سلیم احمد کل نشاطِ قُرب سے موسم بہار اندازہ تھا - سلیم احمد

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 10, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    کل نشاطِ قُرب سے موسم بہار اندازہ تھا
    کچھ ہوا بھی نرم تھی کچھ رنگِ گل بھی تازہ تھا

    تھک کے سنگِ راہ پر بیھٹے تو اُٹھے ہی نہیں
    حد سے بڑھ کر تیز چلنے کا یہی خمیازہ تھا

    آئینہ دونوں کے آگے رکھ دیا تقدیر نے
    میرے چہرے پر لہو تھا رائے گل پر غازہ تھا

    مجھ کو ملّاحوں کے گیتوں سے محبت ہے مگر
    رات ساحل پر ہوا کو شور بے اندازہ تھا

    اب تو کچھ دکھ بھی نہیں ہے داغ بھی جاتا رہا
    کل اسی دل میں یہیں اک زخم تھا اور تازہ تھا

    گو یقینی تو نہیں تھے میرے تخمینے مگر
    جو تجھے پیش آیا اس کا کچھ مجھے اندازہ تھا

    میرے اوراقِ پریشاں دیکھنے والے ، کبھی
    میں کتابِ عشق تھا اور دل مرا شیرازہ تھا

    آنکھ میں اس کی چمک تھی پر ہوسنا کی بھی تھی
    رنگ اس کے رُخ پر تھا لیکن رہینِ غازہ تھا

    جوشِ گریہ میرے رونے کا یہ شورِ بازگشت
    کچھ نہ تھا اک کوچہ گردِ صبر کا آوازہ تھا

    جانے اندر کیا ہوا میں شور سن کر اے سلیمؔ
    اُس جگہ پہنچا تو دیکھا بند وہ دروازہ تھا
    سلیم احمد
     

اس صفحے کی تشہیر