پتہ کرو: عمران خان نیازی نے پھر اپنی ناقص علمی کا مظاہرہ کردیا؟

فاخر نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 12, 2019

  1. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    14,166
    جھنڈا:
    Pakistan
    جھوٹ!!!
     
    • متفق متفق × 1
  2. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    14,166
    جھنڈا:
    Pakistan
    بے کار ہے!!!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    14,166
    جھنڈا:
    Pakistan
    یعنی علم کے اعتبار سے ایک ہل چلانے والا اور ایک مفتی برابر کی حیثیت سے دینی مسائل حل کرسکتے ہیں؟؟؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    ارے سید صاحب، زحمت کیسی آپ حکم فرمائیں۔ آپ شاید اس تھریڈ کا ذکر فرما رہے ہیں۔

     
    • متفق متفق × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    تحریک پاکستان میں مسلمانوں کے علاوہ ہندو، مسیحی، قادیانی اور دیگر اقلیتی لیڈران نے بھی اپنا حصہ ڈالا تھا۔ پاکستان بننے کے کچھ عرصہ بعد ہی ایک ایسی قرارداد سامنے لائی جس میں اقلیتی مذاہب کو ثانوی حیثیت دے دی گئی۔
    یعنی ملک میں قانون سازی کا آغاز ہی ناانصافیوں سے ہوا تھا۔ ایسے میں وہ اقلیتی لیڈران جنہوں نے تحریک پاکستان کا ساتھ دیا تھا کا پاکستان میں مزید رہنے کا جواز نہیں بنتا تھا۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  6. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    یہودیوں کی قربانیوں کا ذکر کرنا شاید آپ بھول گئے۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • متفق متفق × 1
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    بھارت سے متعلق مسلمانان ہند کا خیال تھا کہ وہاں ہندو اکثریت کی وجہ سے ان کی آواز دبا دی جائے گی۔
    پاکستان بنتے ساتھ وہی کام غیر مسلم اقلیتوں کے ساتھ یہاں شروع کر دیا گیا۔ یوں بھارت و پاکستان کا فرق خود ہی مٹا دیا۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  8. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    ڈکلیئر کرنے والے کون تھے؟ مسلم اکثریت ارکان اسمبلی۔
    بھارت میں جب ہندو اکثریت ارکان اسمبلی مسلم اقلیت کے خلاف قانون سازی کرتے ہیں تو آپ کو مرچیں کیوں لگ جاتی ہیں کہ یہ نا انصافی و خلاف شریعت اقدام ہیں؟
     
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    کوئی بھی مذہب زور زبردستی نافذ ہی کیوں کیا جائے جب آئین پاکستان ہر شہری کو مذہبی آزادی کی مکمل اجازت دیتا ہے؟
    ایک طرف مذہبی آزادی اور دوسری طرف ملک میں اسلام کا نفاذ ایک ساتھ نہیں چل سکتا۔ آپ کو ان میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنا پڑے گا۔
     
  10. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    کہاں آواز دب گئی بھائی!

    ایک رُکن کو نظر انداز کر دو تو محفل سونی ہو جاتی ہے ۔ ساری آوازیں اور سب شور و غوغا اقلیتوں اور اُن کے حمایتیوں کا ہی تو ہے۔
     
  11. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    یہ سچ ہے کہ عمرانی نظریہ اسلامی فلاحی ریاست اور علما کرام کا نظریہ اسلامی شرعی ریاست دو بالکل مختلف چیزیں ہیں۔
    علما کرام کے نزدیک پاکستان میں شرعی قوانین کا نفاذ کر دینے سے ملک جنت نظیر اسلامی معاشرہ بن جائے گا جس کی پوری دنیا مثالیں دے گی۔ جبکہ وہ یہ نہیں بتاتے کہ یہی کام دیگر ممالک جیسے ایران اور سعودیہ میں ہو چکا ہے۔ جہاں پورا پورا قانون شریعت پر چل رہا ہے۔ اس کے باوجود کیا وہ معاشرے کسی تعریف کے قابل ہیں؟ انسانی حقوق کی جتنی خلاف ورزیاں سعودیہ اور ایران میں ہوتی ہیں وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں۔
    جبکہ عمرانی نظریہ کے مطابق اسلامی فلاحی ریاست شرعی قوانین لاگو کر کے نہیں بلکہ اسلامی اصول انصاف جو میثاق مدینہ اور ریاست مدینہ میں دنیا نے دیکھے تھے۔ ان کی بنیاد پر امور ریاست و مملکت چلانا ہے۔
     
  12. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    حکومتی جماعت تحریک انصاف کے ہندو رکن اسمبلی رمیش کمار نے دو بار شراب پر پابندی سے متعلق قانون سازی کی کوشش کی۔ اور دونوں بار ان کی اپنی جماعت کے پکے مسلم ارکان نے اقلیت ہونے کے طعنے دیے اور بل کی مخالفت کی۔
    پاکستان میں مسیحی اقلیت سے تعلق رکھنے والی آسیہ مسیح ۹ سال توہین رسالت کے الزام میں جیل میں سڑتی رہی اور بالآخر با عزت بری کر دی گئیں۔ لیکن بات یہاں ختم نہیں ہوئی۔
    لبیک یا رسول اللہ کے علما کرام نے ملک کی سب سے بڑی عدالت کا فیصلہ ماننے سے صاف انکار کر دیا۔ اور سڑکوں پر نکل کر فوج اور ججوں کو دھمکیاں دی۔ کہا آرمی چیف کے خلاف بغاوت کر دو۔ ججوں کی گردنیں اڑا دو۔
    آج بھی توہین رسالت کے تقریباً تمام کیسز اقلیتوں کے خلاف ہی بنتے ہیں۔
     
  13. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    پہلے جماعتی سطح پر بات کرنی چاہیے تھی اُنہیں ۔

    عمران خان قرارداد پیش کریں تو لوگ انکار نہیں کریں گے۔ :)
     
  14. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    عمران خان پاکستان کو اسلامی شرعی ریاست نہیں بلکہ فلاحی ریاست جو اسلامی اصول انصاف پر چلتی ہے بنانا چاہتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ان کی کسی مذہبی جماعت سے نہیں بنتی جو دراصل شرعی قوانین کا نفاذ چاہتی ہیں۔
     
  15. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کسی بھی مسلم ملک کا قانون آپ کے نزدیک قابل تعریف ہو ہی نہیں سکتا ۔
    آپ کے نزدیک جن مغربی ممالک کے قوانین قابل تعریف ہیں یقین مانیں وہ ان سے بھی گئے گزرے ہیں ۔
     
  16. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کیسی کمال سوچ ہے کہ اسلام میں سے صرف اپنی پسند کی چیزیں چُن کر صرف ان کی بات شروع کر دیں اور غامدیت کی طرح جو پسند نہیں اسے اسلام سے ہی نکال دیں ۔ مطلب آپ اسلام چاہتے ہیں لیکن اپنی مرضی کا نہ کہ اللہ اور اس کے رسول ﷺ کی مرضی کا ۔
     
    • متفق متفق × 2
    • زبردست زبردست × 1
  17. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    حضرت علی کا قول ہے کفر پر قائم معاشرہ چل سکتا ہے لیکن ظلم و زیادتی پر نہیں۔
    مغربی معاشرے گو کفر پر قائم ہیں لیکن وہاں امیر و غریب کیلئے ایک قانون ہے۔ ہر اک کو یکساں نظام تعلیم اور مفت علاج میسر ہے۔ معاشرہ کے کمزوروں یعنی بچوں، بڑھوں اور خواتین کو خاص قانونی تحفظ حاصل ہے۔ کام کاج نہ ہونے کی صورت میں ریاست ہر شہری کی کفالت کی ذمہ داری اٹھاتی ہے۔ یتیموں، مسکینوں، بیواؤں، طلاق شدگان کو سرکاری خزانہ سے خاص مراعات دی جاتی ہیں۔
    کرپشن و بدعنوانی نہ ہونے کے برابر ہے۔ اگر کوئی مالی خرد برد کرتا پکڑا جائے تو خود ہی شرمندہ ہو کر استعفی دے دیتا ہے۔ ڈھیٹوں کی طرح ریاستی اداروں کو آنکھیں نہیں دکھاتا۔ اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ مغرب میں قومی چوروں کو ووٹ نہیں پڑتے۔
    ریاست کا ہر شہری اپنی استطاعت کے مطابق ٹیکس ادا کرتا ہے۔ ٹیکس چوری کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔
    اگر مغربی معاشرے آج خوشحال ہیں تو ان اسلامی اصول انصاف پر چلنے کی وجہ سے ہیں جو ریاست مدینہ کی پہلی اسلامی فلاحی ریاست میں رائج تھے۔
    پاکستانی معاشرہ میں یہ خوشحالی لانے کیلئے اسلامی شرعی قوانین کی نہیں بلکہ اسلام اصول انصاف لاگو کرنے کی ضرورت ہے۔ اور یہی عمرانی نظریہ ہے۔
     
  18. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    میرے بھائی جن مغربی ممالک کے قانون کی آپ مثالیں دیتے نہیں تھکتے اسی مغربی معاشرے میں عیسائی راہبائیں اپنی مرضی سے حجاب اور پورا لباس پہنتی ہیں اور انہیں مکمل تحفظ فراہم کیا جاتا ہے جب کہ مسلمان خواتین جن کی بات کی جائے تو انہیں حجاب پہننے سے منع کر دیا جاتا ہے اور اس پہ باقاعدہ اسمبلی میں قرارداد پاس کر کے اسے قانون کی شکل دے دی جاتی ہے ۔ یہ انصاف ہے ؟؟

    اسی مغربی معاشرے میں جہاں عورتیں سب سے زیادہ غیر محفوظ ہیں ۔ اسی معاشرے میں زنا بالجبر کی تعداد پوری دنیا سے زیادہ ہے ۔ جہاں آپ کے خیال کے مطابق قانون ہر ایک کے لیے یکساں ہے وہاں ایسے قانون کے ہوتے ہوئے بھی کسی کی ماں بہن بیٹی کی عزت محفوظ نہیں ہے ۔ جہاں عورت کی تذلیل کو اس معاشرے کا حسن سمجھا جاتا ہے ۔ یہ انصاف ہے ؟؟

    جہاں بچے کا نام اس کے والد کی بجائے اس کی والدہ کے ساتھ لکھا جاتا ہے کہ اس قدر اخلاقی گراوٹ کا شکار بے حس معاشرہ ہے کہ لاکھوں بچوں کو ان کے والد کا ہی نہیں پتہ ۔ یہ قانون اور انصاف ہے ؟؟

    جہاں کتوں کو ساتھ سلایا جاتا ہے لیکن بوڑھے والدین ایڑیاں رگڑ رگڑ کر بھی مر جائیں تو ان کا کوئی پرسان ِ حال نہیں ہے ۔ جہاں جانور کی تو عزت ہے لیکن انسان کی نہیں ہے ۔ یہ قانون اور انصاف ہے ؟؟

    جہاں ایک بد عقیدہ انسان مسجد میں آ کر پوری دنیا کے آنکھوں کے سامنے 51 نمازیوں کو لائیو شہید کرتا ہے لیکن اسے عدالت عدالتی کاروائی کے چکر میں اگلے ایک سال بعد کی پیشی کی تاریخ سناتی ہے ۔ یہ انصاف ہے ؟؟

    جہاں ایک انسان سے نفرت کی بنیاد پر پورے ملک کی اینٹ سے اینٹ بجا دی جاتی ہے اور لاکھوں بے گناہ معصوم بچوں اور عورتوں کو قتل کر دیا جاتا ہے ؟؟ یہ انصاف ہے ؟؟

    آپ کے اس بے مثال معاشرے کی لاکھوں مثالیں ہیں جہاں قانون اور انصاف منافقت کا لبادہ اوڑھے آپ جیسوں کی آنکھیں خیرہ کرتے نظر آتے ہیں ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  19. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    18,374
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    حسب معمول جاسم صاحب بحث کو اپنے من پسند رخ (یعنی الجھانا) کی طرف لے جا چکے ہیں ۔ یہ سب مراسلے بہت اچھے ہیں، لیکن کیا ان سے نصب شدہ وزیراعظم کی کم علمی سے ہوئی بے ادبی پر کوئی اثر پڑے گا؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    مغرب میں بھی انسان ہی بستے ہیں فرشتے نہیں۔ البتہ نسبتا مغربی معاشرے زیادہ خوشحال ہیں۔
    اپنا وطن کسے عزیز نہیں۔ لیکن معاشرتی بدحالی سے تنگ آکر جب انسان ہجرت کرتے ہیں تو پہلی کوشش مغرب ہی ہوتی ہے۔ کیونکہ سب کو معلوم ہے کہ یہاں عدل و انصاف کا بول بالا ہے۔ اگر ایسا نہ ہوتا تو لوگ مغرب ہجرت کرنے کی بجائے واپس پلٹ رہے ہوتے۔
    اوپر جو ناانصافی کی مثالیں آپ نے پیش کی ہیں وہ ایکسیپشن ہیں معمول نہیں۔ معاشروں میں خوشحالی کا ضامن عدل و انصاف ہی ہے۔ نہ کہ قوانین شریعت کی اندھی تقلید۔
    کیا یہ محض اتفاق ہے کہ جس ملک میں بھی قوانین شریعت کا نفاذ ہوتاہے وہاں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں شروع ہو جاتی ہیں؟ سعودیہ، ایران، افغانستان میں طالبان اور پاکستان میں ضیا دور کی زندہ مثالیں سب کے سامنے موجود ہیں۔ پھر بھی ڈھیٹ پن کا مظاہرہ کیا جاتا ہے مزید شریعت نافذ کرو۔
     

اس صفحے کی تشہیر