مجاز آوارہ

محمد بلال اعظم نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 5, 2013

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    آوارہ

    شہر کی رات اور میں ناشاد و ناکارہ پھروں
    جگمگاتی جاگتی سڑکوں پہ آوارہ پھروں
    غیر کی بستی ہے کب تلک دربدر مارا پھروں
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    جھلملاتے قمقموں کی راہ میں زنجیر سی
    رات کے ہاتھوں میں دن کی موہنی تصویر سی
    میرے سینے پر مگر چلتی ہوئی شمشیر سی
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    یہ رُو پھیلی چھاؤں یہ آکاش پر تاروں کا جال
    جیسے صُوفی کا تصوّر جیسے عاشق کا خیال
    آہ لیکن کون جانے کون سمجھے جی کا حال
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    پھر وہ ٹوٹا اک ستارا پھر وہ چھوٹی پھلجھڑی
    جانے کس کی گود میں آئے یہ موتی کی لڑی
    ہوک سی سینے میں اٹھی چوٹ سی دل پر پڑی
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    رات ہنس ہنس کر یہ کہتی ہے کہ مے خانے میں چل
    پھر کسی شہنازِ لالہ رُخ کے کاشانے میں چل
    یہ نہیں ممکِن تو پھر اے دوست ویرانے میں چل
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    ہر طرف بکھری ہوئی ، رنگینیاں ، رعنائیاں
    ہر قدم پر عشرتیں لیتی ہوئی انگڑایئاں
    بڑھ رہی ہیں گود پھیلائے ہوئے رسوایئاں
    اے غمِ دل کیا کروں، اے وحشتِ دل کیا کروں

    راستے میں رُک کے دَم لے لوں میری عادت نہیں
    لوٹ کر واپس چلا جاؤں ، میری فطرت نہیں
    اور کوئی ہم نوا مل جائے یہ قسمت نہیں
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    منتظر ہے ایک طوفانِ بلا میرے لئے
    اب بھی جانے کتنے دروازے ہیں وا میرے لئے
    پر مصیبت ہے، مرا عہدِ وفا میرے لئے
    اے غمِ دل کیا کروں، اے وحشتِ دل کیا کروں

    جی میں آتا ہے کہ اب عہدِ وفا بھی توڑ دوں
    اُن کو پا سکتا ہوں یہ آسرا بھی چھوڑ دوں
    ہاں مناسب ہے یہ زنجیرِ ہوا بھی توڑ دوں
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    اک محل کی آڑ سے نکلا وہ پیلا ماہتاب
    جیسے مُلا کا عمامہ جیسے بنئے کی کتاب
    جیسے مُفلس کی جوانی جیسے بیوہ کا شباب
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    دل میں اک شعلہ بھڑک اٹھا ہے آخر کیا کروں
    میرا پیمانہ چھلک اٹھا ہے آخر کیا کروں
    زخم سینے کا مہک اٹھا ہے آخر کیا کروں
    اے غمِ دل کیا کروں، اے وحشتِ دل کیا کروں

    مُفلسی اور یہ مظاہر ہیں نظر کے سامنے
    سینکڑوں چنگیز و نادر ہیں نظر کے سامنے
    سینکڑوں سُلطان و جابر ہیں نظر کے سامنے
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    لے کے ہر چنگیز کے ہاتھوں سے خنجر توڑ دوں
    تاج پر اس کے دمکتا ہے جو پتھر توڑ دوں
    کوئی توڑے یا نہ توڑے، میں ہی بڑھ کر توڑ دوں
    اے غمِ دل کیا کروں، اے وحشتِ دل کیا کروں

    بڑھ کے اس اِندر سبھا کا سازوساماں پھونک دوں
    اِس کا گلشن پھونک دوں اُس کا شبستاں پھونک دوں
    تختِ سُلطاں کیا میں ساراقصرِ سُلطاں پھونک دوں
    اے غمِ دل کیا کروں اے وحشتِ دل کیا کروں

    جی میں آتا ہے، یہ مردہ چاند تارے نوچ لوں
    اس کنارے نوچ لوں اور اُس کنارے نوچ لوں
    ایک دو کا ذکر کیا ، سارے کے سارے نوچ لوں
    اے غمِ دل کیا کروں، اے وحشتِ دل کیا کروں​
     
    • زبردست زبردست × 3
  2. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,591
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
  3. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    18,650
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    اعلیٰ انتخاب۔۔۔ شاد رہو منے
     

اس صفحے کی تشہیر