فراز احمد فراؔز :::::: ہنسے تو آنکھ سے آنسو رواں ہمارے ہُوئے :::::: Ahmad Faraz

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 24, 2016

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,665
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm


    غزلِ

    [​IMG]

    ہنسے تو آنکھ سے آنسو رَواں ہمارے ہُوئے
    کہ ہم پہ دوست بہت مہرباں ہمارے ہُوئے

    بہت سے زخم ہیں ایسے، جو اُن کے نام کے ہیں
    بہت سے قرض سَرِ دوستاں ہمارے ہُوئے

    کہیں تو، آگ لگی ہے وجُود کے اندر
    کوئی تو دُکھ ہے کہ، چہرے دُھواں ہمارے ہُوئے

    گرج برس کے نہ ہم کو ڈُبو سکے بادل
    تو یہ ہُوا، کہ وہی بادباں ہمارے ہُوئے

    فرازؔ ! منزلِ مقصُود بھی ، نہ تھی منزِل
    کہ ہم کو چھوڑ کے، ساتھی رَو اں ہمارے ہُوئے

    احمد فراؔز
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 24, 2016
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر