فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    16,646
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہت خوب
    وارث میاں
    صبح صبح دل خوش کردیتے ہیں۔جیتے رہیے۔:rose:
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. حفصہ1989

    حفصہ1989 محفلین

    مراسلے:
    3
    اس غزل کا صحیح ترجمہ بتائیے

    بہ خوبی ھمچو مہ تابندہ باشی بہ ملک دلبری پایندہ باشی
    اور من تو شدم والی غزل بھی اپلوڈ کریں
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    16,646
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہ خوبی ھمچومہ تابندہ باشی
    بہ ملک دلبری پاینده باشی

    من درویش را کشتی بہ غمزہ
    کرم کردى الٰہی زندہ باشی

    جہاں سوزى اگر در غمزہ آىى
    شکر ریزی اگر در خندہ باشی

    ز قید دو جہاں آزاد گشتم
    اگر تو ھم نشینِ بندہ باشى

    جفا کم کن کہ فردا روزِ محشر
    زروی عاشقان شرمندہ باشی

    بہ رندی و بہ شوخی ہمچو خسروؔ
    ھزاران خان و مان برکندہ باشی
     
  4. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    16,646
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہ خوبی ھمچومہ تابندہ باشی
    بہ ملک دلبری پاینده باشی
    تیرے خوبصورت چہرہ چاند کی طرح چمکتا ہے ملک حسن پہ تیری بادشاہی سلامت رہے

    من درویش را کشتی بہ غمزہ
    کرم کردى الٰہی زندہ باشی
    تیری قاتلانہ نکاہ نے مجھ غریب کو مار ڈالا کرم کیا تو نے خدا تجھے بسر زندگی دے

    جہاں سوزى اگر در غمزہ آىى
    شکر ریزی اگر در خندہ باشی
    تمہاری نکاہِ ناز سے نظامِ دنیا بدل جاتا ہے اور تمہاری مسکراہٹ سے مٹھاس بکھر جاتی ہے

    ز قید دو جہاں آزاد گشتم
    اگر تو ھم نشینِ بندہ باشى
    میں دونوں جہانوں کی قید سے آزاد ہو جاؤں اگر کبھی تو میرے ہمسفر ہو جائے

    جفا کم کن کہ فردا روزِ محشر
    زروی عاشقان شرمندہ باشی
    جفا کم کرو کے کل قیامت کے دن کہیں عاشقوں کے آسامنے شرمندہ نہ ہونا پڑے

    بہ رندی و بہ شوخی ہمچو خسروؔ
    ھزاران خان و مان برکندہ باشی
    تمہاری شوخی اور زندہ دلی کے باعث خسرو جیسے ہزاروں دل تباہ ہو گئے
    امیر خسروؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. حفصہ1989

    حفصہ1989 محفلین

    مراسلے:
    3
    من تو شدم تو من شدی

    یہ غزل کونسی ہے بتائیے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گر آن بی‌وفا عهدِ یاری شِکَست
    خُدا یارِ او باد هر جا که هست
    (عبدالرّحمٰن جامی)


    اگرچہ اُس بےوفا نے میرے ساتھ کیا ہوا عہدِ یاری توڑ دیا، اور محبّت و دوستی کے وعدے کی خِلاف‌ورزی کر دی، لیکن پھر بھی میں یہی دُعا کرتا ہوں کہ وہ یارِ عہدشِکَن جِس بھی جگہ موجود ہے، خُدا اُس کا یار ہو!۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مزن بر دِلم زخم و مرهم منِه
    که پَیوند نتْوان چو شیشه شِکَست
    (عبدالرحمٰن جامی)


    میرے دِل پر زخم مت مارو، اور مرہم مت لگاؤ!۔۔۔ کیونکہ جب شیشہ ٹُوٹ جائے تو اُس کو پَیوَند نہیں کِیا جا سکتا (یعنی جوڑا یا رفو نہیں کِیا جا سکتا)۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زبانِ فارسی (عَظَّمَ اللهُ شَأنَهَا) کی سِتائش میں «علّامه اِقبالِ لاهوری» کی ایک بَیت:

    پارسی از رفعتِ اندیشه‌ام
    درخورَد با فطرتِ اندیشه‌ام
    (اِقبالِ لاهوری)


    میرے افکار کی بُلندی و والائی کے باعث زبانِ فارسی میرے افکار کی فِطرت کے ساتھ مُناسبت و مُطابقت رکھتی ہے۔۔ (یعنی زبانِ فارسی ہی میں میرے افکارِ بُلند و عالی خوبی سے سما سکتے ہیں، اور وہ ہی اُن افکار کی ظرفیت و لِیاقت رکھتی ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سُراغِ یارِ سفرکرده با دِلم آن کرد
    که هِجرِ یوسُفِ مِصری به پیرِ کنعان کرد
    (ملِک قُمی)


    مجھ سے جُدا ہو کر سفر پر چلے گئے یار کی تلاش و جُستُجو نے میرے دِل کے ساتھ وہی کِیا جو یوسُفِ مِصری کے ہِجر نے پِیرِ کنعان (حضرتِ یعقوب) کے ساتھ کِیا تھا۔۔۔ (یعنی یار کی جُدائی میں اُس کی جُستُجو نے میرے دِل کا حال بھی حضرتِ‌ یعقوب جیسا کر دیا۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    افغانستان کے ایک فارسی ادیب «سیِّد اِسحاق دِلجُو حُسَینی» نے چند روز قبل زبانِ فارسی کی سِتائش میں ایک نظم لکھی ہے، جِس کو مَیں اُردو میں ترجمہ کر کے پاکستان میں مُنتَقِل کرنے کا شرَف حاصل کر رہا ہوں۔ ویسے تو زبانِ فارسی «وِفاقِ پاکستان» کی جُملہ پاکستانی اقوام کی کلاسیکی ادبی و شعری زبان ہے، اور ہمارے اسلاف و بُزُرگان کی میراث ہے، اور ہنوز ہمارے مُلک میں دس لاکھ کے قریب فارسی‌گو پاکستانی شہری بستے ہیں، اور گُذشتہ دس صدیوں سے یہ زبانِ باشرَف ہماری ادبی و شعری و ثقافتی کِشت‌زار کو جاری و حیات‌بخش دریاؤں کی مانند مُسَلسَل سیراب کرتی آ رہی ہے، لہٰذا زبانِ فارسی کی سِتائش ہمارے مُلک اور ہمارے مردُم ہی کی ایک چیز کی سِتائش ہے، اور ہم کو وہ سِتائش دیکھ کر دِل‌شاد ہونا چاہیے، اور اِفتِخار کرنا چاہیے کہ ہمارا اُس عظیم زبان کے ساتھ دس گیارہ صدیوں سے تعلُّق ہے، جِس کے ساتھ اِنتِساب کسی بھی شخص و شہر و خِطّہ و دِیار کے لیے باعِث مَجد و بُزُرگواری ہے۔ لیکن اُس نظم پر نِگاہ پڑتے ہی جس چیز نے مجھ کو اُس کا فوراً ترجمہ کرنے پر مجبور کیا ہے وہ یہ ہے کہ شاعر نے نظم کی ایک بَیت میں «وفاقِ پاکستان» کے ایک خِطّے «پنجاب» کے مرکزی شہر «لاہور» کی جانب بھی اشارہ کیا ہے، اور اُس کو مشرق‌زمین کے طُول و عرض میں پھیلے «جُغرافیائے معنویِ فارسی» کا ایک جُزء بتایا ہے۔ اور اُس چیز سے آخر کون ذی‌شُعور اِنکار کر سکتا ہے؟ کیونکہ اُس شہر میں «مسعود سعد سلمان لاهوری» سے «اِقبالِ لاهوری» تک فارسی شعر و ادبیات کی ہزارسالہ تاریخ موجود ہے، اور وہاں کے گوشے گوشے میں اُس ہزارسالہ تاریخ کے آثار بکھرے پڑے ہیں، اور «لاہور» ہی وہ شہر ہے جِس کے ساتھ گُذشتہ صدی کے ایک بُزُرگ‌ترین فارسی شاعر «اِقبالِ لاهوری» کی نِسبت ہے۔

    لُطفاً، اِس نظم پر نِگاہ ڈالیے، اور زبانِ فارسی پر دِل کے اعماق سے سلام بھیجیے!

    ============

    مِهر و سِپِهر و گُنبدِ خَضراست پارسی
    قَوسِ قُزَح و عرشِ مُعَلّاست پارسی
    شعر و ترنُّم و سُخَنِ عشق و معرفت
    طوفان و موَج و غُرِّشِ دریاست پارسی
    پند است و حِکمت است و مواعظ وَ مُعجِزات
    سِدره‌نِشینِ عالَمِ بالاست پارسی
    گنجی‌ست پُر ز جَوهر و تفسیرِ خَیر و شر
    کوهی گَران ز لعل و مُطَلّاست پارسی
    از گنجه تا به لاهور و از سُغد تا هِرات
    وِردِ زبانِ مردُمِ داناست پارسی
    این نور تا ابد بِدَرَخشَد به عقل و دِل
    ماه و سِتاره و یدِ بَیضاست پارسی
    مصئون ز کَید و کینه و از سِحرِ سامِری
    مانا چو نورِ پرتَویِ سیناست پارسی
    دائم به دَورِ گردشِ افلاک در تپِش
    سِحرِ بیان و عالَمِ معناست پارسی
    شَیداست عالَم از غزلِ عاشقانه‌اش
    رازِ درُونِ عاشقِ شَیداست پارسی
    لحنِ زبور و صَوتِ مسیح، حُسنِ یوسُف است
    گویند قُدسیان که چه زیباست پارسی
    در هر لب همچو شهد و شَکَر جوش می‌زَنَد
    بر هر زبان ملیح و مُصَفّاست پارسی
    بحری‌ست پُر ز مَوج، وَ جامی‌ست لب به لب
    شورِ حیات و غُلغُلِ میناست پارسی

    (سیِّد اِسحاق دِلجُو حُسَینی)


    ============

    فارسی خورشید و سِپِہر و گُنبَدِ نِیلگُوں ہے۔۔۔ فارسی قَوسِ قُزَح اور عرشِ‌ مُعَلّیٰ ہے۔۔۔

    فارسی شعر و ترنُّم، سُخَنِ عشق و معرفت، اور طُوفان و مَوج و خُروشِ دریا ہے۔۔۔

    فارسی نصیحت ہے، حِکمت ہے، مواعِظ و مُعجِزات ہے۔۔۔ فارسی عالَمِ بالا کی سِدرہ‌نشین ہے۔۔۔

    فارسی جواہِر سے پُر ایک خزانہ ہے اور تفسیرِ خَیر و شر ہے۔۔۔ فارسی لعلوں سے بھرا اور زر سے ڈھکا کوہ ہے۔۔۔

    «گنجہ» سے «لاہور» تک، اور «سُغد» سے «ہِرات» تک فارسی مردُمِ‌ دانا کا وِردِ زباں ہے۔۔۔

    یہ نور تا ابد عقل و دِل کی جانب چمکتا اور پرتَواَفشانی کرتا رہے!۔۔۔ فارسی ماہ و سِتارہ و یدِ بَیضا ہے۔۔۔

    فارسی مکر و کِینہ اور سِحرِ سامِری سے محفوظ ہے، اور پرتَوِ طُورِ سینا کے نُور کی مانند پایندہ و جاوید ہے۔۔۔

    فارسی دائماً گردِشِ افلاک میں دھڑکتی رہتی ہے۔۔۔ فارسی سِحرِ بیان اور عالَمِ معنا ہے۔۔۔ (شاعر نے حاشیے میں تَوضیح کی ہے کہ اِس بَیت کے مِصرعِ ثانی میں حضرتِ رسول (ص) کے اِس قَول کی جانب اِشارہ ہے:‌ "شاعری حِکمت ہے، اور بیان سِحر ہے۔")

    عالَم اُس کی غزلِ عاشِقانہ سے شَیدا ہے۔۔۔ فارسی عاشقِ شَیدا کا رازِ درُوں ہے۔۔۔

    فارسی لَحنِ زبور، صدائے مسیح، حُسنِ یوسُف ہے۔۔۔ قُدسیاں دیکھ کر کہتے ہیں کہ: فارسی کسِ قدر زیبا ہے!۔۔۔

    فارسی ہر لب میں شہد و شکر کی مانند جوش مارتی ہے۔۔۔ فارسی ہر زبان پر ملیح و مُصَفّا ہے۔۔۔

    فارسی ایک پُرمَوج بحر، اور ایک لبالب جام ہے۔۔۔ فارسی شورِ حیات اور غُلغُلِ مِینائے شراب ہے۔۔۔

    (مُتَرجِم: حسّان خان)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «ملِک قُمی» کی ضربُ‌المَثَل بَیت:

    رفتم که خار از پا کَشَم محمِل نِهان شُد از نظر
    یک لحظه غافِل گشتم و صدساله راهم دُور شُد
    (ملِک قُمی)


    میں ذرا سی دیر کے لیے کاروان سے جُدا ہو کر ایک گوشے میں گیا تاکہ اپنے پاؤں میں چُبھا خار کھینچ نِکالوں۔۔۔ اُتنی ہی دیر میں مَحمِل میری نظروں سے غائب ہو گیا۔۔۔ میں فقط ایک لحظے کے لیے غافِل ہوا، اور اُس ایک ذرا سے لحظے کی غفلت سے راہِ مقصود مجھ سے سَو سالوں کی مَسافت جِتنی دُور ہو گئی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «وِفاقِ پاکِستان» کے لیے محبّت کے اِظہار میں پاکستانی فارسی شاعر «ضیاء محمد ضیاء» کی ایک نظم دیکھیے، جو ۱۹۷۷ء میں شائع ہوئے اُن کے شعری مجموعے «نوایِ شَوق» سے لی گئی ہے:

    ============

    [پاکستان]

    مرحبا ای ارضِ پاکستانِ ما
    مرحبا ای میهنِ ذی‌شانِ ما
    حبّذا ای گُلشنِ مِینوسَواد
    خُرّما ای روضهٔ رضوانِ ما
    ای که در دل‌هایِ ما داری مقام
    ای که جایِ توست در چشمانِ ما
    ای که هستی دیدهٔ ما را فُروغ
    ای که سوزِ توست اندر جانِ ما
    ای که هستی مِهرِ عالَم‌تابِ ما
    ای که هستی ماهِ نورافشانِ ما
    مِهرِ تو ما را متاعِ زندگی‌ست
    عشقِ تو باشد سر و سامانِ ما
    خاکِ پاکت چشمِ ما را توتیا
    خارِ راهت سُنبُل و رَیحانِ ما
    وادی و کُهسارِ تو سینا و طُور
    شهرهایت مِصرِ ما کنعانِ ما
    دیر زی ای کِشوَرِ مُحکم‌اساس
    شاد باش ای مُلکِ خوش‌بُنیانِ ما
    ای مُداوایِ غمِ پِنهانِ ما
    ای دوایِ دردِ بی‌درمانِ ما
    مَسکَنِ ما، مأمنِ ما، مهدِ ما
    کُلبهٔ ما، کاخِ ما، اَیوانِ ما
    جذبهٔ ما، فِکرِ ما، اِحساسِ ما
    خاطِرِ ما، روحِ ما، وِجدانِ ما
    محفلِ ما، بزمِ ما، دُنیایِ ما
    باغِ ما، گُل‌زارِ ما، بُستانِ ما
    حاصلِ اُمّیدِ ما، مقصودِ ما
    آرزو و حسرت و ارمانِ ما
    ای حِصارِ مُحکَمِ اِسلامِیان
    پاسبانِ مذهب و ایمانِ ما
    ای نشانِ عظمتِ پیشینیان
    حافظِ ناموس و خان و مانِ ما
    تا به زیرِ پرچمِ تو آمدیم
    هست بر ما سایهٔ یزدانِ ما
    با تو عهدِ مِهر و اُلفت بسته‌ایم
    تازه باشد هر زمان پَیمانِ ما
    تا قِیامت زِنده و پاینده باش
    ای قرارِ قلبِ پُرهَیجانِ ما

    (ضیاء محمد ضیاء)

    ============

    مرحبا اے ہماری ارضِ پاکستان!۔۔۔ مرحبا اے ہمارے وطنِ ‌ذی‌شان!۔۔۔ حبّذا اے گُلشنِ جنّت‌سِرِشت!۔۔۔ خُرّما اے ہمارے رَوضۂ رِضوان!۔۔۔ اے کہ تمہارا مقام ہمارے دِلوں میں ہے!۔۔۔ اے کہ ہماری آنکھوں میں تمہاری جگہ ہے!۔۔۔ اے کہ تم ہمارے دِیدے کا نُور ہو!۔۔۔ اے کہ ہماری جانوں میں تمہارا سوز ہے!۔۔۔ اے کہ تم ہمارا خورشیدِ عالَم‌تاب ہو!۔۔۔ اے کہ تم ہمارے ماہِ نُورافشاں ہو!۔۔۔ تمہاری محبّت ہماری متاعِ زندگی ہے۔۔۔ تمہارا عشق ہمارا سر و سامان ہے۔۔۔ تمہاری خاکِ پاک ہماری چشم کے لیے سُرمہ ہے۔۔۔ تمہاری راہ کا خار ہمارا سُنبُل و رَیحان ہے!۔۔۔ تمہاری وادی و کوہسار «سِینا» و «طُور» ہے۔۔۔ تمہارے شہرہا ہمارے «مِصر» اور ہمارے «کنعان» ہیں۔۔۔ دیر مُدّت جِیو اے کِشَورِ مُحکَم‌اساس!۔۔۔ شاد رہو اے ہمارے مُلکِ خوش‌‌بُنیاد!۔۔۔ اے ہمارے غمِ پِنہاں کے مُداوا!۔۔۔ اے ہمارے دردِ بےدرماں کی دوا!۔۔۔ اے ہمارے مسکن، ہمارے مأمَن، ہمارے گہوارے!۔۔۔ اے ہمارے کُلبے (جھونپڑی)، ہمارے قصر، ہمارے اَیوان!۔۔۔ اے ہمارے جذبے، ہماری فِکر، ہمارے احساس!۔۔۔ اے ہمارے ذہن، ہماری روح، ہمارے وِجدان (ضمیر)!۔۔۔ اے ہماری محفِل، ہماری بزم، ہماری دُنیا!۔۔۔ اے ہمارے باغ، ہمارے گُل‌زار، ہمارے بوستان!۔۔۔ اے ہماری اُمیدوں کے حاصِل، اے ہمارے مقصود!۔۔۔ اے ہماری آرزو و حسرت، اے ہمارے ارمان!۔۔۔ اے مُسلمانوں کے حِصارِ مُحکَم!۔۔۔ اے ہمارے مذہب و ایمان کے پاسبان!۔۔۔ اے گُذشتَگان کی عظمت کے نِشان! اے ہماری ناموس اور ہمارے خان‌ومان (گھربار) کے نِگہبان!۔۔۔ جب سے ہم تمہارے پرچم کے زیر میں آئے ہیں، ہمارے سر پر ہمارے خُدا کا سایہ ہے!۔۔۔ ہم نے تمہارے ساتھ مِہر و اُلفت کا پیمان باندھا ہے، اور ہر وقت ہمارا پیمان تازہ ہوتا ہے۔۔۔ تم تا قِیامت زندہ و پایندہ رہو!۔۔۔ اے ہمارے قلبِ پُرہَیجان کے قرار!۔۔۔

    (مُتَرجِم: حسّان خان)

    ============

    شاعر نے نظم کی بَیتِ دوازدَہُم میں لفظِ «جذبه» کو اُس کے مُعاصِر اُردو معنی میں استعمال کیا ہے، در حالے کہ فارسی میں یہ لفظ 'جذب و کشِش' کے معنی میں استعمال ہوتا آیا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حفصہ1989

    حفصہ1989 محفلین

    مراسلے:
    3
    شاعری جزویست از پیغمبری
    جاہلان اش کفر دانند از خری

    اس کا ترجمہ بتا دیجئے
     
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    نه من انیسِ چراگاهِ عَیش و نوشِ تو بودم؟
    چو در کمند فُتادم فرار کردی و رفتی
    (شهریار تبریزی)


    اے یار! کیا مَیں تمہارے عَیش و نوش کی چراگاہ کا انیس و ہم‌دم نہ تھا؟۔۔۔ لیکن جب مَیں صیّاد کی کَمَند میں گِرا تو تم فرار کر گئے اور چلے گئے!۔۔۔ :(
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,928
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    چار سال قبل مجھ کو «ارمَنِستان» کے ایک مُعاصِر شاعر «ادوارد حق‌وردیان» کی ایک مُختَصَر ارمَنی نظم کا فارسی ترجمہ نظر آیا تھا، جِس کو میں نے اُسی زمانے میں اُردو میں ترجمہ کر دیا تھا۔ دوستوں سے درخواست ہے کہ وہ اُس نظم کے فارسی اور اُردو ترجموں پر ذرا نِگاہ ڈالیں:

    ===========

    روزهایم را
    چون رُؤیایی بی‌معنا
    به دیوارِ نیستی كوبیدم
    نمی‌دانستم
    كه جسَدِ خونین‌شان را
    باید در قلبم دفن كُنَم

    (ادوارد حق‌وردیان)

    (مُتَرجِم: واهه آرمن)

    ===========

    میں نے اپنے ایّام کو
    ایک بےمعنی خواب کی طرح
    دیوارِ عدم پر دے مارا
    میں نہیں جانتا تھا
    کہ اُن کے خُونیں اجساد کو
    مجھے اپنے دِل میں دفن کرنا چاہیے

    (مُتَرجِم: حسّان خان)


    ===========

    دوستانِ گِرامی! «آرمینیا» نہیں بلکہ «ارمَنِستان» کہیے، اور «آرمینیائی» نہیں بلکہ «ارمَنی» کہیے، کیونکہ فارسی و تُرکی و کُردی میں یہی نام رائج ہیں۔ قومِ ارمَنی صدیوں سے فارسی‌گویوں، عربی‌گویوں، تُرکی‌گویوں اور کُردی‌گویوں کے ساتھ تَماس (کونٹیکٹ) میں رہی ہے، اور وہ اُس خِطّے کے لیے کوئی نئی و بیگانہ قوم ہرگز نہیں ہے، اور ہماری زبانِ فارسی میں صدیوں سے اُس قوم کا ذِکر ہوتا آ رہا ہے، بلکہ کئی ارمَنیان تو فارسوں اور تُرکوں کے درمیان زندگی بسر کرتے رہے تھے، حتّیٰ کہ اِس زمانے میں فارسی بولنے لِکھنے والے چند ایرانی-ارمَنی بھی موجود ہیں۔ اِس لیے ہمیں حاجت نہیں ہے کہ ہم پاکستانی زبانوں میں «ارمَنی» و «ارمَنِستان» کے لیے انگریزی اَسماء استعمال کریں۔
    فارسی میں «ارمَنی» کی جمع کے طور پر «ارمَنیان، ارمَنی‌ها یا ارامِنه» رائج ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  16. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    981
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اسرارِ خودی میں ایک باب میں خودی کی تربیت میں تین مراحل بیان کرتے ہوئے اقبالِ لاہوری دوسرے مرحلے میں پنج ارکانِ اسلام کو اسبابِ استحکام قرار دیتے ہوئے ان کو مضبوطی سے تھامنے کی نصیحت کرتے ہیں۔

    تا عصایِ لا اله داری به‌دست
    هر طلسمِ خوف را خواهی شکست

    جب تک تیرے ہاتھ میں لاالہ کا عصا ہے، تو خوف کے ہر جادو کو توڑ دے گا۔

    هر که حق باشد چو جان اندر تَنَش
    خم نَگَردَد پیشِ باطل گردَنَش

    جس کسی کے جسم میں خدا اس کی جان کی طرح اندر ہو (یعنے اس کا دل و جاں خدا سے بےگانہ نہ ہو) تو اس کی گردن باطل کے پیش میں (آگے) نہیں جھکتی۔

    خوف را در سینه‌یِ او راه نیست
    خاطرش مرعوبِ غیر الله نیست

    خوف کو اس کے سینے (دل) میں کوئی راستہ نہیں ہے۔ اس کا دل غیر اللہ سے مرعوب نہیں (ہوتا) ہے۔

    هر که در اقلیمِ لا آباد شد
    فارغ از بندِ زن و اولاد شد

    جو ’’لا‘‘ کے کشور (ملک) میں آباد ہوگیا، وہ زن و اولاد کی زنجیر سے فارغ ہوگیا (یعنے اس کے ہمسر و فرزندان اس کے لئے سدِ راہ نہیں ہوتے)

    می‌کند از ما سِویٰ قطعِ نظر
    می‌نِهَد ساطور بر حلقِ پسر

    وہ (خدا کے) ما سویٰ سے قطعِ نظر کرتا ہے ، (اور حضرت ابراہیم کی مانند) پسر (بیٹے) کی حلق پر کارد (چھری) رکھتا ہے۔

    با یکی مثلِ هجومِ لشکر است
    جان بچشمِ او ز باد ارزان تر است

    وہ تک و تنہا ہوتے ہوئے بھی لشکر کے ہجوم کی مانند (ہوجاتا) ہے۔ جان اس کی نظر میں ہوا سے بھی ارزاں (یعنے بےوقعت اور کم قیمت) (ہوجاتی) ہے۔

    لا اله باشد صدف گوهر نماز
    قلبِ مسلم را حجِ اصغر نماز

    لا الہ صدف (سیپی) ہے اور گوہر (موتی) نماز ہے۔ مسلمان کے دل کے لئے حجِ اصغر نماز ہے۔

    در کفِ مسلم مثالِ خنجر است
    قاتلِ فحشا و بغی و منکر است

    مسلمان کے ہاتھ میں (یہ نماز) خنجر کی مثل ہے (جو) بےحیائی اور (خدا سے) بغاوت اور کارہائے بد کی قاتل ہے۔

    روزه بر جوع و عطش شبخون زَنَد
    خیبرِ تن‌پروری را بِشکَنَد

    روزہ گرسنگی و تشنگی (بھوک اور پیاس) پر شبخون مارتا ہے (اور) تن‌پروری (انسانی روح کے بجائے صرف جسم کی پرورش کرنا) کے خیبر کو توڑ دیتا ہے۔

    مؤمنان را فطرت‌افروز است حج
    هجرت‌آموز و وطن سوزست حج

    مومنوں کے لئے حج فطرت کو روشن کرنے والی ہے۔ (ان کےلئے) ہجرت سکھانے والی اور وطن کو جلانے (یعنے وطن کی محبت دل سے نکالنے) والی چیز حج ہے۔

    طاعتی سرمایه‌یِ جمعیتی
    ربطِ اوراقِ کتابِ ملتی

    (حج ایک ایسی) اطاعت ہے جو جمعیت کا سرمایہ ہے۔ ملت کی کتاب کے اوراق کا ربط ہے (یعنے سایر جہان میں پھیلی ملت کی شیرازہ بندی کرتی ہے)

    حبِ دولت را فنا سازد زکوة
    هم مساوات آشنا سازد زکوة

    زکوۃ دولت کی محبت کو ختم کرتی ہے اور مساوات سے آشنا بھی رکھتی ہے۔

    دل ز «حتی تنفقوا» محکم کند
    زر فزاید الفتِ زر کم کند

    زکوۃ دل کو (فرمانِ خدا) حتیٰ تنفقو (جب تک خرچ کرو) سے مضبوط کرتی ہے (اور) زر (سونا) کو زیادہ کرتی ہے (لیکن) زر کی محبت کو کم کرتی ہے۔

    این همه اسبابِ استحکام تست
    پخته‌ای، محکم اگر اسلامِ تست
    (علامه اقبالِ لاهوری)

    یہ سب تمہاری مضبوطی کے سامان ہیں۔ اگر تیرا اسلام محکم ہے تو تو بھی مضبوط ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    981
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ما سوا الله را مسلمان بنده نیست
    پیشِ فرعونی سَرَش افگنده نیست
    (اقبالِ لاهوری)

    اللہ کے سوا مسلمان کسی کا بھی بندہ نہیں ہے۔کسی فرعون کے پیش میں اس کا سر نیچے نہیں (ہوتا) ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    981
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    قرآن کی توصیف میں جاوید نامہ سے تین ابیات:

    چیست قرآن؟ خواجه را پیغامِ مرگ
    دست‌گیرِ بنده‌یِ بی‌ساز و برگ
    فاش گویم آن‌چه در دل مضمر است
    این کتابی نیست، چیزی دیگر است
    چون به‌جان در رفت، جان دیگر شَوَد
    جان چو دیگر شد، جهان دیگر شَوَد
    (اقبالِ لاهوری)

    قرآن کیا ہے؟ آقا (سرمایہ دار) کے لئے موت کا پیغام!(جبکہ) بے ساز وسامان بندے کا مددگار ہے۔میرے دل میں جو کچھ پوشیدہ ہے میں اسے واضح کہتا ہوں: یہ (قرآن) کوئی کتاب نہیں بلکہ کوئی اور چیز ہے۔جب یہ (قرآن) روح کے اندر جائے تو روح کچھ اور ہوجاتی ہے، اور جب روح کچھ اور ہوجائے تو دنیا کچھ اور ہوجاتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    981
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    پیامِ مشرق سے ایک غزل کا ترجمہ:

    آشنا هر خار را از قصه‌یِ ما ساختی
    در بیابانِ جنون بردی و رسوا ساختی

    تو نے ہر کانٹے کو ہماری داستانِ عشق سے آگاہ کردیا۔تو ہمیں جنون کے بیابان میں لے گیا اور یوں ہمیں تو نے رسوا کردیا۔

    جرمِ ما از دانه‌ای، تقصیرِ او از سجده‌ای
    نی به‌آن بی‌چاره می‌سازی نه با ما ساختی

    ہمارا جرم تو دانے کا ہے اور اُس کا قصور سجدہ نہ کرنے کا ہے، نہ تَو تُو (خدا) اس بےچارے سے بنا کے رکھ رہا ہے اور نہ تُو نے ہم ہی سے موافقت کی (قصہٗ آدم و ابلیس کی طرف تلمیح ہے)۔

    صد جهان می‌روید از کشتِ خیالِ ما چو گل
    یک جهان و آن‌هم از خونِ تمنا ساختی

    ہمارے خیال کی کھیتی سے پھولوں کی طرح سینکڑوں جہان اگ رہے ہیں، تو (خدا) نے صرف ایک جہان پیدا کیا اور وہ بھی (ہمارے) خونِ تمنا سے بنایا۔

    پرتوِ حسنِ تو می‌افتد برون مانندِ رنگ
    صورتِ مَی پرده از دیوارِ مینا ساختی

    تیرے حسن کا سایہ/عکس رنگ کی طرح باہر پڑ رہا ہے لیکن تو نے شراب کی طرح صراحی کی دیوار کو اپنا پردہ بنا رکھا ہے۔

    طرحِ نو افگن که ما جدت‌پسند افتاده‌ایم
    این چه حیرت‌خانه‌یِ امروز و فردا ساختی

    تو (اے خدا) اب کسی اور یا نئی دنیا کی بنیاد رکھ (نئی دنیا تخلیق کر) اس لئے کہ ہم جدت پسند واقع ہوئے ہیں۔یہ تو نے امروز و فردا کا کیسا حیرت خانہ بنا رکھا ہے (گویا تقریباََ اس ساری غزل میں خدا ہی سے خطاب ہے)۔

    (اقبالِ لاهوری)

    مترجم: ڈاکٹر خواجہ حمید یزدانی
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 6, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    981
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حافظ شیرازی کی زمین میں پیامِ مشرق سے ایک غزل ترجمہ و تشریح کے ساتھ:

    سرخوش از باده‌یِ تو خم‌شکني نيست که نيست
    مستِ لعلينِ تو شيرين‌سخنی نيست که نيست

    کوئی خم شکن ایسا نہیں ہے جو تیری شراب سے مست و مدہوش نہ ہو (اگر خم شکن سے محتسب لیں تو مطلب ہوگا کہ محتسب جو شراب پینے والوں کو پکڑتا اور صراحیاں توڑ دیتا ہے، وہ بھی تیری شراب سے سرشار ہے۔)کوئی شیریں بیاں شاعر ایسا نہیں ہے جو تیرے سرخ ہونٹوں کی محبت میں مست نہ ہو۔پہلے مصرعے میں خم شکن سے مراد مٹکے پر مٹکا پینے والا ہو تو مطلب ہوگا، بہت بڑا شرابی، لیکن پہلا معنی زیادہ اچھا ہے۔

    در قبایِ عربی خوشترک آیی به نگاه
    راست بر قامتِ تو پيرهنی نيست که نيست
    تو عربی قبا میں کچھ زیادہ خوبصورت دکھائی دیتا ہے، تاہم کوئی ایسا لباس نہیں ہے جو تیرے قد پر صحیح نہ لگتا ہو۔محبوب اپنے دلکش حسن کے باعث ہر لباس میں اچھا لگتا ہے، تاہم اسلامی لباس سے وہ کہیں زیادہ اچھا لگتا ہے۔ اسلامی لباس سے مراد اسلامی شعائر بھی ہوسکتے ہیں، اس حوالے سے کہا جاسکتا ہے کہ اے مسلمان تیرے ڈھنگ تو اچھے ہیں لیکن اگر تو اسلامی طور طریقے اپنا لے تو وہ کہیں بہتر ہے یہ بات بھی بنتی ہے کہ مسلمان عورت کا باپردہ ہونا زیادہ اچھا ہے۔

    گرچه لعلِ تو خموش است ولی چشمِ ترا
    با دلِ خون شده‌یِ ما سخنی نيست که نيست

    اگرچہ تیرے ہونٹ خاموش ہیں لیکن کوئی بات ایسی نہیں جو تیری آنکھ ہمارے خون شدہ دل کے ساتھ نہ کرتی ہو۔ عاشق محبوب کی نگاہوں ہی سے اس کے رویے یا اس کے دل میں موجود باتوں کا اندازہ لگا لیتا ہے۔

    تا حديثِ تو کنم، بزمِ سخن می‌سازم
    ور نه در خلوتِ من انجمنی نيست که نيست

    اس خاطر کہ میں تیری بات/باتیں کروں میں بزمِ سخن آراستہ کرلیتا ہوں ورنہ میری خلوت میں ایسی کوئی انجمن نہیں ہے جو نہ ہو۔خلوت میں ایک عاشق محبوب ہی کے تصور میں محور رہتا اور اس سے گویا غائبانہ باتیں کر رہا ہوتا ہے جو گویا انجمن/محفل کی ایک صورت ہے۔

    ای مسلمان! دگر اعجازِ سليمان آموز
    ديده بر خاتمِ تو اهرمنی نيست که نيست

    اے مسلمان!تو پھر حضرت سلیمانؑ والا معجزہ سیکھ لے کیونکہ کوئی شیطان ایسا نہیں ہے جس کی نظریں تیری انگوٹھی پر نہ لگی ہوں۔مطلب یہ کہ تیرے ایمان پر ڈاکا ڈالنے کے لئے اسلام کے دشمن نگاہیں کگائے بیٹھے ہیں، تو ان سے بچنے کی تدبیر کر اور اسلام لا دامن مضبوطی سے تھام رکھ۔
    (اقبالِ لاهوری)
    مترجم و شارح:ڈاکٹر خواجہ حمید یزدانی
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 7, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر