تنہا تنہا سے نظموں کا انتخاب

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 6, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    السلام علیکم!
    احمد فراز کی نظمیں
    ٹائپنگ کا پہلا زینہ​
    "تنہا تنہا" سے انتخاب
    استادِ محترم الف عین صاحب
    فاتح بھائی
    قیصرانی بھائی
    مقدس آپی

    نوٹ: تبصرہ جات کے لئے یہ دھاگہ استعمال کیا جائے۔
     
    • زبردست زبردست × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    شاعر
    جس آگ سے جل اُٹھا ہے جی آج اچانک
    پہلے بھی مرے سینے میں بیدار ہوئی تھی
    جس کرب کی شدّت سے مری روح ہے بے کل
    پہلے بھی مرے ذہن سے دو چار ہُوئی تھی
    جس سوچ سے مَیں آج لہُو تھوک رہا ہوں
    پہلے بھی مرے حق میں یہ تلوار ہُوئی تھی

    وہ غم، غمِ دنیا جسے کہتا ہے زمانہ
    وہ غم، مجھے جس غم سے سرو کار نہیں تھا
    وہ درد کے ہر دور کے انسان نے جھیلا
    وہ درد مرے عشق کا معیار نہیں تھا
    وہ زخم کے ہر سینے کا ناسور بنا تھا
    وہ زخم مجھے باعثِ آزار نہیں تھا

    دنیا نے تڑپ کر مرے شانوں کو جھنجھوڑا
    لیکن مرا احساس غمِ ذات میں گُم تھا
    آتی رہیں کانوں میں المناک پکاریں
    لیکن مرا دل اپنے ہی حالات میں گُم تھا
    مَیں وقت سے بیگانہ زمانے سے بہت دُور
    جام و مے و مینا و خرابات میں گُم تھا

    دربار کی تفریح کا ساماں تھا مرا فن
    ہاتھوں میں مرے ظرفِ گدا لب پہ غزل تھی
    شاہوں کی ہوا خواہی مرا ذوقِ سخن تھا
    ایوانوں کی توصیف و ثنا اوجِ عمل تھی
    اور اِس کے عوض لعل و جواہر مجھے ملتے
    ورنہ مرا انعام فقط تیغِ اجل تھی

    چھیڑے کبھی میں نے لب و رخسار کے قصّے
    گاہے گل و بلبل کی حکایت کو نِکھارا
    گاہے کسی شہزادے کے افسانے سُنائے
    گاہے کیا دنیائے پرستاں کا نظارا
    میں کھویا رہا جنّ و ملائک کے جہاں میں
    ہر لحظہ اگرچہ مجھے آدم نے پکارا

    برسں یُونہی دل جمعئ اورنگ کی خاطر
    سَو پھول کھِلائے سَو زخم خریدے
    مَیں لکھتا رہا ہجو بغاوت منشوں کی
    میں پڑھتا رہا قصر نشینوں کے قصیدے
    اُبھرا بھی اگر دل میں کوئی جذبۂِ سر کش
    اِس خوف سے چپ تھا کہ کوئی ہونٹ نہ سی دے

    لیکن یہ طلسمات بھی تا دیر نہ رہ پائے
    آخر مے و مینا و دف و چنگ بھی ٹوٹے
    یوں دست و گریباں ہوئے دست و خداوند
    نخچیر تو تڑپے قفسِ رنگ بھی ٹوٹے
    اِس کشمکشِ ذرّہ و انجم کی فضا میں
    کشکول تو کیا افسر و اورنگ بھی ٹوٹے

    میں دیکھ رہا تھا کہ مرے یاروں نے بڑھ کر
    قاتل کو پُکارا کبھی مقتل میں صدا دی
    گاہے رسن و دار کے آغوش میں جھُولے
    گاہے حرم و دَیر کی بنیاد ہلا دی
    جس آگ سے بھرپور تھا ماحول کا سینہ
    وہ آگ مرے لوح و قلم کو بھی پلا دی

    اور آج شکستہ ہُوا ہر طوقِ طلائی
    اب فن مرا دربار کی جاگیر نہیں ہے
    اب میرا ہُنر ہے مرے جمہور کی دولت
    اب میرا جنوں خائفِ تعزیر نہیں ہے
    اب دل پہ جو گزرے گی وہ بے ٹوک کہوں گا
    اب میرے قلم میں کوئی زنجیر نہیں ہے
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    رباعیات


    لفظوں میں فسانے ڈھونڈتے ہیں ہم لوگ
    لمحوں میں زمانے ڈھونڈتے ہیں ہم لوگ
    تو زہر ہی دے شراب کہہ کر ساقی
    جینے کے بہانے ڈھونڈتے ہیں ہم لوگ
    ٭٭٭

    اک راہِ طویل اک کڑی ہے یارو
    افتاد عجیب آ پڑی ہے یارو
    کس سمت چلیں کدھر نہ جائیں آخر
    دوراہے پہ زندگی کھڑی ہے یارو
    ٭٭٭

    غنچے کی چٹک سنائی دے گی یارو
    ساغر کی کھنک سنائی دے گی یارو
    زنداں کا سکوت گونج اُٹھے گا جس سے
    ایسی دستک سُنائی دے گی یارو
    ٭٭٭

    پھولوں کی جبیں جھلس گئی ہے یارو
    گلزار میں آگ بس گئی ہے یارو
    گزرے ہیں کہاں سے رنگ و بو کے طوفاں
    شبنم کو فضا ترس گئی ہے یارو
    ٭٭٭

    اُڑتے پنچھی شکار کرنے والو
    گلزار میں گیر و دار کرنے والو
    کتنی کلیاں مَسل کے رکھ دیں تم نے
    تزئینِ گل و بہار کرنے والو
    ٭٭٭

    یہ دَورِ مے و جام چلے یا نہ چلے
    نشے سے پھر بھی کام چلے یا نہ چلے
    ہم اہلِ خرابات سے یوں بَیر نہ رکھ
    ساقی کل ترا نام چلے یا نہ چلے
    ٭٭٭

    یہ پھیلی ہوئی رات ڈھلے یا نہ ڈھلے
    یہ یورشِ حالات ٹلے یا نہ ٹلے
    روشن کر چراغِ دیر و کعبہ
    پھر شمعِ خرابات جلے یا نہ جلے
    ٭٭٭

    خوابوں میں خیال کھو رہے ہوں جیسے
    نشے میں زمانے سو رہے ہوں جیسے
    سینے سے ڈھلک گیا ہے کس کا آنچل
    خورشید طلوع ہو رہے ہوں جیسے
    ٭٭٭

    ساغر میں ستارے گھل رہے ہوں جیسے
    کرنوں کے دریچے کھُل رہے ہوں جیسے
    مستی میں وہ اُٹھتی ہوئی نظریں توبہ
    پلکوں پہ زمانے تُل رہے ہوں جیسے
    ٭٭٭

    ہر غم کو دلآویز کیے دیتا ہوں
    احساس کی لو تیز کیے دیتا ہوں
    تو زلف کو کچھ اور پریشاں کر دے
    میں جام کو لبریز کیے دیتا ہوں
    ٭٭٭

    دل گرمئ احساس سے پھُک جائیں گے
    قدموں میں ترے زمانے جھک جائیں گے
    اے حسن فقط جنبشِ ابرو کی ہے دیر
    دنیا کے کاروبار رُک جائیں گے
    ٭٭٭

    ظلمات کو موجِ نور کیسے سمجھیں
    پھر برق کو طور کیسے سمجھیں
    مانا کہ یہی مصلحت اندیشی ہے
    ہم لوگ مگر حضور کیسے سمجھیں
    ٭٭٭

    آشوب گہہِ دہر کے سوداگر ہیں
    مغرب کے کسی شہر کے سوداگر ہیں
    تم آبِ حیات مانگتے ہو ان سے
    جو لوگ فقط زہر کے سوداگر ہیں
    ٭٭٭

    یا اپنے رفیقانِ سفر سے کٹ جاؤ
    یا سیلِ حوادث کے مقابل ڈٹ جاؤ
    رستے کا غبار کیوں بنے ہو چھٹ جاؤ
    جب بڑھ نہیں سکتے تو پرے ہٹ جاؤ
    ٭٭٭

    ہر زخم کو سینے پہ سجا لیتے ہیں
    ہر درد کو ہم دل میں بسا لیتے ہیں
    تم پھولوں پہ سوتے ہو تو دکھتا ہے بدن
    ہم کانٹوں کو آنکھوں سے لگا لیستے ہیں
    ٭٭٭

    مذہب کو مدام بیچتے ہیں یہ لوگ
    ایمان تو عام بیچتے ہیں یہ لوگ
    جنت کے اجارہ دار بن کر شب و روز
    اللہ کا نام بیچتے ہیں یہ لوگ
    ٭٭٭

    تھک جائیں گے راہگیر چلتے چلتے
    ڈھل جائیں گے ماحول میں ڈھلتے ڈھلتے
    تاریکئ شب میں نہ کمی آئے گی
    بجھ جائیں گے یہ چراغ جلتے جلتے
    ٭٭٭

    روتا ہوں تو احباب بُرا مانتے ہیں
    ہنستا ہوں تو مجرم مجھے گردانتے ہیں
    ہر حال میں اعتراض کرنے والے
    ناداں مرے حالات کہاں جانتے ہیں
    ٭٭٭

    زہرابِ حیات چکھ رہا ہوں دیکھو
    کانٹوں پہ زبان رکھ رہا ہوں دیکھو
    واقف ہوں طبیعتوں سے ان کی پھر بھی
    احباب کے دل پرکھ رہا ہوں دیکھو
    ٭٭٭

    حالات کی دوپہر کڑی ہے ساقی
    تقدیر برہنہ سر کھڑی ہے ساقی
    کچھ دیر غمِ جہاں پہ ہنس لیں آؤ
    رونے کو تو زندگی پڑی ہے ساقی
    ٭٭٭

    دنیا تو ہے کانٹوں کا بچھونا پیارے
    تم ہم سے کبھی جدا نہ ہونا پیارے
    آؤ مل کر دکھ کے لمحے کاٹیں
    اک جشن ہے ساتھ ساتھ رونا پیارے
    ٭٭٭

    بڑھ جاتا ہے دل کا روگ گاہے گاہے
    کر لیتے ہیں اپنا سوگ گاہے گاہے
    جو یاد دلا دیتے ہیں بھولے صدمے
    مل جاتے ہیں ایسے لوگ گاہے گاہے
    ٭٭٭

    ہر بحرِ ستم کو پاٹ لینے والا
    ہر زہرِ الم کو چاٹ لینے والا
    ذرّے سے پناہ ڈھونڈتا پھرتا ہے
    انساں پہاڑ کاٹ لینے والا
    ٭٭٭

    آشوبِ گہہِ حیات لے ڈوبیں گے
    دنیا کو بھی اپنے ساتھ لے ڈوبیں گے
    ہم لوگ عبارت ہیں زمانے جن سے
    ڈوبیں گے تو کائنات لے ڈوبیں گے
    ٭٭٭
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کھنڈر
    عبث کیوں اُلٹتے پلٹتے ہو جھوٹی روایات کی عظمتوں کے کھنڈر
    یہاں کچھ نہیں ہے
    یہاں تم نہ پاؤ گے کوئی خزانہ
    نہ شداد کی جنتِ گمشدہ کا کوئی لعل و در سے جڑا آستانہ
    نہ فرعون کا کوئی خفیہ خزانہ
    نہ قاروں کا کوئی دفینہ
    نہ جممشید کے جام و مینا
    نہ نمرود کے باغِ آغوش کی چہچہاتی ہوئی کوئی الّھڑ حسینہ
    یہاں کچھ نہ ڈھونڈو
    یہاں کچھ نہیں ہے
    یہاں خشک و ویران خِطّوں میں
    مدّت سے خانہ برانداز عفریت چاروں طرف خیمہ زن ہے
    یہاں سالہا سال سے قرن ہا قرن سے
    وحشت انگیز اوہام سایہ فگن ہیں
    یہاں بے شمار اُلّوؤں کے بسیرے ہیں چمگادڑوں کے ٹھکانے ہیں اور
    گیدڑوں نے کئی غار کھودے ہوئے ہیں
    جو دن کے دھند لکوں میں شب کی سیاہی میں آسیب صورت
    کبھی ایک ایک اور کبھی سب کے سب مل کے یوں چیختے ہیں
    کہ جیسے بنی نوع انساں کی تخریب پر نوحہ گر ہوں
    یہاں کوئی تپتی پوئی دوپہر ہو کہ سرما کی تاریک و مفلوج شب ہو
    کبھی کوئی ابرِ خراماں نہ برسا نہ چھایا
    یہاں کوئی شعلہ نہ بھڑکا نہ کوئی چراغِ سحر ٹمٹمایا
    کہ جیسے ہمیشہ پر افشاں رہا ہو یہاں اجنبیت کا گھمبیر سایہ
    کہ اس سر زمیں کی فضا میں خلا میں کبھی بھی کوئی بھی تغیر نہ آیا
    مگر یہ کھنڈر
    روزِ اوّل سے ہی
    پتّھروں اور اینٹوں کے انبار ہائے پریشاں نہیں تھے
    فقط ادھ کٹے بُت شکستہ ستوں ٹوٹے پھوٹے ظروف
    اور جھکے بام و در یونہی سردر گریباں نہیں تھے
    یہاں صرف ویرانیوں کے مناظر ہی تاریخِ ماضی کے عنواں نہیں تھے
    یہ وہ سر زمیں ہے
    کہ جس پر زمرّد کے یاقوت کے تخت جلوہ فگن تھے
    یہاں سنگِ سرخ اور مر مر کے بے مثل و نادر محلّات
    گلکاریوں سے مرصع تھے معراجِ فن تھے
    یہاں بے بہا اور نایاب قالین فرشِ رہِ کاخِ فرمانروائے زمن تھے
    یہاں ریشم و اطلس و پرنیاں اور دیبا و زربفت و سنجاب و کمخواب
    کے بے نظیر اور عریاں ذخیرے شکن در شکن تھے
    یہاں لہلہاتے ہوئے گلستاں رشکِ باغِ عدن تھے
    یہاں سونے چاندی کے ڈھیروں میں لعل و جواہر میں
    تلتی کنیزوں کے گلرنگ چہرے فضا تاب سینے سنہرے بدن تھے
    اور ان کی حفاظ کی چوبی صلیبیں تھیں زندانِ آہن تھے دار و رسن تھے
    یہاں کاس و قیتار کی گرم تانوں سے جام و سبو کے فسانوں سے
    عیش و نشاط و مسرّت کے جشنِ چراغاں منائے گئے ہیں
    یہاں خوش گلو اپسراؤں کے ہر تارِ گیسو سے تزئینِ بربط روا تھی
    یہاں زندگی صرف زخمِ نوا تھی!!
    یہاں اب ادب با سلیقہ غلاموں نے سجدے کئے اور ثبوتِ وفا کے لئے
    گردنیں تک کٹا دیں
    مگر رحم دل اور کشادہ دل آقاؤں کی عدل و انصاف سے
    جگمگاتی جبینوں پہ کوئی شکن تک نہ آئی
    بہ ایں حال بھی مطمئن تھی خدائی
    مگر وقت کی پے بہ پے کروٹوں نے کئی گل کھلائے
    کبھی تو ہلاکو و چنگیز و تیمور نے بربریت کے پرچم اُٹھائے
    کبھی تورماں اور نادر کی جرار فوجوں نے یلغار کی شہر لوٹے جلائے
    تباہی کے دف صورِ محشر کی صورت ہر اک سمت بھونچال لائے
    بگولوں کے دامن میں امن و سکوں کے درخشندہ فانوس جلنے نہ پائے
    اور اپنی روایات کے تلخ و تیرہ دھوئیں چھوڑ کر بجھ گئے مٹ گئے ہیں
    یہ کہنہ روایات جن کی گھنی ظلمتوں میں نہ جادہ نہ منزل
    غبارِ رواں کی طرح چھا رہی ہیں
    دلوں کو دماغوں کو نظروں کو بھٹکا رہی ہیں
    اور ان کی جلو میں نہ لیلا نہ محمل
    نہ جذبِ تجسّس کا حاصل
    یہاں کچھ نہیں کچھ نہیں ہے
    فقط کچھ کھنڈر ابنِ آدم کی تاریخ پہ منفعل ہیں
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بھول
    افق پر دھندلکے، شفق میں الاؤ گھٹاؤں میں شعلے، چمن میں ببول
    بہاروں پہ صرصر کے گھمبیر سائے
    نظاروں کے دامن میں نکہت بسائے
    دلوں پر اُداسی، دماغوں میں الجھن، خیالوں میں تلخی، نگاہیں ملول
    ہر اک سمت ویرانیوں کا نزول
    جلاتا رہا میں اندھیروں میں شمعیں، کھلاتا رہا خار زاروں میں پھول
    شعاعوں سے تاریکیوں کو اُجالے
    خرابوں پہ تعمیر کا عکس ڈالے
    بڑے زخم کھا کر مگر مسکرا کر کیے زندگی نے حوادث قبول
    اڑاتی پھری دشت و صحرا کی دھول
    وہی وقت کی سست رفتار گردش وہی موت کی رہگزاروں کا طول
    وہی چار سو دہکے دہکے الاؤ
    وہی گلستاں میں خزاں کا رچاؤ
    وہی چاند تاروں پہ کہنہ دھند لکے وہی ظلمتوں کا پرانا اصول
    مگر کون سمجھے یہ کس کی تھی بھول؟
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    فرار
    کئی ایاغ دل میں آنسوؤں کے بیج بو گئے
    شرابِ لالہ گوں کے عکس عکس میں
    جہانِ رنگ و بو لیے
    فریبِ آرزو دیے
    گھنیری آندھیوں کے رقص رقص میں
    کئی چراغ ظلمتوں کی وادیوں میں کھو گئے

    بچھے رہے سراب گام گام پر
    جمالِ ضو فشاں لیے
    مآلِ خونچکاں لیے
    حیات کے ہر اک نئے مقام پر
    ہزاروں داغ مسکرا دیے چراغ ہو گئے

    مگر چلے ہو کس کی جستجو میں تم
    وفا کی روشنی لیے
    ہر ایک چاک دل سیئے
    تصوّرِ حصولِ آرزو میں تم
    کئی دماغ موت کی کمیں گہوں میں سو گئے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
  7. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    احتساب
    سوچ مفلوج ہے حالات کے زندانوں میں
    عقل پر تلخ حوادث کے گراں تالے ہیں
    آگہی سرود خموش
    منجمد شعلۂ ہوش
    ذہن پر بھولے فسانوں کے گھنے جالے ہیں
    کوئی آہٹ بھی نہیں دل کے سیہ خانوں میں
    قہقہے وقت کے خوشرنگ شبستانوں میں
    کتنی دلدوز و غمیں آہوں کے رکھوالے ہیں
    آرزو جامِ طرب
    آبرو زہر بلب
    کتنے ہی ناگ خزانوں نے یہاں پالے ہیں
    کتنے پیکر ہیں جو ڈھل جاتے ہیں ایوانوں میں
    زندگی رینگتی ہے موت کے ویرانوں میں
    انقلابات نے انداز بدل ڈالے ہیں
    رات دن شام و سحر
    کس کو جرات ہو مگر
    ناگ خود ہی تو خزانوں نے یہاں پالے ہیں
    آگ پھولوں نے بکھیری ہے گلستانوں میں
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    آگ
    مفلسو! اپنے مقدّر کی شکایت نہ کرو
    اِس سے انسان کے ایمان میں فرق آتا ہے
    ہم تو ناچیز سے بندے ہیں ہمیں کیا معلوم
    کونسی بات میں کیا مصلحتِ یزداں ہے
    کتنے گمراہ و گنہگار ہوئے جاتے ہو

    کیا کہا؟ "خانماں برباد ہوئے جاتے ہیں
    دمبدم آگ کے بے رحم لپکتے شعلے
    اپنے بوسیدہ مکاں راکھ کیے دیتے ہیں
    خاک ہی خاک ہوئی جاتی ہے دنیا اپنی
    اور اس آتش و ظلمات کے سیلاب میں ابھی
    اسی پندار اسی شان سے استادہ ہیں
    کیا خدا صرف غریبوں پہ ستم ڈھاتا ہے"

    ٹھیک کہتے ہیں مگر خام عقائد والو
    ہم تو تقدیر کے بندے ہیں ہمیں کیا معلوم
    کونسی بات میں کیا مصلحتِ یزداں ہے
    اور پھر اپنی شکایت سے بھی کیا ہوتا ہے
    وہی ہوتا ہے جو منظورِ خدا ہوتا ہے
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بانو کے نام

    ملوکیت کے محل کی گنہگار کنیز
    وہ جُرم کیا تھا کہ تجھ کو سزائے مرگ ملی
    وہ راز کیا تھا کہ تعزیرِ ناروا کے خلاف
    تری نگاہ نہ بھڑکی تری زباں نہ ہلی
    وہ کون سا تھا گناہِ عظیم جس کے سبب
    ہر ایک جبر کو تُو سہہ گئی بطیبِ دلی

    یہی سُنا ہے بس اتنا قصور تھا تیرا
    کہ تُو نے قصر کے کچھ تلخ بھید جانے
    تری نظر نے وہ خلوت کدوں کے داغ گنے
    جو خواجگی نے زر و سیم میں چھپانے تھے
    تجھے یہ علم نہیں تھا کہ اِس خطا کی سزا
    ہزار طوق و سلاسل تھے تازیانے تھے

    یہ رسم تازہ نہیں ہے اگر تری لغزش
    مزاجِ قصر نشیناں کو ناگوار ہوئی
    ہمیشہ اُونچے محلّات کے بھرم کے لئے
    ہر ایک دَور میں تزئینِ طوق و دار ہوئی
    کبھی چُنی گئی دیوار میں انار کلی
    کبھی شکنتلا پتھراؤ کا شکار ہوئی

    مگر یہ تخت یہ سلطاں یہ بیگمات یہ قصر
    مؤرخین کی نظروں میں بے گناہ رہے
    بفیضِ وقت اگر کوئی راز کھُل بھی گیا
    زمانے والے طرفدارِ کجکلاہ رہے
    ستم کی آگ میں جلتے رہے عوام مگر
    جہاں پناہ ہمیشہ جہاں پناہ رہے

    1؎ وہ کم سن کنیز جسے بیگم جونا گڑھ نے قتل کروایا
    ٭٭٭​
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    مجسمہ

    اے سیہ فام حسینہ ترا عریاں پیکر
    کتنی پتھرائی ہوئی آنکھوں میں غلطیدہ ہے
    جانے کس دورِ المناک سے لے کر اب تک
    تو کڑے وقت کے زندانوں میں خوابیدہ ہے

    تیرے شب رنگ ہیولے کے یہ بے جان نقوش
    جیسے مربوط خیالات کے تانے بانے
    یہ تری سانولی رنگت یہ پریشان خطوط
    بارہا جیسے مٹایا ہو اِنہیں دنیا نے

    ریشۂ سنگ سے کھینچی ہوئی زلفیں جیسے
    راستے سینۂ کہسار پہ بل کھاتے ہیں
    ابروؤں کی جھکی محرابوں میں جامد پلکیں
    جس طرح تیر کمانوں میں اُلجھ جاتے ہیں

    منجمد ہونٹوں پہ سنّاٹوں کا سنگین طلسم
    جیسے نایاب خزانوں پہ کڑے پہرے ہوں
    تند جذبات سے بھرپور برہنہ سینہ
    جیسے سستانے کو طوفان ذرا ٹھہرے ہوں

    جیسے یونان کے مغرور خداوندوں نے
    ریگزارانِ حبش کی کسی شہزادی کو
    تشنہ روحوں کے ہوسناک تعّیش کے لئے
    حجلۂ سنگ میں پابند بنا رکھا ہو
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  11. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    مسیحا

    میری افسردگی سے پریشاں نہ ہو
    تو مری تلخیوں کا سبب تو نہیں
    تیری آنکھیں تو میری ہی دمساز ہیں
    تھیں کبھی اجنبی لیکن اب تو نہیں
    تجھ کو میری مسرّت مقدّم سہی
    تیرا غم مجھ کو وجہِ طرب تو نہیں

    تیرا احسان ہے تُو نے میرے لئے
    اپنی پلکوں سے راہوں کے کانٹے چُنے
    خود کڑی دھُوپ میں رہ کے میرے لئے
    تُو نے زلفوں کے شاداب سائے بُنے
    میری خاطر زمانے کو پاگل کہا

    میری خاطر زمانے کے طعنے سُنے
    تُو مری زندگی ہے مگر جانِ من!
    میرے دل میں کئی گھاؤ ایسے بھی ہیں
    جن کا درماں تری دسترس میں نہیں
    ایک غم جس کی شدّت ہمہ گیر ہے
    تیرے بس میں نہیں میرے بس میں نہیں
    ٭٭٭
     
    • زبردست زبردست × 1
  12. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    تشنگی

    دیکھو پگھلا پگھلا سونا بہہ نِکلا کہساروں سے
    دیکھو نازک نازک کرنیں ٹوٹ رہی ٹیلوں پر
    دیکھو بھینی بھینی خوشبو آتی ہے گلزاروں سے
    دیکھو نیلے نیلے بادل جھُول رہے جھیلوں پر
    تم بھی سُندر سُندر سپنوں کی لہروں پر بہہ جاؤ
    اور ذرا کچھ لمحے ٹھہرو اور ذرا رہ جاؤ

    سُلگا سُلگا موسم ہے شعلوں کی دہکتی حِدّت سے
    چڑھتے سورج کے سائے میں ساری دنیا جلتی ہے
    دہک دہک اُٹھی ہیں سڑکیں تپتی دھوپ کی شدّت سے
    ابھی نہ جاؤ دیکھو کتنی تیزی سے لُو چلتی ہے
    اِس کو بھی اِک جبرِ مشیّت سمجھو اور سہہ جاؤ
    اور ذرا کچھ لمحے ٹھہرو اور ذرا رہ جاؤ

    دیکھو چار طرف ٹھنڈے ٹھنڈے سائے لہراتے ہیں
    تارے نکھرے موتی بکھرے شام کا جادو قائم ہے
    خنک خنک پھولوں کے جھونکے خوشبوئیں برساتے ہیں
    ٹھیک ہے تم کو جانا ہے پر ایسا بھی کیا لازم ہے
    ٹھہرو کچھ باتیں ہم سے سُن لو کچھ تم کہہ جاؤ
    اور ذرا کچھ لمحے ٹھہرو اور ذرا رہ جاؤ
    ٭٭٭
     
    • زبردست زبردست × 1
  13. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اَبیٹ آباد

    ابھی تلک ہے نظر میں وہ شہرِ سبزہ و گل
    جہاں گھٹائیں سرِ رہگزار جھُومتی ہیں
    جہاں ستارے اُترتے ہیں جگنوؤں کی طرح
    جہاں پہاڑوں کی قوسیں فلک کو چُومتی ہیں
    تمام رات جہاں چاندنی کی خوشبوئیں
    چنار و سرو کی پرچھائیوں میں گھومتی ہیں

    ابھی تلک ہیں نظر کے نگار خانے میں
    وہ برگِ گل سے تراشے ہوئے بہشت سے جسم
    وہ بولتے ہوئے افسانے الف لیلیٰ کے
    وہ رنگ و نور کے پیکر وہ زندگی کے طلسم
    اور ایسی کتنی ہی رعنائیاں کہ جن کے لئے
    خیال و فکر کی دنیا میں کوئی نام نہ اِسم

    ابھی تلک ہیں تصوّر میں وہ در و دیوار
    بسیط دامنِ کہسار میں چناروں تلے
    جہاں کسی کی جواں زلف بارہا بِکھری
    جہاں دھڑکتے ہوئے دل محبتوں میں ڈھلے
    عجیب تھی وہ جھروکوں کی نیم تاریکی
    جہاں نظر سے نظر جب ملی چراغ جلے

    میں لوٹ آیا ہوں اُس شہرِ سبزہ و گل سے
    مگر حیات اُنہیں ساعتوں پہ مرتی ہے
    مجھے یقیں ہے گھنے بادلوں کے سائے میں
    وہ زلف اب بھی مری یاد میں بِکھرتی ہے
    چراغ بُجھ بھی چکے ہیں مگر پسِ چلمن
    وہ آنکھ اب بھی مرا انتظار کرتی ہے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
  14. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    طلسمِ ہو شربا

    ابھی اک پھول کے دامن سے کوئی بھنور اُڑا
    اور اُڑتے ہی اُجالے میں کہیں ڈوب گیا
    ابھی اک شاخ کے سائے سے سرکتا ہوا سانپ
    پاس بہتے ہوئے نالے میں کہیں ڈوب گیا

    گنگناتے ہوئے نالے کا سنہرا پانی
    دیکھتے دیکھتے اک جھیل بنا نہر بنا
    یوں اُبھر آئے کناروں پہ دمکتے ایواں
    ایک اُجڑے ہوئے خطے میں نیا شہر بنا

    یہ فصیلوں میں گھرا راج محل کس کا ہے
    یہ پُر اسرار در و بام انوکھے فانوس
    بربط و چنگ و خم و جام لیے دست بدست
    منتظر کس کا ہے یہ زہرہ جبینوں کا جلوس

    میں شہنشاہِ زمن ہوں کسے معلوم نہیں
    ہر طرف موجبِ تعمیل ہیں فرمان مرے
    میرے ادنیٰ سے اشارے پہ ہیں سب رقص کناں
    یہ سپاہی، یہ حسینائیں، یہ دربان مرے

    کوئی ہے! کون؟ زرینہ نظر افروز کنیز
    جیسے مینائے مئے ناب دھری ہو کوئی
    یہ پریشان سی زلفیں یہ برہنہ سینہ
    جس طرح قاف کی آوارہ پری ہو کوئی

    خادمہ! آج سے اس قصر کی تو ملکہ ہے
    آ مجھے اپنی گرہ گیر لٹوں میں کَس لے
    آ مرے جسم سے اک سانپ کی مانند لپٹ
    اور تڑپ کر مرے بیتاب لبوں کو ڈس لے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    خریدار

    دلِ بے تاب کی موہوم سی تسکیں کے لئے
    اِک نظر دیکھنے آیا تھا تجھے دیکھ لیا
    آج کی رات بھی تُو اپنے دریچے کی طرف
    حسبِ معمول نئی شان سے اِستادہ ہے
    "تَیرتے ہیں تری آنکھوں میں اشارے کیا کیا"
    دیدنی ہے ترے جلووں کی نمائش لیکن
    اب یہ عالم ہے کہ احساسِ تہی دستی سے
    تیرے زینے کی طرف تیرے دریچے کی طرف
    پاؤں تو کیا مری نظریں بھی نہیں اُٹھ سکتیں!
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    خیر مقدم

    قصیدہ نویسوں نے مل کر یہ سوچا
    کہ پھر آج وہ ساعتِ جانستاں آ گئی ہے
    جب اُن سے کوئی اُن کا آقا جُدا ہو رہا ہے
    وہ آقا؟
    کہ جس کی مسلسل کرم گستری سے
    کوئی خادمِ خاص ہو یا کہ ادنیٰ ملازم
    کسی کے لبوں پر کبھی کوئی حرفِ شکایت نہ آیا
    وہ آقا کہ جس کی کشادہ دلی نے خزانے لٹائے
    وہ آقا کہ جس کی سخاوت نے سب کے دلوں اور دماغوں
    سے حاتم کے مفروضہ قصّے بھلائے
    اگرچہ وہ نوشیرواں کی طرح شہر میں کو بُکو
    بھیس بدلے نہیں گھومتا تھا
    مگر پھر بھی ہر سمت امن و اماں تھا
    اگرچہ جہانگیر کی طرح اُس نے
    کوئی ایسی زنجیرِ زر قصرِ شاہی کے باہر نہ لٹکائی تھی
    جس کی ہلکی سی جنبش بھی انصافِ شاہی میں طوفاں اُٹھاتی
    مگر پھر بھی ہر گھر میں عدل و مساوات کا سائباں تھا
    اگرچہ کبھی وہ جھروکے میں بیٹھے
    رعایا کو رُوئے مبارک کے درشن سے مجبورِ سجدہ نہ کرتا
    مگر پھر بھی ہر دل پہ وہ حکمراں تھا
    وہ جانِ جہاں تھا بڑا مہرباں تھا
    قصیدہ نویسوں نے سوچا
    کہ آخر وہ لمحات بھی آ گئے ہیں
    جب اُن سے بچھڑنے کو ہے اُن کا دیرینہ آقا
    تو وہ آج اُسے کون سا ایسا نایاب تحفہ کریں پیش جس سے
    رہیں تا ابد یاد آقائے عالی کو
    اپنے وفادار پاپوش بردار خادم
    قصیدہ نویسوں نے سوچا
    کہ وہ یوں تو عہدے میں ہیں
    قصرِ شاہی کے جارُوب کش سے بھی کہتر
    مگر عالمِ کلک و قرطاس کے بادشہ ہیں
    وہ چاہیں تو اپنے قلم کے اشارے سے
    ذرّوں کو ہم رُتبۂ مہر و مہتاب کریں
    وہ چاہیں تو اپنے تخیل کے جادو سے
    صحراؤں کے خشک سینوں کو پھولوں سے بھر دیں
    وہ چاہیں تو اپنے کمالِ بیاں سے
    فقیروں کو اورنگ و افسر کا مالک بنا دیں
    وہ چاہیں تو اپنے فسونِ زباں سے
    محلاّت کے بام و دیوار ڈھا دیں
    وہ چاہیں تو یکسر نظامِ زمانہ بدل دیں
    کہ وہ عالمِ کلک و قرطاس کے بادشہ ہیں
    یہی ہے وہ ساعت کہ وہ اپنے
    محبوب آقا کی تعریف و توصیف میں
    آسمان و زمیں کو ملائیں!
    کہ وہ اپنی اپنی طبیعت کے جوہر دکھائیں
    کہ وہ اپنے آقا سے بس آخری مرتبہ داد پائیں
    مگر پھر قصیدہ نویسوں نے سوچا
    کہ وہ تو ہیں عہدے میں ایوانِ شاہی
    کے جاروب کش سے بھی کہتر
    انہیں کیا کوئی آئے یا کوئی جائے
    کہ اُن کا فریضہ تو ہے صرف
    آقائے حاضر کی خدمت گزاری
    کہ ان کا فریضہ فقط تاج اور تخت کی ہے پرستش
    تو پھر مصلحت ہے اِسی میں
    کہ اپنے قصیدوں سے آقائے نو کا کریں خیر مقدم!
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  17. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اے بھوکی مخلوق
    (14 اگست 1954ء)

    آج تری آزادی کی ہے ساتویں سالگرہ
    چار طرف جگمگ جگمگ کرتی ہے شہر پنہ
    پھر بھی تیری رُوح بُجھی ہے اور تقدیر سیہ
    پھر بھی ہیں پاؤں میں زنجیریں ہاتھوں میں کشکول
    کل بھی تجھ کو حکم تھا آزادی بول نہ بول
    آج بھی تیرے سینے پر ہے غیروں کی بندوق
    اے بھوکی مخلوق
    بیس نہ سَو نہ ہزار نہ لاکھ ہیں پورے آٹھ کروڑ
    اتنے انسانوں پر لیکن چند افراد کا زور
    مزدور اور کسان کے حق پر جھپٹیں کالے چور
    کھیت تو سونا اُگلیں پھر بھی ہے ناپید اناج
    تیرے دیس میں سب کچھ اور تُو غیروں کی محتاج
    گوداموں کے پیٹ بھرے ہیں بوجھل ہیں صندوق
    اے بھوکی مخلوق
    آج گرفتہ دل تُو کیوں ہے تو بھی جشن منا
    آنسو گر نایاب ہیں اپنے لہو کے دیے جلا
    پیٹ پہ پتھر باندھ کے اِمشب ننگا ناچ دکھا
    آج تو ہنسی خوشی کا دن ہے آج یہ کیسا سوگ
    تیری بہاریں دیکھنے آئیں دُور دُور کے لوگ
    تیرے خزانے پل پل لُوٹیں کتنے ہی فاروق
    اے بھوکی مخلوق
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  18. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    چند نادان چند دیوانے

    رات کی جانگداز ظلمت میں
    عزم کی مشعلیں جلائے ہُوئے
    دل میں لے کر بغاوتوں کے شرار
    وحشتوں کے مہیب سائے میں
    سر بکف، جاں بلب، نگاہ بہ قصر
    سرخ و خونیں علم اٹھائے ہُوئے
    بڑھ رہے ہیں جنوں کے عالم میں
    چند نادان، چند دیوانے

    قصرِ شاہی کے اے نگہبانو!
    تلخ لمحوں سے ہوشیار رہو
    اپنے پہروں پہ جم کے ڈٹ جاؤ
    اپنے آقاؤں کی بقا کے لئے
    فرض کے تند و تیز دھارے پر
    تم وفادار ہو تو کٹ جاؤ

    اس سے پہلے کہ مہرباں آقا
    تند شعلوں کی زد میں آ جائیں
    اس سے پہلے کہ قصر جل اٹھے
    خاک پر لوٹتے نظر آئیں
    چند نادان، چند دیوانے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  19. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    لختئ

    اَدھ کٹے بالوں پہ افشاں کے ستارے لرزاں
    کھردرے گالوں پہ غازے کی تہیں ہانپتی ہیں
    سرد و بے جان سے چہرے پہ تھرکتی آنکھیں
    جیسے مرگھٹ میں چراغوں کی لَویں کانپتی ہیں

    ٹوٹتے جسم میں لہرانے کی ناکام اُمنگ
    کسی سُوکھی ہوئی ٹہنی کا جھکاؤ جیسے
    لڑکھڑاتے ہوئے قدموں کی گراں رفتاری
    خشک ہوتی ہوئی ندّی کا بہاؤ جیسے

    رقص کرتی ہوئی پشواز پہ باہوں کی اُڑان
    بادباں جس طرح گرداب میں چکراتے ہیں
    یا کسی جھیل میں کنکر کے گرا دینے سے
    چند لمحوں کے لئے دائرے بن جاتے ہیں

    گرد آلود سے ماتھے پہ پسینے کی نمی
    ریگزاروں سے عرق پھُوٹ رہا ہو جیسے
    جھنجھناتے ہوئے ہر گام پہ پیلے گھنگرو
    دُور اک شیش محل ٹوٹ رہا ہو جیسے

    زندگی بال فشاں، خاک بہ رُخ، نالہ بلب
    منجمد، ساکن و حیران ہیولے کی طرح
    چند تانبے کے تراشے ہوئے سکّوں کی طرح
    ڈھول کی تھاپ پہ رقصاں ہے بگولے کی طرح

    1؎ سرحد کے وہ رقّاص لڑکے جو بیاہ شادیوں اور خوشی کی تقریبات کے موقعوں پر عورتوں کا روپ بنا کر ناچتے ہیں
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1
  20. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,219
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ایک منظر

    دُور کچھ ماتمی نعروں سے فضا گونج اُٹھی
    چند مجذوب سے لوگوں کا الم کیش گروہ
    (کچھ سیہ پوش تماشائی بہ اندازِ جلوس)
    چادرِ گُل سے سجائے ہوئے اعلام لیے!
    دمبدم نیند میں ڈوبے ہوئے کوچوں کی طرف
    چیختا پیٹتا بڑھتا ہی چلا جاتا ہے

    یک بیک کھلنے لگے بند دریچوں کے کِواڑ
    چلمنیں کانپتی باہوں کے سہارے اُٹھیں
    جیسے دم توڑتے بیمار کی بوجھل پلکیں
    اور کئی مضطر و بے تاب دمکتے چہرے
    ایک دلچسپ و الم ناک تماشے کے لئے
    تنگ و تاریک جھروکوں کے گھنے پردوں سے
    نُور کے چشموں کی مانند اُبل آئے ہیں
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر