1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

اردو شاعری منظوم معراج ناموں کی ضرورت ہے

شاکرالقادری نے 'مطالعہ کتب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 13, 2015

  1. فاروق احمد بھٹی

    فاروق احمد بھٹی محفلین

    مراسلے:
    2,423
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    انگلیوں میں دردن شدید
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ان شاء اللہ عزوجل! کثیر ووفیر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    نغمۂ رسالت
    از شہزادۂ اعلیٰ حضرت، حجۃ الاسلام حضرت مولانا محمد حامد رضا خان علیہ رحمۃ الرحمن
    ہیں عرشِ بریں پر جلوہ فگن محبوبِ خدا سبحان اللہ
    اک بار ہوا دیدار جسے سو بار کہا سبحان اللہ

    حیران ہوئے بَرْق اور نظر اک آن ہے اور برسوں کا سفر
    راکب نے کہا اللہ غنی مَرْکَبْ نے کہا سبحان اللہ

    طالب کا پتہ مطلوب کو ہے مطلوب ہے طالب سے واقف
    پردے میں بلا کر مل بھی لیے پردہ بھی رہا سبحان اللہ

    ہے عبد کہاں معبود کہاں معراج کی شب ہے راز نہاں
    دو نور حجابِ نور میں تھے خود ربّ نے کہا سبحان اللہ

    جب سجدوں کی آخری حدوں تک جا پہنچا عبودیت والا
    خالق نے کہا ما شآء اللہ حضرت نے کہا سبحان اللہ

    سمجھے حامد انسان ہی کیا یہ راز ہیں حسن والفت کے
    خالق کا حبیبی کہنا تھا خلقت نے کہا سبحان اللہ
    -------------بیاضِ پاک------------​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    بیان معراج فوق السماء ذات الابراج
    مولانا محمد عبد السمیع بیدل رام پوری رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ......تلمیذ مرزا غالب ومصنف انوارِ ساطعہ

    جاتے ہیں معراج کو وہ شاہ عالیجاہ آج
    اور ہی شانِ رسول اللہ ہے واللہ آج

    کس تجمل سے چلی بنکر سواری آپکی
    ہین فرشتے مشعلیں نوری لئے ہمراہ آج

    کسقدر اللہ اکبر ہے ملائک کا ہجوم
    پانو دہرنے کو نہین بطحا مین ملتی راہ آج

    کاش بنتی آج وہ نعل براقِ مصطفےٰ
    سر ٹپکتے پھرتے ہین گردونپہ مہر و ماہ آج

    چرخ ہفتم پر رہے جبریل و چارم پر مسیح
    جا کے چمکا عرش پر نجم رسول اللہ آج

    عام کیسے دخل وہان روح القدس تک کو نہین
    خاص اُس مخلص کے خلوت کو کہلی درگاہ آج

    چین سے خلوت مین جا دیکھا خدای پاک کو
    دیدۂ حادث قِدم کا ہے تماشاگاہ آج

    چشم بد دور آج کیا اخلاص کیا انعام ہے
    لیتے وہ جو کچھ ہین دیتا جائ ہے اللہ آج

    دم مین کیا کیا کچہ کیا اس جزر و مد کو دیکہنا
    بنگیا لمحہ سمٹ کر طولِ سال و ماہ آج

    کل اُسئ روز شفاعت یاد رکہئے گا حضور
    ہے جو مداح آپ کا یہ بندۂ درگاہ آج

    خاتمہ کامل ہو گر دین رسول اللہ پر
    موت کا پھر کچھ نہین غم خواہ کل ہو خواہ آج

    دیکہنا محشر مین کیا کیا لونگا جب ہو گا یہ حکم
    لے غزل کا اپنے اے بیدل صلہ دلخواہ آج
    ............نورِ ایمان............​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ہیں
    پاؤں
    دھرنے
    چہارم
    دیکھنا
    دراصل یہ اور اس جیسے دیگر الفاظ پرانی اردو املا کے مطابق لکھے گئے ہیں۔ ایک تو بندہ ہر کتاب کو اس کے محرر کی املا وغیرہ میں پڑھنا پسند کرتا ہے اور دوسرے یہ کہ اوزانِ شعر سے بھی جاہل ہے ولہٰذا کسے تبدیل کرنے سے وزنِ شعر برقرار رہے گا اور کس کے ساتھ بگڑ جائے گا اس سے بھی لاعلم قرار پایا۔ بنا برایں ومعدودے چند دیگر وجوہات بندے نے ہو بہو نقل کا ارادہ کر لیا البتہ لفظِ "ہے" کی املا تبدیل کرنا پڑی کیونکہ پرانی املا کے مطابق کسی "کی" کا علم نہ ہو سکا۔ سمجھنے میں دشواری پیش آئے تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(خالی جگہ آپ اپنی مرضی کے مطابق خود بہتر طور پر پُر کر سکتے ہیں)۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    خرم انصاری ! بہت خوب مولانا محمد عبد السمیع بیدل رام پوری کے اس کام کا ماخذ کیا ہے اگر ساتھ ہی کتاب کا حوالہ لکھ دیا کریں تو شکر گزار ہونگا
     
  7. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    "............نورِ ایمان............"
    یہ مآخذ اور کتاب کا حوالہ ہی ہے۔ غالباً مآخذ ذکر کرنے کا یہ طریقہ عام اسلوب سے ہٹ کر رہا اسی لیے آپ کو سمجھنے میں دشواری کا سامنا ہوا، اس کے لیے یہ بندہ معذرت خواہ ہے۔ بہرحال "نورِ ایمان" مولانا محمد عبد السمیع بیدل رام پوری رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ کے مجموعہ کلام کا نام ہے۔ فقیر کے پاس اس کا جو نسخہ موجود ہے اسے لاہور کے ایک مطبع "دار الاسلام" نے شایع کر کے استفادہ کا موقع بہم پہنچایا۔ یہ بھی کسی پرانے نسخے کا عکس معلوم ہوتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    لیجئے پیارے آقا ﷺ کے معجزہ معراج شریف سے متعلق مولانا مذکور کا ایک اور کلام ملاحظہ کیجئے

    ذکر معراج صاحب اللواء والتاج


    اس سید الرسل پہ ہے اپنا سلام خاص
    بلوائے جسکو عرش پہ رب الانام خاص

    آئے براق برق روش لیکے جبرئیل
    دربار خاص حق کا سنایا پیام خاص

    آئے فرشتے نور کی شمعین لئے ہوئے
    اللہ رے روشنی کا تھا کیا اہتمام خاص

    جاتے تھے ہمرکاب فرشتے پرے بندھے
    اس شاہِ انبیا کا تھا یہ احتشام خاص

    آئے فرشتے مسجد اقصےٰ مین اور رسل
    سب مقتدی تھے آپ کے اور آپ امام خاص

    دولہا پہ جیسی ہوتی ہے ہر ایک کی نظر
    محبوب حق پہ محو تھے حق کے تمام خاص

    سدرہ پہ جبرئیل تو بس جا کے رہگئے
    آگے بڑھے رسول علیہ السلام خاص

    افلاک طے کئے طبقاً عن طبق تمام
    پھر جا لیا دنٰی فَتَدَلّٰی مقام خاص

    راز ونیاز کا جو ہوا سلسلہ دراز
    جی بھر کے پھر ہوا کیا باہم کلام خاص

    خالق سے کی شفاعتِ امت مین گفتگو
    یاد آئے وہان بھی آپکو اپنے غلام خاص

    افسوس ہم خطا کرین اور بخشوائیں وہ
    وہ انکا فیض عام اور اپنا یہ کام خاص

    قربان جان و دل سے ہو ایسے شفیع پر
    بھیجو درود لیکے محمد کا نام خاص

    آنکھون کو آج عشق نبی مین کرو سبیل
    لینا ہے کل جو دستِ مبارک سے جام خاص

    خاصون سے بھی عوام کا درجہ ہو خاص تر
    ہو مہربان جو شافع یوم القیام خاص

    زاہد نکر غرور یہ قدرت سے کب ہے دور
    گھٹ جایں خاص عام سے ہو جائین عام خاص

    بیدل کو ان لبونکی شفاعت ہو ایخدا
    ہے جن لبونمین مایۂ یحی العظام خاص
    ............نور الایمان، صفحہ۳۲، طبع شدہ دار الاسلام لاہور............​
     
    • زبردست زبردست × 2
  9. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    بیدل کو ان لبونکی شفاعت ہو ایخدا
    ہے جن لبونمین مایۂ یحی العظام خاص
    سبحان اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. فاروق احمد بھٹی

    فاروق احمد بھٹی محفلین

    مراسلے:
    2,423
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Question
    یہ وہی بیدل تو نہیں خرم انصاری اور شاکرالقادری بھائی جن کے بارے میں غالب نے بھی تذکرہ کیا ہے۔
    اسد، ہر جا سخن نے طرحِ باغِ تازہ ڈالی ہے
    مجھے رنگِ بہار ایجادی بیدل پسند آیا

    طرز بیدل میں ریختہ کہنا
    اسد االلہ خان قیامت ہے
    مجھے راہِ سخن میں خوفِ گمراہی نہیں غالبؔ
    عصائے خضرِ صحرائے سخن ہے ، خامہ بیدلؔ کا

    مطربِ دل نے مرے تارِ نفس سے غالبؔ
    ساز پر رشتہ، پے نغمۂ بیدل باندھا
     
  11. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    غالب کے ممدوح:ابو المعانی مرزا عبدالقادر بیدل ہیں
    تفصیلات کے لیے
    https://ur.wikipedia.org/wiki/مرزا_عبدالقادر_بیدل
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  12. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    معراج شریف سے متعلق مولانا موصوف کا ہی ایک عربی کلام نظر نواز کیا جاتا ہے، ملاحظہ کیجئے:

    معراج سيدنا محمد
    قد كان في رجب مكرم

    حين اتي ايليا محمد
    جبريل قال له تقدم

    صار اماما هنا محمد
    صلي بالانبيا و آدم

    فوق السماء علا محمد
    الله شرفه و كرم

    فاز وراء الورا محمد
    مولاه قربه و كلم

    لا نسال عن علا محمد
    لا ندري والله اعلم

    يشكو اليك يا محمد
    عبد السميع و قد تهيم

    ما لي شفيع سوي محمد
    يا كهف الفقر ترحم

    واشفع للعيش المخلد
    ثم التبعيد من جهنم

    واكشف دجانا يا محمد
    بالوجه كالبدر المتمم

    ............نور الایمان، صفحہ٤٥............​
     
    • زبردست زبردست × 2
  13. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    قلت وقت کے باعث مختلف کلام فرداً فرداً پوسٹ کر رہا ہوں۔ انتظار کی زحمت کے لیے معذرت خواہ ہوں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  14. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    پتا نہیں۔۔۔شعر، شاعری اور شعراء کے بارے میں کچھ تفصیلی معلومات نہیں۔
    محترم شاکر القادری صاحب کے معلومات بہم پہنچنانے کے لیے یہ بندہ شکر گزار ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    شب معراج حکم حق
    از سلطان الواعظین ابو النور محمد بشیر کوٹلوی

    حکم ہے میرا میرے فرشتوں
    نارِ جہنم آج بجھا دو
    جنت کے دروازے کھولو
    صلی اللہ علیہ وسلم

    امت کو بخشانے والا
    جنت میں لیجانے والا
    آج ہے اوپر آنے والا
    صلی اللہ علیہ وسلم

    حور و غلماں اور فرشتے
    ان کے استقبال کو آئے
    پڑھ رہے تھے مل کر سارے
    صلی اللہ علیہ وسلم
    ............جبل نور، صفحہ۱۴۸............​
     
    • زبردست زبردست × 1
  16. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    معراج شریف کے موضوع پر پنجابی زبان میں کلام
    از سلطان الواعظین ابو النور محمد بشیر کوٹلوی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

    شب معراج لائی اے بہاراں یارسول اللہ
    خدا نے سدّیا کول پیاراں یارسول اللہ

    ترے معراج دے منکر ہوئے نیں عقل دے بندے
    دلوں منیاں ایں پر ایمان داراں یارسول اللہ

    ایہہ جان و مال ملیا اے خدا کولوں ترے صدقے
    ایہہ جان و مال تیرے توں میں واراں یارسول اللہ
    ............جبل نور، صفحہ۱۹۴............​
     
    • زبردست زبردست × 1
  17. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    گنجینہ پنہاں
    کلامِ محدثِ اعظم ہند سید محمد اشرفی جیلانی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ
    بے پردہ تھا گنجینہ پنہاں شبِ معراج
    اللہ کی قدرت تھی نمایاں شبِ معراج

    بس واقعہ اتنا تھا میری جاں شب معراج
    جاناں سے ملا جلوۂ جاناں شب معراج

    مِنْ اَیْن مَتٰی کَیْف اِلٰی سبکو تھی حیرت
    ادراک تھا انگشت بدنداں شب معراج

    تھا شانِ خدائی کا گزر بزم قدم میں
    کس اوج پہ تھا رتبہ امکاں شب معراج

    اللہ کو ان آنکھوں سے خود دیکھ کے آیا
    انسانونکی آنکھوں کا اک انساں شب معراج

    یہ کسکے قدم آئے کہ اب اوج پہ پہونچی
    خوش بختی تعمیر سلیماں شب معراج

    انکار کا حق کس کو پہونچتا ہے جو پہنچا
    قرآں کے قریں صاحب قرآں شب معراج

    تا طور گئے موسیٰ تو تا چرخ مسیحا
    تا عرش گئے شاہِ رسولاں شب معراج

    بارانِ کرم دیکھ کے سید بھی ہے آیا
    ہاتھوں میں لئے دفترِ عصیاں شب معراج
    ............از مجموعۂ کلام بنام "فرش پر عرش"............​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  18. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    مناجات کی رات
    از تاج الشریعہ مفتی محمد اختر رضا خان دامت برکاتہم العالیہ


    آج کی رات ضیاؤں کی ہے بارات کی رات
    فضل نوشاہ دو عالم کے بیانات کی رات

    شب معراج وہ اَوْحی کے اشارات کی رات
    کون سمجھائے وہ کیسی تھی مناجات کی رات

    چھائی رہتی ہیں خیالوں میں تمہاری زلفیں
    کوئی موسم ہو یہاں رہتی ہے برسات کی رات

    رند پیتے ہیں تری زلف کے سائے میں سدا
    کوئی موسم ہو یہاں رہتی ہے برسات کی رات

    رخ تابان نبی زلف معنبر پہ فدا
    روز تابندہ یہ مستی بھری برسات کی رات

    دل کا ہر داغ چمکتا ہے قمر کی صورت
    کتنی روشن ہے رخ شہ کے خیالات کی رات

    ہر شب ہجر لگی رہتی ہے اشکوں کی جھڑی
    کوئی موسم ہو یہاں رہتی ہے برسات کی رات

    جس کی تنہائی میں وہ شمع شبستانی ہو
    رشک صد بزم ہے اس رند خرامات کی رات

    بلبل باغ مدینہ کو سنا دے اختر
    آج کی شب ہے فرشتوں سے مباہات کی رات
    ............مجموعہ کلام بنام: سفینہ بخشش، صفحہ۲۲............​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  19. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ہیں صف آرا سب حور و ملک اور غلماں خلد سجاتے ہیں
    از امیر اہلسنت، بانی دعوت اسلامی حضرت علامہ ابوبلال محمد الیاس عطار قادری دامت برکاتہم العالیہ


    ہیں صف آرا سب حور و ملک اور غلماں خلد سجاتے ہیں
    اک دھوم ہے عرشِ اعظم پر مہمان خدا کے آتے ہیں

    ہے آج فلک روشن روشن، ہیں تارے بھی جگمگ جگمگ
    محبوب خدا کے آتے ہیں محبوب خدا کے آتے ہیں

    قربان میں شان وعظمت پر سوئے ہیں چین سے بستر پر
    جبریل امیں حاضر ہو کر معراج کا مژدہ سناتے ہیں

    جبریل امین براق لئے جنت سے زمین پر آ پہنچے
    بارات فرشتوں کی آئی معراج کو دولہا جاتے ہیں

    ہے خلد کا جوڑا زیب بدن رحمت کا سجا سہرا سر پر
    کیا خوب سہانا ہے منظر معراج کو دولہا جاتے ہیں

    ہے خوب فضا مہکی مہکی چلتی ہے ٹھنڈی ٹھنڈی
    ہر سمت سماں ہے نورانی معراج کو دولہا جاتے ہیں

    یہ عز و جلال اللہ اللہ یہ اَوْج و کمال اللہ اللہ
    یہ حسن و جمال اللہ اللہ معراج کو دولہا جاتے ہیں

    دیوانو! تصور میں دیکھو! اسریٰ کے دولہا کا جلوہ
    جھرمٹ میں ملائکہ لیکر انہیں معراج کا دولہا بناتے ہیں

    اقصیٰ میں سواری جب پہنچی جبریل نے بڑھ کے کہی تکبیر
    نبیوں کی امامت اب بڑھ کر سلطانِ جہاں فرماتے ہیں

    وہ کیا حسیں منظر ہو گا جب دولہا بنا سرور ہو گا
    عشاق تصور کر کر کے بس روتے ہی رہ جاتے ہیں

    یہ شاہ نے پائی سعادت ہے خالق نے عطا کی زیارت ہے
    جب ایک تجلی پڑتی ہے موسیٰ تو غش کھا جاتے ہیں

    جبریل ٹھہر کر سدرہ پر بولے جو بڑھے ہم ایک قدم
    جل جائیں گے سارے بال و پر اب ہم تو یہیں رہ جاتے ہیں

    اللہ کی رحمت سے سرور جا پہنچے دنا کی منزل پر
    اللہ کا جلوہ بھی دیکھا دیدار کی لذت پاتے ہیں

    معراج کی شب تو یاد رکھا پھر حشر میں کیسے بھولیں گے
    عطار اسی امید پہ ہم دن اپنے گزارے جاتے ہیں
    ............مجموعہ کلام بنام: وسائل بخشش، صفحہ۲۸۶............​
     
    • زبردست زبردست × 1
  20. خرم انصاری

    خرم انصاری محفلین

    مراسلے:
    161
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ترانۂ معراج
    استاد الشعراء حضرت ضیاء القادری بدایونی

    نیا منظر دکھایا جا رہا ہے
    جہاں مسرور پایا جا رہا ہے
    زمین پر عرش چھایا جا رہا ہے
    دو عالم کو سجایا جا رہا ہے
    کوئی دولہا بنایا جا رہا ہے

    یہی ہے رفعت واعزاز و اکرام
    بڑھائی جا رہی ہے شانِ اسلام
    فلک سے لائے ہیں جبریل احکام
    ہے سبحٰن الذی اسریٰ کا پیغام
    جو دنیا کو سنایا جا رہا ہے

    حرم سے تا فرازِ عرشِ اعظم
    ہے بزمِ کن فکاں نورِ مجسم
    ہیں ضو افشانیاں تاروں کی پیہم
    شبِ اسریٰ ہے جلووں کا یہ عالم
    جہاں پر نور چھایا جا رہا ہے

    ہے ذوق دید کی مقصود تکمیل
    فلک سے آئے کعبہ میں بہ تعجیل
    ہے فرمانِ الٰہی کی یہ تعمیل
    لگاتے ہیں قدم آنکھوں سے جبریل
    شہِ دیں کو جگایا جا رہا ہے

    دکھانی شان ہے روح الامیں کو
    ہے کرنا مفتخر عرشِ بریں کو
    امینِ کعبہ ختم المرسلیں کو
    حرم سے اپنے محبوب حسیں کو
    قریب اپنے بلایا جا رہا ہے

    حجابِ دید جو رازِ نہاں تھا
    پسِ آئینہ کون ومکاں تھا
    پئے گفتن بقدرِ دو کماں تھا
    جو محبوب و محب کے درمیاں تھا
    وہ پردہ اب اٹھایا جا رہا ہے

    زہے پیوستگیٔ نگہت و گل
    ہے اک آئینہ میں عکسِ جز و کل
    ہیں خود جلووں میں گم با ایں تجمل
    ہے اللہ جمیل کا تخیل
    جمال اپنا دکھایا جا رہا ہے

    ہیں محبوب و محب مائل بخلوت
    ہے صرف جامہ زیبی دستِ قدرت
    شہا نہ نور کا تاجِ شفاعت
    سرِ اوجِ دنیٰ بخشش کا خلعت
    شہِ دیں کو پہنایا جا رہا ہے

    نہ تھی معراج کی حد ایک شب تک
    رہے گا ذکر یہ دنیا ہے جب تک
    سنیں نغمے خدا جانے یہ کب تک
    ضیا معراج کے دولہا کا اب تک
    جہاں میں گیت گایا جا رہا ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    یہ کلام سلطان الواعظین ابو النور محمد بشیر کوٹلوی صاحب کی کتاب "آنا جانا نور کا" سے نقل کیا جا رہا ہے کیونکہ باوجود کوشش ضیاء القادری بدایونی صاحب کا مجموعہ کلام دست یاب نہ ہو سکا۔​
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر