آن لائن ڈائری لکھیں!!!

پروفیسر شوکت اللہ شوکت نے 'متفرقات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 28, 2020

  1. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    ہمارے ایک بزرگ دوست جوکہ ہائی سکول کے ہیڈ ماسٹر تھے. اکثر کہا کرتے تھے کہ یار ! ساری عمر ہی ڈرتے رہے۔
    پہلے والدین سے، پھر پڑھائی کے زمانے میں استادوں سے، اب نوکری میں افسروں سے اور موت کے خوف سے خدا سے۔
    میں نے کہا کہ ملک صاحب! آپ نے بیوی سے ڈرنے کا ذکر نہیں کیا۔
    کہنے لگے " ڈر کے مارے"۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. لاريب اخلاص

    لاريب اخلاص محفلین

    مراسلے:
    23,361
    زندگی محدود ہے اور علم و ہنر لامحدود
    مواقع تیزی سے گزرے جارہے ہیں
    تجربہ خام ہے اورصحیح نتیجے پر پہچنا بہت مشکل!
    بقراط
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. رومی

    رومی لائبریرین

    مراسلے:
    475
    ویل سیڈ:in-love::in-love::in-love::in-love:
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    تقویٰ اور صبر کا بدلہ.!
    "... کیا سچ مچ تم ہی یوسف ہو. اس نے کہا ہاں میں یوسف ہوں اور یہ میرا بھائی ہے. اللہ نے ہم پر فضل فرمایا. جو شخص ڈرتا ہے اور صبر کرتا ہے تو اللہ نیک کام کرنے والوں کا اجر ضائع نہیں کرتا. (90 یوسف)
    " تقویٰ اور صبر کرنے والوں کا اجر خدا ضائع نہیں کرتا ".
    یہی پورے قصہ یوسف کا خلاصہ ہے.
    اللہ تعالٰی کو اس کی ایک واضح مثال قائم کرنی تھی کہ معاملات دنیا.... میں جو شخص اللہ سے ڈرنے والا طریقہ اختیار کرے اور بے صبری والے طریقوں سے بچے، بالآخر وہ اللہ کی مدد سے ضرور کامیاب ہوتا ہے. حضرت یوسف علیہ السلام کے واقعہ کو اسی حقیقت کی ایک نظر آنے والی مثال بنا دیا گیا.
    حضرت یوسف علیہ السلام کا کنویں میں ڈالا جانا اور پھر اس سے نکل کر مصر پہنچنا دونوں اللہ کی نگرانی میں ہوا........ اللہ چاہتا تو آپ کو کنویں کے مرحلے سے گزارے بغیر مصر کے اقتدار تک پہنچا دیتا........ لیکن اگر یہ تمام غیر معمولی حالات پیش نہ آتے تو اسباب کی اس دنیا میں یوسف علیہ السلام اس بات کی مثال کیسے بنتے کہ اللہ ان لوگوں کی مدد کرتا ہے جو اللہ پر بھروسہ کرتے ہوئے تقویٰ اور صبر کی روش پر قائم رہیں.
     
    • زبردست زبردست × 3
  5. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    میں بینک سے قرضہ لینے گیا. بینک ایڈمن خاتون نے مجھ سے پوچھا کہ آپ کیا کرتے ہیں؟
    میں نے عاجزی سے جواب دیا کہ میں آپ کی طرح ایڈمن ہوں.
    بینک ایڈمن میرے احترام میں کھڑی ہوئی، میرا اور گھر والوں کا حال احوال پوچھا.
    پھر گھنٹی بجا کر چائے اور کیک لانے کے لئے کہا. اس کے بعد مجھ سے پوچھا کہ آپ کہاں ایڈمن ہیں؟
    میں نے جواب دیا کہ میں واٹس ایپ گروپ کا ایڈمن ہوں
    یہ سن کر بینک ایڈمن نے مجھے فوراً بینک سے باہر نکال دیا، حالانکہ میرا دل کیک میں اٹکا ہوا تھا جو بہت لذیذ نظر آرہا تھا !!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  6. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اللہ تعالی ہمیں متقی اور صابرین لوگوں میں شامل فرمائے.
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  7. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    آمین
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    17,839
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    آمین الہی آمین
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بہترین تبلیغ صرف الفاظ سے نہیں بلکہ معاشرے میں اپنے عمل اور رویئے سے ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    جب کبھی خون کے رشتے دل دکھائیں تو حضرت یوسف علیہ السلام کو یاد کر لینا جن کے بھائیوں نے انھیں کنویں میں پھینک دیا تھا.

    جب کبھی لگے کہ تمھارے والدین تمھارا ساتھ نہیں دے رہے تو ایک بار حضرت ابراھیم ؑ کو ضرور یاد کر لینا جن کہ بابا نے انکا ساتھ نہیں دیا بلکہ انکو آگ میں پھنکوانے والوں کا ساتھ دیا.*

    جب کبھی لگے کہ تمہارا جسم بیماری کی وجہ سے درد میں مبتلا ہے تو ہائے کرنے پہلے صرف ایک بار حضرت ایوبؑ کو یاد کرنا جو تم سے زیادہ بیمار تھے.*

    جب کبھی کسی مصیبت یا پریشانی میں مبتلا ہو تو شکوہ کرنے سے پہلے حضرت یونسؑ کو ضرور یاد کرنا جو مچھلی کے پیٹ میں رہے اور وہ پریشانی تمہاری پریشانیوں سے زیادہ بڑی تھی ۔*

    اگر کبھی جھوٹا الزام لگ جائے یا بهتان لگ جائے ناں ! تو ایک بار اماں عائشہ ؓ کو ضرور یاد کرنا ۔*

    اگر کبھی لگے کہ اکیلے رہ گئے ہو تو ایک بار اپنے بابا آدم ؑکو یاد کرنا جن کو اللّٰہ نےاکیلا پیدا کیا تھا اور پھر انکو ساتھی عطا کیا ۔تو تم ناامید نہ ہونا تمہارا بھی کوئی ساتھی ضرور بنے گا ۔*

    اگر کبھی اللّه کے کسی حکم کی سمجھ نہ آرہی ہو تو اس وقت نوح ؑ کو یاد کرنا جنہوں نے بغیر کوئی سوال کیے کشتی بنائی تھی پر اللّه کے حکم کو مانا تھا تو تم بھی ماننا.

    اور اگر کبھی تمھارے اپنے ہی رشتے دار اور دوست تمہارا تمسخر اڑائیں تو نبیوں کے سردار خاتم النبیین حضرت محمّد صَلَّى اللہ عَلَيْهِ وَسَلَّم کو یاد کر لینا ۔

    تمام نبیوں کو الله نے آزمائش میں ڈالا کہ ہم ان کی زندگیوں سے صبر و استقامت ، ہمت وتقوٰی اور ڈٹے رہنے کا سبق حاصل کریں ۔

    اپنے نبیوں کی زندگیوں کو اپنا رول ماڈل بنائیں۔ انھیں اپنا آئیڈیل بنائیں.

    (کاپی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  11. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    ؎ منظر خوبصورت ہے،بصارت دیکھتی ہےیہ
    کیوں،کیسے؟کودیکھےجو،بصیرت اسکو کہتے ہیں۔
    [​IMG]ام عبدالوھاب[​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    آئینے کو دیکھنا.... آئینے میں دیکھنا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  13. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    میاں بیوی میں بات چیت بند ہو گئی۔
    ایک دن بعد ﺑﯿﻮﯼ بولی: ﻣﯿﮟ 10 ﺗﮏ ﮔﻨﻮﮞ ﮔﯽ، ﺍﮔﺮ ﻧﮧ ﺑﻮﻟﮯ ﺗﻮ ﺯﮨﺮ ﮐﮭﺎ ﻟﻮﮞ ﮔﯽ.

    ایک۔۔۔۔
    ﺷﻮﮨﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ
    دو۔۔۔۔۔
    ﺷﻮﮨﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ
    تین۔۔۔۔۔
    ﺷﻮﮨﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ
    چار۔۔۔۔
    شوہر خاموش
    پانچ۔۔۔۔۔
    شوہر خاموش
    چھ۔۔۔۔۔
    شوہر خاموش
    سات۔۔۔۔
    شوہر خاموش
    آٹھ۔۔۔۔۔
    شوہر خاموش

    ﺑﯿﻮﯼ نے 9بولتے رونا شروع کر دیا.
    ﺷﻮﮨﺮ:
    ﮔﻨﺘﯽ ﮔﻨﻮ، ﮔﻨﺘﯽ
    ﺑﯿﻮﯼ: ﺷﮑﺮ ﮨﮯ ﺁﭖ ﺑﻮﻟﮯ ﺗﻮ ﺳﮩﯽ.
    ۔۔۔ﺍﻭﺭ ﯾﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﻋﻈﯿﻢ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﻥ ﺑﭻ ﮔﺌﯽ۔ .
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  14. عبدالقدیر 786

    عبدالقدیر 786 محفلین

    مراسلے:
    1,526
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    ایک باپ کو ڈائری لکھنے کا شوق تھا وہ ہر روز کے واقعات اپنی ڈائری میں لکھتا تھا یہ ہی عادت ایک دن اُس کے کام آئی۔ ایک دن اُس کے بچے نے بڑی معصومیت سے پوچھا اباجی یہ جو دیوار پر پرندہ بیٹھا ہے اُس کا نام کیا ہے؟ ابا جی نے بڑے پیار سے کہا بیٹا یہ کوا ہے بیٹے نے پھر سے سوال کیا نہیں ابا جی یہ کوا نہیں لگ رہا آپ صحیح سے بتائیں یہ کیا ہے؟ اباجی نے پھر سے بڑے ہی پیار سے کہا بیٹا یہ کوا ہی ہے بیٹے نے پھر یہ ہی سوال دوہرا یا اور کم سے کم دس بار یہ ہی سوال دہراتا رہا ابا جی نے بڑے ہی پیار سے دس بار یہ ہی جواب دیا کہ یہ کوا ہے ۔

    ایک دن بوڑھا باپ جب اپنی ڈائری پڑھ رہا تھا تو اُس نے یہ واقعہ پڑھا اُس نے سوچا آج میرا بیٹا بڑا ہوگیا ہے آج میں اُس سے پوچھ کر دیکھتا ہوں میرا بیٹا کیا جواب دیتا ہے بیٹا یہ جو دیوار پر بیٹھا ہے یہ کیا ہے بیٹے نے پیار سے کہا اباجی یہ کوا ہے اباجی نے کہا نہیں صحیح نہیں بتا رہے آپ صحیح سے بتاو اِس کا نام کیا ہے بیٹے نے کہا اباجی آپ کو بتایا تو ہے کہ یہ کوا ہے اباجی نے پھر سے پوچھا بیٹا یہ جو دیوار پر بیٹھاہے یہ کیا ہے اباجی آپ کو دو بار بتادیا ہے آپ کو سمجھ نہیں آتی لگتا ہے بڑھاپے میں دماغ کے ساتھ ساتھ نظر بھی کمزور ہوگئی ہے اپنا ٹیسٹ کرواو جاکر ۔

    پھر باپ نے اُس کو یہ ڈائری کا ورق دکھایا اور کہا بیٹا ایسے ہی تو نے بھی مجھ سے بچپن میں دس بار ایک ہی سوال پوچھا تھا اور میں نے تجھے دس بار ہی بڑے پیار سے بتایا تھا کہ یہ کوا ہے آج تیری باری تھی بتانے کی ۔۔۔۔۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏فروری 23, 2021
    • زبردست زبردست × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہت اعلی.
    مولانا تقی عثمانی صاحب کی ایک کتاب میں پڑھا تھا.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    لوگ سمجهتے ہیں
    بادشاہ کامیاب ہوگئے
    دولت والے کامیاب ہو گئے
    بڑی دگریاں لینے والے کامیاب ہو گئے
    اعلیٰ عہدوں والے کامیاب ہو گئے ،
    جبکہ میرا اللہ کہتا ہے!

    قد افلح المومنون○
    ️بیشک کامیاب ہو گئے ایمان والے.[​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. لاريب اخلاص

    لاريب اخلاص محفلین

    مراسلے:
    23,361
    :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  18. پروفیسر شوکت اللہ شوکت

    پروفیسر شوکت اللہ شوکت محفلین

    مراسلے:
    1,638
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    خلیفہ عبدالملک بن مروان بیت اللہ کا طواف کر رہا تھا- اس کی نظر ایک نوجوان پر پڑی- جس کا چہرہ بہت پُر وقار تھا- مگر وہ لباس سے مسکین لگ رہا تھا-
    خلیفہ عبدالملک نے پوچھا کہ یہ نوجوان کون ہے؟ تو اسے بتایا گیا کہ اس نوجوان کا نام سالم ہے اور یہ سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کا بیٹا اور سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کا پوتا ہے۔
    خلیفہ عبدالملک کو دھچکا لگا۔ اور اُس نے اِس نوجوان کو بلا بھیجا-
    خلیفہ عبدالملک نے پوچھا کہ بیٹا میں تمہارے دادا سیدنا عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا بڑا مداح ہوں۔ مجھے تمہاری یہ حالت دیکھ کر بڑا دکھ ہوا ہے۔ مجھے خوشی ہو گی اگر میں تمھارے کچھ کام آ سکوں۔ تم اپنی ضرورت بیان کرو۔ جو مانگو گے تمہیں دیا جائے گا-

    نوجوان نےجواب دیا، اے امیر المومنین! میں اس وقت اللہ کے گھر بیتُ اللّٰہ میں ہوں اور مجھے شرم آتی ہے کہ اللہ کے گھر میں بیٹھ کر کسی اور سے کچھ مانگوں۔

    خلیفہ عبدالملک نے اس کے پُرمتانت چہرے پر نظر دوڑائی اور خاموش ہو گیا۔
    خلیفہ نے اپنے غلام سے کہا کہ یہ نوجوان جیسے ہی عبادت سے فارغ ہو کر بیتُ اللہ سے باہر آئے، اسے میرے پاس لے کر آنا-

    سالم بن عبداللہؓ بن عمرؓ جیسے ہی فارغ ہو کر حرمِ کعبہ سے باہر نکلے تو غلام نے اُن سے کہا کہ امیر المؤمنین نے آپکو یاد کیا ہے۔
    سالم بن عبداللہؓ خلیفہ کے پاس پہنچے۔

    خلیفہ عبدالملک نے کہا، نوجوان! اب تو تم بیتُ اللہ میں نہیں ہو، اب اپنی حاجت بیان کرو۔ میرا دل چاہتا ہے کہ میں تمہاری کچھ مدد کروں۔
    سالم بن عبداللہؓ نےکہا، اے امیرالمؤمنین! آپ میری کونسی ضرورت پوری کر سکتے ہیں؟ دنیاوی یا آخرت کی؟
    امیرالمؤمنین نےجواب دیا، کہ میری دسترس میں تو دنیاوی مال و متاع ہی ہے۔
    سالم بن عبداللہؓ نے جواب دیا کہ اے امیر المؤمنین! دنیا تو میں نے کبھی اللہ سے بھی نہیں مانگی، جو اس دنیا کا مالکِ کُل ہے۔ آپ سے کیا مانگوں گا؟ میری ضرورت اور پریشانی تو صرف آخرت کے حوالے سے ہے۔ اگر اس سلسلے میں آپ میری کچھ مدد کر سکتے ہیں تو میں بیان کرتا ہوں۔

    خلیفہ حیران و ششدر ہو کر رہ گیا-
    اور کہنے لگا کہ نوجوان یہ تُو نہیں، تیرا خون بول رہا ہے۔

    خلیفہ عبدالملک کو حیران اور ششدر چھوڑ کر سالم بن عبداللہؓ وہاں سے نکلے اور حرم سے ملحقہ گلی میں داخل ہوئے اور نظروں سے اوجھل ہو گئے۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    17,839
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    یُوْفُوْنَ بِالنَّذْرِ وَیَخَافُوْنَ یَوْمًا کَانَ شَرُّهٗ مُسْتَطِیْرًا. وَ یُطْعِمُوْنَ الطَّعَامَ عَلٰی حُبِّهٖ مِسْکِیْنًا وَّیَتِیْمًا وَّاَسِیْرًا.

    ’’(یہ بندگانِ خاص وہ ہیں) جو (اپنی) نذریں پوری کرتے ہیں اور اس دن سے ڈرتے ہیں جس کی سختی خوب پھیل جانے والی ہے۔ اور (اپنا) کھانا اﷲ کی محبت میں (خود اس کی طلب و حاجت ہونے کے باوُجود اِیثاراً) محتاج کو اوریتیم کو اور قیدی کو کھلا دیتے ہیں۔‘‘

    (الدهر، 76: 7،)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  20. ام عبدالوھاب

    ام عبدالوھاب محفلین

    مراسلے:
    2,170
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    حضرت شافعی رضی اللہ عنہ کا قول ہے کہ جس نے قرآن کا علم سیکھا اس کی قیمت بڑ ھ گئی جس نے علم فقہ سیکھا اس کی قدر بڑھ گئی، جس نے حدیث سیکھی اس کی دلیل قوی ہوئی، جس نے حساب سیکھا اس کی عقل پختہ ہوئی، جس نے نادر باتیں سیکھیں اس کی طبيت نرم ہوئی اور جس شخص نے اپنی عزت نہیں کی اسے علم نے کوئی فائدہ نہیں دیا۔
    حضرت حسن بن علی رضی اللہ عنہ کا ارشاد ہے کہ جوشخص علماء کی محفل میں اکثر حاضرہوتا ہے اس کی زبان کی رکاوٹ دور ہوتی ہے
    ذہن کی الجھنیں کھل جاتی ہیں اور جو کچھ وہ حاصل کرتا ہے اس کے لیے باعث خوشی ہوتا ہے۔
    اس کا علم اس کے لیے ایک ولایت ہے اور فائدہ مند ہوتا ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر