وسعت اللہ خان کا کالم بات سے بات: انڈین کسان آندولن اور پاکستانی سینیٹ

سیما علی نے 'صحافت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 8, 2021

  1. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool


    وسعت اللہ خان کا کالم بات سے بات: انڈین کسان آندولن اور پاکستانی سینیٹ

    • وسعت اللہ خان
    • تجزیہ کار
    7 فروری 2021
    [​IMG]
    انڈین کسان آندولن اور پاکستانی سینیٹ کے مجوزہ انتخابات میں کیا قدرِ مشترک ہے ۔یہ جاننے سے پہلے دوطرفہ نفسیات سمجھنے کی ضرورت ہے۔

    مودی حکومت زرعی شعبے میں نجی سرمایہ کاری بڑھانا چاہتی ہے اور زرعی اشیا کو کھلی منڈی کے طلب و رسد کے اصول پر خوبخود ریگولیٹ ہونے کی آزادی دینا چاہتی ہے۔

    اس بابت جو تین قوانین نافذ کیے گئے ہیں ان کے بارے میں حکومت کہتی ہے کہ اب کسان اپنی مرضی سے حکومت اور نجی خریداروں سمیت جسے چاہیں اپنی پیداوار فروخت کر کے خوشحال ہو جائیں گے۔

    مگر کسان چونکہ سرکار جتنے ’عقل مند‘ نہیں اس لئے وہ سمجھتے ہیں کہ ان قوانین کا مقصد صحت مند اصلاحات سے زیادہ زراعت کو نجی کارپوریٹ سیکٹر اور کارٹیل کے رحم و کرم پر چھوڑنا ہے۔

    کسان خوشحال تو خیر کیا ہوں گے ان کی موجودہ حالت بھی ساہوکار کے رحم و کرم پر ہو جائے گی اور سرمایہ دار اس محتاجی کا بھرپور فائدہ اٹھائے گا جیسے بلیک اینڈ وائٹ فلموں میں مکھیا، بنیا اور زمیندار اٹھاتا تھا یعنی کسان جدید جاگیرداری نظام کے غلام بنا دیے جائیں گے۔


    یہاں تک تو ٹھیک ہے مگر گڑبڑ تب شروع ہوتی ہے جب حکومت کسانوں کی سنے بغیر پہلے قوانین مسلط کر دے اور پھر بضد ہو جائے کہ چاہے کچھ بھی ہو جائے ہم تمہیں ان قوانین کے تحت خوشحال بنا کر ہی دم لیں گے، تم نادان پینڈو ہو اپنا اچھا برا نہیں سمجھتے، ریاست تمہاری مائی باپ ہے، وہ تمہارے لیے کیسے برا سوچ سکتی ہے۔

    اگر یہ کسان میری نسل کے سعادت مند بچے ہوتے تو مائی باپ انھیں مار پیٹ کر کب کا سیدھا کر دیتے مگر یہ نئی نسل کے منہ پھٹ بچے ہیں جو مار پیٹ کے بجائے دلیل اور مباحثے سے قائل ہونے پر یقین رکھتے ہیں۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہEPA

    وہ مزید بدظن ہو جاتے ہیں اگر والدین کے دائیں ہاتھ میں دودھ کا پیالا اور بائیں ہاتھ میں ڈنڈا ہو۔ ان بچوں کی سمجھ میں نہیں آتا کہ ان سے کیوں کہا جا رہا ہے کہ اگر دودھ نہ پیا تو تشریف لال کر دی جائے گی، بچہ فوراً سوچتا ہے کہ دودھ میں کہیں نیند کی دوا تو نہیں ملا دی گئی؟

    چونکہ ہمارے جیسے سماجوں میں ریاست بالخصوص بنا مطلب کے کبھی جنتا پر مہربان نہیں ہوتی۔ اس لئے جب ریاست کسی خاص معاملے میں ماں سے زیادہ چاہت دکھاتی ہے تو پھاپا کٹنی کہلاتی ہے۔ اسی لئے اس طرح کے فلمی جملے کروڑوں لوگوں کو یاد رہ جاتے ہیں کہ ’تھپڑ سے نہیں پیار سے ڈر لگتا ہے صاحب۔‘

    اور اسی لیے اس طرح کے شعر بھی مقبول ہوتے ہیں:

    عزیز اتنا ہی رکھو کہ جی سنبھل جائے

    اب اس قدر بھی نہ چاہو کہ دم نکل جائے ( عبید اللہ علیم )

    جتنی فکر مودی حکومت کو کسانوں کا مستقبل روشن کرنے کی ہے، لگ بھگ اتنی ہی فکر عمران حکومت کو سینیٹ کی ووٹنگ شفاف کرنے کی ہے۔

    اصولی طور پر کسان کی خوشحالی کی طرح جمہوری شفافیت کا بھی کوئی مخالف نہیں مگر بات تب بگڑتی ہے جب معیشت و خارجہ پالیسی سمیت دیگر کلیدی معاملات کو سلٹانے میں اتنی عجلت نظر نہیں آتی جتنی پھرتیاں سینیٹ کا قبلہ درست کرنے کے لیے دکھائی جاتی ہیں اور وہ بھی پولنگ سے چند روز پہلے۔

    اس سرکاری بھاگ دوڑ کے نتیجے میں فرقہ ِشکیہ کے کان کھڑے ہو جاتے ہیں کہ ایسی کیا قیامت ٹوٹ پڑی کہ سرکار ایک جانب تو سینیٹ میں کھلی ووٹنگ کا آئینی ترمیمی بل قومی اسمبلی میں لے آئی۔ حالانکہ حکومت اچھے سے جانتی ہے کہ اس وقت حزبِ اختلاف سے اس کے تعلقات جس پاتال میں ہیں اس کے ہوتے آئینی ترمیم کے لئے مطلوبہ دو تہائی اکثریت کا انتظام تقریباً ناممکن ہے۔

    ساتھ ہی ساتھ سرکار نے اس معاملے پر رولنگ مانگنے کے لیے سپریم کورٹ کا دروازہ بھی کھٹکھٹا دیا۔ بے صبری کی انتہا یہ کہ عدالتی رائے کا انتظار کئے بغیر راتوں رات ایک صدارتی آرڈیننس کے زریعے کھلی ووٹنگ کا ہدف حاصل کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

    گویا ایک شفاف اصلاحی عمل کو عمران حکومت نے اپنی مثالی ’فہم و فراست‘ سے جلیبی کی طرح سیدھا کر دیا۔ تو کیا واقعی حکومت سینیٹ کو انتخابی منڈی بننے سے روکنا چاہتی ہے؟

    اس کا جواب بھی حکومتی وزرا نے خود ہی دے دیا کہ ہم دراصل قوم کو یہ دکھانا چاہتے ہیں کہ کون سینیٹ کے انتخابات میں ووٹوں کی خرید و فروخت کا حامی ہے اور کون اس روایت کو ختم کرنا چاہتا ہے۔ گویا اس مشق کا مطلب اصلاح سے زیادہ مدِ مقابل کو ذلیل و رسوا کرنا ہے۔

    مورل آف دی سٹوری: جس طرح مودی سرکار زراعت کو نجی شعبے کے لئے کھول کر کسان کو بالجبر خوشحال بنانا چاہ رہی ہے اسی طرح عمران حکومت حزبِ اختلاف کی ناک انتخابی عمل کے شیشے پر رگڑوا کر اسے چمکانا چاہ رہی ہے۔

    پشتو کی ضرب المثل ہے ’نرمی سے تم مجھے جہنم میں دھکیل سکتے ہو مگر زبردستی جنت میں بھی نہیں لے جا سکتے۔‘
    انڈین کسان آندولن اور پاکستانی سینیٹ - BBC News اردو
     
    • زبردست زبردست × 1
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  2. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    جاسم محمد تبصرہ چاہیے پاکستانی سیاہ ست کے تناظر میں :)
    :):)
    ثمین زارا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. ثمین زارا

    ثمین زارا محفلین

    مراسلے:
    878
    وسعت اللہ خان نے ایک بےکار موازنہ کیا ہے ۔ ایپلز کا اورنجز سے مقابلہ کرنے کی کوشش کی ہے ۔ دونوں دو علیحدہ مسئلے ہیں ۔ وسعتاللہ خان بی بی سی وغیرہ کے لیے کالمز لکھتے ہیں اور پاکستان کے معاملات پر ایسی ہی بے تکی منطق کا اظہار کرتے ہیں ۔ پی ٹی آئی کے بیس لوگ پانچ پانچ کروڑ روپے لینے کی وجہ سے پہلے نکالے گئے تھے اور اس وقت بھی عمران خان نے یہی کہا تھا کہ اقتدار میں آ کر خفیہ ووٹنگ کو ختم کریں گے ۔ اس میں اپوزیشن کی بے عزتی کیسے ہو گئی ۔ اصل میں پی ڈی ایم خریدو فروخت کو جاری رکھنا چاہتی ہے کہ ان کو ایسی ہینکی پینکی سوٹ کرتی ہے ۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,827
    اور پھر اسی صوبہ سے تحریک انصاف دو تہائی ووٹ لے کر جیتی۔ اس وقت لفافے اپوزیشن کی بی ٹیم بنے ہوئے ہیں۔
     
    • متفق متفق × 2
  5. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    وسعت اللّہ خان کے لاتعداد کالم ہیں جو جنابِ وزیرِ اعظم کی پالیسیوں کی تعریفیں کرتے نہیں تھکتے لیکن تنقید برداشت کا حوصلہ ہی کامیابی کی شان ہے اس میں ایسا کچھ غلط نہیں آپ جن ماننے والے ہیں او ریاست مدینہ کا خشوع و خضوع سے ذکر کرتے ہیں۔۔۔اُنہوں کسی کو بے عزت کرکے زیر نہیں کیا، آپکی رائے مختلف ہوسکتی ہم بھی چوروں اور ڈاکوؤں سے نفرت کرتے ہیں پر ہمیں ہر وقت زیب نہں دتیا کہ ایک وزارت عظمیٰ کا قلمدان اپنے پاس رکھ کر ایک اسڑیٹ لینگو یج استعمال کریں۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏فروری 8, 2021
    • زبردست زبردست × 1
  6. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بے شک اس میں دو رائے نہیں ہوسکتیں
     
    • متفق متفق × 1
  7. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,495
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اس کے بعد سے میں نے دوسری جماعت کا قاعدہ تو نہیں دیکھا۔ البتہ اگر آج بھی یہ قاعدہ مروج ہے تو یقیناً اس میں لکھا ہوگا ’ہمارے وزیرِ اعظم کا نام عمران خان ہے۔ وہ ایک بیدار مغز شخصیت ہیں۔ انہیں ہر وقت ملکی تعمیر و ترقی کا خیال رہتا ہے۔ پاکستان ان کی قیادت میں مسلسل ترقی کر رہا ہے۔‘

    اس بھیڑ چالی درسی قاعدے سے قطع نظر ہر حکومت کی طرح موجودہ حکومت کی بھی نیت صاف ہے منزل بھلے آسان نہ ہو۔

    جب خان صاحب جولائی دو ہزار اٹھارہ میں برسرِاقتدار آئے تب تک سابق حکومتیں پاکستان کی فلاح و بہبود کے لیے نوے بلین ڈالر کے غیر ملکی قرضے لے چکی تھیں۔ پچھلے ڈھائی برس میں گذشتہ غلط پالیسیوں کو ڈھا کے نیا پاکستان بنانے کے لیے مزید چوبیس ارب ڈالر کا قرضہ لیا جا چکا ہے۔ یعنی قومی بجٹ میں کل ملا کے سود سمیت تقریباً گیارہ ارب ڈالر سالانہ ان قرضوں کی واپسی کے لیے مختص کرنا پڑ رہے ہیں۔

    گویا تمام قومی بجٹ سود، دفاع اور انتظامی اخراجات کی مد میں کم و بیش برابر ہو جاتا ہے۔

    اس شیطانی چکر سے نکلنے کے لیے موجودہ حکومت سرتوڑ کوششیں کر رہی ہے۔ گیس اور بجلی پر سبسڈی مسلسل کم کی جا رہی ہے۔ ٹیکس نیٹ میں زیادہ سے زیادہ کمپنیوں اور افراد کو لانے کی کوشش ہے۔ بیمار اور خسارہ زدہ اداروں کو ختم کیا جارہا ہے یا آپس میں ضم کیا جارہا ہے تاکہ اخراجات کم سے کم ہو سکیں۔
    ایک سو سڑسٹھ روپے انچاس پیسے کی قومی ترقی - BBC News اردو
     
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر