پتہ کرو: عمران خان نیازی نے پھر اپنی ناقص علمی کا مظاہرہ کردیا؟

فاخر نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 12, 2019

  1. ربیع م

    ربیع م محفلین

    مراسلے:
    3,581
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    کیا کہنے آپ کی نکتہ شناسی کے!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
  2. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    عارف کریم بھائی آپ تو کم از کم پڑھے لکھے فالوور ہیں ۔۔ آپ سے تو یہ توقع نہیں کہ دوسروں کے غلط کاموں کو کسی اور کے غلط کاموں کی توجیہہ بنا کر پیش کریں ۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    علمائے کرام کو عزت دینے کی کوئی لاجک نہیں ہے تو علمائے کرام کی عزت کو خراب کرنے کی بھی کوئی لاجک نہیں ہے ۔
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. عبدالقیوم چوہدری

    عبدالقیوم چوہدری محفلین

    مراسلے:
    18,374
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    یہ تو 'نقطہ' ہے، جڑوں میں بیٹھائے جانے کے لائق۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    یہ تو میں نے کہیں کہا ہی نہیں۔ میں نے یہ کہا تھا کہ اگر آج عمران خان لیاقت علی خان، بھٹو، ضیاء الحق دور کی طرح ان علما کرام کے تشریح کردہ اسلام کا نفاذ شروع کر دے تو یہی علما جو تنقید کر ر ہے ہیں اس کے سب سے بڑے حامی بن جائیں گے۔
    عمران خان جب ریاست مدینہ اور اسلامی فلاحی ریاست کی بات کرتے ہیں تو کسی کو کچھ سمجھ نہیں آتا۔ کیونکہ قوم کو جو ان علما کرام نے اس سے متعلق پڑھا رکھا ہے وہ عمرانی نظریہ سے مختلف ہے۔
     
  6. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    جاسم بھائی آپ کسی بھی فرقے ، کسی بھی مسلک کا اسلامی فلاحی ریاست کا نظریہ اٹھا کر دیکھ لیں ۔ کسی کا بھی اسلامی فلاحی ریاست کا نظریہ ناچ ، گانے ، فحاشی اور سودی نظام کے کندھوں پہ بیٹھ کر نہیں آتا ۔
     
    • متفق متفق × 2
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    واقعی۔ ملک میں اصل اسلامی فلاحی ریاست تو ضیا دور میں نافذ ہوئی تھی۔ جب بینکوں سے سودی نظام کا خاتمہ ہو چکا تھا ۔ ناچ، گانا، فحاشی کے اڈے ختم ہو چکے تھے۔ اسلامی شرعی حدود قوانین کا نفاذ ہو چکا تھا۔ آرڈیننس 20 کے تحت قادیانیوں پر شعائر اسلام استعمال کرنے کی پابندی لگ چکی تھی۔
    وہ دور واقعتا پاکستان میں جنت نظیر اسلامی معاشرہ کی تاریخی مثال تھا۔
     
  8. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ہائے ۔۔۔ پیڑاں ہور تے پھکیاں ہور
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  9. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ہر لڑی میں جاسم بھائی المعروف عارف کریم بھائی اپنی بے بسی ( آرٹیکل 20 ) کا رونا روتے نظر آتے ہیں ۔ کیا کریں بھائی آپ کے درد کا علاج یہاں ہے ہی نہیں ۔ :D
     
    • متفق متفق × 2
  10. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    یہ تاریخ پاکستان سے صرف چند مثالیں ہیں جو ثابت کرتی ہیں کہ اسلامی شرعی قوانین کا نفاذ کرکے بھی ملک اسلامی فلاحی ریاست نہ بن سکا۔ کیونکہ دنیا کے دیگر ممالک جہاں آج فلاحی ریاستیں قائم ہیں۔ وہاں اسلامی شریعت نافذ نہیں ہے۔ بلکہ وہاں اسلامی اصول انصاف پر سختی سے عمل ہوتا ہے۔ جیسے:
    • امیر اور غریب کیلئے ایک قانون کی حکمرانی
    • ٹیکس چوری، بدعنوانی پر سخت ترین سزا اور ریکوری
    • یکساں نظام تعلیم اور اعلی معیار تعلیم
    • مفت علاج اور عمدہ معیار علاج
    اگر یہ سب ضیا دور میں شرعی قوانین کے نفاذ کے بعد عوام کو میسر آگیا تھا تو پھر کسی نئے اسلامی فلاحی نظریہ کی ملک کو قطعی ضرورت نہیں ہے۔
     
  11. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    انصاف تو اس دور ِ حکومت میں بھی کہیں دور دور نظر نہیں آرہا ۔۔ سانحہ ساہیوال کے ذمہ داران کو آپ کے لاڈلے نے عبرت کا نشان بنانا تھا وہ بے چارے آج بھی رُل رہے ہیں ۔ کہاں کہاں کس کس کی مثال دوں نا انصافیوں اور انصافیوں کے کارناموں کی ؟؟ ایک لمبی لسٹ ہے بھائی ۔
     
  12. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    7,376
    موڈ:
    Asleep
    عارف کے مطابق دنیا دو گروہوں میں بٹی ہوئی ہے۔ ایک عمران خان کے پیروکار۔ اور دوسرے جو عمران خان کے پیروکار نہیں ہیں۔ دوسرے گروہ کو یہ نون لیگ سمجھتے ہیں۔ اب چاہے کوئی سفید فام امریکی بھی عمران خان کے گروپ میں نہ ہو اس کو بھی پٹواری سمجھا جائے گا اور اس کے سامنے نون لیگ کی خرابیوں پر مبنی دلائل سے بحث کی جائے گی۔
    مثال:
    زید:سائنسدان کہتے ہیں کہ دنیا گول ہے۔
    عارف: گول نہیں ہے، کیونکہ عمران خان کا چہرہ لمبوترا ہے اور نواز شریف کا چہرہ گول ہے۔ اور نواز شریف کو سپریم کورٹ نے نا اہل قرار دیا ہے اور وہ کرپٹ ہے۔ :LOL:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
  13. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    عمران خان کے حالیہ قوم سے خطاب کے مطابق ریاست مدینہ ۹ ماہ میں نہیں بنی تھی۔ اور اس زمانہ میں مسلمانوں کی کل تعداد چند ہزار سے زیادہ نہیں تھی۔ یہ تو ۲۰ کروڑ کا ملک ہے۔ اور اس کی ۷۰ سالہ بگاڑ کسی صورت اتنی جلدی ٹھیک نہیں ہو سکتی جتنی میں آپ توقع کر رہے ہیں۔
     
  14. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    23,068
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    :):):)

    جو "قائد" کا غدار ہے وہ موت کا حقدار ہے۔ :D
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    جس دور میں آرڈیننس ۲۰ آیا اسی دور میں شرعی حدود آرڈیننس بھی آیا تھا۔ کیا کسی کو یاد بھی ہے کہ اس آرڈیننس کی وجہ سے کتنی بے گناہ خواتین کو سالہا سال جیلوں میں ڈالا جاتا رہا کیونکہ وہ اپنے خلاف ریپ کا مقدمہ پولیس میں لے کر گئی۔ مگر شرعی قوانین کے تحت الٹا انہی کو مجرم بنا کر پیش کیا جاتا رہا۔
    اگر اس وقت انسانی حقوق کی تنظیمیں ان کے حق کیلئے آواز نہ اٹھاتی تو مشرف دور میں بھی حدود آرڈیننس جوں کا توں رہتا۔
    حیرت خیز طور پر اس وقت بھی علما کرام اور مذہبی جماعتوں نے حدود آرڈیننس میں ترامیم کی مخالفت کی تھی۔ حالانکہ پوری دنیا دیکھ رہی تھی کہ کیسے ان قوانین کی وجہ سے خواتین کے ساتھ ناانصافی ہو رہی ہے۔ مگر وہ بضد رہے۔
    اسی طرح حالیہ حکومت نے جب کمسن بچوں اور بچیوں کو تحفظ اور انصاف دلانے کی خاطر شادی کی کم سے کم عمر ۱۸ سال رکھنے کی کوشش کی تو علما کرام اور مذہبی جماعتوں کی طرف سے پھر وہی روایتی شور شرابے کا سامنا کرنا پڑا۔
    اس تسلسل سے یہی ثابت ہوتا ہے کہ علما کرام اور ان سے منسلکہ مذہبی جماعتوں کو معاشرتی انصاف سے بالکل کوئی غرض نہیں ہے۔ اگر غرض ہے تو صرف اس سے کہ ان کی تشریح کے مطابق ملک میں اسلامی قوانین کا نفاذ ہو رہا ہے یا نہیں۔
    اگر آج عمران ناانصافی پر مبنی آرڈیننس ۲۰ ختم کردے تو علما کرام اور مذہبی جماعتیں پھر اپنی گھسی پٹی تاریخ دہرائیں گے۔
     
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  16. ابوعبید

    ابوعبید محفلین

    مراسلے:
    275
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    آپ کی بات سے اتفاق کرتا ہوں کہ ضروری نہیں انسان یوتھیا ہو یا پٹواری ، وہ سمجھدار بھی ہو سکتا ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  17. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    باالفاظِ دیگر، دلیل سے عاری تقلید۔
     
    • متفق متفق × 1
  18. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بھائی جہاں تک فوج کو بغاوت اور قتل پر اُکسانے کی باتیں ہیں تو کسی عالم کا بغیر دلیل کی کوئی بھی بات قابلِ قبول نہیں ہوتی۔ جس طرح ایک سائنسدان کی غلطی کی بنیاد پر پورے سائنسی طبقے کو موردِ الزام نہیں ٹھہرایاجاسکتا اسی طرح کچھ علما کی وجہ سے پورے علما طبقے کو نشانہ بنانا غلط اور قابلِ مذمت ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  19. آصف اثر

    آصف اثر معطل

    مراسلے:
    3,060
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    کیوں کہ
     
  20. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    27,657
    اچھا پھر ان چنیدہ علما کرام کا نام ہی بتا دیں جنہوں نے قرار داد مقاصد، قادیانیوں سے متعلق آئینی ترامیم، اسلامی حدود آرڈیننس وغیرہ کی مخالفت کی ہو۔ تاکہ علما کرام سے متعلق اعتماد بحال ہو سکے۔
     

اس صفحے کی تشہیر