1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

برائے اصلاح

فلسفی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 11, 2018

ٹیگ:
  1. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    سر الف عین اور دیگر احباب سے اصلاح کی گذارش

    عشق تیرا مجھے عطا ہوتا
    میں بھی رشکِ ملائکہ ہوتا

    یاد سے تیری دل بھرا ہوتا
    آنکھ روتی جگر کٹا ہوتا

    تیری شفقت کا فیصلہ ہوتا
    تو عدالت سے ماورا ہوتا

    تھام رکھا ہے تیری رحمت نے
    ورنہ انسان گر گیا ہوتا

    کاش اعمال بھی گنے جاتے
    کچھ تو بخشش کا آسرا ہوتا

    بھول جاتا میں خود کو روزِ حشر
    میرا خود سے جو سامنا ہوتا

    کوئی ایسی جگہ جہاں پر صرف
    ایک تو اور میں دوسرا ہوتا

    کاش محبوب تیرا جلوہ اب
    سر بسر ہوتا جا بجا ہوتا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,589
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    درست ہے غزل
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ سر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    849
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    السلام علیکم !

    ان چار اشعار میں ردیف "ہوتا " کی رعایت سے "اگر" ' "کاش" "جو" (اگر کے معنی میں )جیسے الفاظ ہونے چاہییں یا ایسی کوئی عبارت جو ردیف کا جواز فراہم کرے ورنہ بیانیہ ادھور١ ہے -ہر شعر میں ایسا اس لئے ضروری ہے کہ یہ غزل ہے نظم نہیں اور غزل کا ہر شعر بجائے خود ایک اکائی ہے -

    عشق تیرا مجھے عطا ہوتا
    میں بھی رشکِ ملائکہ ہوتا

    یاد سے تیری دل بھرا ہوتا
    آنکھ روتی جگر کٹا ہوتا

    تیری شفقت کا فیصلہ ہوتا
    تو عدالت سے ماورا ہوتا

    کوئی ایسی جگہ جہاں پر صرف
    ایک تو اور میں دوسرا ہوتا


    بطور ثبوت غالب کی غزل دیکھ لیں :

    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
    اگر
    اور جیتے رہتے، یہی انتظار ہوتا
    تِرے وعدے پر جِئے ہم، تو یہ جان، جُھوٹ جانا
    کہ خوشی سے مرنہ جاتے، اگراعتبار ہوتا
    تِری نازُکی سے جانا کہ بندھا تھا عہدِ بُودا
    کبھی تو نہ توڑ سکتا، اگراستوار ہوتا
    کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیرِ نِیمکش کو
    یہ خلِش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا
    یہ کہاں کی دوستی ہےکہ، بنے ہیں دوست ناصح
    کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا
    رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہوکہ، پھر نہ تھمتا
    جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا
    غم اگرچہ جاں گُسل ہے، پہ کہاں بچیں کہ دل ہے
    غمِ عشق گر نہ ہوتا، غمِ روزگار ہوتا
    کہوں کس سے میں کہ کیا ہے، شبِ غم بُری بلا ہے
    مجھے کیا بُرا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا
    ہوئے
    مرکے ہم جو رُسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا
    نہ کبھی جنازہ اٹھتا، نہ کہیں مزار ہوتا
    اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا
    جو دوئی کی بُو بھی ہوتی توکہیں دوچار ہوتا
    یہ مسائلِ تصّوف، یہ ترا بیان، غالبؔ
    تجھے ہم ولی سمجھتے، جو نہ بادہ خوار ہوتا
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 12, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    محترم بلاشبہ آپ کا مشورہ مفید ہے۔ آپ کو ثبوت پیش کرنے کی ضرورت نہیں تھی :)۔ لیکن وہ بھی مجھ جیسے مبتدی کے لیے مفید ہی ثابت ہوا ہے۔ آئندہ بھی خیال رکھوں کا۔ محترم الف عین سے سند مل گئی تھی اس لیے مطمئن ہو گیا تھا۔ خیر اگر درج ذیل تبدیلیاں ہوں تو مناسب رہیں گے یہ اشعار

    عشق تیرا اگر عطا ہوتا
    میں بھی رشکِ ملائکہ ہوتا

    دل محبت سے جو بھرا ہوتا
    آنکھ روتی جگر کٹا ہوتا

    تیری شفقت کا فیصلہ ہوتا
    تو عدالت سے ماورا ہوتا

    ہوتی ایسی جگہ جہاں اے کاش
    ایک تو اور میں دوسرا ہوتا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    849
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    "جگر کٹا ہوتا "ذوق و وجدان پہ گراں گزرتا ہے -قصائی یاد آتا ہے:? -نیز یہ شعر بھی واضح نہیں :

    تیری شفقت کا فیصلہ ہوتا
    تو عدالت سے ماورا ہوتا


    ایک عدل ہوتا ہے اور ایک فضل(بجائے شفقت کے ) - پھر "توعدالت سے....." میں " تو " کیا ہے ؟-اور حشر تو ابھی بپا ہونا ہے پھر "ہوتا " چہ معنی دارد ؟؟
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 12, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  7. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ محترم یہ تبدیلیاں مناسب ہوں گی؟

    آنسوؤں کا کوئی سبب بنتا
    دل محبت سے گر بھرا ہوتا

    فضل ہوتا ترا جو روزِ حشر
    تو عدالت سے ماورا ہوتا​
     
  8. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    849
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    آنسوؤں کا کوئی سبب بنتا
    دل محبت سے گر بھرا ہوتا

    دل بھرا ہونا -ایک محاورہ ہے جس کا مفہوم غمگین ہونا اور اشکبار ہونا وغیرہ نکلتا ہے لہذا شعر محض تکلّف ہے -

    فضل ہوتا ترا جو روزِ حشر
    تو عدالت سے ماورا ہوتا

    شعر ماضی کی طرف اشارہ کر رہا ہے -یا حسرت پہ دال ہے کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا اور دراصل ہوا نہیں -مجھے بھی کوئی متبادل نہیں سوجھ رہا -آپ بہت اچھا لکھ سکتے ہیں لہذا یہ شعر بھی رہنے دیں -
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ محترم، ویسے بھی اتنی چھوٹی بحر میں مناسب الفاظ کو پرونا مجھ جیسے مبتدیوں کے لیے مشکل ہوتا ہے۔ مزید سوچتا ہوں اگر کوئی مناسب متبادل ملا تو اصلاح و تنقید کے لیے پیش کروں گا۔ آپ کے وقت اور راہنمائی کا بہت شکریہ امید ہے آپ شفقت فرماتے رہیں گے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    محترم یاسر شاہ صاحب اس قطعہ کے بارے میں آپ کی رائے درکار ہے اگر مناسب ہے تو باقی اشعار کے ساتھ شامل کردیتا ہوں

    ق
    رات کے آخری پہر اٹھ کر
    جب ترے سامنے کھڑا ہوتا
    اشک آنکھوں سے بہہ رہے ہوتے
    اور میں گڑگڑا رہا ہوتا
     
  11. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    849
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    مجھے تو قطعہ ادھورا لگ رہا ہے -وجہ وہی ردیف کو نبھا نہ سکنا -یہ صورتیں دیکھیں:

    ہے یہ حسرت کہ آخر شب 'میں
    آپ کے سامنے کھڑا ہوتا ...........

    یا

    آرزو ہے کہ نیم شب اٹھ کر
    میں ترے سامنے کھڑا ہوتا ............


    یا اپنے ہی قطعہ میں کاش وغیرہ کا اضافہ کر دیں -

    یہ محض متبادل تجاویز ہیں جو مثال کے طور پہ دی گی ہیں -آپ انھیں اپنا سکتے ہیں یا کوئی اور اسی طرح کا متبادل آپ خود اپنے لئے سوچ سکتے ہیں -یہ اصلاح نہیں-

    میرا تو مشوره ہے ایسی تجاویز آپ اوروں کے کلام پہ بھی دیا کریں -اس سے آپ کی اپنی مشق سخن میں نکھار آئے گا -باقی عجم کی تواضع اکثر فارغ رہنے کا ایک بہانہ ہی ہوتی ہے -:)

    یاسر
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 15, 2018
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  12. عابد علی خاکسار

    عابد علی خاکسار محفلین

    مراسلے:
    359
    اچھی غزل ہے یاسر شاہ صاحب کا مشورہ مفید ہے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  13. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    ارے حضرت یہاں اپنی اصلاح کے لالے پڑے ہیں، آپ دوسروں کو مشورہ دینے کا کہہ رہے ہیں۔ خیر مزید سوچوں گا اس پر۔ آپ کے وقت اور راہنمائی کا بہت شکریہ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر