پُراتن اردو شاعری وچ پنجابی شبداں دا اُدھارن - Examples of Punjabi words in classical Urdu poetry

الف نظامی

لائبریرین

پُراتن اردو شاعری وچ پنجابی شبداں دا اُدھارن​

ਪੁਰਾਤਨ ਉਰਦੂ ਸ਼ਾਇਰੀ ਵਿਚ ਪੰਜਾਬੀ ਸ਼ਬਦਾਂ ਦਾ ਉਧਾਰਨ​

Examples of Punjabi words in classical Urdu poetry

پہلاں پنجابی شاعراں دے شعراں دیاں چند مثالیں جنہاں وچ شبد کیتا ورتیا اے
ਪਹਿਲਾਂ ਪੰਜਾਬੀ ਸ਼ਾਇਰਾਂ ਦੇ ਸ਼ਿਅਰਾਂ ਦਿਆਂ ਚੰਦ ਮੱਸਾ ਲੀਨ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਵਿਚ ਸ਼ਬਦ ਕੀਤਾ ਵਰਤਿਆ ਏ

دمودر (1568ء-1486ء)
اوتھے کیتا رہن دمودر ، اوہ دستی خوش آئی
چوچک نوں جو ونج ملیاسے ، نالے کندی تائیں
چوچک بہوں دلاسا کیتا، تاں دلگیری لاہی
آکھ دمودر ہویا دلاسہ، ہٹی اُتھے بنائی

وارث شاہ ( 1722ء – 1798 ء):
شکر گنج نے آن مکان کیتا
دکھ درد پنجاب دا دُور ہے جی

ہنڑ کجھ اردو شاعراں دے شعر ویکھو جنہاں وچ ایہہ شبد (کیتا / کیتے) آیا اے۔
ਹਨੜ ਕੁੱਝ ਉਰਦੂ ਸ਼ਾਇਰਾਂ ਦੇ ਸ਼ਿਅਰ ਵੇਖੋ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਵਿਚ ਇਹ ਸ਼ਬਦ (
ਕੀਤਾ / ਕੀਤੇ) ਆਇਆ ਏ।


محمد قلی قطب شاہ: ( 1566ء - 1611ء )
نبی صدقے (قطب شاہ) دل میں کیتا
محبت حیدر کرار احداث
کلیات سلطان محمد قلی قطب شاہ ، صفحہ 56
-
سکی کا حسن کیتا جذب مولود
اسی تے مج ہے مجذوباں سوں اخلاص

عبد اللہ قطب شاہ (1614ء)
مجھ سوں بچھر پیا کیوں دو تن کے آج گھر گئے
کیتے سو قول شطاں یک بارگی بسر گئے

آبرو شاہ مبارک (1685ء–1733ء)
گناہ گاروں کی عذر خواہی ہمارے صاحب قبول کیجے
کرم تمہارے کی کر توقع یہ عرض کیتے ہیں مان لیجے

عبدالوہاب یکروؔ: ( ? - 1165ھ)
دل کو مژگاں نیں لے کے پنجے میں
کام کیتا ہے شاہبازی کا

علیم اللہ:
نکو نصیحت کرو عزیزاں نگا ہے ہمنا مہن سوں میتا
تجا ہوں میں ریت سب جہاں کی جدھاں پیا سوں پریت کیتا

یار کے کوچے مین جو کیتا مقام
نہیں ہوا محتاج کسکے دار کا
(دیوانِ علیم اللہ ، صفحہ 4 )
 
آخری تدوین:

الف نظامی

لائبریرین
قلی قطب شاہ دی ہک غزل دی ردیف ای پنجابی شبد کیتا اے
ਕੱਲੀ ਕੁਤਬ ਸ਼ਾਹ ਦੀ ਹਿੱਕ ਗ਼ਜ਼ਲ ਦੀ ਰਦੀਫ਼ ਈ ਪੰਜਾਬੀ ਸ਼ਬਦ ਕੀਤਾ
یاد مُج اُس رات کا دیوانہ کیتا
وونھنا مُج خواب میں افسانہ کیتا


رات میرے نین مُج سونے نہ دیویں
او ہَمَن گھر میں نِپَٹ ویرانہ کیتا

کم نکو کر یا خدا اُس زلف کے تئیں
مُج دل آزادی بدل آں شانہ کیتا

شمع مہمان جیوں کرے پروانہ کوں اب
مرغِ بسمل بُھونکر پروانہ کیتا

جیو میرا اُس پری کے نیہہ سوں مِل
عقل و ہوش سدا مرا بے گانہ کیتا

میں نہ جانوں کیوں اچھے گی حورِ جنت
حُسن تیرا مُج عجب دیوانہ کیتا

اب پُچھے گا قطبِ معنی حال کیوں
قبلہ کوں اس کام میں میخانہ کیتا
کلیات سلطان محمد قلی قطب شاہ ، صفحہ 22
 
آخری تدوین:

الف نظامی

لائبریرین
حافظ برخوردار(1658 – 1707)
کانواں جنڈ تے بیٹھیا کتنی عمر گئی
عرض نہ منّی رب وے ہو بیزار کہی
بھین بھائی سبھ چھڈ گئے کِسے نہ سُدھ لئی

ہور پنجابی شبد :
دستا:
میں نہ جانوں کعبہ و بت خانہ و میخانہ کوں
دیکھتا ہوں ہر کہاں دِستا ہے تج مُکھ کا صفا
صفحہ 16

میرے جیو آرسی میں خیال تُج مکھ کا سو دِستا ہے
کرے او خیال مُنج دل میں نشانی زرفشانی کا
صفحہ 17

توں:
پڑے دنبال میں میرے سو اُس نیناں کے دنبالے
خدایا عشق مشکل ہے بھرم رکھ توں معانی کا
صفحہ 16
توں ، بیٹھیا:
برہ کی تاب تھے مُنج کوں خدایا توں سلامت رکھ
تمن امید سوں بیٹھیا ہوں بھیجو لطف کا بارا
صفحہ 19

کوڑ ، کدھیں ، بسیا:
نہیں عشق جس وہ بڑا کوڑ ہے
کدھیں اُس سے مِل بسیا جائے نا
صفحہ 23

پرگٹ، ہووے گا، بھریا:
جاگا سو ہریکس کا ہووے گا آج پرگٹ
او چھند بھریا سو چندا ابیٹھن صدارت آیا
صفحہ 24
 
آخری تدوین:

الف نظامی

لائبریرین
آکھو:
تیرے تل ہیں میرے دل کنٹھال کے موتی صحی
کرتا ہوں تسبیح اس موتیاں کا تم آکھو حدیت
کلیات سلطان محمد قلی قطب شاہ ، صفحہ 64

کیتا:
کون شعلہ تھا کیتا رخ جو مج من
کہ عاشق غیر عاشق کوں جو نابوج
کلیات سلطان محمد قلی قطب شاہ ، صفحہ 65

ویکھیا:
گنوانے غم گیا میں باغ میں ویکھیا عجائب کچھ
پیا کے پاوں پڑنے تیں ہوئے ہیں پھول ڈالاں کچ
کلیات سلطان محمد قلی قطب شاہ ، صفحہ 70
 
Top