سخنورانِ محفل کے شعری فن پارے۔۔۔!

متلاشی نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 1, 2013

?

آپ کو یہ دھاگہ کیسا لگا۔۔۔؟

  1. زبردست ہے

    73.2%
  2. مناسب ہے

    26.8%
  3. فضول ہے

    0 آرا
    0.0%
  1. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    یہاں اس فورم کے تمام شعراء کرام سے گذارش ہے کہ وہ اپنے شعری فن پارے(آپ کی وہ شعری کاوش جو آپ کے نزدیک آپ کی سب سے بہترین کاوش ہو یا آپ کی وہ کاوش جسے لوگوں نے بہت زیادہ سراہا ہو) جمع کروائیں۔۔۔! اس طرح اس فورم کے تمام شعراء کرام کی بہترین شاعری کا ایک مجموعہ تیار ہو گا۔۔۔ جسے اگر استاذِگرامی جناب الف عین مناسب سمجھیں تو اپنی ای بک لائبریری میں ایک ای بک کی شکل میں لگا سکتے ہیں۔۔۔!
     
    • زبردست زبردست × 11
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
    • متفق متفق × 1
  2. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    سو سب سے پہلے اپنی سب سے بہترین کاوش(بزعمِ خود) پیش کرنے کی جسارت کر رہا ہوں۔۔۔! آپ کی آراء و تبصرہ جات کا شدت سے انتظار رہے گا۔۔۔!
    دُعا​
    الٰہی مجھ کو تو ذوقِ مسیحائی عطا کر دے​
    جنوں کو تو مرے، مولا شکیبائی عطا کر دے​
    بنوں رہبر دکھاؤں راہ میں گمراہ لوگوں کو​
    مجھے وہ معرفت ، ایماں، وہ مولائی عطاکردے​
    مری بے نام منزل کو نشانِ راہ دے دے تو​
    مجھے تو ذات سے اپنی شناسائی عطا کر دے​
    الٰہی سوچ سے میری ،ہو روشن اک جہانِ نو​
    تخیل کو مرے تو ایسی گہرائی عطا کردے​
    نگہ میری اٹھے جس سمت دنیا ہی بدل جائے​
    مری بے نور آنکھوں کو ،وہ بینائی عطا کر دے​
    معطر روح ہو جس سے ، مسخر قلب ہو جس سے​
    زبان و نطق کو یارب ،وہ گویائی عطا کردے​
    زَمن جس سے منور ہو، چمن جس سے معطر ہو​
    مرے کردار کو مولا، وہ رعنائی عطا کر دے​
    خیالوں کو ملے تصویر اور تعبیر خوابوں کو​
    مرے وجدان کو یارب، وہ دانائی عطا کر دے​
    اگر چہ عجز سے ہوں میں تہی دامن ، کرم سے تُو​
    مرے بے ربط جملوں کو پذیرائی عطا کردے​
    ترے در پر ندامت سے ،جھکی ہے پھر جبیں میری​
    تمنائے حزیں کو اب، تو شنوائی عطا کر دے​
    ترا ہی نام ہو لب پر ، نہ ہو پھر دوسرا کوئی​
    نصرؔ کو اب تو وہ خلوت، وہ تنہائی عطا کردے​
    محمد ذیشان نصر​
    اپریل 2012​
     
    • زبردست زبردست × 14
    • پسندیدہ پسندیدہ × 13
  3. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
  4. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
  5. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
  6. کسی ایک کے بارے میں خود فیصلہ کرنا مشکل ہے۔ میں چار پانچ غزلیں چن رہا ہوں۔ ان میں سے آپ حضرات جسے چاہیں، رکھ لیں۔ باقی ڈیلیٹ کر دیں!!

    اس زمین میں غالب کی بھی ایک غزل ہے (زمین عام سی ہے)۔ غالب کی غزل کے مطلع کا مصرعہ اولیٰ ہے: "ز بسکہ مشقِ تماشا جنوں علامت ہے"۔
    میری جسارت ہی سمجھیے:
    نظر بہ مہر و وفا از سرِ ندامت ہے​
    وگرنہ ذوقِ ستم گستری سلامت ہے​

    نگار خانۂ وہم و گماں کا ہر پیکر​
    غزال چشم و گل اندام و سرو قامت ہے​

    درازئِ شبِ ہجراں بہ چشمِ غیض نہ دیکھ​
    کہ دل مقابلِ دعوائ استقامت ہے​

    مکینِ کوچۂ جاناں ہوا ہے طالبِ خلد​
    مقامِ سرزنش و مَوردِ ملامت ہے​

    اگرچہ راندۂ درگاہ ہوں مگر پھر بھی​
    خدا کا شکر ہے کاسہ ابھی سلامت ہے​

    کیا ہے خونِ تمّنا یہ سوچ کر کاملؔ​
    غمِ شکستِ تمنّا بھی اک قیا مت ہے​
    -------------​

    غالب ہی کی ایک اور غزل "شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا" کی زمیں میں میری ایک اور جسارت:​

    گرچہ گلشن میں کھلا ہرسو گلابِ تازہ تھا​
    حیف زندانِ الم کا بند ہر دروازہ تھا​

    کیا بتاؤں خستگی ہمدم تنِ رنجور کی​
    مشربِ خونِ جگر ہر بار زخمِ تازہ تھا​

    تیری آمد پر کیا ہے منعِ خوش رویانِ شہر​
    یہ دلِ حسن آشنا پہلے تو بے دروازہ تھا​

    کون ہے مشّاطہءِ فطرت بہ ہنگامِ غروب​
    ابرِ آتش رنگ روئے آسماں کا غازہ تھا​

    جس گھڑی آیا بہ دستِ کاملِؔ رنگیں نوا​
    زورِ رفتارِ قلم از بسکہ بے اندازہ تھا​
    ------------​

    ایضاً لہُ

    کیا چین سے بیٹھوں کہ سکوں دل کو نہیں ہے​
    آنکھوں سے تری فتنۂ محشر بہ کمیں ہے​

    یہ دل کہ ہے گُلچینِ سمن زارِ تمّنا​
    خارِ المِ ہجر سے آگاہ نہیں ہے​

    اے محوِ تغافل اثرِ خونِ جگر دیکھ​
    جو اشک بہا سو ترے خاتم کا نگیں ہے​

    آغازو سر انجامِ وفا محملِ لیلیٰ​
    منزل گہِ مجنوں نہ فلک ہے نہ زمیں ہے​

    وہ کیوں کرے اصنامِ خود آرا کی پرستش​
    جوخاکِ درِ یار سے آلودہ جبیں ہے​

    کاملؔ بہ خیالِ رخِ زیبائے دل آرا​
    صحرا بھی مجھے غیرتِ فردوسِ بریں ہے​
    ------​

    باقی کی غزلیں (غالباً!) میری اپنی زمینوں میں ہیں۔​

    پاتے نہیں چراغِ تمنّا سے سود ہم​
    لیتا ہے نور غیر سمیٹے ہیں دود ہم​

    عاجز ہوئے بہ ساحتِ کون و مکاں، دریغ!​
    گو چاہتے تھے کشفِ رموزِ وجود ہم​

    دے کر ادھار ہجر کو سرمایۂِ حیات​
    پاتے رہے بہ رنگِ غم و درد سود ہم​

    خوش تھے بہت عدم میں،جہانِ خراب میں​
    لائے گئے بہ سازشِ چرخِ کبود ہم​

    نیرنگِ آرزو کو بعنوانِ بندگی​
    ڈھالا کیے بہ شکلِ قیام و سجود ہم​

    کاملؔ چلو لباسِ جنوں زیبِ تن کریں​
    کب تک رہیں گے وقفِ غمِ ہست و بود ہم​
    ----------​

    ایضاً لہُ

    منفعل ہو کے برسنے کو نہ ٹھہرے بادل​
    دیکھ لے گر تری زُلفوں کے سنہرے بادل​

    گھیر لیتے ہیں مجھے آ کے سرِشامِ فراق​
    چار جانب سے تری یاد کے گہرے بادل​

    خوشبوئیں آتی ہیں مٹی سے، جو تم شہر میں ہو​
    آسمانوں پہ دیا کرتے ہیں پہرے بادل​

    دیکھ کر شام میں سورج کی بکھرتی کرنیں​
    یاد آئے تری زلفوں کے سنہرے بادل​

    ایک لمحے کو جھکائیں جو نگاہیں اس نے​
    گردشِ چرخِ کہن رک گئی، ٹھہرے بادل​

    گیسوی وچہرۂ جاناں کی وہ چھب ہے کامل ؔ​
    گردِ مَہ جیسے اُمنڈ آ ئیں سنہرے بادل​
    --------​
     
    • زبردست زبردست × 20
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  7. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    واہ واہ
    دونوں دوستوں ہی کی غزلیں خوب ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    زبردست دھاگہ اور زبردست غزلیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
  9. مزمل شیخ بسمل

    مزمل شیخ بسمل محفلین

    مراسلے:
    3,523
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    جناب خدائے سخن۔ آپ بھی کچھ ارشاد فرما دیں حضور۔ ہم ہمہ تن (خر) گوش ہیں۔ :D
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    اور خدائے عروض سے بھی یہی التجا ہے ۔۔۔! :p
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  11. مزمل شیخ بسمل

    مزمل شیخ بسمل محفلین

    مراسلے:
    3,523
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    جی جی. میِں ٹیگ کئے دیتا ہوں.
    محمد وارث
    محمد یعقوب آسی
    :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  12. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    ارے یہ خطاب آنجناب کو دیا تھا ہم نے ۔۔۔۔! آپ اس کو آگے ٹرانسفر کر رہے ہیں۔۔۔۔!
     
  13. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,791
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بھئی یہ تو اپنے منہ میاں مٹھو بننے والی سی بات ہے، لیکن خیر پھر بھی آپ یاد کر رہے ہیں تو حاضر ہوں گو جانتا ہوں کہ پاس کچھ بھی نہیں :)

    غزل

    تازہ ہوا کا جھونکا بنایا گیا مجھے
    دنیائے بے نمو میں پھرایا گیا مجھے

    میں آنکھ سے گرا تو زمیں کے صدف میں تھا
    بہرِ جمالِ عرش اُٹھایا گیا مجھے

    سازش میں کون کون تھا، مجھ کو نہیں ہے علم
    مصحف میں اک ہی نام بتایا گیا مجھے

    بخشی گئی بہشت مجھے کس حساب میں
    دوزخ میں کس بنا پہ جلایا گیا مجھے

    چیخا کبھی جو دہر کے ظلم و ستم پہ میں
    قسمت کی لوری دے کے سلایا گیا مجھے

    تسخیرِ کائنات کا تھا مرحلہ اسد
    یونہی نہیں یہ علم سکھایا گیا مجھے
    ----------

    آرزوئے بہار لاحاصل
    عشقِ ناپائدار لاحاصل

    قیدِ فطرت میں تُو ہے پروانے
    تیرا ہونا نثار لاحاصل

    ہے شفاعت اگر بُروں کے لیے
    نیکیوں کا شمار لاحاصل

    دلِ دنیا ہے سنگِ مرمر کا
    لاکھ کر لو پکار لاحاصل

    شعر و گُل میں ڈھلے اسد لمحے
    کب رہا انتظار لاحاصل
    ------

    بلا کشانِ محبت کی رسم جاری ہے
    وہی اٹھانا ہے پتھر جو سب سے بھاری ہے

    نگاہِ شوق نہیں، آہِ صبح و شام نہیں
    عجب فسردہ دلی حیف مجھ پہ طاری ہے

    نگہ میں آبِ رُخِ یار، ہاتھ میں تیشہ
    زمیں کی مانگ اِسی جہد نے سنواری ہے

    اسے بھی جھیل ہی جائے گی فطرتِ عشّاق
    یہ مانا اب کے لگا ہے جو زخم، کاری ہے

    یہی متاع ہے میری، یہی میرا حاصل
    نہالِ غم کی لہو سے کی آبیاری ہے
    ------

    اس جہاں میں ایسی کوئی بات ہو
    جیت ہو اور نے کسی کی مات ہو

    اس طرح پینے کو مے کب ملتی ہے
    ناب ہو، تُو ساتھ ہو، برسات ہو

    زخم دل کے چین سے رہنے نہ دیں
    روزِ روشن ہو کہ کالی رات ہو

    بس ہوس کے ہیں یہ سارے سلسلے
    بابری مسجد ہو یا "سُمنات" ہو

    برملا گوئی کا حاصل ہے اسد
    اپنوں کی نظروں میں بھی کم ذات ہو
    --------

    رباعی

    بکھرے ہوئے پھولوں کی کہانی سُن لے
    ہے چار دنوں کی زندگانی سن لے
    پیری میں تو ہوتے ہیں سبھی وقفِ عشق
    کرتا ہے خراب کیوں جوانی سن لے

    شکوہ بھی لبوں پر نہیں آتا ہمدم
    آنکھیں بھی رہتی ہیں اکثر بے نم
    مردم کُش یوں ہوا زمانے کا چلن
    اب دل بھی دھڑکتا ہے شاید کم کم
     
    • زبردست زبردست × 23
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    زبردست جناب کاشف عمران صاحب۔۔۔ زبردست۔۔۔! ساری غزلیں ایک سے بڑھ کر ایک ہیں۔۔۔۔!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    مکرمی ومحترمی جناب محمد وارث صاحب ۔۔۔ آپ کا بہت بہت شکر گذار ہوں کہ آپ نے میری گذارش کو شرفِ قبولیت بخشے ہوئے مجھے اتنے خوبصورت کلام سے نوازا۔۔۔۔!
    بہت ہی زبردست کلام ہے ۔۔۔ اگرچہ ساری غزلیں ہی ایک سے بڑھ کر ایک ہیں ۔۔۔ مگر مجھے سب سے زیادہ پہلی غزل پسند آئی۔۔۔!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 1
  16. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. متلاشی

    متلاشی محفلین

    مراسلے:
    2,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    نہیں محمود بھیا۔۔۔! کسرِ نفسی کا اظہار مت فرمائیں۔۔۔! آپ کے تو دستخط میں بھی دو دو شعر لکھے ہوئے ہیں۔۔۔ اور کہہ رہے ہیں کہ میں شاعر کہاں ؟ ;)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  18. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,391
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کیا کہنے
    لطف آ گیا
    محفل کے تمام شعراء کا نمایندہ کلام یہاں جمع ہو گیا
    بہت مفید دھاگہ لگایا آپ نے
    شاد و آباد رہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  19. محمد یعقوب آسی

    محمد یعقوب آسی محفلین

    مراسلے:
    6,818
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ع: خداوندا، خدائی دردِ سر ہے

    ہم فقیروں کو یوں رُسوا نہ کرو صاحبو! ہم فرش نشینوں کو خدائی سے کیا سروکار؟ کوئی کج کلاہ ہوتا تو اس کی گردن کچھ اور ٹیڑھی ہو جاتی۔

    مزمل شیخ بسمل صاحب! ایک تو یہ فقیر ہے اور وہ علم و ادب کے وارث خود کو ’’خاکسار‘‘ کہتے ہیں۔ ایک فقیر ایک خاکسار کا احترام نہیں کرے گا تو کون کرے گا، بھلا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 2
  20. محمد یعقوب آسی

    محمد یعقوب آسی محفلین

    مراسلے:
    6,818
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    رہی بات شاعری کی، اور پھر اس پر شرط ’’بہترین‘‘ کی بھی۔ بہت مشکل ہے، بہت ہی مشکل ہے!

    میری ساری شاعری (اردو : نظم اور غزل، پنجابی : نظم اور غزل) پہلے ہی محفل کے سارے احباب دیکھ چکے! ایک شعر ہے جو وہاں شامل نہیں ہے، سو عرض کئے دیتا ہوں:
    عقلِ کم کوش کو موت کی گود میں جا کے نیند آ گئی​
    عشق منہ زور تھا برزخوں کے سفر پر رہا حشر تک​

    کوئی قافیہ سوجھ بھی گیا تو ردیف کہاں چلنے دے گی۔

    جنابِ محمد وارث
     
    • زبردست زبردست × 9
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4

اس صفحے کی تشہیر