ابصار عالم: سابق چیئرمین پیمرا اور سینیئر صحافی پر قاتلانہ حملہ

جاسم محمد نے 'صحافت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 20, 2021

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    ابصار عالم: سابق چیئرمین پیمرا اور سینیئر صحافی پر قاتلانہ حملہ
    20 اپريل 2021، 19:25 PKT
    اپ ڈیٹ کی گئی 12 منٹ قبل
    [​IMG]
    پاکستان کے سینیئر صحافی اور سابق چئیرمین پیمرا ابصار عالم پر نامعلوم افراد نے فائرنگ کی ہے جس کے نتیجے میں وہ زخمی ہو گئے ہیں۔

    منگل کی شام دارالحکومت اسلام آباد میں ابصار عالم پر اس وقت حملہ ہوا جب وہ ایف الیون پارک میں چہل قدمی کر رہے تھے۔

    گولی لگنے کے بعد انھیں ایک پرائیویٹ گاڑی میں ہسپتال شفٹ کیا گیا۔ اس دوران انھوں نے ایک ویڈیو پیغام بھی ریکارڈ کروایا جس میں ان کا کہنا ہے کہ ’میں چہل قدمی کر رہا تھا، مجھے کسی نے گولی مار دی ہے، پیٹ میں میری پسلیوں میں لگی ہے۔'

    ان کا کہنا تھا کہ ’میں حوصلہ نہیں ہارا اور نہ میں حوصلہ ہاروں گا۔ یہ میرا پیغام ہے ان لوگوں کو جنھوں نے مجھے گولی مروائی ہے۔ میں حوصلہ چھوڑنے والا نہیں ہوں اور نہ ان چیزوں سے ڈرنے والا ہوں۔'

    ابصار عالم نے اپنے پیغام میں لوگوں سے کہا کہ وہ انھیں دعاؤں میں یاد رکھیں۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    آخری اطلاعات کے مطابق انھیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے اور وزیر داخلہ شیخ رشید نے ان پر حملے کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔

    اسلام آباد پولیس کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ابصار عالم کو گولی لگنے کے واقعے کی تحقیقات کے لیے ایس ایس پی انویسٹی گیشن کی سربراہی میں خصوصی ٹیم تشکیل دے دی گئی ہے جو معاملے کی تمام پہلوؤں سے تفتیش کرے گی اور ٹیم سے کہا گیا ہے کہ وہ ملزم کا پتہ لگانے کے لیے تمام سائنسی اور فرانزک طریقے استعمال کرے۔

    خیال رہے کہ ابصار عالم گذشتہ 27 برس سے صحافت کے شعبے سے منسلک ہیں۔

    وہ موجودہ حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کے ایک ناقد کے طور پر جانے جاتے ہیں اور اکثر اس حوالے سے سوشل میڈیا پر تبصرے کرتے رہتے ہیں۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    دوسری جانب ابصار عالم پر حملے کے بعد مختلف سماجی حلقوں کی جانب سے تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے اور اس کی مذمت کی جا رہی ہے۔

    ایسوسی ایشن آف الیکٹرانک میڈیا ایڈیٹرز نے معاملے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

    مسلم لیگ ن کے قائد میاں نواز شریف نے اپنی ٹویٹ میں لکھا کہ ’ابصار عالم پر قاتلانہ حملہ بہت سارے سوالات کو جنم دے رہا ہے۔ وه جمہوریت اور سول بالا دستی کے لیے اٹھتی ایک بہادر اور حق پر مبنی آواز ہیں۔ صحافت کا گلا گھونٹنے والے ان مجرموں کو فوری طور پر قوم کے سامنے لاکر نشان عبرت بنایا جائے۔‘

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    مسلم لیگ ن کی رہنما مریم نواز نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں لکھا کہ ’اختلاف کرنے والی آواز کو دبانا اس ملک کو برسوں سے لاحق کینسر ہے‘۔

    ان کا کہنا تھا کہ ’ابصار عالم اس ظلم اور بربریت کا شکار ہونے والے شخص ہیں۔ خدا ان کے اور اس ملک کے زخموں کو مندمل کرے‘۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    اے این پی کی رہنما بشریٰ گوہر نے کہا کہ وہ اس بزدلانہ حملے کی سخت مذمت کرتی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ’پاکستان صحافیوں کے لیے محفوظ ملک نہیں ہے‘۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    اینکر پرسن معید پیرزادہ نے لکھا کہ وہ ابصار عالم کو گولی لگنے کی خبر سن کر صدمے میں ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اسلام آباد ’تیزی سے ایک خطرناک شہر بنتا جا رہا ہے‘۔

     
    • غمناک غمناک × 2
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    غالبا اس ٹویٹ کی وجہ سے خلائی مخلوق نے حملہ کروایا ہے
     
  3. فہد مقصود

    فہد مقصود محفلین

    مراسلے:
    396
    ثبوت بھی فراہم کیا ہوا ہے

     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    یہ جو نامعلوم ہیں سب ہمیں معلوم ہیں
     
  5. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    27,053
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اس ٹویٹ میں اس جملے کا کیا مطلب ہے:
    "کُچھ ہی دیر بعد وفاقی حکومت نے اپنے اختیار کے تحت تمام چینلز بند کرنے کا حُکم نامہ بھیج دیا۔"

    کیا اس جملے کا یہی مطلب ہے کہ بطور چیئرمین پیمرا بصار عالم صاحب نے جنرل فیض کی بات ماننے سے انکار کر دیا لیکن اس وقت کی وفاقی حکومت نے "کچھ ہی دیر " میں مذکورہ جنرل کی بات بلا چون و چرا مان لی؟
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  6. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    میرا خیال ہے محض قیاس آرائیوں پہ فیصلہ کر لینا درست نہیں۔
     
    • متفق متفق × 2
  7. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    2,335
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جنرل فیض کا نام نومبر 2017 میں اسلام آباد میں فیض آباد کے مقام پر مذہبی تنظیم تحریکِ لبیک کے دھرنے کے دوران بھی سامنے آیا تھا۔

    اس تنظیم اور حکومت کے درمیان چھ نکات پر مشتمل معاہدے کے بارے میں کہا گیا تھا کہ یہ معاہدہ کرنے میں اس وقت میجر جنرل کے عہدے پر کام کرنے والے فوجی افسر فیض حمید کی مدد شامل رہی۔


    لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید آئی ایس آئی کے نئے سربراہ مقرر - BBC News اردو
     
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  8. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    ایسا تو نہ کہیں۔ نواز شریف کے جمہوری انقلابی لیڈر ہونے کا سارا پراپگنڈہ ضائع ہو جائے گا :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    27,053
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    خیر اس معاملے میں میں نواز شریف کے ساتھ ہوں، ملک میں آئین کی حکمرانی اور فوج پر حکومت اور پارلیمان کی برتری ہونی چاہیئے۔ مسئلہ سارا یہ ہے کہ نواز شریف ہمیشہ ع- "یہ ناداں گر گئے سجدوں میں جب وقت قیام آیا" والا کام کرتے ہیں۔ موصوف اپوزیشن میں ہوں یا حکومت میں ہر ایسے موقعے پر بس سجدہ ریز ہو جاتے ہیں، مثالیں دونگا تو بات لمبی ہو جائے گی۔ ان کے اسی رویے سے میں اور شاید اور بھی بہت سارے لوگ ان کے ووٹر نہیں رہے!
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  10. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,942
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    ٹویٹ میں نومبر 2018 کا ذکر ہے۔ اس وقت کون وزیراعظم تھا؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  11. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    نومبر 2017 جب جمہوری انقلابی لیڈر نواز شریف سڑکوں پر کیوں نکالا کا جلوس لے کر گھوم رہے تھے۔
     
  12. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    27,053
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    واقعہ پہلے کا ذکر ہو رہا ہے، نون لیگ کی حکومت تھی اور وزیر اعظم عباسی تھا۔
     
    • متفق متفق × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  13. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,942
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    کیا عباسی کے وقت یہ واضح نہ تھا کہ فوج ہی اصل طاقت ہے؟ اگرچہ ن لیگ یہ نہیں مانتی صرف ہنٹ دیتی ہے
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 22, 2021
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  14. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    11,626
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    بھٹو اور اس کے بعد کے جمہوری ادوار میں فوج ایک بہت منظم پریشر گروپ کے طور پر ضرور موجود تھی لیکن ہر دور میں جمہوری قوتوں نے ان کی طاقت کا پوری شدت کے ساتھ مقابلہ کیا اور انہیں غالب نہیں آنے دیا۔ 2017 میں نواز شریف کو بذریعہ عدالت ہٹانے کے بعد 2018 میں فوج نے ازخود ایک نام نہاد ھائبرڈ سسٹم نافذ کرکے کپتان کی حکومت بنوائی اور جمہوریت کے نام پر خود حکومت کررہے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 22, 2021
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    دیسی لبرلز کے مطابق پاکستان کی بربادی ۲۵ جولائی ۲۰۱۸ سے شروع ہوتی ہے۔ اس سے پہلے ملک میں جمہوری انقلاب کی ندیاں بہہ رہی تھیں۔
    [​IMG]
    [​IMG]
    [​IMG]
    [​IMG]
    اس selective amnesia بغض عمران کا اب کیا علاج ہے؟ نوٹ: منفی ریٹنگ اس مسئلہ کا حل نہیں ہے
     
    • متفق متفق × 1
  16. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    اس بارہ میں امریکہ نے بھی بیان دے دیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    7,483
    موڈ:
    Asleep
    اچھا ہے۔ اس سے شاید تھوڑا پریشر پڑے اور غنڈہ گردی شاید کچھ کم ہو جائے۔
     
    • متفق متفق × 2
  18. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    27,053
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    یہ تو سب جانتے ہیں کہ یہاں فوج ہی اصل طاقت ہے۔ تین بڑی سیاسی جماعتوں میں سے پی ٹی آئی تو کھلم کھلا مانتی ہے، پیپلز پارٹی بھی مانتی ہے اور جب ضرورت پڑے برملا مانتی ہے، نون لیگ نعرہ کچھ اور لگاتی ہے مگر اندر خانے مانتی وہ بھی ہے (یا شاید مجھے ہی ایسا لگتا ہے)، مثال کے طور پر اگر نواز شریف کو عقل بقول شخصے 2018ء میں نکالے جانے کے بعد ہی آئی ہے تو پھر جنرل باجوہ کو بقولِ جاسم نہا دھو کر اور خوشبو لگا کر 2020ء میں پارلیمنٹ میں ووٹ کس چکر میں دے دیا تھا؟
     
    • زبردست زبردست × 2
  19. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    ن لیگ کی یہی منافقانہ پالیسی سارے فساد کی جڑ ہے۔ اگر یہ پارٹی سویلین بالا دستی کے حق میں ہے تو موقع ملنے پر بوٹ کیوں چاٹتی ہے؟ جس دن اس نے جنرل باجوہ کے ایکسٹینشن کیلئے پارلیمان میں ووٹ دیا اس رات ایک شو میں فیصل واڈا ان کو سبق سکھانے کیلیے بوٹ چھپا کر لے آئے تھے :)
    [​IMG]
     
  20. حسرت جاوید

    حسرت جاوید محفلین

    مراسلے:
    703
    یہ تو بہت بے ہودہ حرکت کی تھی جناب نے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر