حرفَِ معتبر۔۔۔۔ بانی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 9, 2006

ٹیگ:
  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حرف معتبر



    [align=center]بانی
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حرفِ معتبر

    جملہ حقوق بحقِ مصنّف محفوظ
    پہلی بار ستمبر 1971
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نام : راجندر منچندہ
    پیدائش: 12 نومبر 1932ء
    تعلیم: ایم ایے اقتصادیات
    وطن: ملتان (مغربی پاکستان)

    صلاح کار : راج نارائن راز
    انتخاب : چندر پرکاش شاد
    ترتیب : مہدی حیدر زیدی
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    انتساب

    والدِ محترم گوبند رام منچندہ (مرحوم) کے نام
    مکرّم کیول کرشن وڈیرہ کے نام


    اے صفِ ابرِ رواں تیرے بعد
    اک گھنا سایہ شجر سے نکلا
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    زماں مکاں تھے مرے سامنے بکھرتے ہوئے
    میں ڈھیر ہو گیا طولِ سفر سے ڈرتے ہوئے
    دکھا کے لمحۂ خالی کا عکسِ لا تفسیر
    یہ مجھ میں کون ہے مجھ سے فرار کرتے ہوئے
    بس ایک زخم تھا دل میں جگہ بناتا ہوا
    ہزار زخم مگر بھولتے بسرتے ہوئے
    وہ ٹوٹتے ہوئے رشتوں کا حسنِ آخر تھا
    کہ چُپ سی لگ گئ دونوں کو بات کرتے ہوئے
    عجب نظارہ تھا بستی کاا اس کنارے پر
    سبھی بچھڑ گئے دریا سے پار اترتے ہوئے
    میں ایک حادثہ بن کر کھڑا تھا رستے میں
    عجب زمانے مرے سر سےتھے گزرتے ہوئے
    وہی ہوا کہ تکلّف کا حسن بیچ میں تھا
    بدن تھے قربِ تہی لمس سے بکھرتے ہوئے
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پتّہ پتّہ بھرتے شجر پر ابر برستا دیکھو تم
    منظر کی خوش تعمیری کو لمحہ لمحہ دیکھو تم!
    مجھ کو اس دلچسپ سفر کی راہ نہیں کھوٹی کرنی
    میں عجلت میں نہیں ہوں یارو، اہنا رستہ دیکھو تم
    آنکھ سے آنکھ نہ جوڑ کے دیکھو سوئے اُفق اے ہم سفرو!
    لاکھوں رنگ نظر آئیں گے، تنہا تنہا دیکھو تم!
    آنکھیں٬ چہرے٬ پاؤں سبھی کچھ بکھرے پڑے ہیں رستے میں
    پیش روؤں پر کیا کچھ بیتی، جا کے تماشہ دیکھو تم
    کیسے لوگ تھے٬ چاہتے کیا تھے کیوں وہ یہاں سے چلے گئے
    گُنگ گھروں سے کچھ مت پوچھو، شہر کا نقشہ دیکھو تم
    میرے سر ہے شراپ کسی کا، چھوڑ دو میرا ساتھ یہیں
    جانے اس ویران ڈگر پر آگے کیا کیا دیکھو تم
    اب تو تمھارے بھی اندر کی بول رہی ہے مایوسی
    مجھ کو سمجھانے بیٹھے ہو٬ اپنا لہجہ دیکھو تم!
    پلک پلک من جوت سجا کر کوئ گگن میں بکھر گیا
    اب ساری شب ڈھونڈو اس کو، تارا تارا دیکھو تم
    بھاری رنگوں سے ڈرتا سا، رنگ جدا اک ہلکا سا
    صاف کہیں نہ دکھائ دے گا، آڑھا ترچھا دیکھو تم
    پانی سب کچھ اندر اندر دور بہا لے جاتا ہے۔۔۔۔
    کوئ شے اس گھاٹ نہ ڈھونڈو، ساتوں دریا دیکھو تم
    جیسے میرے سارے دشمن مرے مقابل ہوں اک ساتھ
    پاؤں نہیں آگے اٹھ پاتے، زور ہوا کا دیکھو تم
    ابھی کہاں معلوم یہ تم کو ویرانے کیا ہوتے ہیں
    میں خود ایک کھنڈر ہوں جس میں وہ آنگن آ دیکھو تم
    ان بن گہری ہو جائے گی یوں ہی سمے گزرنے پر
    اس کو منانا چاہوگےجب، بس نہ چلے گا۔۔۔ دیکھو تم
    ایک ایسی دیوار کے پیچھے، اور کیا کیا دیواریں ہیں
    اِک دیوار بھی راہ نہ دے گی، سر بھی ٹکرا دیکھو تم
    ایک اتھاہ گھنی تاریکی کب سے تمھاری راہ میں ہے
    ڈال دو ڈیرہ وہیں، جہاں پر نور ذرا سا دیکھو تم
    سچ کہتے ہو! ان راہوں پر چَین سے آتے جاتے ہو
    اب تھوڑا اس قید سے نکلو، کچھ ان دیکھا دیکھو تم
    خالی خالی سے لمحوں کے پھول ملیں گے پوجا کو
    آنے والی عمر کے آگے دامن پھیلا دیکھو تم
    ہم پہنچے ہیں بیچ بھنور کے روگ لئے دنیا بھر کے
    اور کنارے پر دنیا کو لَوٹ کے جاتا دیکھو تم
    اِک عکسِ موہوم عجب سا اِس دھندلے خاکے میں ہے
    صاف نظر آئے گا تم کو، اب جو دوبارہ دیکھو تم
    اپنی خوش رقدیری جانو، اب جو راہیں سہل ہوئیں
    ہم بھی اِدھر ہی سے گزرے تھے، حال ہمارا دیکھو تم
    رات، دعا مانگی تھی بانی ہم نے سب کے کہنے پر
    ہاتھ ابھی تک شل ہیں اپنے، قہر خدا کا دیکھو تم
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مرے بدن میں پگھلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    اِک اور ذات میں ڈھلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    مری صدا نہ سہی۔۔ہاں۔۔ مرا لہو نہ سہی
    یہ موج موج اچھلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    کہیں نہ آخری جھونکا ہو مِٹتے رِشتوں کا
    یہ درمیاں سے نکلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    نہیں ہے آنکھ کے صحرا میں ایک بوند سراب
    مگر یہ رنگ بدلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    جو میرے واسطے کل زہر بن کے نکلے گا
    تِرے لبوں پہ سنبھلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    یہ عکسِ پیکرِ صد لمس ہے، نہیں۔۔ نہ سہی
    کسی خیال میں ڈھلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    بدن کو توڑ کے باہر نکلنا چاہتا ہے
    یہ کچھ تو ہے، یہ مچلتا ہوا سا کچھ تو ہے!
    کسی کے واسطے ہوگاپیام یا کوئ قہر
    ہمارے سر سے یہ ٹلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    یہ میں نہیں۔۔ نہ سہی۔۔۔ اپنے سرد بستر پر
    یہ کروٹیں سی بدلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    وہ کچھ تو تھا، میں سہارا جسے سمجھتا تھا
    یہ میرے ساتھ پھسلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    بکھر رہا ہے فضا میں یہ دودِ روشن کیا
    اُدھر پہاڑ کے جلتا ہوا سا کچھ تو ہے
    مِرے وجود سے جو کٹ رہا ہے گام بہ گام
    یہ اپنی راہ بدلتا ہوا سا کچھ تو ہے!
    جو چاٹتا چلا جاتا ہے مجھ کو اے بانی!
    یہ آستین میں پلتا ہوا سا کچھ تو ہے!!
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نہ منزلیں تھیں، نہ کچھ دل میں تھا،۔۔ نہ سر میں تھا
    عجب نظارۂ لا سمتیت نظر میں تھا
    عتاب تھا کسی لمحے کا اِک زمانے پر
    کسی کو چین نہ باہر تھا، اور نہ گھر میں تھا
    چھُپا کے لے گیا دُنیا سے اپنے دل کے گھاؤ
    کہ ایک شخص بہت طاق اس ہنر میں تھا
    کسی کے لَوٹنے کی جب صدا سنی تو کھُلا
    کہ میرے ساتھ کوئ اور بھی سفر میں تھا
    کبھی میں آب کے تعمیرکردہ قصر میں ہپوں
    کبھی ہوا میں بنائے ہوئے سے گھر میں تھا
    جھجھک رہا تھا وہ کہنے سے کوئ بات ایسی
    میں چُپ کھڑا تھا۔ کہ سب کچھ مِری نظر میں تھا
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہی سمجھ کے اسے خود صدا نہ دی میں نے
    وہ تیزگام کسی دور کے سفر میں تھا
    کبھی ہوں تیری خموشی کے کٹتے ساحل پر
    کبھی میں لَوٹتی آواز کے بھنور میں تھا
    ہماری آنکھ میں آ کر بنا اک اشک، وہ رنگ
    جو برگِسبز کے اندر، نہ شاخِ تر میں تھا
    کوئ بھی گھر میں سمجھتا نہ تھا مرے دُکھ سُکھ
    اِک اجنبی کی طرح میں خود اپنے گھر میں تھا
    ابھی نہ برسے تھے بانی گھِرے ہوئے بادل
    میں اُڑتی خاک کی مانند رہگذر میں تھا
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اِک گلِ تر بھی شرش سے نکلا
    بسکہ ہر کام ہُنر سے نکلا
    میں ترے بعد۔۔ پھر اے گمشدگی
    خیمۂ گردِ سفر سے نکلا
    غم نکلتا نہ کبھی سینے سے
    اک محّبت کی نظر سے نکلا
    اے صفِ ابرِ رواں تیرے بعد
    اِک ھگھنا سایہ شجر سے نکلا
    راست میں کوئ دیوار بھی تھی
    وہ اسی ڈر سے نہ گھر سے نکلا
    ذکر پھر اپنا، وہاں،مدّت بعد
    کسی عنوانِ دِگر سے نکلا
    ہم کہ تھے نشٓۂ محرومی میں،
    ءیہ نیا درد کدھر سے نکلا!
    ایک ٹھوکر پہ سفر ختم ہوا
    ایک سودا تھا کہ سر سے نکلا
    ایک اک قصّۂ بے معنی کا
    سلسلہ تیری نظر سے نکلا
    لمحے، آدابِ تسلسل سے چھُٹے
    میں کہ امکانِ سحر سے نکلا
    سرِ منزل ہی کھُلا اے بانی
    کون کس راہگزر سے نکلا
     

اس صفحے کی تشہیر