ابن انشا کیوں نام ہم اس کے بتلائیں

محمد بلال اعظم نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 22, 2013

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کیوں نام ہم اس کے بتلائیں


    تم اس لڑکی کو دیکھتے ہو
    تم اس لڑکی کو جانتے ہو
    وہ اجلی گوری؟ نہیں نہیں
    وہ مست چکوری نہیں نہیں
    وہ جس کا کرتا نیلا ہے؟
    وہ جس کا آنچل پیلا ہے؟
    وہ جس کی آنکھ پہ چشمہ ہے
    وہ جس کے ماتھے ٹیکا ہے
    ان سب سے الگ ان سب سے پرے
    وہ گھاس پہ نیچے بیلوں کے
    کیا گول مٹول سا چہرہ ہے
    جو ہر دم ہنستا رہتا ہے
    کچھ چتان ہیں البیلے سے
    کچھ اس کے نین نشیلے سے
    اس وقت مگر سوچوں میں مگن
    وہ سانولی صورت کی ناگن
    کیا بے خبرانہ بیٹھی ہے
    یہ گیت اسی کا در پن ہے
    یہ گیت ہمارا جیون ہے
    ہم اس ناگن کے گھائل تھے
    ہم اس کے مسائل تھے
    جب شعر ہماری سنتی تھی
    خاموش دوپٹا چنتی تھی
    جب وحشت اسے سستاتی تھی
    کیا ہرنی سی بن جاتی تھی
    یہ جتنے بستی والے تھے
    اس چنچل کے متوالے تھے
    اس گھر میں کتنے سالوں کی
    تھی بیٹھک چاہنے والوں کی
    گو پیار کی گنگا بہتی تھی
    وہ نار ہی ہم سے کہتی تھی
    یہ لوگ تو محض سہارے ہیں
    انشا جی ہم تو تمہارے ہیں
    اب اور کسی کی چاہت کا
    کرتی ہے بہانا۔۔۔ بیٹھی ہے
    ہم نے بھی کہا دل نے بھی کہا
    دیکھو یہ زمانہ ٹھیک نہیں
    یوں پیار بڑھانا ٹھیک نہیں
    نا دل مانا، نا ہم مانے
    انجام تو سب دنیا والے جانے
    جو ہم سے ہماری وحشت کا
    سنتی ہے فسانہ بیٹھی ہے
    ہم جس کے لئے پردیس پھریں
    جوگی کا بدل کر بھیس پھریں
    چاہت کے نرالے گیت لکھیں
    جی موہنے والے گیت لکھیں
    اس شہر کے ایک گھروندے میں
    اس بستی کے اک کونے میں.
    کیا بے خبرانہ بیٹھی ہے
    اس درد کو اب چپ چاپ سہو
    انشا جی لہو تو اس سے کہو
    جو چتون کی شکلوں میں لیے
    آنکھوں میں لیے، ہونٹوں میں لیے
    خوشبو کا زمانہ بیٹھی ہے
    لوگ آپ ہی آپ سمجھ جائیں
    کیوں نام ہم اس کا بتلائیں
    ہم جس کے لیے پردیس پھرے
    چاہت کے نرالے گیت لکھے
    جی موہنے والے گیت لکھے
    جو سب کے لیے دامن میں بھرے
    خوشیوں کا خزانہ بیٹھی ہے
    جو خار بھی ہے اور خوشبو بھی
    جو درد بھی ہے اور دار و بھی
    لوگ آپ ہی آپ سمجھ جائیں
    کیوں نام ہم اس کا بتلائیں
    وہ کل بھی ملنے آئی تھی
    وہ آج بھی ملنے آئی ہے
    جو اپنی نہیں پرائی ہے
     
    • زبردست زبردست × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    شکریہ نیلم آپی اور فارقلیط صاحب
     
  3. مہ جبین

    مہ جبین محفلین

    مراسلے:
    6,246
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خوب کلام ہے انشاجی کا
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  4. سید زبیر

    سید زبیر محفلین

    مراسلے:
    4,362
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    بہت خوب ،
    گو پیار کی گنگا بہتی تھی​
    وہ نار ہی ہم سے کہتی تھی​
    یہ لوگ تو محض سہارے ہیں​
    انشا جیہم تو تمہارے ہیں​
    کیا بات ہے ۔۔۔واہ​
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    نہیں نہیں :)
    ابن انشا کی خوبصورت نظم۔۔۔ واہ واہ
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بہت شکریہ سید زبیر صاحب
    حسنِ اتفاق ہے کہ یہی وہ چار مصرع تھے، جن کی وجہ سے میں نے یہ نظم پوسٹ کی تھی تلاش کر کے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. مدیحہ گیلانی

    مدیحہ گیلانی محفلین

    مراسلے:
    2,282
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    کیا بات ہے انشاء کی ۔
    نازک احساسات کی ترجمانی کرتی ہوئی ایک خوبصورت نظم ۔
    جیتے رہو ۔:)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    شکریہ
     
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    آہا
    بہت شکریہ فاتح بھائی
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بہت شکریہ محترمہ مدیحہ صاحبہ
     

اس صفحے کی تشہیر