1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

کلام میں موسیقیت کیسے اور کیونکر لائی جاتی ہے؟

افتخاررحمانی فاخر نے 'بزم سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 17, 2019

  1. افتخاررحمانی فاخر

    افتخاررحمانی فاخر محفلین

    مراسلے:
    664
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Buzzed
    کوئی یہ تو بتادے ؟

    بڑے بڑے شاعر سے لے کر چھوٹے چھوٹے شاعر کے کلام کو پڑھا ، کئی باتیں جو ذہن میں آئیں ان کا جواب تو خود میں نے ڈھونڈلیا ؛لیکن ایک راز کا مجھ پر انکشاف نہ ہوسکا کہ :’ آخر کلام میں موسیقیت کیسے اور کیوں کر لائی جاتی ہے ؟‘۔ کلام میں موسیقیت کے لیے کیا کوئی خاص بحر متعین ہے؟ یا مترنم کلام کے لیے فن موسیقی کے لحاظ سے کسی خاص راگ کے تحت کلام کہا جاتا ہے ؟فارسی کلام میں حضرت امیر خسرو علیہ الرحمہ کے کلام میں جو ترنم ہے ،شاید وہ ترنم حافظؔ کے کلام میں نہ ہو(یہ میرا خیال ہے )۔اردو میں حضرت حالیؔ، شاعر مشرق اقبالؔ ، ساحر لدھیانوی ،ساغر صدیقی مرحوم اوراحمد فرازؔ وغیرہ کے کلام میں(مجھے) ترنم نظر آتا ہے ۔ ساغر ؔصدیقی کا تو دل سے قدردان ہوں کہ انہوں نے وہ کچھ کیا ،جو بڑے بڑے شاعر کو نصیب نہ ہوسکا (اگر ساغر ؔ کو چرس کی عادت نہ لگتی اوراس کے اسیر نہ ہوتے تو یقیناً ساغر ؔصدیقی کا نام اور بھی بڑا ہوتا ) ۔الغرض ، میرا سوال یہ ہے کہ :
    1:- کلام میں ترنم وہبی شی ہے یا کسبی؟ اگر کسبی ہے تو پھر اس کا کسب کس طرح ہوسکتا ہے ؟
    2:- ترنم کے لیے ساز وآہنگ اور ہم وزن الفاظ کا ہونا ضروری ہے ؟
    3:- کلام میں ترنم کے لیے آسان اور عوامی ذہن سے قریب تر الفاظ استعمال کئے جائیں ؟
    اس سلسلے میں اساتذہ بالخصوص ،بالعموم تمام شعرا اور محفلین اپنی اپنی بے باک رائے ضرور نوازیں ۔
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 17, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. افتخاررحمانی فاخر

    افتخاررحمانی فاخر محفلین

    مراسلے:
    664
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Buzzed
    ’’ کوئی تو بتادے ، پریشان ہوں میں ! ‘‘
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  3. انس معین

    انس معین محفلین

    مراسلے:
    212
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    مجھے بھی شدت کے ساتھ جواب کا انتظار ہے ۔۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  4. افتخاررحمانی فاخر

    افتخاررحمانی فاخر محفلین

    مراسلے:
    664
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Buzzed
    اس کی تصحیح فرمالیں ۔ ورنہ ’’عدنانی املا‘‘ کا فتویٰ آپ پر بھی صادر ہوجائے گا۔ :LOL::LOL::LOL: @محمدعمران صاحب کی نظر سے گزرنے کی دیر ہے ۔ :):):)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  5. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  6. انس معین

    انس معین محفلین

    مراسلے:
    212
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  7. افتخاررحمانی فاخر

    افتخاررحمانی فاخر محفلین

    مراسلے:
    664
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Buzzed
    تابش بھائی ! آپ بھی اس سلسلے میں لب کشائی کی زحمت فرمائیں ۔ آپ سے بھی ’’کچھ سننے‘‘ کا شوق ہے۔ :):)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. انس معین

    انس معین محفلین

    مراسلے:
    212
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    لگتا ہے ٹیگ کرنا پڑے گا:)
    محمد تابش صدیقی
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  9. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    کھانے کا وقت تھا اور کھانے سے زیادہ اہم کیا ہو سکتا ہے۔

    اس حوالے سے کچھ خاص مطالعہ نہیں ہے۔ البتہ جو خود سمجھتا ہوں وہ عرض کیے دیتا ہوں۔ ہو سکتا ہے کہ نری احمقانہ بات ہو، یا پھر کچھ جواب مل جائے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  10. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    8,745
    بعض بحریں بھی ایسی ہیں جن میں دیگر بحروں کی نسبت زیادہ غنائیت اور نغمگی پائی جاتی ہے۔ مثال کے طور پر،
    فاعلاتن مفاعلن فعلن
    مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 17, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  11. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    کچھ بحور ایسی ضرور ہیں جن میں موسیقیت زیادہ ہوتی ہے، بلکہ ہو سکتا ہے کہ مختلف مزاج کے لوگوں کو مختلف بحور میں موسیقیت محسوس ہو۔ لیکن ضروری نہیں کہ ان بحور میں بھی تمام کلام موسیقیت لیے ہوئے ہو۔ یا جن بحور میں بالعموم موسیقیت محسوس نہ ہوتی ہو، ان میں ایسا کلام بھی پڑھنے کو مل جاتا ہے جو موسیقیت سے بھرپور ہو۔
    موسیقیت میں ایک بڑا عمل دخل الفاظ کی ترتیب کا بھی ہے۔ بعض اوقات ایک مصرع انھی الفاظ کے ادھر ادھر کر دینے سے موزوں تو ہوتا ہے، مگر وہ موسیقیت نہیں دے پاتا جو الفاظ کی کسی دوسری ترتیب میں مل رہی ہوتی ہے، حالانکہ الفاظ وہی ہوتے ہیں۔

    قوافی سے ہٹ کر ہم وزن و ہم قافیہ الفاظ کا استعمال موسیقیت میں اضافہ کرتا ہے۔

    الفاظ کے آسان یا مشکل ہونے کا موسیقیت میں زیادہ عمل دخل معلوم نہیں ہوتا۔ بلکہ وہی بات جو پہلے کہی کہ الفاظ کی ترتیب موسیقیت بڑھاتی ہے۔

    ابھی مثالیں ذہن میں نہیں، اور ڈھونڈنے کا وقت نہیں، لہٰذا محض ان متفرق خیالات پر اکتفا کیجیے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  12. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مفاعلن
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    لڑی کا عنوان آپ ہی کے الفاظ سے بدل دیا ہے، تاکہ مدعا واضح ہو سکے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  14. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
  15. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,930
    جھنڈا:
    Pakistan
    آپ کی وجہ سے یہ بال بال بچ گئے!!!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  16. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,930
    جھنڈا:
    Pakistan
    صحیح کہا...
    الفاظ کا چناؤ اور پڑھنے کا انداز!!!
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  17. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,930
    جھنڈا:
    Pakistan
  18. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مجھے قابلؔ کی شاعری میں جو موسیقیت نظر آئی، اس کا جواب نہیں
    ایک نمونۂ کلام
    حیرتوں کے سلسلے سوزِ نہاں تک آگئے
    ہم نظر تک چاہتے تھے تم تو جاں تک آگئے

    نامرادی اپنی قسمت ، گمرہی اپنا نصیب
    کارواں کی خیر ہو ، ہم کارواں تک آگئے

    انکی پلکوں پر ستارے اپنے ہونٹوں پر ہنسی
    قصۂ غم کہتے کہتے ہم کہاں تک آگئے

    اپنی اپنی جستجو ہے اپنا اپنا شوق ہے
    تم ہنسی تک بھی نہ پہنچے ہم فغاں تک آگئے

    زلف میں خوشبو نہ تھی یا رنگ عارض میں نہ تھا
    آپ کس کی آرزو میں گلستاں تک آگئے

    رفتہ رفتہ رنگ لایا جذبِ خاموشیِ عشق
    وہ تغافل کرتے کرتے امتحاں تک آگئے

    خود تمہیں چاکِ گریباں کا شعور آجائے گا
    تم وہاں تک آتو جاؤ ، ہم جہاں تک آگئے

    آج قابل میکدے میں انقلاب آنے کو ہے
    اہلِ دل اندیشۂ سود و زیاں تک آگئے

    قابل اجمیری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
  19. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    23,929
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اس شعر کا پہلا مصرع لیجیے
    خود تمھیں چاکِ گریباں کا شعور آ جائے گا

    اسے یوں لکھ دیں
    خود شعور آ جائے گا چاکِ گریباں کا تمھیں
    تم وہاں تک آ تو جاؤ، ہم جہاں تک آ گئے

    یہ بھی موزوں ہے لیکن آپ کو فرق محسوس ہو جائے گا۔ جو موسیقیت اور روانی قابلؔ کے مصرع میں ہے، وہ یہاں مفقود ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  20. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    10,930
    جھنڈا:
    Pakistan
    واہ اچھے اشعار ہیں...
    ہمیں بھی جو مزہ اساتذہ متقدمین کے کلام میں آتا ہے متاخرین میں نہیں...
    مثلاً میر صاحب اور داغ بھیا!!!
     
    آخری تدوین: ‏جولائی 17, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر