ایک جانب چاندنی - احمد فواد

سندباد نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 25, 2007

  1. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    اس لڑکیوں کی بھیڑ میں لیلیٰ نہیں کوئی
    مجنوں بہت ہیں شہر میں صحرا نہیں کوئی

    ہاتھوں میں ہاتھ دے کے یہاں گھومتے ہیں یہ
    اب زندگی سے موت کا جھگڑا نہیں کوئی

    اب آپکی نگاہ کسی اور سمت ہے
    اچھا ہے دل کے جانے کا خطرہ نہیں کوئی

    کیا بات ہے وہ سارے دِوانے کدھر گئے
    چرچا تمہارے حُسن کا کرتا نہیں کوئی

    سب مہ رخوں سے میرا تعارف ہے کچھ نہ کچھ
    اس شہر میں جناب سے اچھا نہیں کوئی

    یوں گھوم پھر کے اور بھی ہو جاؤگے خراب
    اس درد کا جہاں میں مداوا نہیں کوئی

    دل کی کلی کھلے تویہاں کس طرح کھلے
    اس شہر میں تو پھول بھی ہنستا نہیں کوئی

    مشکل نہیں ہے اتنی سمندر سے بات چیت
    اچھا یہ ہے کہ راہ میں دریا نہیں کوئی

    کھیلیں ضرور آپ مگر احتیاط سے
    دل ہے مرا حضور کھلونا نہیں کوئی

    تجھ سے ملے تو سب سے ملاقات ہو گئی
    ملنے کی اب کسی سے تمنا نہیں کوئی

    یوں کیسے منہ اٹھائے چلے آرہے ہیں سب
    یہ زندگی ہے کھیل تماشا نہیں کوئی

    رکھنا خیال اس کا تمہارا یہ فرض ہے
    دل کے مکاں میں اور تو رہتا نہیں کوئی

    تیرے خلاف آج سے اعلانِ جنگ ہے
    اب مجھ کو اس جہان کی پروا نہیں کوئی

    رہتے ہو تم بھی سارے جہاں سے الگ تھلگ
    میرا بھی اس جہاں میں ٹھکانہ نہیں کوئی

    دنیا سے آج تک ہے بس اس بات پر گلہ
    دنیا میں آج تک مجھے سمجھا نہیں کوئی

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  2. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    صحرا میں گھومنے کا مجھے یونہی شوق ہے
    میں نے تمہارے عشق کا دعویٰ نہیں کیا

    رہتی تھی اس میں ایک محبت کی کائنات
    دل توڑ کے یہ آپ نے اچھا نہیں کیا

    جاں دے کے اور ہو گئے ہم لوگ سرخرو
    گھاٹے کے کاروبار میں گھاٹا نہیں کیا

    دنیا تو مل رہی تھی یہاں کوڑیوں کے مول
    ہم نے ہی اپنے عشق کا سودا نہیں کیا

    اخبار میں نہ دی کبھی اس درد کی خبر
    اس ظلم پر بھی آپکو رسوا نہیں کیا

    اس دل کو داد دیجئے سمجھا نہیں تمہیں
    ورنہ جناب آپ نے کیا،کیا نہیں کیا

    بس حُسن کا غلام رہا ہوں تمام عمر
    شاہوں کے سامنے کبھی سجدہ نہیں کیا

    دنیا کو چھوڑنے کا سبب مختصر یہ ہے
    جینا ترے بغیر گوارہ نہیں کیا

    انصاف تو یہی ہے تجھے بھی سزا ملے
    جب میں نے کوئی جرم بھی تنہا نہیں کیا

    کاٹی ہے اس جہان میں مٹی کی قید بھی
    ہم نے تری خوشی کے لئے کیا نہیں کیا

    پھینکا ہے یہ اٹھا کے کہاں سے کہاں مجھے
    اس پر بھی آپ سے کبھی شکوہ نہیں کیا

    خود بھی تمہاری راہ میں جلتا رہا ہوں رات
    تاروں سے میں نے صرف اجالا نہیں کیا

    کیوں ہو رہا ہے مجھ سے یہاں ناروا سلوک
    تو نے اگر مذاق میں پیدا نہیں کیا

    زندہ ہے مجھ سے آج یہاں رسم عاشقی
    ناکامیوں پہ دل کبھی چھوٹا نہیں کیا

    مرضی تھی دل کی اس لئے تجھ پر ہوئے نثار
    ہم نے کسی کے کہنے پہ ایسا نہیں کیا

    اب آپکی نگاہ میں جادو نہیں رہا
    سچ کہہ دیا ہے آپ سے دھوکہ نہیں کیا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  3. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    اداسیوں نے بنائے ہیں گھونسلے اس میں
    مسرّتوں سے کبھی سر ہوا نہ دل کا درخت

    بہار آئی کئی بار اس طرف لیکن
    تمہاری یاد سے جانبر ہوا نہ دل کا درخت

    تمہارے جاتے ہی وہ دور اس کا ختم ہوا
    پھر اُس کے بعد تناور ہوا نہ دل کا درخت

    خزاں سے اپنے تعلق پہ اس کو ناز رہا
    کبھی بہار کا نوکر ہوا نہ دل کا درخت

    وہ پتے زرد ہوئے سارے پھول مرجھائے
    کسی خوشی کا کبھی گھر ہوا نہ دل کا درخت

    جہاں جہاں بھی گھنے مال و زر کے جنگل ہیں
    پھر اُس زمیں کا مقدّر ہوا نہ دل کا درخت

    تمہارے بعد کئی موسموں نے کوشش کی
    مگر وہ پھولوں کی چادر ہوا نہ دل کا درخت

    یہ سب طیور اُسی کا کلام پڑھتے تھے
    پھر اُس طرح سے سخنور ہوا نہ دل کا درخت

    وہ پہلے پیار کی بارش عجیب بارش تھی
    کسی سے ویسا مسخّر ہوا نہ دل کا درخت

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  4. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    (1)

    وہ اس زمین پہ رہتی تھی آسماں کی طرح
    کوئی نہیں ہے یہاں آج میری ماں کی طرح

    اب آنسوؤں کی کتابیں کبھی نہ لکھوں گا
    کہ ڈال دی ہے نئی نالہ و فغاں کی طرح

    اُسی کے دم سے یہ مٹی کا گھر منور تھا
    وہ جس کی قبر چمکتی ہے کہکشاں کی طرح

    وہ خود بھی لڑتی تھی سورج سے روز میرے لئے
    ہے اُس کی یاد بھی اک ابرِ مہرباں کی طرح

    طویل رات کا مسکن جو آج لگتا ہے
    یہی مکان تھا اک روز لامکاں کی طرح

    اب اُس کی موت پہ خود موت بھی پریشاں ہے
    کہ اس طرح سے پڑی عمر جاوداں کی طرح

    جہاں کو آج بھی اُس کی بڑی ضرورت ہے
    رہے گی اب وہ محبت کی داستاں کی طرح

    ترس رہا ہوں میں پانی کی بوند بوند کو اب
    حیات ہو گئی اک دشتِ بے اماں کی طرح

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  5. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    (2)
    زمیں سے خوب لڑا آسماں سے کچھ نہ کہا
    تمہاری موت پہ اللہ میاں سے کچھ نہ کہا

    یہ زرد رنگ ہی تشہیر کا سبب ہوگا
    خود اپنے منہ سے تو میں نے جہاں سے کچھ نہ کہا

    سلوک غم سے مناسب میں اور کیا کرتا
    خموش ہو گیا آہ و فغاں سے کچھ نہ کہا

    تمہارے دکھ نے کیا کتنا سربلند مجھے
    کہ جل کے راکھ ہوا لامکاں سے کچھ نہ کہا

    مقابلہ کی سکت موت سے کسی میں نہ تھی
    اسی لئے تو کبھی انس و جاں نے کچھ نہ کہا

    فضا میں درد بکھیرا ہوا سے باتیں کیں
    زیادہ اور تو کون و مکاں سے کچھ نہ کہا

    بچارے اتنا بڑا بوجھ کیا اٹھا ئیں گے
    یہ بات سوچ کے لفظ و بیاں سے کچھ نہ کہا

    جدائی میرے لئے کس قدر کٹھن ہوگی
    میں جانتا تھا مگر پھر بھی ماں سے کچھ نہ کہا

    فریضہ سونپ کے آنکھوں کو رونے دھونے کا
    پھر اُس کے بعد دل ناتواں سے کچھ نہ کہا

    وہ موسموں سے تعلق نہیں رہا باقی
    تمہارے بعد بہار و خزاں سے کچھ نہ کہا

    تمہارے ذکر سے دل میں شگاف پڑتے ہیں
    اسی لئے تو کسی مہرباں سے کچھ نہ کہا

    ان آنسوؤں نے جو دل کی زمیں پہ گرتے ہیں
    تمہارے بارے میں آب رواں سے کچھ نہ کہا

    تمہارے دکھ کا کسی سے علاج کیا ہوتا
    یقیں کی بات تھی وہم و گماں سے کچھ نہ کہا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  6. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    (3)

    دو دن میں پھیل جائے گی اس درد کی خبر
    یہ بوجھ آنسوؤں سے سنبھالا نہ جائے گا

    ہر سانس کی جبیں پہ ترے نقش ثبت ہیں
    اس زندگی سے تیرا حوالہ نہ جائے گا

    اب تو کرے گی ان کی وہاں خوب دیکھ بھال
    تاروں کو اب خلا میں اچھالا نہ جائے گا

    جب تو وہاں رہے گی تو کیا فکر ہے ہمیں
    جنت سے اب کسی کو نکالا نہ جائے گا

    تجھ سے سیاہ بخت کو وہ روشنی ملی
    مٹی سے اب کبھی یہ اجالا نہ جائے گا

    اب اس کے پاس کوئی نہیں ہے تری طرح
    اب زندگی سے موت کو ٹالا نہ جائے گا

    قدرت بھی آج سوچ کے یہ سوگوار ہے
    مٹی سے اور یوں کوئی ڈھالا نہ جائے گا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  7. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    کسی نے بھی تو محبت کی داستاں نہ سنی
    تمہارے بعد یہاں میں بہت ذلیل ہوا

    وہ جس پہ سرمد و حلاّج ہو گئے قرباں
    اُسی نگاہ کا میں بھی یہاں قتیل ہوا

    تمہارے جانے کا صدمہ عظیم صدمہ ہے
    اُسی سے آج میں اشکوں میں خود کفیل ہوا

    یہ عشق کھیل نہیں جناب بچّوں کا
    یہاں جو آگ میں کودا ہے وہ خلیل ہوا

    ہمیشہ سے یونہی پھولوں کو اس نے روندا ہے
    شریف کب تھا زمانہ جو اب رذیل ہوا

    یہ جس نگاہ سے دل کا علاج کرتے ہیں
    اُسی نگاہ سے مل کر یہ دل علیل ہوا

    حیات کیا تھی مسلسل عذاب کاٹا ہے
    ہر ایک لمحہ ترے ھجر کا طویل ہوا

    وہ جس نے کوہ و بیاباں کو کردیا سیراب
    ذرا سا مجھ کو پلانے میں کیوں بخیل ہوا

    غموں کی خوب یہاں دل نے سرپرستی کی
    نہیں تھا جس کا کوئی اُس کا یہ کفیل ہوا

    تری تلاش میں پھرتا نہ اس طرح بے کل
    یہ دل کا درد تری ذات پر دلیل ہوا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  8. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    تیری گلی میں ظرف سے بڑھ کر ملا مجھے
    اک پیالہ جستجو تھی سمندر ملا مجھے

    میں چل پڑا تھا اور کسی شاھراہ پر
    خنجر بدست یادوں کا لشکر ملا مجھے

    دریائے شب سے پار اترنا محال تھا
    ٹوٹا ہوا سفینۂ خاور ملا مجھے

    تاروں میں اُس کا عکس ہے پھولوں میں اُس کا رنگ
    میں جس طرف گیا مرا د لبر ملا مجھے

    ہر ذرّہ باکمال ہے ہر پتّہ بے مثال
    دنیا میں خودسے کوئی نہ کمتر ملا مجھے

    کب سے بھٹک رہا ہوں میں اس دشت میں مگر
    خود سے کبھی ملا نہ ترا در ملا مجھے

    ہوتا نہیں ہے تجھ پہ کسی بات کا اثر
    لگتا ہے تیرے روپ میں پتھر ملا مجھے

    بے کیف کٹ رہی تھی مسلسل یہ زندگی
    پھر خواب میں وہ خواب سا پیکر ملا مجھے

    اس بات پر کروں گا میں دن رات احتجاج
    کس جرم میں یہ خاک کا بستر ملا مجھے

    مجھ کو نہیں رہی کبھی منظر کی جستجو
    گھر کے قریب کوئے ستمگر ملا مجھے

    جب تک رہا میں خود میں بھٹکتا رہا یہاں
    جب خود کو کھو دیا تو ترا در ملا مجھے

    مٹی میں ڈھونڈتا ہوا کچھ بوڑھا آسماں
    میں جس طرف گیا یہی منظر ملا مجھے

    کرتے ہیں لوگ حسن سے یاں ناروا سلوک
    روتے ہوئے ہمیشہ گلِ تر ملا مجھے

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  9. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    (1)

    سنتا ہے کوئی بات نہ کہتا ہے آسماں
    دن رات بس زمین کو تکتا ہے آسماں

    کوئی نہیں جو اس سے کرے دو گھڑی کو بات
    میں سوچتا ہوں کتنا اکیلا ہے آسماں

    آتا ہے اب وہ لطف نہ چڑھتا ہے وہ سرور
    یوں دیکھنے میں آج بھی نیلا ہے آسماں

    میں آج بھی جہاں میں غریب الدیار ہوں
    اپنی ہوئی زمین نہ اپنا ہے آسماں

    یہ کس کو جیتنے کے لئے بے قرار ہے
    کیوں ہر گھڑی لباس بدلتا ہے آسماں

    لگتا ہے اس کو بھی کوئی دکھڑا لگا ہوا
    چھپ چھپ کے سب سے رات کو روتا ہے آسماں

    قوّت میں آج بھی ہے جوانوں کے سر کا تاج
    گو عمر کے لحاظ سے بوڑھا ہے آسماں

    ذلّت ہے کائنات میں اب خاک کا مقام
    جب سے مری زمین سے روٹھا ہے آسماں

    اُس چشمِ نیلگوں کا سراپا نہیں اگر
    پھر آپ ہی بتائیں مجھے کیا ہے آسماں

    ہر وقت اس پہ ٹوٹتے رہتے ہیں اب عذاب
    اچھی طرح زمیں کو سمجھتا ہے آسماں

    جانے بھگت رہا ہے یہ کس جرم کی سزا
    لٹکا ہوا خلا میں جو رہتا ہے آسماں

    مجھ کو ذلیل کرکے ملے گی اسے خوشی
    میں جانتا ہوں کتنا کمینہ ہے آسماں

    نیلے سے ایک پل میں یہ ہو جائے گا سفید
    دیکھو تو کیا عجیب تماشا ہے آسماں

    کہتے ہیں لوگ اس کی حقیقت نہیں کوئی
    کیا صرف دل زدوں کی تمنا ہے آسماں

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  10. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    (2)
    نیلا اسی لئے نظر آتا ہے آسماں
    آنکھوں سے تیرے رنگ چراتا ہے آسماں

    ہر سال اس کو بھیج کے پھولوں کا اک لباس
    مٹی پہ کتنا رعب جماتا ہے آسماں

    ہر رات اپنے ہاتھ میں لیکر نئے چراغ
    بھٹکے ہوؤں کو راہ دکھاتا ہے آسماں

    اب بھی حرام خور کی چالیں نہیں گئیں
    بالوں میں گو خضاب لگاتاہے آسماں

    رہتا ہے اس پہ جیسے ہمیشہ ہی غسل فرض
    ملتا ہے جب بھی پانی نہاتا ہے آسماں

    تازہ نقوش دیکھتے رہنے کے شوق میں
    پچھلے تمام نقش مٹاتا ہے آسماں

    سنتا نہیں زمین کی چھوٹی سی کوئی بات
    سب اپنا ہی کلام سناتا ہے آسماں

    کرتی ہے رات اس لئے اس تیرگی پہ ناز
    تاروں کی اس میں فصل اگاتا ہے آسماں

    تنہا زمین کے لئے ممکن نہیں یہ کام
    دن رات اس کا ہاتھ بٹاتا ہے آسماں

    رہتی ہے میری خاک سدا حیرتوں میں گم
    ہر روز اک کمال دکھاتا ہے آسماں

    ہر رات کس کا کرتا ہے اس طرح انتظار
    کس کے لئے یہ دیپ جلاتا ہے آسماں

    ہم نے تو اس کا کچھ بھی بگاڑا نہیں کبھی
    پھر کس لئے خلا میں نچاتا ہے آسماں

    یا بھول کے بھی اس کی طرف دیکھتا نہیں
    یا خاک میں گلاب کھلاتا ہے آسماں

    ہم قید میں ہیں اس کے بھلا اور کیا کریں
    بس دیکھتے ہیں جو بھی دکھاتا ہے آسماں

    گلیوں میں سج کے رات کو پھرتے ہیں اس طرح
    تاروں سے اب بھی پیشہ کراتا ہے آسماں

    اس کو نہیں ہے گرچہ ہمارا کوئی خیال
    لیکن ہمیں تو آج بھی بھاتا ہے آسماں

    سیلاب بھیجتا ہے کبھی قحط سالیاں
    مجھ کو طرح طرح سے دباتا ہے آسماں

    کس طرح اس سے رکھے گا اچھی کوئی امید
    جب رات دن عذاب ہی لاتا ہے آسماں

    ملنے کی جانے کس سے یہ تقریب ہے کہ یوں
    ہر رات اپنے گھر کو سجاتا ہے آسماں

    میں جانتا ہوں یہ بھی کوئی ہوگی اس کی چال
    کب دوستی کا ہاتھ بڑھاتا ہے آسماں

    میرا نہیں قصور ستاروں سے پوچھ لو
    گھر کے چراغ خود ہی بجھاتا ہے آسماں

    تاروں کو بیچ دیتا ہے ہر تیرگی کے ہاتھ
    روزی اسی طرح سے کماتا ہے آسماں

    آؤ تہیں بھی آج دکھائیں یہ معجزہ
    آنکھوں میں کس طرح سے سماتا ہے آسماں

    بس یونہی اس کے در کا کئے جاتی ہے طواف
    قابو میں کب زمین کے آتا ہے آسماں

    ممکن نہیں ہے خاک سے اس کا کوئی ملاپ
    یونہی مرا مذاق اڑاتا ہے آسماں

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  11. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    (3)
    بن ٹھن کے رات آتی ہے ہر رات اس کے پاس
    کہتے ہیں پھر بھی لوگ کنوارا ہے آسماں

    اس کھیل میں بھی دیکھنا ہوگی ہمیں ہی مات
    بازی کبھی زمین سے ہارا ہے آسماں

    ٹوٹے ہوئے دلوں پہ اسی ناز سے چلو
    سب جانتے ہیں آج تمہارا ہے آسماں

    کس طرح روشنی کا چلائیںگے یہ نظام
    تاروں کی تربیت کا ادارہ ہے آسماں

    دل اس کو دیکھتے ہی مچلتے ہیں اسطرح
    اڑتا کوئی خلا میں غبارہ ہے آسماں

    مٹتا ہے دیکھ دیکھ کے احساس تشنگی
    سیرابیوں کا ایسا نظارہ ہے آسماں

    ہوں اس لئے اب اس پہ دل و جان سے فدا
    میں نے زمین کے لئے ہارا ہے آسماں

    یہ صاحبِ جمال ہے کیا صاحبِ کمال
    آنکھوں میں اس طرح سے اتارا ہے آسماں

    دیکھا نہیں کسی نے بھی جاکر قریب سے
    شاید اسی لئے ہمیں پیارا ہے آسماں

    اس حسن و دلکشی کا سبب صرف تو نہیں
    ہم نے بھی آنسوؤں سے نکھارا ہے آسماں

    سورج کو کیسے سونپ دیں اب اس کی باگ ڈور
    تاروں نے اپنے خوں سے سنوارا ہے آسماں

    مایوس ہوکے دیکھتے ہیں سب اسی طرف
    ٹوٹے ہوئے دلوں کا سہارا ہے آسماں

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  12. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    اُن نگاہوں کو ہم آواز کیا ہے میں نے
    تب کہیں گیت کا آغاز کیا ہے میں نے

    ختم ہو تاکہ ستاروں کی اجارہ داری
    خاک کو مائل پرواز کیا ہے میں نے

    آپکو اک نئی خفّت سے بچانے کے لئے
    چاندنی کو نظر انداز کیاہے میں نے

    آسمانوں کی طرف اور نہیں دیکھوں گا
    اک نئے دور کا آغاز کیا ہے میں نے

    روٹھے لوگوں کو منانے میں مزہ آتا ہے
    جان کر آپکو ناراض کیا ہے میں نے

    تم مجھے چھوڑ کے اس طرح نہیں جا سکتے
    اس تعلق پہ بہت نازکیا ہے میں نے

    وہ جو صدیوں سے یہاں بند پڑا تھا دیکھو
    شاعری کا وہی در باز کیا ہے میں نے

    سُن کے مبھوت ہوئی جاتی ہے دنیا ساری
    شعر لکھّے ہیں کہ اعجاز کیا ہے میں نے

    عشق میں نام کمانا کوئی آسان نہ تھا
    سارے احباب کو ناراض کیا ہے میں نے

    صرف لوگوں کو بتانے سے تسلّی نہ ہوئی
    چاند تاروں کو بھی ہم راز کیا ہے میں نے

    اور بھی ہوں گے کئی چاہنے والے لیکن
    آپ کے نام کو ممتاز کیا ہے میں نے

    آسمانوں سے پرے کرتا ہے اب جاکے شکار
    طائرِ دل کو وہ شہباز کیاہے میں نے

    شاعروں سے جو ترے بعد کبھی ہو نہ سکا
    کام وہ حافظِ شیراز کیاہے میں نے

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  13. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    پھر آسمان کے نخرے اٹھا رہا ہوگا
    کسی ستارہ سے آنکھیں لڑا رہا ہوگا

    فواد کا تو یہاں اور کام ہی کیا ہے
    صبا کو روک کے نظمیں سنا رہا ہوگا

    اُسے یہ ہوش کی سب محفلیں پسند نہیں
    پھر اُس گلی میں کہیں لڑ کھڑا رہا ہوگا

    وہ ہنستے گاتے درختوں پہ جان دیتا ہے
    انہیں کہیں پہ کھڑا گدگدا رہا ہوگا

    بہت دنوں سے وہ گھر لوٹ کر نہیں آیا
    ہوا کے ساتھ کہیں گنگنا رہا ہوگا

    تمہارے آنے سے مایوس ہو کے غصّہ میں
    پھر اٹھ کے چاند ستارے بجھا رہا ہوگا

    یہ منہ بسورتے لوگ اُس کو زھر لگتے ہیں
    وہ ان کا دور کھڑا منہ چڑا رہا ہوگا

    وہ جانتا ہے کہ اُس کا دماغ ٹھیک نہیں
    یہ سوچ سوچ کے خود مسکرا رہا ہوگا

    وہ بیوقوف تمہیں آج بھی نہیں بھولا
    تمہاری یاد میں آنسو بہارہا ہوگا

    تمہارے آنے کی کوئی خبر ملی ہوگی
    تمہاری راہ میں کلیاں بچھا رہا ہوگا

    ہم اپنی مرضی کے مالک ہیں آسماں کیاہے
    زمیں کو پھر یہی پٹّی پڑھا رہا ہوگا

    تم اُس کو ڈھونڈنے آئے ہو نیند کے گھر میں
    وہ چاندنی سے کھڑا گپ لگا رہا ہوگا

    نئے شگوفوں کی بستی سے دو قدم آگے
    وہ تتلیوں کے لئے گھر بنا رہا ہوگا

    زمیں کو پھر کسی سورج نے آنکھ ماری ہے
    یہ بات سُن کے وہ پھر تلملا رہا ہوگا

    وہ جس کو سُن کے سب اس کا مذاق اڑاتے ہیں
    کسی کو پھر وہی قصہ سنا رہا ہوگا

    بہار آئی ہے اُس کو ابھی نہیں معلوم
    وہ زرد پتوں کو ٹیوشن پڑھا رہا ہوگا

    وہ اب یہاں سے کہیں دور جا نہیں سکتا
    ستارہ بن کے یہاں جگمگا رہا ہوگا

    خوشی سے اب بھی نہیں کوئی واسطہ اس کا
    اداسیوں کا کہیں دل بڑھا رہا ہوگا

    وہ آنسوؤں کی خطابت میں طاق ہے اب بھی
    پھر اپنی باتوں سے سب کو رُلا رہا ہوگا

    وہ زندگی سے تعلق پہ شرمسار رہا
    اب اپنی موت پہ خوشیاں منا رہا ہوگا

    کسی نے اُس سے کیا ہوگا شام کا وعدہ
    وہ انتظار میں شب بھر کھڑا رہا ہوگا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  14. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    ہوا نے چھین لیا آکے میرے ہونٹوں سے
    وہ ایک گیت جو میں گنگنا رہا تھا ابھی

    وہ جاکے نیند کے پہلو میں مجھ سے چھپنے لگا
    میں اُس کو اپنی کہانی سنا رہا تھا ابھی

    کہ دل میں آکے نیا تیر ہو گیا پیوست
    پرانا زخم میں اُس کو دکھا رہا تھا ابھی

    برس رہی تھی زمیں پر عجیب مدھوشی
    نہ جانے کون فضاؤں میں گا رہا تھا ابھی

    افق کے پار یہ ڈوبا ہے کس طرح سورج
    یہیں پہ بیٹھ کے باتیں بنا رہا تھا ابھی

    اٹھاکے دھوپ نے گھر سے مجھے نکال دیا
    میں انتظار کی شمعیں جلا رہا تھا ابھی

    جو سب کو ہنسنے کی تلقین کرتا رہتا ہے
    وہ میرے سامنے آنسو بہا رہا تھا ابھی

    وہ جس کا نام پڑا ہے خموش لوگوں میں
    یہاں پہ لفظوں کے دریا بہا رہا تھا ابھی

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  15. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    میں کس کے کہنے پہ اس خاکداں میں آیا ہوں
    نظر سے کس کے لئے آپ نے گرایا ہوں

    کچھ ان پہ بھی تری آواز کی پھوار پڑے
    حضور میں یہ سماعت کے پھول لایا ہوں

    میں تجھ سے آج بھی انصاف کا نہیں طالب
    میں جانتا ہوں وہ اپنے ہیں میں پرایا ہوں

    ہمیشہ تجھ سے تعلق پہ مجھ کو ناز رہا
    ہر ایک زخم پہ سوبار مسکرایا ہوں

    وہ سوچتا تھا چلو کام ہو گیا اس کا
    مگر میں خاک میں کچھ اور جگمگایا ہوں

    یہ نغمہ بار پرندے یہ خوش گلو دریا
    مقابلہ میں ذرا میں بھی گنگنایا ہوں

    اسی لئے تو مجھے آنسوؤں سے رغبت ہے
    میں اس جہان میں زخمی دلوں کا سایہ ہوں

    مدام رہتی ہیں کیوں آندھیاں تعاقب میں
    جلا نہیں ہوں میں خود آپ نے جلایا ہوں

    وہ آسمانوں پہ جانے کی آرزو نہ رہی
    کچھ اس طرح سے میں اس خاک میں سمایا ہوں

    تو جانے کون جہانوں میں ہو گیا مصروف
    یہ سوچ سوچ کے ہر لمحہ تلملایا ہوں

    مری تلاش میں نکلے ہیں کیوں رسول یہاں
    خود اپنے ہاتھ سے جب آپ نے گنوایا ہوں

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  16. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    ہمارے دل کی بجادی ہے اُس نے اینٹ سے اینٹ
    ہمارے آگے کبھی اُس کا نام مت لینا

    اُسی نگاہ سے پینے میں لطف ہے سارا
    علاوہ اس کے کوئی اور جام مت لینا

    اسی سبب سے ہے دنیا میں آسماں بدنام
    تم اپنے ہاتھ میں یہ انتظام مت لینا

    دل و نظر کی بقا ہے فقط محبت میں
    دل و نظر سے کوئی اور کام مت لینا

    یہاں پہ اچھا ہے جتنا بھی مختصر ہو قیام
    ذلیل ہوگے حیاتِ دوام مت لینا

    یہ سارے لوگ تمہارا مذاق اڑاتے ہیں
    جہاں میں اور محبت کا نام مت لینا

    رہوگے چاند کی سرگوشیوں سے بھی محروم
    کسی سے دھوپ کا جلتا کلام مت لینا

    اگرچہ تم پہ ہوا ہے یہاں پہ ظلم بہت
    کسی سے اس کا مگر انتقام مت لینا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  17. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    تمہارے لئے مسکراتی سحر ہے
    ہمارے لئے رات کا یہ نگر ہے

    اکیلے یہاں بیٹھ کر کیا کریں گے
    بلایا ہے جس نے ہمیں وہ کدھر ہے

    پریشاں ہوں کس کس کا سُرمہ بناؤں
    یہاں تو ہر اک کی اُسی پر نظر ہے
    ا
    جالا ہیں رخسار جادو ہیں آنکھیں
    بظاہر وہ سب کی طرح اک بشر ہے

    وہ جس نے ہمیشہ ہمیں دکھ دیئے ہیں
    تماشہ تو یہ ہے وہی چارہ گر ہے

    نکل کر وہاں سے کہیں دل نہ ٹھہرا
    بچارہ ابھی تک یہاں دربدر ہے

    کسی دن یہ پتھر بھی باتیں کرے گا
    محبت کی نظروں میں اتنا اثر ہے

    جو پلکوں سے گِر جائے آنسو کا قطرہ
    جو پلکوں میں رہ جائے گا وہ گہر ہے

    وہ ذلّت وہ خواری بھی اس کے سبب تھی
    محبت کا سہرہ بھی اس دل کے سر ہے

    کوئی آرہا ہے کوئی جا رہا ہے
    سمجھتے ہیں دنیا کو خالہ کا گھر ہے

    نہ کوئی پیام اُس کی جانب سے آیا
    نہ ملتا کہیں اب مرا نامہ بر ہے

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  18. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    سمندروں سے کوئی کام ہی نہیں پڑتا
    ہمارے پاس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    کوئی تو ایک ہی قطرہ سے ہو گیا مدھوش
    کسی کی پیاس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    سنا ہے ڈوب گئی رات چاند کی کشتی
    بہت اداس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    بھٹک رہی ہے خلاؤں میں کب سے اس کے لئے
    زمیں کی آس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    بہت سے لوگ تو کہتے ہیں اور کچھ بھی نہیں
    بس اک قیاس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    جڑے ہوئے ہیں ستارے اسی لئے اس میں
    ترا لباس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    وہ ناز کرنے میں ہر وقت حق بجانب ہے
    وہ جس کے پاس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    اسی کو پیتی ہیں دن رات تشنہ لب آنکھیں
    مری اساس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    تری نگاہ میں کھوئے ہوئے سمندر کا
    اک اقتباس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    اسی لئے تو گوارا ہوئی یہ خاک مجھے
    نظر کو راس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    میں دیکھ لینا کسی روز اس کو پی لوں گا
    بھرا گلاس ہے یہ آسماں کی نیلی جھیل

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  19. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    زمین ان کی ہر اک بات مان لیتی ہے
    کہاں سے سیکھ کے آتے ہیں گفتگو دریا

    یہ کس کی یاد میں اشکوں کے بند ٹوٹے ہیں
    یہ کس کو ڈھونڈتے پھرتے ہیں کوبکو دریا

    جوان ہوتے ہی سب گھر سے بھاگ جاتے ہیں
    کبھی نہ چھوڑیں گے لگتا ہے اپنی خو دریا

    سمندروں سے بغاوت کا شوق ہے لیکن
    مقابلہ پہ نہیں آتے دوبدو دریا

    وہ جس کو دور کہیں آسماں میں بھول آئے
    اب اس کی خاک میں کرتے ہیں جستجو دریا

    جو میں نے خوابوں کی وادی میں بہتے دیکھا تھا
    نہیں ہے کوئی یہاں ویسا ہوبہو دریا

    کہیں پہ خاک میں پوشیدہ اک خزانہ ہے
    اُسی کی کھوج میں پھرتے ہیں چار سو دریا

    سفر میں رہنے سے آداب سیکھ جاتے ہیں
    وگر نہ ہوتے ہیں حد درجہ تند خو دریا

    گھروں سے حلف اٹھاتے ہوئے نکلتے ہیں
    نہیں کریں گے کبھی گھر کی آرزو دریا

    خود اپنے آپ سے لڑتے ہوئے شہید ہوئے
    بہت سے ایسے بھی دیکھے ہیں تندخو دریا

    تمام عمر یہ اپنوں سے دور رہتے ہیں
    بس اتفاق سے ملتے ہیں روبرو دریا

    یہ کس کے خون کا لیتے ہیں انتقام اس سے
    زمیں کا پیتے ہیں ہر وقت کیوں لہو دریا

    نہ جانے کون ہیں آئے ہیں کس کی شادی میں
    یہ نغمہ بار پرندے یہ خوش گلو دریا

    اسی لئے تو یہ سب میکشوں سے بہتر ہیں
    شراب پیتے ہیں بے ساغر و سبو دریا

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ​
     
  20. سندباد

    سندباد لائبریرین

    مراسلے:
    734
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy

    وہ دبدبہ نہ اجالا نہ شان و شوکت ہے
    تمہارے سامنے بے اختیار ہے سورج

    بچھڑ گئی ہے کہیں چاندنی اندھیرے میں
    اُسی کی یاد میں یوں بے قرار ہے سورج

    جہاں میں اس کا بھی شاید کوئی ٹھکانہ نہیں
    مری طرح سے غریب الدّیار ہے سورج

    خلا میں اور بھی روشن کئی ستارے ہیں
    تمہارے فن کا مگر شاھکار ہے سورج

    یہ اور بات سحر کو نہ کر سکا آزاد
    لڑا تو رات سے مردانہ وار ہے سورج

    بلند ہم نے کیا تھا علم بغاوت کا
    ہمارے خون سے ہی داغدار ہے سورج

    نہیں کریں گے کوئی ساز باز اس کے خلاف
    دفع ہو رات ہمارا تو یار ہے سورج

    یہ چاند تارے سبھی اُس کے ہاں ملازم ہیں
    بہت بڑا کوئی سرمایہ دار ہے سورج

    کسی نے رات کو پھر اس سے بات کی ہوگی
    پھر آج غصہ میں جلتا شرار ہے سورج

    چلو یہاں سے کہیں اور اب کریں ہجرت
    یہاں تو سر پہ ہمیشہ سوار ہے سورج

    کہیں پہ ایک بھڑکتا ہوا جہنّم ہے
    کہیں پہ صرف محبت ہے پیار ہے سورج

    بڑے بڑوں کو یہاں سے اکھاڑ ڈالا ہے
    اگرچہ یوں تو نحیف و نزار ہے سورج

    کہیں اٹھا کے اسے اب سنبھال کر رکھو
    گئے دنوں کی کوئی یاد گار ہے سورج

    خلا میں تاکہ وہ ہارے نہ حوصلہ اپنا
    زمیں کے نام کسی کی پکار ہے سورج

    کہیں پہ بیٹھ کے آرام کیوں نہیں کرتا
    ہوا کے گھوڑے پہ ہردم سوار ہے سورج

    نیا ستارہ کوئی آسماں سے ٹوٹا ہے
    کئی دنوں سے بہت سوگوار ہے سورج

    ہمیشہ ڈرتے ہوئے اس سے ملنے جاتا ہوں
    نہ جانے نور ہے تیرا کہ نار ہے سورج

    ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔

    ختم شد​
     

اس صفحے کی تشہیر