مصطفیٰ زیدی حصار ،،،مصطفی زیدی

علی فاروقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 26, 2009

  1. علی فاروقی

    علی فاروقی محفلین

    مراسلے:
    268
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بے نُور ہوں کہ شمعِ سرِ راہ گزرمیں ہوں
    بے رنگ ہوں کہ گردشِ خونِ جگر میں ہوں

    اندھا ہوں یوں کہ کور نگاہوں میں رہ سکوں
    بہرہ ہوں یوں کہ قصّہ ءِ نہ معتبر میں ہوں

    ذرّے جوان ہو کے اُفق تک پہنچ گئے
    میں اتنے ماہ و سال سے بطنِ گہر میں ہوں

    مستقبلِ بعید کی آنکھوں کی روشنی
    اوروں میں ہوں نہ ہوں مگر اپنی نظر میں ہوں

    لاکھوں شہادتوں نے مجھے واسطے دیئے'
    میں شب گزیدہ پھر بھی تلاشِ سحر میں ہوں

    سفّاک بچپنوں کا کھلونابنا ہوا ہے
    دنیاکی زد میں پنجہِ شمس و قمر میں ہوں

    میں جنگلوں کی رات سے تو بچ آگیا
    اب کیا کروں کہ وادیءِ نوعِ بشر میں ہوں

    جی چاہتاہے مثلِ ضیا تجھ سے تجھ سے مِل سکوں
    مجبور ہوں کہ محبسِ دیوار و در میں ہوں

    میں ہم نشینِ خلوتِ شہنازِ لالہ رُخ
    میں گرمئ پسینہِءِ اہلِ ہنر میں ہوں

    خوابوں کے راہروو، مجھے پہچاننے کے بعد
    آواز دو کہ اصل مِیں ہوں یا خبر میں ہوں

    اتنی تو دور منزلِ وارفتگا ں نہ تھی
    کن راستوں پہ ہوں کہ ابھی تک سفر میں ہوں

    کیسا حصار ہے جو مجھے چھوڑتا نہیں
    میں کس طلسمِ ہوش رُباکے اثر میں ہوں

    زنداں میں ہوں کہ اپنے وطن کی فصیل میں
    عزّت سے ہوں کہ جسم فروشوں کے گھر میں ہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت خوب نظم ہے! شکریہ علی فاروقی صاحب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. شاہ حسین

    شاہ حسین محفلین

    مراسلے:
    2,901
    بہت خوب جناب علی فاروقی صاحب اچھا انتخاب ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,874
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بہت شکریہ فاروقی صاحب خوبصورت نظم شیئر کرنے کیلیے!

    زنداں میں ہوں کہ اپنے وطن کی فصیل میں
    عزّت سے ہوں کہ جسم فروشوں کے گھر میں ہوں

    واہ واہ واہ، لاجواب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    حصار

    بے نُور ہوں کہ شمعِ سرِ رہ گزر میں ہوں
    بے رنگ ہوں کہ گردشِ خونِ جگر میں ہوں

    اندھا ہوں یوں کہ کور نگاہوں میں رہ سکوں
    بہرہ ہوں یوں کہ قصّۂ نامعتبر میں ہوں

    ذرّے جوان ہو کے اُفق تک پہنچ گئے
    میں اتنے ماہ و سال سے بطنِ گہر میں ہوں

    مستقبلِ بعید کی آنکھوں کی روشنی
    اوروں میں ہوں نہ ہوں مگر اپنی نظر میں ہوں

    لاکھوں شہادتوں نے مجھے واسطے دیے
    میں شب گزیدہ پھر بھی تلاشِ سحر میں ہوں

    سفّاک بچپنوں کا کھلونا بنا ہوا
    دنیاکی زد میں پنجۂ شمس و قمر میں ہوں

    میں جنگلوں کی رات سے تو بچ کے آ گیا
    اب کیا کروں کہ وادیِ نوعِ بشر میں ہوں

    جی چاہتاہے مثلِ ضیا تجھ سے مِل سکوں
    مجبور ہوں کہ محبسِ دیوار و در میں ہوں

    میں ہم نشینِ خلوتِ شہنازِ لالہ رُخ
    میں گرمیِ پسینۂ اہلِ ہنر میں ہوں

    خوابوں کے رہ رو، مجھے پہچاننے کے بعد
    آواز دو کہ اصل میں ہوں یا خبر میں ہوں

    اتنی تو دور منزلِ وارفتگا ں نہ تھی
    کن راستوں پہ ہوں کہ ابھی تک سفر میں ہوں

    کیسا حصار ہے جو مجھے چھوڑتا نہیں
    میں کس طلسمِ ہوش رُباکے اثر میں ہوں

    زنداں میں ہوں کہ اپنے وطن کی فصیل میں
    عزّت سے ہوں کہ جسم فروشوں کے گھر میں ہوں

    (مصطفیٰ زیدی، کوہِ ندا)
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 29, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    2,983
    اصلاح کرکے شامل کرنے پر بہت زیادہ شکریہ بھائی۔ جزاک اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    2,983
    یہ شعر بہت پسند آیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ْخوش رہیے۔
     

اس صفحے کی تشہیر