پیروڈی: صبح سے شام تلک، شب سے سحر ہونے تک

عاطف ملک نے 'مزاحیہ شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 5, 2020

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,234
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    استادِ محترم کی اصلاح اور مشوروں کے بعد یہ تک بندیاں اس قابل ہوئیں کہ احباب کی خدمت میں پیش کی جا سکیں۔امید ہے کہ پسند آئیں گی۔


    صبح سے شام تلک شب سے سحر ہونے تک
    سویا رہتا ہوں میں اب، دردِ کمر ہونے تک

    شعر وہ پڑھتا نہیں، بات میں کر سکتا نہیں
    "دل کا کیا رنگ کروں خونِ جگر ہونے تک"

    "ہلکے پھلکے سے تشدد" کا نہیں ہوں قائل
    پیار سے تجھ کو مناؤں گا اثر ہونے تک

    اک تری ہاں کے سوا کوئی رکاوٹ نہیں اب
    ترے ڈیڈی کے مرے پیارے سسر ہونے تک

    پیار زوجین کے مابین ہو جس درجہ بھی
    مانتا کوئی نہیں لختِ جگر ہونے تک

    عشق بھی عینؔ ہے اک مشغلۂِ بے لذت
    چاہتے سب ہیں کہ کر بیٹھیں، مگر ہونے تک

    (عینؔ میم)
    ستمبر ۲۰۲۰
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    7,753
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
  3. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,234
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    شکریہ:)
     

اس صفحے کی تشہیر