خریدی ہے سیاہی پل بھر سرور کی خاطر ۔۔۔۔ از س ن مخمور

loneliness4ever نے 'آپ کی تحریریں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 26, 2014

  1. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover

    خریدی ہے سیاہی پل بھر سرور کی خاطر
    از س ن مخمور

    بس ٹریفک سگنل پر رکی تو میں نے اپنی نگاہ کا دئراہ مزید بڑھا دیا اور اردگرد کا جائزہ لینے لگا، اچانک میری نگاہ ایک اشتہاری بورڈ پر پڑی اور میں نے جھجھک کر نگاہوں کا رخ بس کے اندر کر لیا۔ میں بس میں عورتوں کی بیٹھک والے حصے سے ایک سیٹ چھوڑ کر بیٹھا تھا، کھڑکی کے پاس بیٹھنے کی وجہ سے یاتو میں کھڑکی سے باہر دیکھتا رہوں ، یا بالکل سامنے دیکھوں، کھڑکی سے باہر وہ اشتہاری بورڈ مجھے پریشان کر نے لگا تھا۔ اور سامنے عورتوں کی بیٹھک سے کسی جوان لڑکی کے آسیتن سے آزاد شانے پریشان کر رہے تھے۔ میں نے مجبوراَ آگے والی سیٹ پر اپنے ہاتھ رکھے اور اپنا سر ان پر ٹکا کر نیچے اپنے جوتوں کو دیکھنے لگا۔
    یہ حال کم و بیش ہر روز کا ہے، مجھے بس سے آنا جانا پڑتا ہے اور میں اب اپنا اکثر سفر نیچے دیکھتے دیکھتے گزار دیتا ہوں۔ میرا جیسا حال معلوم نہیں کتنے افراد کا ہے مگر ہم تعداد میں ہو کر بھی اقلیت بن چکے ہیں۔ قاری پر اب بوجھ بن رہی ہوگی یہ تحریر، مگر جو کچھ میں بیان کرنا چاہتا ہوں وہ بوجھ وہ ہے جو وقت کے ساتھ بڑھتا ہی گیا ہے دل و نظر پر اور اب آنے والے کل کی سیاہ سوچ کے خیال نے مجھے پریشان کردیا ہے۔ اور یہ ہی وہ بوجھ ہے جس نے کلمہ پڑھتی قوم کو گمراہی کے عمیق گڑھوں میں اتار دیا ہے۔
    صاف طور سے کہوں تو ہم نے لذت ِنفس اور آنکھوں کی ٹھنڈک اور سرور کے لئے فیشن، جدید دور کے بہانے، موسم کے تقاضوں جیسے نہ جانے کتنے دروازے کھول کر صنف ِنازک کوتماشہ بنا دیا ہے۔ یہ کوئی تیس، بتیس سال پُرانی بات ہے میں اور میرے دوست کراچی یونیورسٹی میں شعبہ بی فارمیسی سے نکل کر ٹھنڈی سڑک پر خوش گپیاں کرتے ہوئے یونیورسٹی کے مرکزی دروازے کی جانب جا رہے تھے،آگے بیان سے’’ قبل ٹھنڈی سڑک ‘‘ نامی کے سڑک کے نام کا سبب جانتے چلیں۔دوستوں اس نام کا سبب شعبہ بی فارمیسی کی لڑکیوں تھیں جو فارغ اوقات میں اس سڑک کے کنارے لگی بینچوں پر جلوہ افروز ہوتی تھیں، یہ تمام حقیقت مجھےیونیورسٹی کی زندگی گزارکر پتہ چلی ورنہ یونیورسٹی کے زمانے میں ہم ٹھنڈی سڑک کو ٹھنڈا اس کے دونوں کناروں پر موجود گھنے درختوں کی وجہ سے سمجھتے تھے ۔توجناب یونیورسٹی کےصدردروازے کی جانب جاتے ہوئے ہمارے آگے ایک لڑکی سفید لباس میں ملبوس ، بال کھولے اس انداز سے چل رہی تھی جیسے فیشن شو میں ماڈلز بلی کی چال( کیٹ واک ) چلتی ہیں، ہمارے دوستوں میں ایک صاحب تھے جن کو جماعت کی تمام لڑکیاں بھائی کہتی تھیں اور وہ بھی واقعی انکے بھائی ہی تھے ،اور ایسی طبیعت کے مالک کہ جب تک ہمارا ساتھ رہے انہوں نے کبھی یہ ظاہر نہیں کیا کہ وہ حافظ ہیں اور یونیورسٹی سے سیدھا مدرسے جاتے ہیں پڑھانے ، وہ خود نمایائی جوعموما آج معاشرے میں حافظ حضرات یا واجبی سابھی علم رکھنے والے میں ہوتی ہے، نام کی بھی ان میں کبھی نظر نہ آئی،ایسے رفیق نے کہا ’’ بھائیوں یہ جس انداز سے چل رہی ہے اور جو لباس اس نے زیب تن کیا ہوا ہے وہ واضح طور پر گناہ کی دعوت دے رہا ہے ‘‘ اورہم تمام دوست تیز تیز قدم اٹھاتے اس سے آگے نکل گئے۔ یونیورسٹی کا وہ زمانہ، جوانی کا وہ وقت پر لگا کر اُڑ گیا۔ اب آج دیکھوں تو ہر طرف کچھ وقت کو نظر اٹھتی ہے پھر کوئی ایسا منظر نگاہ میں آجاتا ہے کہ جھجھک کر نظر وہاں سے ہٹانا پڑتی ہے۔
    مردوں کے معاشرے میں عورت کو آنکھوں کی ٹھنڈک اور نفسی لذت کے لئے ایسا استعمال کیا اور پیش کیا کہ بیان سے باہر ہے،میں نہ مفتی ہوں، نہ عالم ہوں اور نہ ہی کسی قسم کا علم رکھنے والا مگر جو لکھنے جا رہا ہوں اسکے لئے کسی علم کی نہیں بس لمحہ بھر کی سوچ ، آنے والے سیاہ وقت کا خوف ہونا لازم ہے اور بس پھر تمام منظر اپنے آپ ہی صاف ہوجائے گا ۔ تیس بتیس سال پہلے کا جو واقعہ اوپر بیان کیا ہے اس وقت وہ محترمہ لباس تو مکمل پہنی ہوئی تھیں مگر انداز ایسا کہ لگتا تھا انہوں نے کپڑے کے تھان پر لیٹ کر لباس سلوایا ہے، وہ وقت اور تھا، بڑا عجیب اور معیوب سا لگا تھا خاکسار اور اسکے احباب کو اتنی فیٹنگ کا لباس ۔مگردھیرے دھیرے فیشن کے نام ، جدید دور کے تقاضوں کے تحت اس طرح کی فیٹنگ ہم ہی لوگوں نے اپنی آنکھوں کے سرور اور نفسی لذت کے لئے عام کردی۔کپڑا موسم کے تقاضوں کی بدولت ہم نے باریک سا باریک کردیا اورلباس کے نیچے استر کا فیشن یا تو غائب کر دیا یا پھر استر کے لئے بھی اتنا ہلکا اور باریک کپڑا استعمال کیا کہ معاشرہ عورت کا اسکے لباس میں ہوتے ہوئے بھی ایکسرے کرنے کے قابل ہوگیا اور ہم راہ چلتے اپنی نگاہوں کو سیراب کرنے لگے۔
    جدید دور میں ذہنی پسماندگی اتنی عروج پر پہنچ گئی کہ کسی بھی اشتہار میں عورت کی موجودگی لازم قرا ر پاگئی اور وہ بھی اس انداز سے کہ اشتہار اگر رنگت صاف کرنے کی کریم کا ہے تو سڑک کنارے بڑے بڑے اشتہاری بورڈ پر نہ صرف عورت کا گورا چہرہ دکھایا جا رہا ہے بلکہ عریاں شانے بھی خصوصی طور پر نمایاں ہوتے ہیں۔ اب رنگت صاف کرنے کی کریم کے اشتہار کے لئے نہ تو عورت ضروری تھی اور نہ ہی یہ عریانیت ۔ اور اگر عورت کی موجودگی ضروری تھی تو صرف چہرے سے کام باآسانی نکل جاتا مگر یہ عریاں شانے ۔۔۔۔۔ اف !! میں بھی کیسی دقیانوسی باتیں کرنے لگا، جدید دور میں یہ معمولی بات ہے اور میری ٹانگ یہیں ٹوٹ رہی ہے۔عجیب نامعقول انسان ہوں۔
    ایک وقت تھا جب پاکستان کے واحد ٹی وی چینل پر خبریں یعنی حکومت نامہ پڑھا جاتا تھا تو پڑھنے والی کے سر پر دوپٹہ لازم قرار دے دیا گیا تھا اب صاحب آپ اس کو دوپٹہ کہیں یا روپٹہ کہیں وہ جو بھی تھا اب صرف پٹہ بن کے رہ گیا ہے جو خبریں پڑھنے والی کے گلے میں نظر آرہا ہوتا ہے۔ پہلے یہ اوڑھنی سر سے سینے تک تھی مگر جدید دور کے تقاضوں، نئے فیشن کی ضرورت اور دقیانوسی سیاہی ذہنوں پر سے چھٹنے کے سبب یہ سر سے اتر کر سینے کو اپنی گرفت میں لئےرہی اور پھر وقت کے ساتھ گلے تک محدود ہوگئی اور اب کہیں کہیں گلے سے بھی غائب ہوگئی اور آج ہم فخر سے کہہ سکتے ہیں ہمارے پاس ایسے گھرانے ہیں جنہوں نے یہ اوڑھنی صدوقوں میں بند کر کے ہم کو جدید دور سے روشناس کروایا ہے۔ میری تو آنکھیں خیرہ ہیں اس دور سے ، کبھی سوچتا ہوں مجھے تلواروں اور گھوڑوں کے زمانے میں ہونا چاہئیے تھا ۔مگر اس دور میں ہم جیسے گدھے قابل ِقبول نہیں تھے۔
    اب ہم دیکھیں تو سڑک کنارے لگے بورڈز چاہے رنگت گوری کرنے والی کسی کریم کے ہوں، چاہے کسی لان کے یا بستر کے گدوں کے ، اس میں عورت کاعکس یعنی اسکی تصویر جسم کےکسی نہ کسی ڈھکے ہوئے حصے کی نمائش کے ساتھ لازمی ہے ۔ یہ تمام بالا باتیں جو فقیر کے ذہن میں آئی ہیں وہ عام سی باتیں ہیں ، لوگ اپنے نفس کو ان نظاروں سے لطف پہنچا رہے ہیں مگر جو سوال خاکسار کے ذہن میں ہے وہ اکثر ایسی سوچ تک فقیر کولیجاتا ہے جس کو وہ زیرِقلم نہیں لا سکتا ، اور آج بالا تمام باتیں بیان کرنے کے بعد وہ سوال قاری کی خدمت میں عرض کر رہا ہوں۔
    پرانے وقتوں میں عورت کی نمائش نہیں تھی، مگرانسان اپنے نفس کے سرور کے لئے مختلف بہانوں سے عورت کی نمائش کرتا رہا اور اب یہ عالم ہے کہ راہ چلتے ایسے اشتہار نظر آنے لگے ہیں جن میں یا تو عریانیت موجود ہے یا راہ چلتی صنف ِنازک ایسے لباس میں نظر آنے لگی ہیں جس کو پہنو یا نہ پہنو بات برابر ہے۔ اب بات کر تے ہیں ہم سے چھوٹوں کی ، جنہوں نے اس ماحول میں آنکھ کھولی ہے جو عورت کو لباس میں دیکھ تو رہے ہیں مگر عریاں شانوں اور ٹانگوں کے ساتھ۔ وہ یہ سب دیکھتے دیکھتے ان تمام نظاروں کے عادی ہوچکے ہیں ان کے لئے ان نظاروں میں کوئی نفسی لذت نہیں ہے ۔ اور اب ذرا سوچ لیں وہ اپنی کھوج اس نفسی لذت کے ہاتھوں کہاں تک جا سکتے ہیں جس کی انگلیوں پر رقص کرتے ہوئے ہم ان کو وراثت میں لبا س کے ساتھ بے لباسی دے رہے ہیں۔ اخبا ر ہو یا خواتین کے رسالے، اشتہار سگریٹ کا ہو یا کسی لان کا، کاونٹر کسی کوچنگ سینٹر کا ہو یا کسی ہسپتال کا ہم فیشن کے بہانے، جدید دور کے بہانے ، آزاد خیالی کے بہانے آنے والوں کو وہ راستہ دے رہے ہیں جس کو فقیر زیرِقلم نہیں لاسکتا ، ہم لذت کی وہ بھوک چھوڑے جا رہے ہیں جو رہی سہی انسانیت کو چاٹ جائے گی۔۔۔
    ہماری نسل ان تمام نظاروں کی عادی ہو چکی ہے اسکو ان تمام نظاروں سے بڑھ کر کھوج ہے۔ ہم نے محض اپنی آنکھوں کے سرور کی خاطر اپنا کل نہ جانے کس تاریکی کے حوالے کر دیا ہے، ہمارا دل بہلا جب ہم عورت کو محفل تک لائے، پھر بھوک بڑھی ہم نے اسکی اوڑھنی چھین لی ، پھر وقت کے ساتھ طلب بڑھی تو مردانہ پہناوا پہنا دیا ، ہماری آنکھیں یہ منظر دیکھ دیکھ کر عادی ہوگئیں ، نفس کچھ اور کی طلب کرنے لگا توہم ایسا کپڑا لے آئے جس کو پہن کر بھی بدن کا پردہ نہ ہو، مگر طلب تھی کہ مٹنے ہی میں نہیں آرہی تھی اور پھر ہم وہ فیشن لے آئے جس میں کبھی شانے عریاں تو کہیں ٹانگیں عریاں ہو جائیں ۔اب ہمارا زمانہ تمام ہونے کو ہے اور باگ دوڑ ہماری نسل کے ہاتھوں میں ہے جو ان تمام نظاروں کی عادی ہوچکی ہے اب سوچیں کہ نفس کی یہ بھوک جب انکو پریشان کرے گی ۔ جب وہ اس طلب کے پیچھے رقص کریں گے تو اسکےتحت صنف ِنازک کو کہاں لا کھڑا کریں گے ۔آج جو بند کمروں کے تماشےہیں کل سڑک کے عام تماشے بنا دئیے جائیں گے ۔آخر کب تک ؟؟ اور کہاں تک؟؟
    یہ سوال امید کی روشنیوں پر مہیب اندھیرا بن کر چھا تا جا رہا ہے مگر جب الفاظ اترتے ہیں قرطاس پر تو امید کی لو پھر بھڑک پڑتی ہے کہ شاید کبھی یہ الفاظ پڑھکر کسی سمت سے کوئی ایسا سورج ابھرے جو پھیلتی سیاہی کو روشنی میں تبدیل کر دے ۔ اب یہ پڑھنے والے پر ہے وہ یہ سوچ ، یہ پیغام کہا ں تک لے پہنچے۔ اور کل ہونے والے اندھیرے کے لئے روشنی کے چراغ ابھی سے جلا دے


    خیر اندیش
    س ن مخمور
    امر تنہائی
     
    • زبردست زبردست × 11
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. لئیق احمد

    لئیق احمد معطل

    مراسلے:
    12,179
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    آپ کی یہ تحریر پڑھ کر زخم ہرے ہوگئے۔ بے حیائی پانی کی طرح اپنا راستہ بناتی جا رہی ہے مگر اس کے آگے بند باندھنے والا کوئی نہیں۔ بلکہ اگر کوئی اس کے خلاف بات کرے تو جس طوفان بدتمیزی کا سامنا کرنا پڑتا ہے کہ انسان سوچتا ہے کہ میں نے بات کرنے کی غلطی ہی کیوں کی۔
    اللہ تعالی آپ کی کاوش کو قبول فرمائے۔ آپ کلمہ حق بلند کرتے رہئے۔ کوئی سنے نا سنے ماننے یا نا مانے آپ کو جزائے خیر ضرور ملے گی انشآاللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  3. نایاب

    نایاب لائبریرین

    مراسلے:
    13,422
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Goofy
    معاشرے کے چلن پر اک دردمندانہ مخلص تحریر ۔۔۔۔۔۔۔۔
    "وجود زن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ "
    اور ہم نے ان حقیقت بھرے رنگوں کو کمرشلائز کرتے " صنف نازک " کو صرف اشتہاری منڈی کا بکاؤ مال بنا دیا ہے ۔
    لمحہ فکریہ یہ ہے اب کہ ہماری آنے والی نسلیں اس اشتہاری منڈی میں ان رنگوں کو مزید کس صورت پھیلائیں گی ۔
    کیونکہ اس اشتہاری منڈی میں ہم نے صنف نازک کو لباس کے معاملے میں غربت کی انتہا تک تو پہنچا دیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
    آگہی کی حامل اس بہترین تحریر پر ڈھیروں دعاؤں بھری داد ۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 2
  4. ماہا عطا

    ماہا عطا محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    السلام علیکم مخمور بھائی آپ نے ایک تلخ حقیقت کو بہت اچھے انداز میں بیان کیا ہے۔۔۔۔
    باقی میں کیا تبصرہ کر سکتی ہوں۔۔آپ نے بہت اچھے الفاظ استعمال کیے ہیں۔۔۔
    اللہ آپ کی اس کاوش کو قبول فرمائیں۔۔۔
    خوش رہیں بھائی آمین۔۔
     
    مدیر کی آخری تدوین: ‏جولائی 27, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
    • متفق متفق × 1
  5. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    7,796
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    بہت عمدہ تحریر ہے اور قلم میں نشتر کی کاٹ ہے۔آج کل ہم نے برائی کو برائی سمجھنا بھی ترک کردیا ہے چہ جائیکہ (سب سے کمتر درجے میں ) اس کے خلاف آواز اُٹھائیں۔ ایسے میں آپ جیسے لکھاریوں کا دم غنیمت ہے۔ اللہ کرے زورِ قلم اور زیادہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • متفق متفق × 2
  6. محمود احمد غزنوی

    محمود احمد غزنوی محفلین

    مراسلے:
    6,435
    موڈ:
    Torn
    اچھی تحریر ہے۔ لمحہِ فکریہ ہے کہ جس تناسب سے معاشرے میں بے حجابی بڑھتی جاتی ، ہے میرا گمان ہے کہ اسی تناسب سے شعر و ادب اور فنونِ لطیفہ انحطاط پذیر ہوتے جاتے ہیں۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
    • زبردست زبردست × 1
  7. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,331
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت فکر انگیز تحریر
    عصر حاضر کے ایک اہم موضوع کو آپ نے بہت اچھے انداز میں قلمبند کیا
    شراکت کا شکریہ
    اللہ کرے زور قلم زیادہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. ابن رضا

    ابن رضا لائبریرین

    مراسلے:
    4,228
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    نہایت درد بھرے انداز میں لمحہ فکریہ بیان کیا گیا ہے اور ایک معتدل قلم آرائی کی گئی ہے. آنے والے طوفان کا پیش خیمہ تحریر. صاحبِ تحریر کا شکریہ. اللہ ہم سب کو صراطِ مستقیم عطا فرمائے آمین.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 2
  9. سید زبیر

    سید زبیر محفلین

    مراسلے:
    4,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    برادر عزیز ! فحاشی کا یہ ایک ایسا ناسور پھیلایا جا رہا ہے جو ہمارے کم سن بچوں کو بھی متاثر کر رہا ہے ۔ آج سے پان چھے سال پہلے اسی موضوع پر میں اخبار میں ایک کالم لکھا تھا شائد کہیں میرے پاس پڑا ہو ۔ اور اس میں یہی لکھا تھا کہ دوسروں کی بیٹیوں کی چند ٹکوں میں یہ عزت خریدنے والے اس مقام پر اپنی بیٹیوں کی تصویریں لگا کر سوچیں ۔ ان اشتہاری کمپنیوں کے مالکان ، اخبارات اور الیکٹرانک میڈیا کے مالکان جو مالی منفعت کے لئے قوم کو تباہ کر رہے ہیں انہیں نہیں معلوم کہ ان کی عزتوں سے کون کہاں کھیل رہا ہے ۔ سابق گورنر شیر پنجاب غلام مصطفےٰ کھر جن کے گورنر ہاوس سے لاہور کالج کی اغوا شدہ بچیاں برامد ہوئی تھیں کی عزتیں کہاں کہاں نہیں رلیں اگر یہ عبرت ناک منظر دیکھنے والی آنکھ ہو ۔ تو۔
    کے پی کے میں جب ایسی تصاویر کے خلاف مہم چلی تو ایک طبقہ نے اُس کی مخالفت کی ۔ ایسی تصاویر زیادہ تر ملٹی نیشنل کمپنیوں کی اشتہاری مہم میں استعمال ہونا شروع ہوئی تھیں اب بھی اُن ہی کے اشتہاروں میں بے باکی نظر آتی ہے ۔اُن کی دیکھا دیکھی چند دیسی کمپنیوں میں بھی یہی روش اختیار کرلی
    کاش جغرافیائی سرحدوں کی محافظ افواج کی طرح ، پاکستان کے جوانوں کی کوئی فوج نظریاتی سرحدوں کی بھی حفاظت کرتی ۔ اللہ ہم پر رحم کرے قوت عمل کی توفیق عطا کرے (آمیں)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  10. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    بلا تبصرہ۔۔۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  11. سلمان حمید

    سلمان حمید محفلین

    مراسلے:
    1,270
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Breezy
    عید کی مصروفیت کی وجہ سے تھوڑی دیر ہوئی یہاں آنے میں۔ اس کے لیے معذرت چاہتا ہوں۔
    جہاں تک بات آپ کی تحریر کی ہے تو پچھلی تمام تحاریر کی طرح آپ نے موضوع کو بہت اچھے طریقے بیان کیا اور اس بار تو موضوع ہی وہ تھا جو آج کے دور کا ایک المیہ ہے اور آپ بہت اچھی طرح اسے لے کر چلے۔
    زیادہ بہتر ہوتا اگر آپ اس کو تھوڑا پھیلا کر ہمارے گندے ذہنوں پر بھی روشنی ڈالتے جو برقعے میں ملبوس خاتون کو نہیں بخشتے، اس مردانہ معاشرے کی اس مردانگی کا ذکر کرتے جو ہوس کے پہلو کہیں سے بھی تلاش کر لیتے ہیں چاہے وہ اخبار میں اجتماعی زیادتی کی خبر ہو یا اپنا آپ لپیٹ کر چلنے والی سکول کالج کی لڑکی۔ ہمارا معاشرہ صرف خواتین کی حجاب پر زور دیتا ہے، آپ کو چاہئے تھا کہ مرد کے لباس پر بھی لکھتے تاکہ خواتین کی نگاہیں بھی پاکیزہ رکھنے پر تھوڑی بات ہوتی :)
    ہم اس معاشرے کے لوگ ہیں جہاں صرف لڑکیوں کو حجاب کا بتایا جاتا ہے اور حجاب نہ کرنے پر خواتین کے ساتھ نازیبا حرکات ہونے پر خواتین کو ہی مورود الزام ٹھہرایا جاتا ہے اور معاشرے کی بے راہروی میں سب سے پہلی بات ہی یہی آتی ہے کہ فحاشی بڑھ گئی ہے۔ ہم مردوں کو آنکھیں نیچی رکھنے کا نہیں بتاتے۔ اگر بتاتے تو لڑکی جس مرضی لباس میں ملبوس ہوتی، مرد تو اپنا فرض نبھاتا؟
    میں یہاں یورپ کا ذکر کسی تفصیل میں جائے بغیر کرنا چاہوں گا کہ اپنے معاشرے میں اپنی عورتوں کو حجاب میں دیکھ دیکھ کر باہر آنے والے برہنہ ٹانگوں میں کھو جاتے ہیں۔ تو صرف عورت کو حجاب میں مت رکھیں ورنہ باہر آنے والا ہر مرد اپنی رسی تڑوا کر زبان باہر نکالے یہاں وہاں بھاگتا پھرے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  12. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    6,799
    موڈ:
    Asleep
    عورتوں کے لباس پر تو تفصیلاً بات آپ نے کر دی۔ تاڑو مردوں کا ذکر ہم کروا دیتے ہیں:

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  13. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover

    السلام علیکم سلمان بھائی

    امید ہے عید خوب گزری ہوگی .....
    آپ کی رائے اور اظہار سر آنکھوں پر ...
    جو لکھ رہا ہوں وہ بحث در بحث کے واسطے نہیں لکھ رہا
    البتہ اس ابہام کے سبب لکھ رہا ہوں جو مجھ ناچیز کے ذہن
    میں آپکی رائے پڑھکر آیا کہ شاید میرے بھائی یہ خیال کر بیٹھے
    کہ میرا جھکائو مردوں کی جانب ہے اور قلم جو لکھتا ہے وہ
    مردوں کے اعمال سے نگاہ موڑ کر لکھتا ہے

    یہ اپنے ہی لکھے سے یہاں نقل کر رہا ہوں

    ہم نے محض اپنی آنکھوں کے سرور کی خاطر اپنا کل نہ جانے کس تاریکی کے حوالے کر دیا ہے، ہمارا دل بہلا جب ہم عورت کو محفل تک لائے، پھر بھوک بڑھی ہم نے اسکی اوڑھنی چھین لی ، پھر وقت کے ساتھ طلب بڑھی تو مردانہ پہناوا پہنا دیا ، ہماری آنکھیں یہ منظر دیکھ دیکھ کر عادی ہوگئیں ، نفس کچھ اور کی طلب کرنے لگا توہم ایسا کپڑا لے آئے جس کو پہن کر بھی بدن کا پردہ نہ ہو، مگر طلب تھی کہ مٹنے ہی میں نہیں آرہی تھی اور پھر ہم وہ فیشن لے آئے جس میں کبھی شانے عریاں تو کہیں ٹانگیں عریاں ہو جائیں

    یہاں ہم سے مراد مرد ہی ہیں جوعورت کو محفل تک لائے
    اور گھر کی عورتوں سے گھر کے ہی مرد کیا کر جاتے ہیں اسکی
    بابت اپنی ایک حقیر تحریر " سائباں تلے جھلستی زمیں " میں ذکر کر چکا ہوں
    ابھی ایک تحریر رہتی ہے جو یہ بتائے گی کہ اسکول کی انتظامیہ اپنی اسکول
    ٹیچر سے کیا کیا ڈیمانڈ کرتی ہے ..... صاحب معاشرہ بہت برا ہے
    معاشرے کو مرد اور عورت ہی بناتے ہیں
    اور اس معاشرے کو برا مرد اور عورت دونوں ہی نے کیا ہے
    رہی بات مرد کے پہناوے کی ... تو جناب مقصد پہناوا نہیں بلکہ وہ کل زیر غور لانا تھا جو ہم
    اپنی آنے والی نسل کو دیئے جا رہے ہیں ....
    بالا تحریر میں نہ ڈھکے چھپے الفاظ میں ، نہ کھلے الفاظ میں
    قصور وار صرف عورت کو ٹھہرایا گیا ہے ... مگر شاید چند قاری احباب کو لگا کہ بات یہیں تک محدود ہے
    اور نشانہ قلم کا عورتیں ہیں ... تو جناب یقین مانیں ایسا کوئی مقصد نہیں ...

    اصل مقصد تو یہ تھا کہ صاحب جو ہونا تھا سو ہو گیا اب کل جو ہونا ہے اسکے
    لئے اگر کچھ کیا جاسکتا ہے تو وہ کیا جائے .... بس سبب یہ ہی خیال تھا اس تحریر کا ...

    امید ہے میری کوئی بات ناگوار نہ گزری ہوگی
    اور ایسا ہونے کی صورت میں خاکسار پیارے بھیا سے پیشگی معذرت کرتا ہے

    اللہ آباد و بےمثال رکھے آپکو .... آمین
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 31, 2014
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  14. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    جزاک اللہ ۔۔۔۔۔
    لئیق بھائی ممنون ہوں آپکی آمد پر ۔۔۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    بیشک نایاب بھائی مقصد اس فکر ہی کو سامنے لانا تھا ۔۔۔۔

    اللہ آباد و بے مثال رکھے آپکو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  16. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover

    بہت شکریہ میری بہن ۔۔۔۔۔

    اللہ آباد و بے مثال رکھے آپکو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover


    السلام علیکم

    جناب میں کیا میری بساط کیا ....
    سیکھنے آیا ہوں تمام احباب سے .... اب دیکھیں آگے مالک کی رضا

    سوالی کو رب سے مانگنا برا لگتا ہے
    یہاں خدا کا بندہ ہی اب خدا لگتا ہے
    میں کچھ نہیں،گر میں کچھ ہوں تو یقنناَ سید
    عطا اسی کی ہے ، اسکا ہی دیا لگتا ہے

    اللہ آباد و بے مثال رکھے آپکو.....
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  18. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover

    آپکی آمد پر خاکسار ممنون و مسرور ہے

    اللہ آباد و بے مثال رکھے آپکو.....
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover

    آپکی آمد فقیر کے لئے باعث ِ مسرت ہے

    اللہ آپکو خوشحال و کامران رکھے .....
     
  20. loneliness4ever

    loneliness4ever محفلین

    مراسلے:
    652
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover


    آمین صد آمین ...

    آپکی آمد فقیر کے لئے باعث ِ مسرت ہے
    اللہ آپکو خوشحال و کامران رکھے .....
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر