رئیس امروہوی يہ کیسا گيت ہے اے نے نوازِ عالمِ ہُو - رئیس امروہوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 20, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,112
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    يہ کیسا گيت ہے اے نے نوازِ عالمِ ہُو
    کہ نَے سے راگ کے بدلے ٹپک رہا ہے لہو

    بہارِِ صبح کے نغمہ گروں کو کيا معلوم
    گزر گيا گل و ریحاں پہ کيا عذابِ نمو

    اگر نقاب اُلٹ دے تو کيا قيامت ہو
    وہ جانِ گل کہ کبھی رنگ ہے کبھی خوشبو

    مئے نشاط انڈيلی تھی ميں نے ساغر ميں
    کہاں سے آئی يہ زہرِ غمِ حيات کی بُو

    ہوائے صبح نہ جانے کہاں سے آئی ہے
    مچل رہی ہے فضا ميں اک اجنبی خوشبو

    جہاں جو وجد ميں آتا ہے نعرۂ ہُو سے
    عجب نہيں کہ جہاں ہو خود ايک نعرۂ ہُو

    ميں ايک قطرہ لہو سے اميد کيا رکھوں
    يہ کائنات ہے کيا صرف ايک قطرہ لہو

    تمہيں شکستہ دلوں کا خيال ہی تو نہيں
    خيال ہو تو کرم کے ہزار ہا پہلو

    کسی کی بات ميں تيرے سکوت ميں اعجاز
    کسی کے لطف ميں تيرے گريز ميں جادو

    سزائے ہجر لرزتا ہے جس سے قلبِ حيات
    مجھے قبول بشرطيکہ اس کا اجر ہو تُو

    متاعِ غم ہے کسی کو بہت عزيز اے دل
    بہ احتياطِ محبت ميں صرف کر آنسو

    بہت خجل ہوں تری آستينِ لطف سے ميں
    کہ جوشِ غم تو وہی ہے مگر کہاں آنسو

    شگفتگی کو ٹٹولا فسردگی پائی
    مسرتوں کو نچوڑا ٹپک پڑے آنسو

    يہ حادثاتِ شب و روز بے سبب تو نہيں
    بدل رہا ہے کوئی خوابِ ناز سے پہلو
    رئیس امروہوی
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 20, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,351
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت خوب انتخاب
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,112
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    بہت محبت :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر