سراج الدین ظفر حاِصل ہو کسی کو نگہِ عُقدہ کُشا بھی ۔ سراج الدین ظفر

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 5, 2017

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,515
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    حاِصل ہو کسی کو نگہِ عُقدہ کُشا بھی
    کھُلنے کو تو کھُل جائے تِرا بندِ قبا بھی

    برہم مِری رِندی سے قدر بھی ہے قضا بھی
    اب ان میں اضافہ ہے تِری زُلف ِ دوتا بھی

    اِک عشق ہے آزاد سزا اور جزا سے
    ہر اِک کیلئے ورنہ سزا بھی ہے جزا بھی

    تا دیر تِری زُلف ِ سمن بُو رہی موُضوع
    کل خلوت ِ مے خانہ میں ہم بھی تھے صبا بھی

    اُن سے مِری بیماریِ دل میں ہے اضافہ
    ہے رُوحِ شفا جن کے تنفُّس کی َہوا بھی

    پرہیز نہ کر بادۂ گُل فام سے اے شیخ
    اِس زہر میں موجُود ہے دارُوئے شفا بھی

    اخلاص ہو مفقوُد تو اے واعظِ خُوش گو
    الفاظ ہی الفاظ ہیں تسبیح و ثنا بھی

    کیا اُلٹا زمانہ ہے کہ ہر سمت ہیں پہرے
    ہے بند سُلیماں کے لئے شہر ِ سبا بھی

    بیٹھے ہوں سرِ راہ جو یارانِ خرابات
    کُنجوں سے دبے پاؤں گزرتی ہے صبا بھی

    اے زُہرہ وشو راہِ وفا میں مِرے ساتھ آؤ
    اِس راہ میں رہزن بھی ہُوں مَیں راہنُما بھی

    معلُوم ہُوا زُہد فروشانِ حرَم سے
    اک ِجنس ہے بازارِ عقیدت میں خُدا بھی

    اے وائے تذُبذب کہ اگر پردۂ اَسرار
    اُلٹُوں تو اُلٹ جائے بساطِ دو سرا بھی

    اے تازگیِ رُوئے غزالانِ خرابات
    دَم سے ہےتِرے تازگیِ آب و ہَوا بھی

    یہ شوق کا عالم ہے سرِ منزلِ جاناں
    چلتے ہیں مِرے ساتھ نقُوشِ کفِ پا بھی

    اس طرح کِیا تیز سبُو نے مِرا احساس
    سُنتا ہُوں سکُوت ِ ابدیّت کی نوا بھی

    کہہ دو کہ جو کر دے قدحِ بادہ مقررّ
    گردش اُسی رستے پہ کریں ارض و سما بھی

    اے آہُوئے آوارہ اِرادہ ہے کہاں کا
    دل بادہ گساروں کا خُتن بھی ہے خطا بھی

    دونوں سے مِری رُوح نے باندھے نئے پیماں
    کل رات کہ بُت بھی تھے مِرے ساتھ خُدا بھی

    ہوتا ہے یہاں مُثبت و منفی میں تصاُدم
    قوسِ لب ِ شاہد میں فنا بھی ہے بقا بھی

    وُہ پردۂ اَسرار ہو یا پردۂ محمل
    ہاتھ اپنے پہنچ جائیں گے بے اذن و صَلا بھی

    مَیں گردشِ ایّام پہ مرتا ہُوں کہ اِس میں
    خُو بُو بھی تِری ہے تِرے انداز و ادا بھی

    کام آ ہی گیا تجربۂ زُلفِ نگاراں
    آسُودہ ہیں ہم لوگ تہِ دامِ بَلا بھی

    رکّھا ہے مِری خاک میں تُونے شررِ ہوش
    اب کیا اسے سمجھُوں کہ سِتم بھی ہے عطا بھی

    بہکا ہی نہ دے ہم نفَسو مُجھ کو مِرا عِلم
    عالِم بھی ہُوں آئینۂ جہلِ عُلما بھی

    دیکھا ہے ظفرؔ تجھ کو خرابات میں ہم نے
    تُجھ کو بھی ہے دعوائے کرامت ، ارے جا بھی !

    (سراج الدین ظفرؔ)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. سفیر آفریدی

    سفیر آفریدی محفلین

    مراسلے:
    403
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    الفاظ ہی الفاظ ہے تسبیح و ثنا بهی
     
    • ناقص املا ناقص املا × 1
  3. سفیر آفریدی

    سفیر آفریدی محفلین

    مراسلے:
    403
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    کہہ ستم بهی ہے عطا بهی
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر