ردیف الف ۔ غزلیں 31 تا 45

تفسیر نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 4, 2008

  1. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088


    صفحہ اوّل

    فہرست غزلیات ردیف الف
    ردیف الف ۔ غزلیں 31 تا 45

    031 ۔ جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا
    032 ۔ میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں
    033 ۔ گھر ہمارا جو نہ روتے بھی تو ویراں ہوتا
    034 ۔ نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
    035 ۔ یک ذرۂ زمیں نہیں بے کار باغ کا
    036 ۔ وہ میری چینِ جبیں سے غمِ پنہاں سمجھا
    037 ۔ پھر مجھے دیدۂ تر یاد آیا
    038 ۔ ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا
    039 ۔ لب خشک در تشنگی، مردگاں کا
    040 ۔ تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا
    041 ۔ شب کہ وہ مجلس فروزِ خلوتِ ناموس تھا
    042 ۔ آئینہ دیکھ، اپنا سا منہ لے کے رہ گئے
    043 ۔ ضعفِ جنوں کو وقتِ تپش در بھی دور تھا
    044 ۔ فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں
    045 ۔ عرضِ نیازِ عشق کے قابل نہیں رہا

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088

    [​IMG]

    ۔ 031 ۔

    جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا
    تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا

    اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخئ ناز
    جوہرِ آئینہ کو طوطئ بسمل باندھا

    یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا
    عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا

    نہ بندھے تِشنگئ ذوق کے مضموں، غالب
    گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا



    [​IMG]

     
  3. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088



    001 - 031
    جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا
    تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا
    [hr]
    فرہنگ

    تقریب
    مقصد، شادی بیاہ یا اور کوئی رسم

    محمل باندھا
    اونٹ پر کجاوہ (‌اونٹ کی کاٹھی۔ جس پر دو شخص ایک دوسرے کے مقابل بیٹھتے ہیں) رکھ کر سفر کے لیے تیار کرنا

    تپیش
    گرمی، حرارت، تپاک، گرم جوشی، شوخی، تیزی، غصہ، الفت


    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ جب سفر پرجانے کے لیے محبوب نے اونٹ پر کجاوہ رکھا۔
    مصرع نمبر 2۔ تو تپش عشق نے کچھ ایسا جوش مارا کہ راہ کا ذرہ ذرہ دل بن گیا


    تبصرہ

    جب محبوب اپنا جلوہ دیکھانے کے لیے باہر آئی توچاہنے والوں کی گرمیِ شوق نے ہرذرے ذرے کو دلِ بےتاب بنادیا


    شاعری کےاصطلاحات

    تشبیہہ

    شاعری میں دل کو ایک کلی یا پھول سے تشبیہہ دی جاتی ہے ۔

    تشبیہہ کے لغوی معنی مانند کردن یعنی دو چیزوں کو ایک جیسا بنانا۔ “مشابہت دینا“ ۔ علمِ بیان کی رو سے جب کسی ایک چیز کو کسی مشترک خصوصیت کی بنا پر کسی دوسری شیز کی مانند قرار دیا جائے تو اُسے “تشبیہہ“ کہتے ہیں۔ تشبیہہ س غرض اس پہلی چیز کی کسی صفت ، حالت یا کیفیت کو واضح اور موثر بنا کر پیش کرنا ہوتا ہے اس سے فصاحت و بلاغت پیدا ہوتی ہے۔

    ذرے کو دلِ بے تاب سےتشبیہ دی ہے۔

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    [align=center]
    02 - 031
    اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخئ ناز
    جوہرِ آئینہ کو طوطئ بسمل باندھا
    [/align]
    [hr]
    فرہنگ

    اہل بینش
    دیداور، اہل نظر، تماشائی

    حیرت کدہ
    مراد آئینہ

    طوطئ
    ہرے رنگ کا پرندہ جو آئنیہ میں اپنا رنگ دیکھ کر بولتا ہے

    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ اہلِ نظر نے آئینہ میں شوخی و ناز کو دیکھ کر
    مصرع نمبر 2۔ آئینہ میں طوطئ کو تڑپتا سمجھا۔

    تبصرہ

    آئینہ میں نازو ادا کی جو شوخیاں ہورہی تھیں انہوں نے اس منظر کو حیرت کدہ بنادیا اور تماشائیوں نے دیکھا کہ جوہر آئینہ بھی اس حیرت کدہ میں بے تاب ہو کر طوطئِ بسمل کی طرح تڑپ رہا ہے۔


    شاعری کے اصطلاحات

    غالب کے زمانے میں آئینہ فولاد کےہوتے تھے۔ اور ان کو اتنا چمکایا جاتا تھا کےاُن میں اپنی تصویر دیکھ جاسکتی تھی۔
    آئینہ سے مراد فولادی آئینہ ہے۔ فولادی آئینہ کا جوہر سبز ہوتا ہے۔ سبز رنگ کے لحاظ سے جوہر آئینہ کو طوطی کہا۔ اور آئنیہ دیکھنے کے حسن سے بے تاب ہوجانے کے سبب طوطی کو طوطی بسمل قرار دیا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    [align=center]
    03 - 031
    یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا
    عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا
    [/align][line]
    فرہنگ

    یاس
    ناا میدی، نراش، مایوسی

    عرَبدہ
    جنگ ، بدخوئی، لڑائی جھگڑا

    عجز
    منت، سماجت، خوشامد، کمزوری، ناتوانی

    ہمت
    عزم و ارادہ

    عجزِہمت
    پست ہمتی

    طلسم
    جادو، سحر

    سائل
    سوال کرنے والا، طالب، امیدوار، بھکاری

    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ یاس و امید دونوں لڑنے کے لیے میدان طلب کرر ہے ہیں۔
    مصرع نمبر 2۔ یہ سب سائل کی پست ہمتی کا نتیجہ ہے جس کی طلبی کی وجہ سے طلسم برپا ہے۔

    تبصرہ

    دل کا سوال کرنا اس کی پست ہمتی ہے۔ اور سوال کرنے کی وجہ سےدل میں یاس و امید کا میدانِ جنگ بن گیا ہے۔ اگر یہ پست ہمتی نہ ہوتی تو یاس و امید میں جنگ نہ ہوتی اور نہ ہی طلسمی تماشا ہوتا۔ مطلب یہ ہے کہ دل بیم و رجا کی کشمکش میں بری طرح مبتلا ہے۔
     
  6. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088

    [align=center]
    031-04
    نہ بندھے تِشنگئ ذوق کے مضموں، غالب
    گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا
    [/align]
    [line]

    فرہنگ

    دریا کو بھی ساحل باندھا
    یعنی ساحل سے بھی دریا کا کام لیا

    دل کھول کے
    یعنی مبالغہ سےکام لیکر

    تِشنگئ ذوق
    شعرگوئی کی پیاس، شوقِ شعرگوئی

    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ میری شعرگوئی کی پیاس نہیں بجھی
    مصرع نمبر 2۔ اگرچہ میں نے مبالغہ سے کام لے کر یہ کہہ دیا کہ ساحل نےسارا دریا پی لیا ہے

    تبصرہ

    ہم نے مبالغے سے کام لے کر اگر یہ کہہ دیا کہ ساحل نےسارا دریا پی لیا اور خود بھی خشک ہوکر ساحل بن گیا۔ ہماری قوت بیانیہ ناکام رہی ہے۔ مبالغہ سے کام لینے پر بھی ہم اس مضمون کو صحیح طور پر ادا نہیں کرسکے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    [align=center]
    [​IMG]

    ۔32۔

    میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں
    گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟

    ہے ایک تیر جس میں دونوں چھِدے پڑے ہیں
    وہ دن گئے کہ اپنا دل سے جگر جدا تھا

    درماندگی میں غالب کچھ بن پڑے تو جانوں
    جب رشتہ بے گرہ تھا، ناخن گرہ کشا تھا


    [​IMG]
    [/align]
     
  8. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088


    01 -032
    میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں
    گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟

    [line]
    فرہنگ

    بزمِ
    محفل، مجلس

    مے
    شراب، خُمر، بادہ، دارو، دختِ زر، صہبا، بنت

    تشنہ
    پیاسا، خواہش مند،

    توبہ
    کسی کام کو ترک کرنا، افسوس، پچھتاوا

    ساقی
    شراب یا حقہ پلانے والا


    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ میں میکدے سے پیاسا لوٹا
    مصرع نمبر 2۔ میں نے توبہ کی تھی مگر ساقی نے تو زبرستی پلادی ہوتی

    تبصرہ

    میں میکدے سے پیاسا واپس آگیا ۔ مانا کہ میں نےشراب سے توبہ کی تھی مگر ساقی کو چاہیے تھا کہ میرے انکار کرنے کو نظر انداز کر کے پلادیتا۔
     
  9. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088

    02 -032
    ہے ایک تیر جس میں دونوں چھِدے پڑے ہیں
    وہ دن گئے کہ اپنا دل سےجگر جدا تھا
    [line]
    فرہنگ

    تیر
    سیدھا اور لمبا ٹکڑا۔ ایک قسم کا

    چھِدے
    پرونا، چھید دینا

    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر 1۔ ایک ییر نےدونوں ہی میں چھید کر رکھا ہے
    مصرع نمبر 2۔ وہ دن چلے گئے جب دل اور جگر ایک دوسرے سے علحیدہ ہوتے تھے۔

    تبصرہ

    عشق نے مجھے زخمی کر رکھا ہے ۔ پہلے تو صرف دل ہی تیر کا گھائل تھا۔ لیکن اب دل و چگر دونوں ہی تیر کا شکار ہیں۔ یعنی عشق میں میرا حال پہلے سے بھی خراب ہے۔ پہلے دل زخمی تھا اب جگر بھی.
    [/indent]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088

    03 -032
    درماندگی میں غالب کچھ بن پڑے تو جانوں
    جب رشتہ بےگرہ تھا، ناخن گرہ کشا تھا

    [hr]
    فرہنگ

    درماندگی
    عاجزی، محتاجی، بے نوائی، مفلسی، عاجزی، تباہی

    بےگرہ
    گانٹھ، عقیدہ، مشکلبات، پیچیدہ بات، راز،

    گرہ کشا
    گانٹھ نہ کھول سکنا

    نثری ترجمہ

    مصرع نمبر1۔ اس عاجزی میں شاید ہی کچھ کرسکوں
    مصرع نمبر 2۔ جب میرے ناخن اس قابل تھے کہ گرہ کھول سکیں توگرہ نہیں تھی

    تبصرہ
    جب مجھ میں مصائب کو دور کرنے کی قدرت تھی۔ کوئی مصیبت نہیں نازل ہوئی۔ اب جب کہ میں اس قابل نہیں ہوں تو بےشمار مصائب نازل ہو رہے ہیں۔

    مشکل۔ گرہ کا استعارہ ہے اور تدیر، ناخون کا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر