1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

جو یاد میں باقی ہے

محمد شکیل خورشید نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 30, 2020

  1. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    283
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    جو یاد میں باقی ہے نگاہوں میں سمایا ہے
    اک دستِ حنائی ہے اور شام کا سایا ہے

    کیا تجھ کو بتائیں ہم اے ہمدمِ دیرینہ
    یادوں سے تری ہم نے کیا لطف اٹھایا ہے

    جینے کے بہانے تو پہلے بھی ہزاروں تھے
    جینے کا مزا تیری چاہت ہی سے آیا ہے

    وہ پیکرِ رعنائی دیکھا تو کہا دل نے
    فرصت سے نظارہ یہ قدرت نے بنایا ہے

    یہ کوئی نہ جانے کیوں مرتا ہے شکیل اس پہ
    وہ کون سا ناتا ہے جو اس نے نبھایا ہے

    فروری 92 کی ویلنٹائن کی شام نکاح ہوا ( رخصتی اسی سال نومبر میں ہوئی) اس نکاح کی شام کے حوالے سے یہ غزل کہی تھی انہی دنوں میں

    محترم الف عین
    محترم محمد خلیل الرحمٰن
    و دیگر اساتذہ و احباب کی نذر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    701
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    ماشاء اللہ اچھی غزل ہے.

    مطلع میں کہیں ٹائپو تو نہیں رہ گیا؟ ایسے تو پہلے مصرعے میں بحر ہی بد رہی ہے. نگاہوں کی جگہ نظروں ہو تو پھر وزن ٹھیک ہوجاتا ہے.

    پہلے مصرعے میں اشارہ کسی جسم کی جانب ہے، تو دوسرے مصرعے میں نظارے کی تخلیق کا ذکر کرنا درست نہیں لگتا، فرصت سے تو قدرت نے وہ پیکر رعنائی بنایا ہوگا، جس کا نظارہ دل نے کیا ہے.

    بھئی نکاح کی شام تو بڑی جرأت کا کم کیا آپ نے ایسا مطلع کہہ کر. بھابھی اگر کہیں پڑھ لیتیں تو شامت آجاتی :)
    ویسے پہلے مصرعے میں "پہ" کی ضرورت نہیں ہے، "پر" بھی وزن میں آجائے گا، اس لئے یہاں یہ تخفیف غیر ضروری معلوم ہوتی ہے.

    دعاگو،
    راحل.
     
    • متفق متفق × 1
  3. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    283
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    تبصرے کا شکریہ محترم
    اوزان کی جو تھوڑی شدبدھ اب ہے اس زمانے میں تو وہ بھی نہیں تھی، مطلع میں ہونے والی بے وزنی اسی وجہ سے در آئی ہے، آپ کے توجہ دلانے پر نظر پڑی

    نظارہ کا لفظ میں نے اس پیکر کے لئے ہی استعمال کیا تھا، مجھے سمجھ نہیں آ پائی کہ آپ کس غلطی کی نشاندہی فرما رہے ہیں

    ہاہاہاہا جو میں نے کہا وہ شائد اسے معلوم ہی تھا، اسی لئے بچت ہو گئی۔

    مطلع آپ کی رہنمائی کے مطابق درست کر لیتا ہوں، نظارے والے معاملے پر مزید رہنمائی کا انتظار رہے گا، شکریہ
     
  4. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    701
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    ان معنی میں استعمال تو ہوسکتا ہے مگر کیونکہ پہلے مصرعے میں آپ کسی کو دیکھنے کی بات کر چکے ہیں، اس لئے نظارہ سے لامحالہ اس دیکھنے کی عمل کی طرف ہی توجہ مبذول ہوجاتی ہے۔ واللہ اعلم
     

اس صفحے کی تشہیر