اداسی اور سناٹا تھا۔ کوئی کچھ نہیں بولا، کسی نے کچھ نہیں کہا۔ اسی گھمبیر خاموشی میں راستہ طے کرتے ہم دروازے تک آگئے۔ پردہ اٹھایا اور پلٹ کر آخری بار نظر بھر محبتوں کے خمیر سے گندھے ان لوگوں کو دیکھا جن کو دیکھنا شاید دوبارہ نصیب نہ ہو!!!

    ہم سمجھے سب ہمیں جاتے ہوئے دیکھ رہے ہوں گے، ہم پلٹ کر دیکھیں گے تو ہمیں دیکھ کر ہاتھ ہلائیں گے۔ مگر یہ کیا؟ سب اپنے آپ میں مگن تھے، کوئی ہمیں نہیں دیکھ رہا تھا۔ دادی سر پر ہاتھ رکھے سر جھکائے بیٹھی تھیں۔ معین کی بڑی بڑی چمک دار آنکھیں پانی بھرنے سے گدلی ہورہی تھیں، موٹے موٹے آنسوؤں کی قطار رخسار پہ بہہ رہی تھی۔ شائستہ چچی سے لپٹی ہچکیاں لے رہی تھی ۔ چچی دوپٹہ سے آنکھیں پونچھ رہی تھیں اور بابر کے صرف کپڑے نظر آئے۔ وہ ستون کے پیچھے چھپا کھڑا تھا۔ نہ جانے کیوں!!!

    ہم پردہ گرا کر فوراً باہر آگئے۔ سب کی پردہ پوشی کر لی۔ کوئی نہ دیکھ سکا کہ ہم نے انہیں اس حال میں دیکھ لیا ہے۔ جہاں سب کی آنکھیں تر تھیں وہاں ایک ہم تھے جس کی آنکھیں خشک تھیں اور دل پتھر کا۔ کیا ہمیں ان سے ایسی محبت نہیں جیسی ان لوگوں کے دلوں میں رچی بسی ہے۔ ہم سارے راستے سوچتے رہے، اپنا محاسبہ کرتے رہے۔

    دلّی اسٹیشن پر ٹرین کی سیٹ پر چچا بھی ہمارے ساتھ بیٹھ گئے۔ جب گاڑی نے روانگی کے لیے سیٹی بجائی تو اٹھے، گلے ملے، مصافحہ کیا اور ایک مسکراہٹ کے ساتھ رخصت ہوکر نیچے اتر گئے۔ چچا مسکرا تو رہے تھے مگر ان کے ہونٹوں کے کنارے لرز رہے تھے۔ آنکھیں بھیگ گئی تھیں تبھی وہ منہ پھیر کر تیزی سے پلٹ گئے، ٹرین سے اُتر گئے۔ ہم لپک کر دروازے تک آئے انہیں جی بھر کر دیکھنے کے لیے۔ مگر وہ ہمیں نہیں دیکھ رہے تھے۔ ہتھیلیوں سے آنکھیں مسل رہے تھے!!!

    ٹرین آگے بڑھ گئی۔ چچا بھیڑ میں گم ہوگئے ہمیشہ ہمیشہ کے لیے۔ ہمیں نہیں معلوم تھا یہ ہماری ان کی آخری ملاقات ہے۔ ہمیں نہیں معلوم تھا کہ اب کے جو بچھڑے تو کبھی خوابوں میں بھی نہ ملیں گے۔
    چچا ہم سے دوبارہ ملے بغیر اس دنیا سے چلے گئے!!!

    ٹرین دلی شہر سے نکلی تو چھم چھم بارش ہونے لگی۔ لگا سارا جہاں رو رہا ہے۔ بس ایک ہم ہیں جس کی آنکھوں کے سوتے خشک ہیں۔ شاید بارش رات بھر ہوتی رہی۔ صبح کے پانچ بجے ہوں گے جب ہم نے کھڑکی کھول کر دیکھا۔ بارش ہلکی پھوار میں تبدیل ہوچکی تھی۔ اکا دکا کے علاوہ سب مسافر سورہے تھے۔ ہمارے چہرے پر پھوار کے ہلکے ہلکے قطرے پڑنے لگے۔ ہم بار بار صاف کرتے اور وہ بار بار چہرہ بھگودیتے۔ تبھی اچانک سرحدوں کی درمیانی باڑ آگئی۔ پھاٹک کھل گئے اور ہم سرحد کے اُس پار داخل ہوگئے۔ اپنے دیس میں۔
    لیکن ہمارا دیس کون سا تھا یہ یا وہ؟؟؟
    ہمارے جسم کے ٹکڑے اِدھر بھی تھے اور اُدھر بھی۔ ہم اپنے آپ کو یہاں تلاشیں یا وہاں۔ اپنوں سے ایسی جدائیاں کیوں ہوئیں کہ بھائی بھائی کو ترس گیا اور ماں اولاد کو۔ اتنی دوریاں کہ ایک دوسرے کو قبروں میں اتارنے کے لیے بھی نہ آسکیں۔ سب جیتے جی اپنی اپنی قبروں میں دفن ہوگئے۔ شاید اب ہم اپنی قبر سے نکل کر ان لوگوں کو دوبارہ نہ دیکھ سکیں۔ کاش ہم ان سے نہ ملے ہوتے۔ آج ہم نے جانا شناسائی کا عذاب سہنا ناقابل برداشت ہوتا ہے۔ یہ شناسائی ہی تھی جو ہم سب کی آنکھوں میں آنسو چھوڑ آئے تھے۔

    ہماری نظروں میں دادی کا جھکا سر، معین کے آنسو کی قطاریں، شائستہ کا سسکنا، چچی کا چپکے چپکے آنسو پونچھنا اور چچا کا آنکھیں مَلنا سب گھوم گیا۔ یہ سارے رشتے ہمارے تھے مگر سب ہمارے ہاتھ سے نکل گئے تھے۔۔۔
    شاید ہمیشہ ہمیشہ کے لیے!!!
    بے بسی کا شدید احساس تھا جو ہماری آنکھوں کے خشک سوتے بھگو گیا۔ برستی آنکھیں باہر برستی بارش کا ساتھ دینے لگیں۔۔۔
    ہم نے بہتے ہوئے آنسو نہ پونچھے۔۔۔
    کون پہچاننے والا تھا کہ آنسو ہیں یا برستی برسات کے قطرے!!!
     
    آخری تدوین: ‏اگست 3, 2019
    • زبردست زبردست × 6
    • غمناک غمناک × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
  11. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    13,933
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    واہ ہمیں یہاں بیٹھے ہندوستان کی سیر کروا دی، کیا خوب منظر نگاری ہے۔ ما شاء اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  12. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    17,775
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    دلگیر۔۔۔ اب جن کے پاس بارش نہیں۔۔۔ وہ کیا کریں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  13. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,783
    جھنڈا:
    Pakistan
    شکریہ نظامی صاحب!!!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر