1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

پی ٹی ایم رہنما محسن داوڑ کی ساتھیوں کے ہمراہ میرانشاہ میں چیک پوسٹ پر فائرنگ

جاسم محمد نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 26, 2019

  1. جان

    جان محفلین

    مراسلے:
    1,740
    موڈ:
    Dead
     
    • متفق متفق × 1
  2. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    17,088
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خیبر ایجنسی سے تعلق رکھنے والے ایک پختون دوست کی فیس بک سے اس تحریر کو کاپی کیا ہے۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    ہمارے اندھے اور کم عقل قوم پشتون۔

    میں نے کسی پنجابی، سندھی، بلوچ یا کشمیری کو بنوں، کوہاٹ، کرک اور خیبر ایجنسی میں دکان کے ترازو میں کچھ تولتے ہوئے نہیں دیکھا۔ مگر ملک وال، گوجرہ، رتو ڈیرو، جیکب آباد اور ہر جگہ پشتون کو کاروبار کرتے ضرور دیکھا ہے۔ بلکہ میرے پچیس ہزار پشتون تو سندھ سانگھڑ میں لاکھوں ایکڑ اراضی کے مالک ہیں۔ اور مقامی سندھی ان کی زمینوں پر مزدوری کرتے ہیں۔ میں نے آج تک کسی سندھی یا پنجابی کو اس بات پہ احتجاج و اعتراض کرتے نہیں دیکھا،کہ پشتون ان کی سرزمین پر حاکم بنے بیٹھے ہیں۔ میں نے کسی پنجابی کو آج تک یہ کہتے ہوئے بھی نہیں سُنا،کہ پشتون بے غیرت ہوتے ہیں۔ مگر ہر روز اپنے حجروں میں، بازاروں اور سیاسی جلسوں میں، میں نے پنجابیوں کا نام بطور گالی دیتے ضرور سُنا ہے۔
    آپ کسی قوم پرست سے بات کرتے ہیں،تو وہ پشتونوں کا رونا شروع کردےگا۔ کہ پشتونوں کےساتھ ظُلم ہو رہا ہے،ان کی حق تلفی ہورہی ہے،ہمیں حقوق مانگنے نہیں چھیننے ہوں گے۔ دراصل یہ سب کُچھ ان کی فطری انتہاء پسندی ہے۔ ان پشتون قوم پرستوں کا وہی حال ہے،جو دوسری جنگ عظیم میں یہودیوں نے ہولوکاسٹ کے نام پر پوری دُنیا کو بلیک میل کرکے کیا۔ میں نے ہمیشہ پنجاب کے وسی بابا کو پشتونوں کے لئے لڑتے ہوئے دیکھا ہے۔ میں نے پنجابی ثمینہ ریاض کو پشتونوں کو انصاف دلانے کے لئے خوار ہوتے دیکھا ہے۔مگر ایسے لوگ آپ کو اس لئے نظر نہیں آئیں گے۔کہ بغض ،انتہاپسندی اور نفرت کی جو کالی پٹی آپ کی آنکھوں پر باندھی گئی ہے۔ اس پٹی کے دوسرے پار آپ کےلئے دیکھنا ناگوار اور نامُمکن ہے۔
    حالیہ اسلام آباد واقعے میں فرشتہ بیٹی کے ساتھ جو کُچھ ہوا۔وہ کسی پشتون بچی کےساتھ نہیں،بلکہ میرے گُھٹن زدہ معاشرے کے مُنہ پر ایک کالک ملی گئ۔ لیکن جس طرح سے پشتون قوم پرست اس مسئلے کو نسل پرستی کا نام دے رہے ہیں۔وہ ان کی گھناؤنی سازشوں کا ایک غلیظ رُخ ہے۔ یہ سارے وہ گھناؤنے کردار ہیں۔جن کو انسان سمجھنا تو دُور انسانیت سے جڑا سمجھنا بھی ایک ناقابل معافی جُرم ہے۔ فرشتہ شہید کےلاشے کو اپنے مفادات کی خاطر جس طرح یہ قوم پرست بھنبھوڑ رہے ہیں ۔واللہ خود کو پشتون کہتے بھی ہوئے شرم آرہی ہے۔ گلالئی اسماعیل جیسی عورت جس کا کام جُھوٹ مُوٹ کی پریزینٹیشنز اور رپورٹس جمع کروا کر فنڈز لینا ہوتا ہے۔وہ پشتون ولی کے منہ پر یہ کہہ کر کالک مل گئی ہے۔کہ وزیرستان میں فوجیوں نے عورتوں اور لڑکوں کا جنسی استحصال کیا۔
    وزیرستان کے لوگوں کی غیرت کا میں پندرہ سال سے گواہ رہا ہوں۔ جہاں عزتوں کے بدلے سر اُتارے جاتے ہیں۔لیکن آج میرے ہی پشتون گلالئی اسماعیل کی گالیوں پر تالیاں بجا رہے ہیں۔
    ان پشتون قوم پرستوں کا بس نہیں چلتا،کہ اپنی اولاد کو ننگا کرکے بیچ بازار لا کھڑا کردیں۔اور دُنیا کو یہ بتا سکیں ،کہ دیکھو اس ریاست نے ہماری کیا حالت کر دی ہے۔ اگر اس کو آپ قوم کی خدمت یا پشتون ولی کہتے ہیں۔تو مولانا بجلی گھر صاب کی اس بات سے پھر آپ قطعاً انکار نہیں کرسکتے۔کہ میں نے آپ جیسے اُونچے شملوں والے پشتونوں کو طوائف کا حُقہ پانی تازہ کرتے دیکھا ہے۔
    اگر آپ کو مُعتدل اور بُردبار پشتون دانشور دیکھنے ہیں۔تو آئیے، آپ کو عبدالمجید داوڑ، حیات پریغال، ہارون وزیر، نجیب آغا، عابد آفریدی، افتخار محمد داجی اور اورنگزیب محسود سے ملوا دوں۔ جو پشتونوں کا اصل چہرہ ہیں۔
    ان انتہاء پسند پشتون قوم پرستوں کا بس نہیں چلتا،کہ کلمہ بھی پشتو میں ہی پڑھیں۔اور ساتھ ہی ساتھ یہ بھی ثابت کردیں کہ آدم علیہ السلام کا تعلق بھی کاکڑ یا یوسفزئی قبیلے سے تھا۔
    میرا دوست عبدالمجید داوڑ کہتا ہے،کہ ان کا بس نہیں چلتا کہ سات کروڑ پشتونوں کو چھوڑ کر دُنیا کے باقی پانچ ارب ترانوے کروڑ انسانوں کو قبروں میں لٹا دیں۔اور اس کے بعد ان کی قبروں پر پشتون ولی کا جھنڈا گاڑ دیں۔اور اپنی فتح کا اعلان کر دیں۔

    آئی شرمیدلو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  3. جان

    جان محفلین

    مراسلے:
    1,740
    موڈ:
    Dead
    تصویر کا یہ رخ بھی بہت حد تک متوازن معلوم ہوتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  4. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    یہ بندہ قبائلی نہیں بلکہ لیویز اہلکار ہے۔
    اور اس نے فائرنگ نہیں کی۔ جب کہ آپ اس سے فائرنگ ثابت کرنا چاہتے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 28, 2019
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    غلط بات۔ یہودیوں کے ساتھ جو جرمن نازیوں نے کیا وہ تاریخ کا نہ جھٹلایا جا سکنے والا المناک سانحہ ہے۔
    مجھے حیرت ہوتی ہے کہ پاکستانی اپنی فوج کے ہاتھوں بنگالیوں کے قتل عام پر تو آنکھیں بند کر کے یقین کر لیتے ہیں۔ لیکن جب ان کو ثبوتوں کے ساتھ بتایا جاتا ہے کہ جرمن افواج نے دوسری جنگ میں واقعی یہودیوں کا قتل عام کیا تو وہ اسے صیہونیوں کی سازش قرار دیتے ہیں۔
    فوج تو فوج ہے چاہے کسی بھی ملک کی ہو۔ اور اسے ٹرین ہی قتل کرنے کیلئے کیا جاتا ہے۔ دفاع وطن تو ثانوی ہے۔
     
  6. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    فوج قبائل میں جتنا رہے گی اتنا ہی ان کی عزت گرتی جائے گی۔ پشتون اپنی سرزمین پر فوج برداشت نہیں کرسکتی۔ یا تو پورے ملک میں فوج کی چوکیاں لگا دو یا صرف بارڈرز پر۔ آسان سا اصول ہے۔
    یک طرفہ پروپیگنڈو اور متعصب رویوں سے مسائل حل نہیں ہوتے۔ وقت سب کچھ سمجھا دیتی ہے۔
     
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    یہ آج کی بات نہیں۔ صدیوں سے پشتون قبائل کا یہی حال ہے۔ انگریز، روسی، امریکی اور اب پاک افواج کی باری ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  8. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بہت اچھا تبصرہ ہے۔
    اس میں کچھ باتیں صرف زمینی حقائق دیکھ کر پرکھی جاسکتی ہیں لیکن چند ایک پر تبصرہ بھی کیا جاسکتا ہے۔
    جو محفلین اور احباب پشتونوں کی فطرت یا طرز زندگی اور موجودہ حالات کو سمجھنا چاہتے ہیں، ان کے لیے خصوصا یہ تفصیل لکھ رہا ہوں۔ برسبیل تذکرہ بتادینا مناسب سمجھتا ہوں کہ دنیا میں عموما اور برصغیر میں (ڈیڑھ سوسال تک انگریزوں کی غلامی میں رہنے کی وجہ سے) خصوصا جو قوم جتنی جلدی دیہاتی زندگی سے شہری زندگی کی جانب گئی ہے اتنا ہی اس کا وقار اور تشخص تباہ ہوا ہے۔
    میں یہاں اپنی پشتون قوم کی مثال دیتا ہوں تاکہ بیان کرنے اور سمجھنے میں آسانی ہو۔
    آپ پشاور سے شروع کریں۔ پشتونوں میں یہ بات مشہور ہے کہ پشاور کا شہری (کٹر پشتون خاندانی طبقے کو چھوڑ کر) سب سے زیادہ دھوکہ باز اور ڈرپوک ہوتا ہے۔ اس کے بعد مردان، چارسدہ اور مینگورہ کے پشتون۔
    اس کی وجہ یہ ہے کہ جیسے جیسے آپ کے چاروں طرف قسماقسم طبیعتوں، خصلتوں اور تہذیب کے لوگ آباد ہوتے جائیں گے ویسے ویسے آپ کی نسل ان سے متاثر ہوکر اپنا اصل تشخص کھوتی جائیں گی۔ دیہات میں کیا ہوتا ہے کہ ہر شخص آپ ہی میں سے ہوتا ہے، جیسے وہ ویسے آپ، جیسے آپ ویسے وہ۔ سب ایک ہی خون ہے۔ ایک ہی مزاج۔
    اب آپ سوات پر غور کریں۔ سوات میں مینگورہ ایک بازاری علاقہ ہے جب کہ جیسے جیسے آپ اوپر غیر شہری علاقوں چار باغ، کانجو، مٹہ، خوازہ خیلہ وغیرہ کی جانب جائیں گے آپ کو رویوں میں فرق محسوس ہونا شروع ہوگا۔ مینگورہ میں دیگر قوموں سے آئے ہوئے لوگوں کی کثرت کی وجہ سے وہاں کا پشتون تہذیب وتمدن تباہ ہوچکا ہے۔ وہاں بھی جن (چند) پشتونوں نے اپنا خاندانی نظام بچا رکھا ہے وہ محفوظ ہیں (اور مسلسل تباہی کے خطرے سے دو چار)، باقی کچھ بھی نہیں بچا۔
    اب آپ یہی عمرانی اصول اپنی قوموں پنجابی، سندھی، گلگت، چترال، بلوچی، سرائیکی وغیرہ پر لاگو کریں اور دیکھیں کہ دیہاتی اور شہری فرد میں کتنا واضح فرق ہے۔
    اب سوال یہ ہے کہ پشتون کیوں دوسری قوموں کو اپنی سرزمین پر طبیعتا پسند نہیں کرتی تو یہ سوچ ہر قوم میں پائی جاتی ہے۔۔ کوئی بھی طبیعتا یہ پسند نہیں کرتا کہ کوئی غیر قوم آکر ان کی فطری طرز زندگی پر اثرانداز ہوسکے یا ان کی زمینوں کے مالک۔ اکا دکا اگر کوئی تجارت کی غرض سے آتا ہے تو اسے کوئی بھی نہیں روکتا۔ کوئی بھی نہیں۔ یہاں آپ کو کچھ اہم اور دلچسپ پہلو بیان کرنا مناسب معلوم ہوتا ہے۔
    پہلے وقتوں میں (اور آج بھی) پشتونوں میں اگر کسی دوسرے علاقے سے کوئی پشتون شخص آکر آباد ہونا چاہتا تھا تو گاؤں دیہات کے کچھ افراد اس شخص سے پتا معلوم کرکے اس کے گاؤں چلے جاتے اور معلوم کرتے کہ آپ کے گاؤں سے فلاں نامی فلاں خلیے کا شخص آکر ہمارے گاؤں میں رہائش اختیار کرنا چاہتا ہے، لہذا معلوم کرنا ہے کہ وہ ایسا کیوں کررہا ہے، آیا وہ کوئی قتل کرکے گاؤں سے بھاگا ہے، یا چھوڑ کے چلا گیا ہے، کسی اخلاقی جرم میں گاؤں سے نکالا گیا ہے یا خود فرار ہوا ہے یا کوئی اور وجہ۔ تاکہ ہم بھی گاؤں میں اس کو اسی تناظر میں دیکھیں اور وہ وہاں بھی کوئی غلطی نہ کرے۔ یہ معلوم کرکے وہ گاؤں کے بڑوں کو پوری صورت حال سے آگاہ کرتے تاکہ اس سے اس کے شایان شان برتاو کیا جائے۔ اب آپ خود سوچیں کہ جب ایک پشتون کے حوالے سے کوئی اتنا حساس ہو تو غیر قوموں سے آئے ہوئے شخص کو وہ کس تناظر میں دیکھیں گے۔ ظاہر ہے اس شخص اور اس کے بال بچوں کے اطوار اور صفات کا اثر بہرحال موجود ہوگا اور یہ سوال بھی کہ وہ اپنے آبائی سرزمین جہاں اس کے والدین اور خاندان عرصوں سے آباد رہے وہ کیوں اسے چھوڑ کر یہاں آنا چاہتا ہے۔
    فرق صرف اتنا ہے کہ کون سی قوم اس کو کتنی اہمیت دیتی ہے یا وہ معاشرتی طور پر کتنی کمزور ہے۔ جو جتنی کمزور ہوگی اتنا ہی اس کے معاشرتی زندگی پر دیگر قومیں اثرانداز ہوں گی۔ سندھ میں اگر پشتون آباد ہیں تو اس کی وجہ سندھ میں وڈیرہ ازم کے سبب عام سندھیوں کی بے بسی، غریبی اور کم شعوری ہے۔ اسی طرح جو پشتون وہاں رہ رہے ہیں ان کی وجہ سے ان کے اقدار اور معاشرتی زندگی میں اگر بہتری نہیں آتی تو ان شاء اللہ برے اثرات کسی طور نہیں ہوں گے۔
    مزید برآں ہم صرف اس پہلو کو بھی اگر سامنے رکھیں تو بات آسانی سے سمجھی جاسکتی ہے کہ پردہ اور حیا خاندانی پشتون معاشرے کا جزوِ لاینفک ہے۔ لیکن ہم دیکھتے ہیں کہ بیشتر دوسری اقوام میں اجتماعی طور پر اس لحاظ سے کمزوری پائی جاتی ہے اور ایک پشتون اس کو کسی بھی طور اچھی نظر سے نہیں دیکھتا۔ اسی طرح اور بھی پہلوؤں کو دیکھا جائے تو یہ بات سمجھنا ہرگز مشکل نہیں ہے۔
     
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    آخری تدوین: ‏مئی 28, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    یہ ایک قسم کا تعصب ہی ہے۔ سندھ، پنجاب وغیرہ کے دیہی علاقوں میں خاندانی سسٹم آج بھی مضبوط ہے۔ شہروں کا نہیں کچھ کہہ سکتے کیونکہ وہاں گلوبلائیزیشن کے اثرات بہت زیادہ ہوتے ہیں۔
     
  11. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,583
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    آصف اثر بھائی، انتہائی معذرت کے ساتھ، آپ کی باتوں میں مجھے پاکستان کے پشتونوں کے احساس محرومی سے زیادہ پشتون قوم کا احساس برتری نظر آتا ہے۔ :unsure:

    پاکستان میں بسنے والا ہر شخص اگر اسی قسم کے خیالات کا حامی ہو تو ہمیں پھر ایک "قوم" کا تصور ذہن سے نکال ہی دینا چاہیے :(
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
    • غمناک غمناک × 1
  12. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اس کو آپ تعصب کی نظر سے دیکھیں گے تو یقینا ایسا ہی تبصرہ ہوگا لیکن آپ اس کو معاشرتی موازنت کی نظر سے کیوں نہیں دیکھتے۔ آپ کے تبصرے سے یہ تاثر جاتا ہے کہ گویا میں نے (بہت معذرت کے ساتھ) ان اقوام کو بے حیا اور اخلاقی گراوٹ میں لکھا ہو۔ حالاں کہ ایسا ہرگز نہیں ہے۔ میں نے صرف مجموعی مزاج کی بات کی ہے اور پشتونوں کے مقابلے میں "نسبتا کمزوری" کی جانب اشارہ کیا ہے نہ کہ کوئی ہتک یا توہین سمجھ کر۔ جب کہ میں نے یہ وضاحت شروع میں بھی کی ہے بہت سے پہلووں میں پشتون قبائل ایک دوسرے کو بھی اسی نظر سے دیکھتے اور پرکھتے ہیں۔ اس کے ثبوت میں ایک اور مثال دینا چاہوں گا کہ خیبر پختون خوا کے پشتونوں میں دلیری اور جان نثاری میں سب سے زیادہ امتیاز محسود اور ایک دو اور قبائل کو دیا جاتا ہے۔ اسی طرح سوات کے مینگورہ اور پشاور کے شہری پشتونوں کی ماڈرنزم کو بالکل بھی اچھی نظر سے نہیں دیکھا جاتا اور ان کو بطور استہزاء کے پیش کیا جاتا ہے۔ اسی طرح کراچی کے پشتونوں کو پشتون روایات اور تہذیب سے دور اور نااہل سمجھا جاتا ہے۔ مزید یہ کہ تاریخی طور پر جن لوگوں نے انگریزوں کا ساتھ دیا مثلا کوہاٹ کے کچھ طبقے اور صوابی مردان کے خوانین اور ان کے عوامی سطح پر انگریز فوج میں شمولیت کو انتہائی ناپسندیدگی سے دیکھا جاتا ہے۔ پشتون قبائل چوں کہ معاشرتی طور پر ایک دوسرے کے ساتھ قلبی وابستگی رکھتے ہیں اور کھلے ڈھلے گفتگو کی وجہ سے ایک دوسرے کے قریب ہونے میں دیر نہیں کرتے لہذا ان کے احتساب اور نقطۂ نظر کے اس عمل کو یقینا منفرد نظر سے دیکھا جاتا ہے۔
    سطحی طور پر آپ احباب کا اسے تعصب کہنا غیر متوقع نہیں تھا لیکن اس وضاحت کے بعد امید ہے اس کو احتساب کے تناظر میں دیکھا جائے گا۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 29, 2019
  13. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اگر میری تحریر سے ایسا کوئی قوم پرستانہ تاثر ملا ہو تو اس پر میں انتہائی معذرت خواہ اور اللہ تعالیٰ کے حضور معافی کا طلب گار ہوں۔

    چاہوں گا کہ اگر مجھے قوم پرست کے بجائے اقدار پرست کی نظر سے دیکھا جائے تو درست ہوگا۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 29, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  14. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,583
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    میرا آپ کے بارے میں یہی تاثر ہے اور چاہتا ہوں کہ قائم رہے۔ لیکن بھائی اس لڑی کے عنوان اور گفتگو کے دوران آپ کے پشتون قوم کے حوالے سے پیش کیے گئے الفاظ کچھ اور تاثر پیدا کررہے ہیں۔

    ہم نے پٹھانوں کی روایات، مذہب پسندی یا بہادری پر نہ اعتراض کیا اور نہ اسے برا کہا اس کے باوجود چوہدری صاحب کے ایک مراسلے میں آپ نے شاید دفاعی پوزیشن سنبھال لی، حالانکہ اس میں زیادہ اہم نکتہ یہ ہے کہ بظاہر جو مظلومیت کی بات کی جاتی ہے، حالات اس کے برعکس ہیں۔ مقصد یہ نہیں کہ غیر پشتون کو پشتون علاقوں میں آباد کیوں نہیں ہونے دیا جاتا بلکہ نکتہ یہ ہے کہ پشتون بھائیوں کو پورے پاکستان کے ہر علاقے میں کاروبار کرنے یا آباد ہونے سے نہیں روکا جاتا تو پھر مجموعی مظلومیت کا تاثر کیسا؟ ابھی بھی کتنے سرکاری بڑے عہدوں پر پشتون فائز ہیں۔

    آپ جن محرومیوں کا ذکر فرماتے ہیں وہ ایک خاص علاقے کے لوگوں کے حوالے سے ہے نہ کو پوری پشتون قوم کے حوالے سے، اور یقین رکھیے پوری پاکستانی قوم، اپنے ان بھائیوں کے دکھ، درد میں برابر کی شریک ہے۔ جس طرح زینب بچی کے واقعہ پر میرا دل خون کے آنسو رویا، بالکل اسی طرح فرشتہ کے ظالمانہ قتل پر میرا کلیجہ منہ کو آتا ہے۔ دونوں میری اپنی بچیاں تھیں، ہم بحیثیت قوم اپنی ان بچیوں سے شرمندہ ہیں کہ انھیں اچھا معاشرہ نہ دے سکے۔

    ایک بات اور اہم ہے کہ کچھ پشتون علاقوں کی محرومیوں کا ذمے دار فقط فوج کا ادارہ نہیں، اس میں سول حکومتوں کی ناعاقبت اندیشی، مقامی راہنماؤں کی خود غرضی، حالات کی ستم ظریفی اور خود وہاں کے لوگوں کا بھی کچھ نہ کچھ قصور ہے۔ فوج ایک طاقتور ادارہ ہے اور پاکستان کی علاقائی پوزیشن کی وجہ سے ایک اہم ضرورت ہے۔ طاقت کے نشے میں غلطیاں بھی سرزد ہوتی ہیں اور یقین کیجیے ان غلطیوں پر ہم عوام بالکل پردہ نہیں ڈالتے اور نہ ان کی حمایت کرتے ہیں بلکہ ہم بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ ان غلطیوں اور لوگوں کی محرومیوں کا ازالہ ہونا چاہئے لیکن کس قیمت پر؟ کس کی حمایت سے؟ کس کے ساتھ مل کر؟ کس کے خلاف کام کر کے؟ کس طریقہ کار کے ذریعے؟ اس پر سوچنے کی ضرورت ہے، باقی پشتون علاقوں کے عوام کی جو مشکلات ہیں، ان کے حل کے لیے ہم سب بحیثیت قوم پشتون بھائیوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اللہ پاک ہم سب کے دلوں کو صاف فرمائے اور ہم سب کی تمام مشکلوں کو اپنے فضل سے حل فرمائے آمین ۔
     
    • زبردست زبردست × 2
  15. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    17,088
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کوئی اپنی مرضی سے پنجابی، پشتون، سندھی، بلوچی، بنگالی، کشمیری، مہاجر، یا سنی شیعہ و دیگر پیدا نہیں ہوتا ، اللہ جس کوجہاں چاہتا ہے پیدا کرتا ہے، یعنی اس میں انسان کا اپنا کوئی کمال نہیں کہ جس پر وہ فخر کر سکے۔ بندے مجبورمحض ہیں۔
     
    • متفق متفق × 4
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    17,088
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    ایسے ہوتے ہیں نفرتیں پھیلانے والے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  17. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    ریاست پاکستان سے کوئی بھی نہیں لڑ سکتا۔ سیدھا سیدھا سیاسی راستہ اپنائیں۔ وگرنہ انجام تو سب کو معلوم ہے
    [​IMG]
     
  18. جان

    جان محفلین

    مراسلے:
    1,740
    موڈ:
    Dead
    آمین ثم آمین۔
     
    • متفق متفق × 1
  19. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,900
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    آپ کی مراد کون ہے؟

    ٹویٹ پر کمینٹ پڑھنے سے تعلق رکھتے ہیں۔ یہ پاکستانی گیدڑ غیرمسلح شہریوں پر فرعونوں کہ طرح ٹوٹتے ہیں لیکن بارڈر پر گیدڑوں کی طرح دم دبائے سرجھکائے پوری قوم کی عزت خاک میں ملا دیتے ہیں۔ بنگلہ دیش کو قوم نہیں بھول سکتی۔
     
  20. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    11,690
    [​IMG]
    [​IMG]
    [​IMG]
     

اس صفحے کی تشہیر