عدیم ہاشمی جلتا رہا ہوں رات کی تپتی چٹان پر۔ عدیم ہاشمی

شیزان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 8, 2013

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    جلتا رہا ہوں رات کی تپتی چٹان پر
    سُورج تھا جیسے، چاند نہ تھا آسمان پر
    اِک روگ ہے کہ جاں کو لگا ہے اُڑان کا
    ٹُوٹا ہوا پڑا ہوں پروں کی دُکان پر
    میں راستوں میں اُس کا لگاؤں کہاں سُراغ
    سو سو قدم ہیں، ایک قدم کے نِشان پر
    بادل کو چُومتی رہیں پُختہ عمارتیں
    بجلی گِری تو شہر کے کچے مکان پر
    اُس تُند خُو کو راہ میں ٹھہرا لیا ہے کیا
    دریا عدیم روک لیا ہے ڈھلان پر
    نذرِ شکیب جلالی
    عدیم ہاشمی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر