برائے اصلاح

فلسفی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 8, 2019

ٹیگ:
  1. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    سر الف عین اور دیگر احباب سے اصلاح کی گذراش۔

    جہانِ عارضی میں وقت مستقبل کا حاسد ہے
    بہ نسبت زیست کی مہلت کے ہر ارمان زائد ہے

    کسے ہے فکر ساقی میکدے میں درج اصولوں کی
    ہٹا دے ہر وہ پیمانہ جو پابندِ قواعد ہے

    ہمیشہ سچ کی جن قدروں کی تُو ترویج کرتا تھا
    تری تحریر کا ہر لفظ ان افکار کی ضد ہے

    جو خط دے کر چلا جاتا تو پڑھ کر رو دیے ہوتے
    ابھی تک سامنے موجود وہ بد ذوق قاصد ہے

    الجھتے ہیں خود اپنے نفس کی ظلمت سے آئے روز
    ہماری بے بسی کا اے خدا تو آپ شاہد ہے

    لہو سے جو وضو کر کے نمازِ عشق پڑھتا ہو
    زمانے میں کوئی ابنِ علیؓ جیسا مجاہد ہے؟

    لے آؤ پارساؤں کو بھی اپنے ساتھ ہی رندوں
    قریب اس میکدے کے راستے میں ایک مسجد ہے

    زمانے بھر کے سب اعزاز اس کو دے دیے جائیں
    حقیقت کی جو اس دنیا میں افسانوں کا موجد ہے

    پڑھا کر فلسفیؔ سورة فلق ہر بات سے پہلے
    تری سادہ بیانی کے سبب ہر شخص حاسد ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. سید عاطف علی

    سید عاطف علی محفلین

    مراسلے:
    8,572
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    بہت خوب جولانی طبع دکھائی ہے ۔ واہ۔
    البتہ قوافی پر کچھ کلام شاید کیا جا سکتا ہے ۔
    رندوں والے شعر میں کیوں کہ تخاطب ہے اس لیے "ں" کی ضرورت نہیں اور مصرع میں الفاظ کی نشست پھر بھی بہتراور رواں ہو سکتی ہے ۔
    مقطع میں سادہ بیانی کے بجائے جادو بیانی ہو تو فلق کی مناسبت سے پیوستہ نہ ہو جائے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    نوازش
    کچھ وضاحت فرما دیجیے تاکہ آئندہ خیال رکھوں۔
    جی درست فرمایا آپ نے۔ رندو! کو درست کر لیتا ہوں۔ روانی کے لیے متبادل سوچتا ہوں۔
    اصل میں سورۃ فلق کا ربط، قافیہ حاسد کے ساتھ رکھنے کی کوشش کی تھی۔ جادو بیانی کی ترکیب خوب کہی آپ نے، اس سے مزید نکھر جائے گا شعر۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. سید عاطف علی

    سید عاطف علی محفلین

    مراسلے:
    8,572
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    الف عین بھائی سے مشورہ لیتے ہیں اس بابت ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. سفیر آفریدی

    سفیر آفریدی محفلین

    مراسلے:
    403
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    ہاہا حقیقت کی اس دنیا میں جو افسانوں کا موجد ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    عاطف بھائی، اسے کے متبادل تو بہت سے بن رہے ہیں۔ لیکن مجھے یہ دو متبادل مناسب لگے کچھ الفاظ اور مفہوم کی تبدیلی کے ساتھ۔ آپ کا کیا خیال ہے

    وہاں رندو! نمازی دوستوں کو ساتھ لے آنا
    گزر کے میکدے سے جس گلی میں ایک مسجد ہے
    یا
    نمازی دوستوں کے ساتھ بادہ خوار آتے ہیں
    جہاں پر میکدے والی گلی میں ایک مسجد ہے
     
  7. سید عاطف علی

    سید عاطف علی محفلین

    مراسلے:
    8,572
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    ذرا لے آؤ رندو پارساؤں کو بھی ساتھ اپنے
    یہ کیسا رہے گا ۔
    دراصل مجھے لے آؤ میں لے کا کٹنا کچھ ٹھیک نہیں لگ رہا تھا ؟ باقی ٹھیک ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    درست فرمایا آپ نے۔ مجھے اسی پر اعتراض کا کھٹکا تھا۔ اس حساب سے تو یہ ترتیب شاید زیادہ رواں ہے۔

    تم اپنے ساتھ رندو! پارساؤں کو بھی لے آؤ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,474
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    مجموعی طور پر زبردست
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,321
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    واہ اچھا ہو گیا شعر اب، ماشاء اللہ پوری غزل ہی اچھی لگ رہی ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  11. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ سر۔ مجوزہ تبدیلیوں کے بعد غزل حاضر ہے۔

    جہانِ عارضی میں وقت مستقبل کا حاسد ہے
    بہ نسبت زیست کی مہلت کے ہر ارمان زائد ہے

    کسے ہے فکر ساقی میکدے میں درج اصولوں کی
    ہٹا دے ہر وہ پیمانہ جو پابندِ قواعد ہے

    ہمیشہ سچ کی جن قدروں کی تُو ترویج کرتا تھا
    تری تحریر کا ہر لفظ ان افکار کی ضد ہے

    جو خط دے کر چلا جاتا تو پڑھ کر رو دیے ہوتے
    ابھی تک سامنے موجود وہ بد ذوق قاصد ہے

    الجھتے ہیں خود اپنے نفس کی ظلمت سے آئے روز
    ہماری بے بسی کا اے خدا تو آپ شاہد ہے

    لہو سے جو وضو کر کے نمازِ عشق پڑھتا ہو
    زمانے میں کوئی ابنِ علیؓ جیسا مجاہد ہے؟

    تم اپنے ساتھ رندو! پارساؤں کو بھی لے آؤ
    قریب اس میکدے کے راستے میں ایک مسجد ہے

    زمانے بھر کے سب اعزاز اس کو دے دیے جائیں
    حقیقت کی جو اس دنیا میں افسانوں کا موجد ہے

    پڑھا کر فلسفیؔ سورة فلق ہر بات سے پہلے
    تری جادو بیانی کے سبب ہر شخص حاسد ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر