امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کر لیا

مرزا حنیف احمد نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 6, 2017

  1. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    [​IMG]
    امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بدھ کی رات یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ان کے خیال میں یہ اقدام امریکہ کے بہترین مفاد اور اسرائیل اور فلسطین کے درمیان قیامِ امن کے لیے ضروری تھا۔

    ان کا کہنا تھا ’یہ ایک اتحادی کو تسلیم کرنے کے لیے علاوہ اور کچھ نہیں۔ میں امریکی سفارت خانے کو یروشلم منتقل کرنے کے احکامات دیتا ہوں۔‘

    وائٹ ہاؤس میں خطاب کرتے ہوئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ان کے خیال میں 'یہ اقدام امریکہ کے بہترین مفاد اور اسرائیل اور فلسطین کے درمیان قیامِ امن کے لیے ضروری تھا۔ '

    ٹرمپ کا کا کہنا تھا کہ یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا فیصلہ بہت عرصے پہلے ہو جانا چاہیے تھا۔

    ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ ’امریکہ دو ریاستی حل کا حامی ہے۔ اگر دونوں فریق اس بات پر راضی ہو جائیں۔ ہماری سب سے بڑی امید امن ہی ہے۔ ہم خطے میں امن اور سلامتی چاہتے ہیں۔ ہم پر اعتماد ہیں کہ ہم اختلافات کے خاتمے کے بعد امن قائم کریں گے۔‘

    واضح رہے کہ امریکہ دنیا کا پہلا ملک بن گیا ہے جس نے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کیا ہے۔

    دریں اثنا اسرائیلی وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ دنیا کے ہر کونے میں ہمارے لوگ یروشلم واپس آنے کے لیے بے تاب ہیں اور آج صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اعلان نے ہمارے لیے یہ ایک تاریخی دن بنا دیا ہے۔

    ’یہ ایک تاریخی دن ہے۔ یروشلم اسرائیل کا دارالحکومت 70 سے ہے۔ یروشلم ہماری امیدوں، خوابوں اور دعاؤں کا مرکز رہا ہے۔ یروشلم یہودیوں کا تین ہزار سال سے دارالحکومت رہا ہے۔ یہاں پر ہماری عبادگاہیں رہی ہیں، ہمارے بادشاہوں نے حکمرانی کی ہے اور ہمارے پیغمبروں نے تبلیغ کی ہے۔'

    [​IMG]
    دوسری جانب امریکی صدر کی جانب سے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے پر بین الاقوامی سطح پر شدید تنقید کی جا رہی ہے۔

    فلسطین لبریشن آرگنائزیشن کے سیکریٹری جنرل کا کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے سے دو ریاستی حل کی امید کو تباہ کر دیا گیا ہے۔

    ترکی نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے پر تنقید کرتے ہوئے کہا 'ہم امریکی انتظامیہ کے اس غیر ذمہ دار بیان کی مزمت کرتے ہیں۔ یہ فیصلہ بین الااقوامی قوانین اور اقوامِ متحدہ کی قرار دادوں کے خلاف ہے۔'

    مصر نے امریکہ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے اعلان کو مسترد کر دیا۔

    فرانسیسی صدر نے ٹرمپ کے اعلان کے رد عمل پر کہا ہے کہ وہ امریکہ کے یکطرفہ فیصلے کو تسلیم نہیں کرتے جس میں اس نے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کیا ہے۔

    'یہ فیصلہ افسوسناک ہے جس کو فرانس قبول نہیں کرتا اور یہ فیصلہ عالمی قوانین اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے خلاف جاتا ہے۔'
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • غمناک غمناک × 1
  2. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    اسرائیل ایک سیکولر یہودی ملک ہونے کی وجہ سے تمام مذاہب و ادیان کو مذہبی آزادی دیتا ہے۔ وہ فرقے بھی جو مسلم ممالک میں طرح طرح کی پابندیوں کا شکار ہیں جیسے احمدی یا بہائی، وہ اسرائیل میں مذہبی طور پر مکمل آزاد ہیں۔ اس تناظر میں اگر دیکھا جائے تو یروشلم اسرائیل کی زیر نگرانی فلسطین کی نسبت زیادہ مذہبی آہنگی کو فروغ دے سکتا ہے۔ کیونکہ فلسطینی علاقوں میں تو اول کسی یہودی کا داخلہ ہی ممنوع ہے، اور جو کچھ عیسائی بچ گئے تھے وہ بھی بھاگ کر اسرائیل شفٹ ہو گئے ہیں۔
     
    • غیر متفق غیر متفق × 3
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    20,620
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    مسلم ممالک کے علاوہ اقوامِ متحدہ کے جنرل سیکرٹری، یورپی یونین، برطانیہ، فرانس وغیرہ کے سربراہان نے ٹرمپ کے اس بیان کی مذمت اور مخالفت کی ہے۔
    لیکن
    مرزا صاحب آپ کی خوشی دیدنی ہے!
    :)
     
    • متفق متفق × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • پر مزاح پر مزاح × 3
    • زبردست زبردست × 2
  4. فرقان احمد

    فرقان احمد مدیر

    مراسلے:
    2,266
    مسٹر ٹرمپ نے اقتدار میں آنے کے بعد ایک بار پوری دنیا کو ہلا کر رکھ دیا ہے؛ شاید انہیں لائے جانے کا ایک مقصد یہ بھی رہا ہو۔ یہ بھی ممکن ہے کہ یہ سب حالات و واقعات کا نتیجہ ہو۔ تاہم، یہ بات تو طے شدہ ہے کہ پوری دنیا میں کافی اتھل پتھل ہو چکی ہے۔ شاید، ہلیری کلنٹن کے برسراقتدار آنے کے بعد حالات و واقعات کی یہ رفتار نہ رہتی۔ خاص طور پر، خلیجی ممالک اور مشرقِ وسطیٰ کے خطے میں جس رفتار سے تبدیلیاں آ رہی ہیں، وہ معنی خیز ہیں۔ اور اب اس پیش رفت کے بعد، واقعات مزید تیزی سے آگے بڑھیں گے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. لئیق احمد

    لئیق احمد محفلین

    مراسلے:
    10,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    پوری دنیا میں لبرل ازم کی کمی ہوری ہے، برطانیہ میں بریگزیٹ، ٹرمپ اور مودی کی کامیابی اسی کی علامات ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  6. Muhammad Qader Ali

    Muhammad Qader Ali محفلین

    مراسلے:
    890
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    السلام علیکم
    مجھے ٹرمپ سے نفرت نہیں ہے وہ ایک دلیر دشمن ہے
    پرانے زمانے کے سارے امریکی سیاست دان اور پالیسی میکر سبھی منافق ہیں
    ٹرمپ نے جب بھی بات کی سینہ بجاکر۔
    بے عقل دوست سے اچھا عقل مند دشمن ہوتا ہے
     
    • متفق متفق × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. لئیق احمد

    لئیق احمد محفلین

    مراسلے:
    10,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    یہ بات درست لگتی ہے کہ ٹرمپ میں منافقت کم ہے۔
     
    • متفق متفق × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. Muhammad Qader Ali

    Muhammad Qader Ali محفلین

    مراسلے:
    890
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    اللہ رب العالمین نے ابلس کو قیامت تک موقع دیا ہے جو کرنا ہے کرلے۔
    ابلس اپنے طریق سے ہر طرف سے حملہ آور ہوتا ہے
    جو اللہ رب العالمین کے بندے ہیں وہ اس کے حملے سے بچ جاتے ہیں
    کافی عرصے کے بعد ابلس سے غلطی ہوگئی، اس نے غلط بندہ امریکہ
    کے لئے چن لیا۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  9. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    27,978
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    یہ ایک پوسٹ میں اچھے نہیں لگتے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 5
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    میرے خیال میں یہ محض بیان بازی نہیں بلکہ امریکہ کا حتمی فیصلہ ہے کہ انکاسفارتخانہ آئندہ سال سے اسرائیل کے دارالحکومت یروشلم میں ہوگا۔
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  11. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    کیا مطلب؟ کیا امریکہ میں بھی افواج اپنے صدر منتخب کرتی ہے؟
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  12. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    لگتا ہے مشرق وسطیٰ کا رنگ پوری دنیا پر چڑھ گیا ہے۔
     
    • غیر متفق غیر متفق × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  13. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    اسے خوبی سمجھا جائے یا خامی؟
     
  14. عثمان

    عثمان محفلین

    مراسلے:
    8,478
    موڈ:
    Cheerful
    معلوم ہوتا ہے کہ ٹرمپ کے پاکستان میں کافی مداحین ہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  15. خالد محمود چوہدری

    خالد محمود چوہدری محفلین

    مراسلے:
    8,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    کیا کسی نے ایسی بات سنی ہے ٹرمپ کی روس نے مدد کی تھی صدر بننے میں
     
    • متفق متفق × 1
  16. لئیق احمد

    لئیق احمد محفلین

    مراسلے:
    10,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    نسل پرستی صرف مشرق وسطی میں نہیں، دنیا کے اور بھی خطوں میں شدید نسل پرستی پائی جاتی ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  17. Muhammad Qader Ali

    Muhammad Qader Ali محفلین

    مراسلے:
    890
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت بنانے کے اعلان کے بعد امریکی صدر ٹرمپ کا ڈاکٹر سے چیک اپ کروانے کا فیصلہ کرلیا گیا
    مانیٹرنگ ڈیسک دسمبر 8, 2017
    واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کی تقریر کے دوران امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ کی زبان جس طرح بوکھلاہٹ کے سے انداز میں لڑکھڑاتی رہی اور انہوں نے مبہم سے الفاظ بولے، اس پر امریکہ میں شدید بحث جاری ہے جس سے مجبور ہو کر وائٹ ہاﺅس نے ڈونلڈٹرمپ کا مکمل طبی معائنہ کروانے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ وائٹ ہاﺅس کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ”اسرائیل پالیسی پر مبنی تقریر کے دوران ڈونلڈٹرمپ کے اٹکنے اور زبان لڑکھڑانے میں کوئی پریشانی کی بات نہیں ہے۔ ان کا جلد فوجی ڈاکٹروں سے مکمل طبی معائنہ کراوایا جائے گا اور اس کے نتائج عام کیے جائیں گے تاکہ اس حوالے سے لوگوں کے شکوک و شبہات ختم ہو سکیں۔“

    وائٹ ہاﺅس کی پریس سیکرٹری سارا سینڈرز نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”ڈونلڈٹرمپ کی تقریر کے حوالے سے کئی سوالات اٹھائے جا رہے ہیں جن میں سے اکثر انتہائی نامعقول ہیں۔ درحقیقت صدر ٹرمپ کا گلا اس وقت خشک تھا، جس کی وجہ سے انہیں الفاظ کی ادائیگی میں کچھ مشکل ہوئی۔ اس سے زیادہ کچھ نہیں۔“ اس موقع پر انہوں نے صحافیوں سے وعدہ کیا کہ ”صدر ٹرمپ کا آئندہ سال کے شروع میں مکمل طبی معائنہ کروایا جائے گا اور اس کے نتائج عام کیے جائیں گے۔ یہ معائنہ والٹر ریڈ(نیشنل ملٹری میڈیکل سنٹر)میں کیا جائے گا۔“

    واضح رہے کہ ڈونلڈٹرمپ کی اس تقریر پر دندان سازوں کا کہنا ہے کہ ٹرمپ نے نقلی بتیسی لگوائی ہوئی ہے جو ڈھیلی ہو چکی ہے، اس وجہ سے انہیں الفاظ کی ادائیگی میں مشکل ہوئی۔ اس حوالے سے ایم ایس این بی سی کی میزبان جوئی سکاربورو کا کہنا تھا کہ ”ٹرمپ کی اس حالت کی سب سے قرین قیاس وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ وہ ڈیمینشا (Dementia)کے مریض ہو چکے ہیں جس کی وجہ سے ان کی بولنے کی صلاحیت متاثر ہو رہی ہے۔“
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  18. Muhammad Qader Ali

    Muhammad Qader Ali محفلین

    مراسلے:
    890
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    لوجی،،،
    شمالی کوریا کے صدر نے کہا ہے کہ اسرائیل نامی کوئی ریاست ہی نہیں تو اس کا دار الحکومت کہاں ہو سکتا ہے
    شمالی کوریا نے اب تک اسرائیل کو تسلیم نہیں کیا ہے اس لیے کوریائی میڈیا اسرائیل کی جگہ فلسطین کا لفظ ہی استعمال کرتا ہے۔
    [​IMG]
    [​IMG]

    [​IMG]
    muslim community all over the world remember yasser Arafat........if want to free Jerusalem..... free Palestine.......
     
    آخری تدوین: ‏دسمبر 9, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. Muhammad Qader Ali

    Muhammad Qader Ali محفلین

    مراسلے:
    890
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
  20. مرزا حنیف احمد

    مرزا حنیف احمد معطل

    مراسلے:
    222
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Aggressive
    جی مدد کی تھی بلکہ خود روسیوں نے امریکہ جاکر ٹرمپ کے حق میں ووٹ ڈالے تھے۔
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1

اس صفحے کی تشہیر