پیرس کے تاریخی نوٹرے ڈیم چرچ میں آگ بھڑک اُٹھی

محمد خلیل الرحمٰن نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 15, 2019

  1. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,858
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    [​IMG]

    پیرس کے تاریخی نوٹرے ڈیم چرچ میں آگ بھڑک اُٹھی
    [​IMG]ویب ڈیسک 15 اپریل 2019

    پیرس: فرانس کے دارالحکومت پیرس کے تاریخی نوٹرے ڈیم چرچ میں خوفناک آگ بھڑک اٹھی۔

    غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق فرانس کے دارالحکومت پیرس کے 850 سال پرانے نوٹرے ڈیم چرچ میں آگ لگ گئی جس نے دیکھتے ہی دیکھتے پورے چرچ کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔


    فائر فائٹرز آگ پر قابو پانے کی کوششوں میں مصروف ہیں جبکہ عمارت کو خالی کرالیا گیا ہے۔

    نوٹرے ڈیم وہ تاریخی چرچ ہے جہاں ہر سال دنیا بھر سے لاکھوں سیاحوں کی آمد ہوتی ہے، واضح رہے کہ چرچ کی عمارت میں تعمیراتی کام جاری تھا۔

    پیرس کے نوٹرے ڈیم چرچ میں آگ لگنے کی وجوہات فوری طور پر معلوم نہیں ہوسکی ہیں۔

    پیرس پولیس نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر شہریوں سے اپیل کی ہے کہ وہ چرچ کے اطراف آنے سے گریز کریں تاکہ ریسکیو گاڑیوں کو پہنچے میں کسی قسم کی دشواری نہ ہو۔

    [​IMG]

    میئر پیرس اینے ہدالگو نے اپنے ٹویٹ میں آگ کو خوفناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ فائر فائٹرز آگ پر قابو پانے کی کوشش کررہے ہیں، قریبی رہائشی ریسکیو اداروں سے تعاون کریں۔

    فرانسیسی صدر ایمانویل میکرون نے آتشزدگی کے واقعے کے پیش نظر عوام سے متوقع خطاب ملتوی کردیا۔

    یاد رہے کہ گزشتہ سال کیتھولک چرچ کی جانب سے عمارت کو مزید خراب ہونے سے بچانے کے لیے فنڈز کی فراہمی کی اپیل کی گئی تھی۔

    پیرس کے تاریخی نوٹرے ڈیم چرچ میں آگ بھڑک اُٹھی
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 15, 2019
    • غمناک غمناک × 3
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,266
    یہ لیں گرجا گھر کی چھت بھی گئی
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,858
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    نوٹرے ڈیم کے اس قدیم گرجا گھر کا جلنا ٹرائے کے جلنے سے کم نہیں!!!
     
    • متفق متفق × 1
  4. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    16,093
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    افسوس ناک خبر۔
     
    • متفق متفق × 3
  5. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    6,858
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    [​IMG]’’نوٹر ڈیم چرچ دوبارہ اصل حالت میں بحال کریں گے‘‘

    [​IMG]

    فرانسیسی صدر ایمائنول میکرون نے بارہویں صدی کے تاریخی گرجا گھر نوٹر ڈیم چرچ کو دوبارہ اصل حالت میں بحال کرنے اور تعمیر نو کا اعلان کیا ہے۔

    دنیا بھر میں مشہور 800 سال قدیم پیرس کے نوٹرڈیم چرچ میں لگی خطرناک آگ کئی گھنٹے بعد بجھا دی گئی، جبکہ فائر بریگیڈ حکام کا کہناہےکہ عمارت کے اصل ڈھانچے کو بچاکر چرچ کو مکمل تباہی سے بچا لیا ہے۔

    [​IMG]


    ذرائع کے مطابق آگ سے متاثر ہوکر چرچ کی چھت جل گئی ہے ، ایک بلند مینار گر گیاجبکہ اس کے دو مین ٹاور بچا لیے گئے ہیں، 400 فائر فائٹرز نے آگ بجھانے میں حصہ لیا ۔

    حادثے کی جگہ پہنچنے والے فرانس کے نائب وزیر داخلہ لورنٹ نونیزنے آگ بجھانے کے لیئے طیاروں کی مدد نہ لینے کے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ ایسے ایکشن سے چرچ کے ڈھانچے کو شدید نقصان پہنچنے کا خدشہ تھا ۔

    اس سے قبل امریکی صدر ٹرمپ نے چرچ کی آگ پر اظہار افسوس کرتے ہوئے اسے بجھانے کےلیے طیاروں کے استعمال کا مشورہ دیا تھا ۔

    واضح رہے کہ آگ کی لپیٹ میں آیا چرچ گوتھک آرٹ کا شاہکار تھا، نوٹرےڈیم چرچ کی تعمیر1160میں شروع ہوئی اور 1260میں مکمل ہوئی، یہاں ہر سال ایک کروڑ20 لاکھ سیاح شاہکار چرچ کو دیکھنے آتے ہیں، اس میں موجود مصوری کے فن پارے بھی تاریخی اہمیت کے حامل ہیں۔


     
    آخری تدوین: ‏اپریل 16, 2019
  6. سید عاطف علی

    سید عاطف علی محفلین

    مراسلے:
    6,453
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    اللہ خیر کرے یہ تو بہت بڑے پیمانے پر پھیلی ہوئی آگ ہے ۔ جانی نقصان کتنا ہوا ہے ؟
     
  7. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
    نوٹرے ڈیم چرچ کی آگ بھی یہودی سازشیوں کی ایک خوفناک سازش ہے...
    اب ان بدمعاشوں کا اگلا ہدف مسجد اقصی ہے!!!
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,266
    مضحکہ خیز۔ ابھی فرانسیسی حکام آگ لگنے کی وجوہات پر تفتیش کرر ہے اور یہاں ہزاروں میل دور بیٹھے چند پاکستانیوں کو معلوم ہوگیا کہ یہ یہودیوں کی سازش ہے۔
    Notre Dame: Cause of fire being investigated - CNN
     
  9. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
    مضحکہ خیز...
    ابھی رپورٹ آنے تو دیں پہلے سے ہی یہودیوں کی طرف داریاں!!!
     
  10. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,266
    جب ابھی فرانسیسی حکام کی جانب سے سانحہ پر کوئی حتمی رپورٹ پیش نہیں ہوئی ہے تو یہودیوں کی سازش کہاں سے بیچ میں آ گئی؟
     
  11. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    9,144
    جھنڈا:
    Pakistan
    جہاں سے کی گئی تھی!!!
     
  12. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,266
    نوٹر ڈیم کتھیڈرل کے بارے میں ‌ کچھ دلچسپ حقائق
    17/04/2019 ڈاکٹر لبنیٰ مرزا

    [​IMG]

    آج 2019 کی پندرہ اپریل ہے۔ آج صبح کام پر آتے ہوئے مجھے یہ اندازہ بالکل نہیں تھا کہ نوٹر ڈیم کتھیڈرل پر مضمون لکھوں ‌ گی۔ صبح مریضوں کے آنے سے پہلے بیک کیے ہوئے آلو کے ٹکڑے کرکے اس پر مکھن ڈال کر جلدی جلدی کھا رہی تھی تو ایک صاحب نے ڈاکٹر فیم کو دیکھنے کے بعد ہال میں ‌ سے گزرتے ہوئے میرے آفس میں ‌ سر داخل کرکے کہا کہ کیا آپ کو معلوم ہے کہ میں ‌ نے ابھی تک ناشتہ نہیں کیا ہے؟ میری میز پر ایک کیلا رکھا تھا تو میں ‌ نے ان سے کہا کہ آپ چاہیں ‌ تو یہ کھا سکتے ہیں۔

    انہوں ‌ نے کہا نہیں نہیں میں ‌ ایسے ہی مذاق کررہا ہوں۔ پھر کہنے لگے کہ مجھے شکریہ کہنے کا اس سے پہلے موقع نہیں ملا لیکن آج سے سات سال پہلے میں ہسپتال میں ‌ داخل تھا اور آپ مجھے دیکھنے آئی تھیں۔ آپ ”کائنڈ“ اور ”نائس“ تھیں، آپ نے میرا اچھا علاج کیا اور میں بہتر ہوگیا تھا۔ میں ‌ نے ان سے کہا کہ سات سال گزر گئے اور آپ ٹھیک ٹھاک ہیں، یہ دیکھ کر مجھے خوشی ہوئی۔ پھر وہ چلے گئے۔ میں ‌ نے سوچا کہ خوش مریض‌ آپ کے سامنے بتا دیتے ہیں ‌ کہ وہ خوش ہیں اور جو ناخوش ہوتے ہیں وہ انٹرنیٹ پر جاکر ساری دنیا کو بتاتے ہیں کہ وہ کتنے ناخوش ہیں۔ اس لیے ہمیں ‌ خود ہی انٹرنیٹ پر یہ بتانا ہوگا کہ ہمارے سارے مریض ناخوش نہیں ہوتے۔ اس لیے آج کے مضمون میں ‌ لکھ رہی ہوں ‌ کہ ہمارے کچھ مریض خوش بھی ہیں۔

    لنچ بریک سے پہلے مریضوں ‌ کے درمیان میں نے بی بی سی پر خبر دیکھی کہ نوٹر ڈیم کتھیڈرل میں ‌ آگ لگی ہوئی ہے۔ میں ‌ نے فوراً یہ خبر اپنے بچوں ‌ کو بھیجی۔ ہم دو سال پہلے پیرس گئے تھے اور نوٹر ڈیم میں ‌ بھی گھوم پھر کر آئے تھے۔ وہاں ‌ میں ‌ نے کچھ تصویریں ‌ کھینچی تھیں جو اس مضمون کے ساتھ شامل ہیں۔ میں امید کرتی ہوں کہ اس آگ پر جلدی سے قابو پالیا جائے گا۔ امید ہے کہ اس آگ میں ‌ کسی کی جان نہیں جائے گی اور اس شاندار اور خوبصورت تاریخی عمارت کی دوبارہ مرمت ہوسکے گی۔

    نوٹر ڈیم کتھیڈرل کے بارے میں ‌ کچھ دلچسپ حقائق یہ ہیں۔
    [​IMG]

    1۔ نوٹر ڈیم پیرس کے بالکل مرکز میں ‌ واقع ہے۔ یہ وہاں بارہویں ‌ صدی سے کھڑا ہے۔ نوٹر ڈیم رومن شہنشاہیت کے زمانے سے مقدس سمجھے جانے والے جزیرے پر تعمیر کیا گیا تھا۔ جب رومن فوج نے 52 قبل مسیح میں گالز کو شکست دی تبھی سے یہ جزیرہ دو حصوں میں ‌ بٹا ہوا تھا۔ مغربی حصے میں ‌ سلطنت کے معاملات سنبھالے جاتے تھے جہاں حکمران رہائش پذیر تھے اور مہمان آکر ٹھہرتے تھے۔ مشرقی حصہ عبادت کے لیے مخصوص تھا جہاں ‌ کئی مندر قائم تھے۔

    انہی مندروں ‌ کی جگہ پر آگے چل کر نوٹر ڈیم کتھیڈرل بنایا گیا۔ اگر دنیا کے بڑے مذاہب کی تاریخ اٹھا کر دیکھیں ‌ تو ان کی عمارات پرانی عبادت گاہوں ‌ کو ہٹا کر ان زمینی جگہوں پر تعمیر کی گئی ہیں جو ان علاقوں کے انسانوں کے لیے مقدس تھیں۔ اس بات کا ذکر پروفیسر وائن ڈیلوریا نے اپنی کتاب گاڈ از ریڈ یعنی کہ خدا سرخ ہے میں ‌ بھی کیا ہے۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ آسمانوں ‌ میں بسنے والے خداؤں پر یقین کرنے والے افراد بھی اپنے لاشعور کی گہرائی میں ‌ زمین سے جڑے ہوئے ہیں۔

    2۔ نوٹر ڈیم کتھیڈرل کے سامنے پیرس کا پوائنٹ زیرو ہے جس میں ‌ سمت دکھانے کے لیے ایک کمپاس بھی بنا ہوا ہے۔ اس نقطے کو استعمال کرکے پیرس سے دوسرے علاقوں کا فاصلہ ناپا جاتا ہے۔
    [​IMG]

    3۔ کافی سارے لوگ سمجھتے ہیں کہ آئفل ٹاور پیرس میں ‌ سیاحوں کے لیے سب سے زیادہ پرکشش جگہ ہو گی لیکن حقیقت یہ ہے کہ نوٹر ڈیم کو تمام دنیا سے دیکھنے کے لیے قریب 13 ملین افراد ہر سال آتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ قریب ہزار سال سے کھڑی اس خوبصورت عمارت کے جھلسنے کا منظر دنیا کے ہر کونے کے انسانوں ‌ کی دل شکنی کا باعث بنا ہے۔ نوٹر ڈیم کے اندر قدیم مجسمے اور شاہکار آرٹ کے نمونے جمع تھے جن کے جل جانے کا نقصان پورا نہیں ‌ کیا جاسکے گا۔

    4۔ دیگر گرجا گھروں ‌ کی طرح‌ نوٹر ڈیم کی گھنٹیوں ‌ کے بھی نام ہیں۔ ان میں ‌ سے زیادہ اہم ماری، ایمانیول، گیبریل این جینیوی، ڈینس، مارسل، ایٹیئین، بینوئی جوزف اور جین ماری ہیں۔ ان گھنٹیوں ‌ کے ناموں سے زیادہ ان کی زندگیاں دلچسپ ہیں۔ یہ گھنٹیاں شروع میں ‌ کوئی چھ سو سال پہلے لگائی گئی تھیں۔ ہم جانتے ہیں کہ وکٹر ہیوگو کے 1831 میں ‌ شائع ہوئے ناول نوٹر ڈیم کا کبڑا میں ‌ یہ کردار ان گھنٹیوں ‌ کو بجانے کا ذمہ دار تھا۔ اس ناول کی وجہ سے اس تاریخی گرجاگھر کو ایک نئی توجہ حاصل ہوئی تھی جس کی وجہ سے اس کی دوبارہ سے مرمت ہوسکی۔ کتنی نسلیں ‌ یہ کہانی پڑھ کر بڑی ہوئیں جس کی وجہ سے نوٹر ڈیم کی تاریخ اجتماعی انسانی شعور کا حصہ ہے۔
    [​IMG]

    1791 کے فرانسسی انقلاب کے دوران زیادہ تر گھنٹیاں ‌ اتارلی گئی تھیں اور ان کو پگھلا کر توپ کے گولے بنائے گئے تھے۔ فرانسسی انقلاب سے اس نئی دنیا کی بنیاد پڑی جس میں ‌ صدیوں ‌ سے مذاہب کے چنگل میں ‌ پھنسی انسانیت کو آزادی ملی اور سائنسی ترقی ممکن ہوسکی۔ 2013 میں ‌ نوٹر ڈیم کی 850 ویں سالگرہ کے موقع پر ان گھنٹیوں ‌ کو تبدیل کیا گیا۔ یعنی اس آگ میں ‌ جل جانے والی گھنٹیاں ‌ صرف آج سے پانچ سال پہلے لگائی گئی تھیں۔ اس وقت آگ سے ہونے والے نقصان کا اندازہ لگایا جارہا ہے۔ ساری دنیا سے لوگ پیسے بھیج رہے ہیں کہ اس انسانی ورثے کو دوبارہ سے بحال کیا جاسکے تاکہ آنے والی نسلیں ماضی سے تعلق محسوس کرسکیں۔ یہ آگ اور اس کے نتیجے میں ‌ جڑجانے والی انسانیت بھی دنیا کی تاریخ‌ کا حصہ بن چکی ہے۔

    5۔ نوٹر ڈیم کے لیے آج تک یہی کہا جاتا تھا کہ یہ ایک جنگل ہے کیونکہ اس کی 127 میٹر لمبی چھت مکمل طور پر لکڑیوں ‌ کی بنی ہوئی تھی۔ یہی وجہ سے کہ اس میں ‌ اتنی تیزی سے آگ پھیل گئی۔ یہ چھت کوئی 1300 درختوں ‌ سے بنی ہوئی تھی۔ میرے خیال میں ‌ نئی چھت میں ‌ جدید ٹیکنالوجی استعمال کی جائے گی جس میں ‌ آگ سے محفوظ رہنے کی صلاحیت ہو۔
    [​IMG]

    6۔ فرانسسی انقلاب کی تفصیل جاننے والے قارئین گلوٹین کے ذریعے سر تن سے جدا کرنے کی تاریخ‌ سے واقف ہوں گے۔ نوٹر ڈیم کتھیڈرل میں ‌ بھی سر تن سے جدا کیے گئے تھے۔ اصلی انسانوں ‌ کے نہیں ‌ بلکہ مجسموں ‌ کے۔ فرانسسی انقلابی امراء سے اس قدر نفرت کرتے تھے کہ انہوں ‌ نے ان کو بادشاہوں ‌ کے مجسمے سمجھ کر توڑا پھوڑا لیکن وہ امراؤں ‌ کے مجسمے نہیں ‌ بلکہ بنی اسرائیل کے پیغمبروں ‌ کے مجسمے تھے مثلاً ڈیوڈ اور سولومن۔ یہ مجسمے آج کی تاریخ تک تو وہاں ‌ بغیر سروں ‌ کے موجود تھے۔ اب کچھ وقت کے بعد ہی معلوم ہوگا کہ قدیم زمانے کے گزرے ہوئے انسانوں ‌ کے ہاتھوں ‌ سے تراشے ہوئے ان تاریخی فن پاروں میں ‌ سے آج کی آگ میں ‌ کون سے جلنے سے بچ گئے ہیں۔

    7۔ نوٹر ڈیم سنہرے تناسب سے بنا ہوا ہے۔ آرکیٹیکچر کی دنیا میں ‌ سنہرا توازن کسی بھی چوکور یا مستطیل میں دیکھا جاسکتا ہے جن کی اطراف 1 : 1.61 کے تناسب میں ہوتی ہیں۔ اس تناسب کو آرٹ کی دنیا میں ‌ بھی کمال کا معیار سمجھا جاتا ہے۔ آرکیٹیکچر کی دنیا کی اہم عمارات جیسے کہ پارتھینان جو کہ روم میں ‌ ہے اور تاج محل جو کہ آگرہ انڈیا میں ‌ ہے، شامل ہیں۔ یہ دونوں ‌ شاہکار بھی میں ‌ نے اپنی آنکھوں ‌ سے دیکھے ہیں اور امید ہے کہ دیگر قارئین کو بھی اپنی زندگی میں ‌ گزرے ہوئے بے شمار بے نام انسانوں ‌ کے ہاتھوں ‌ سے تراشے ہوئے ان تاریخی ورثوں کو دیکھنے کا موقع ملے گا۔
    [​IMG]

    پارتھینان جانے کے بارے میں یہ یاد ہے کہ اس کے چھت کے مرکز میں ‌ موجود تیس فٹ سوراخ سے ایک کبوتر اندر آکر تخت پر بیٹھ گیا تھا اور سب سیاح‌ اس کی تصویریں ‌ کھینچ رہے تھے۔ اس دن روم میں ‌ زبردست بارش ہوئی تھی۔ پارتھینان یونانی دیوی اتھینا کا 500 قبل مسیح میں ‌ تعمیر ہوا ایک مندر تھا جو بعد میں ‌ چرچ میں ‌ تبدیل کردیا گیا۔ اس طرح‌ یہ حیران کن عمارت اپنے اردگرد کی شاندار عمارتوں ‌ کی طرح‌ کھنڈر بننے سے بچ گئی تھی۔ ان بے جان پتھروں کے شاہکاروں سے انسانوں کو یہ سبق ملتا ہے کہ وقت کے ساتھ ساتھ چلتے رہنا اور بدلتے رہنا کتنا اہم ہے۔
    [​IMG]

    8۔ آخری دلچسپ حقیقت یہ ہے کہ نوٹر ڈیم کتھیڈرل کے خزانوں ‌ میں ‌ سے سب سے قیمتی خزانہ مقدس تاج ہے جو یسوع مسیح کے سر پر رکھا گیا تھا۔ اس کے علاوہ جس صلیب پر ان کو چڑھایا گیا تھا اس کا ایک ٹکڑا اور ایک نیل بھی موجود ہے جن کو مہینے کے آخری جمعے کے دن لوگ دور دور سے دیکھنے کے لیے آتے ہیں۔ اس وقت معلوم نہیں کہ یہ آگ سے بچے ہوں گے یا نہیں۔ ان کی جگہ نقلی تاج وغیرہ رکھنے کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔ کیا معلوم ایسا پچھلے دو ہزار سال میں ‌ پہلے بھی ہوچکا ہو؟
     
  13. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,135
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    مغرب کا ایک ترقی یافتہ ملک جہاں ہروقت لوگوں کی نقل و حرکت پر نظر رکھی جاتی ہے وہاں ایک اہم مقام پر آگ لگ جاتی ہے اور فرانسیسی حکام ابھی تک تحقیقات کر رہے ہیں۔ وہاں لوگوں سے پوچھ گوچھ بھی ہو رہی ہے۔ کچھ عجیب سا لگتا ہے۔ کوئی سی سی ٹی وی بھی نہیں وہاں؟ کوئی مزید جدید ٹیکنالوجی؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,875
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    افسوسناک۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    6,266
    تحقیقات وقت مانگتی ہیں۔ یہ پاکستان نہیں ہے :)
     
  16. عباس رضا

    عباس رضا محفلین

    مراسلے:
    313
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    یہ آئی ڈی کتنے لوگ استعمال کرتے ہیں؟:cautious:
     
  17. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,135
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    اچھا، یہ تو ہمیں پتہ ہی نہیں تھا۔ ہم تو سمجھتے تھے کہ ترقی یافتہ ممالک جدید سائنسی ٹیکنالوجی سے لیس ہوتے ہیں اور تحقیقات بہت جلدی کر لیتے ہیں جیسے کسی بھی واقعے میں مسلمانوں یا داعش وغیرہ کا سراغ لگنا، لیکن واقعی کچھ تحقیقات کے لیے وقت چاہئے ہوتا ہے۔

    آہ خوش فہمی بھی انسان سے کیا کیا کرواتی ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 18, 2019

اس صفحے کی تشہیر