وزیر مذہبی امور کی قادیانیوں کو اقلیتی کمیشن میں شامل کرنے کی تردید

جاسم محمد نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 30, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    پاکستان
    30 اپریل ، 2020
    وزیر مذہبی امور کی قادیانیوں کو اقلیتی کمیشن میں شامل کرنے کی تردید
    [​IMG]
    حکومت سے کسی بھی غیر آئینی غیر دستوری عمل کی توقع نہیں کی جانی چاہیے، نور الحق قادری ،فوٹو:فائل

    وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نور الحق قادری نے قادیانیوں کو اقلیتی کمیشن میں شامل کرنے کی تردید کردی۔

    نورالحق قادری نے ایک بیان میں کہا ہے کہ قادیانیوں کو اقلیتی کمیشن میں شامل کرنے سے متعلق خبر بے بنیاد ہے۔

    ان کا کہنا ہے کہ حکومت پاکستان ایسی خبروں کی سختی کے ساتھ تردید کرتی ہے کہ قومی اقلیتی کمیشن میں قادیانیوں کی شمولیت کافیصلہ کیاگیا ہے۔

    وفاقی وزیر مذہبی امور کا کہنا تھاکہ قادیانی آئین اور دستور پاکستان کے مطابق غیر مسلم ہیں اور حکومت پاکستان کا مؤقف واضح ہے کہ کسی بھی گروہ کو اسی صورت آئینی اور دستوری اداروں میں شامل کیا جا سکتا ہے جب وہ آئین اور دستور کو تسلیم کریں۔

    نور الحق قادری نے مزید کہا ہےکہ پاکستان کا آئین اور دستور برتر ہے، پوری قوم اور حکومت اسی آئین اور دستور کے تابع ہے، حکومت سے کسی بھی غیر آئینی غیر دستوری عمل کی توقع نہیں کی جانی چاہیے۔
     
  2. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    آپ کی کیا رائے ہے اس حوالے سے؟

    کیا انہیں اقلیتی کمیشن کا حصہ بنانا چاہیے؟

    جاسم محمد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    آئین پاکستان میں قادیانی غیرمسلم اقلیت قرار ہیں۔ اس لئے ان کو کمیشن کا حصہ بنانا چاہئے۔ باقی ان کی مرضی ہے وہ اس میں اپنا نمائندہ بھیجتے ہیں یا نہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  4. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    15,589
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    جو طریقہ واردات نون لیگ کے دورمیں تھا وہی موجودہ تحریک انصاف کی حکومت میں ہے۔
    خواجہ آصف نے اس وقت جو کہا تھا کہ "وی آر مور لبرل دن پی ٹی آئی" آج اس کی وجہ سمجھ آئی کہ قادیانیوں کی طرف سے دونوں جماعتوں پر انویسٹمنٹ کی گئی تھی کہ ایک جماعت ناکام ہو تو پھر دوسری سیاسی جماعت کو استعمال کیا جائے۔

    لیکن حکومت میں موجود سیاسی جماعت پہلے تبدیلی کرتی ہے پھر عوام کے دباو پر اسے تردید کر نا پڑتی ہے کہ ایسا کچھ تھا ہی نہیں اور کلیریکل ایرر کی وجہ سے ایسا ہوا۔
    عوامی امنگوں کو نظر انداز کر کے کیا جانے والے فیصلے کا یہی حشر ہوتا ہے کہ تردید کرنی پڑتی ہے :):) :)

    مذہبی جماعتوں کو سیاست میں مزید ایکٹو ہوجانا چاہیے اور مشترکہ سیاسی فورم کو مضبوط کرنا چاہیے تا کہ کسی غیر مذہبی سیاسی جماعت کو کھل کھیلنے کا موقع نہ ملے۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 1, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    اس الزام کا کوئی ثبوت؟ حوالہ؟
     
  6. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,146
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    الف نظامی بھائی آپ کا تبصرہ اس موضوع کے حساب سے تو درست ہوگا ہی، جنرل اصول کے طور پر زبردست ہے۔

     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    [​IMG]
     
  8. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    15,589
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    ہم حکومت سے درخواست کرتے ہیں کہ عارف کریم کو ثبوت فراہم کیے جائیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    حکومت کے پاس ثبوت ہوں گے تو دیں گے ۔۔۔
     
  10. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    یہ کس قسم کی بکواس ہے؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  11. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    کچھ اس قسم کی بکواس ہے:

    وزارت مذہبی امورکی اقلیتی کمیشن میں قادیانیوں کو شامل نہ کرنے کی تجویز
    ویب ڈیسک جمع۔ء 1 مئ 2020
    [​IMG]
    کابینہ ڈویژن کو بھجوائی گئی سمری کے مطابق 17 رکنی کمیشن میں 9 اقلیتی ارکان شامل ہوں گے، فوٹوفائل


    وزارت مذہبی امور نے اقلیتی کمیشن قائم کرنے کے لیے کابینہ ڈویژن کو سمری بھجوادی جس میں قادیانیوں کو کمیشن میں شامل نہ کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔

    وزارت مذہبی امور کی جانب سے کابینہ ڈویژن کو بھجوائی گئی سمری کے مطابق 17 رکنی کمیشن میں 9 اقلیتی ارکان شامل ہوں گے۔ اسلامی نظریاتی کونسل کے سربراہ قبلہ ایاز بھی کمیٹی کے ممبر ہوں گے۔ کمیشن میں بادشاہی مسجد کے خطیب مولانا عبدالخبیر آزاد اور مفتی گلزار احمد نعیمی بھی شامل ہوں گے۔

    سمری میں ہندو برادری کے تین ارکان جے پال چھابریا وشو راجہ قوی اور چلا رام کلوانی کا نام تجویز کیا گیا ہے، جب کہ چلا رام کلوانی کا نام کمیشن کے چیئرمین کے طور پر بھی تجویز کیا گیا ہے۔ سمری کے مطابق کمیشن میں تین عیسائی ممبران سارہ صفدر، آرچ بشپ سباستان فرناس اور البرٹ ڈیوڈ کے نام شامل ہیں۔ سکھ برادری سے ممپال سنگھ اور سروپ سنگھ اور کالاش برادری سے داؤد شاہ کے نام شامل ہیں۔

    اقلیتی کمیشن میں وزارت داخلہ وزارت قانون وزارت انسانی حقوق اور وزارت تعلیم کے گریڈ 20 کے افسران ممبران ہوں گے اس کے علاوہ وزارت مذہبی امور کے سیکریٹری بلحاظ عہدہ بھی کمیشن کے ممبر ہوں گے۔
     
  12. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    اقلیتی کمیشن میں بھی مولوی؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  13. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    حکومت پاکستان خود کہہ رہی ہے کہ احمدی اقلیت نہیں ہیں۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  14. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    15,589
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    ہر کمیشن میں مولوی نکلے گا تم کتنے مولوی مارو گے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  15. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    مجھے کیا ضرورت ہے یہ خود ہی مار لیں گے۔ ان کا کام ہی مار دھاڑ ہے
     
    • زبردست زبردست × 1
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  16. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    15,589
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused
    زیکیہ الزامات برگیڈ :p
     
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  17. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    اقلیتیں اسلام اور ریاست مدینہ کے خلاف کوئی سازش وازش نہ کردیں اس لئے ایک مولوی کو بھی اقلیتی کمیشن میں شامل کیا ہے۔
     
  18. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    اقلیتی کمیشن میں احمدی نمائندگی کے سوال پر حکومت کا یوٹرن
    01/05/2020 سید مجاہد علی
    [​IMG]

    مسلم لیگ (ق) کے صدر چوہدری شجاعت حسین اور بعض مذہبی لیڈروں کے احتجاج کے بعد حکومت نے قومی اقلیتی کمیشن میں احمدی نمائندہ نامزد کرنے کا فیصلہ تبدیل کرنے کا اشارہ دیا ہے۔ خبروں کے مطابق 15 اپریل کو کابینہ کے اجلاس میں وزیر اعظم کی ہدایت پر فیصلہ کیا گیا تھا کہ اقلیتوں کے قومی کمیشن میں احمدیوں کا ایک نمائندہ بھی شامل کیا جائے۔ تاہم اس معاملہ پر سامنے آنے والے احتجاج کے بعد وزیر مذہبی امور نور الحق قادری نے دوبارہ کابینہ سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اور کسی احمدی کو اقلیتی کمیشن میں نمائندگی نہ دینے کا مشورہ دیا ہے۔

    وزیر مذہبی امور نور الحق قادری اب اس معاملہ پر یہ توجیہ پیش کرتے ہیں کہ کابینہ کے اجلاس میں کمیشن کی تشکیل نو پر غور کیا گیا تھا لیکن کمیشن کے نام فائینل نہیں ہوئے تھے ۔ وزارت مذہبی امور اس سلسلہ میں کابینہ کی منظوری کے بعد کمیشن کے ارکان کا اعلان کرے گی۔ انہوں نے ایک بیان میں واضح کیا کہ ’کابینہ ہی یہ فیصلہ کرے گی کہ قادیانی اقلیت کا کوئی نمائندہ کمیشن میں شامل ہو یا ایسا کرنا مناسب نہیں ہے۔ اس معاملہ کے تمام پہلوؤں کا جائزہ لے کر ہی کابینہ کوئی حتمی فیصلہ کرے گی‘۔ نور الحق قادری نے بیان میں مزید کہا ہے کہ ’ختم نبوت ہمارے ایمان کا حصہ ہے اور اس پر کسی صورت مفاہمت نہیں کی جاسکتی‘ ۔

    بیان کے اس حصے سے یہ اندازہ کرنا مشکل نہیں ہے کہ وفاقی وزیر مذہبی امور اقلیتی کمیشن میں احمدیوں کی نمائندگی کے بارے میں کیا خیالات رکھتے ہیں۔ اس مؤقف کے ساتھ وہ کابینہ کو اپنا گزشتہ فیصلہ تبدیل کرنے پر آمادہ کرنے کے لئے دلائل دیں گے۔ ملک کی موجودہ سیاسی صورت حال میں یہ بعید از قیاس نہیں ہونا چاہئے کہ کابینہ بھی اپنے ایک حلیف اور ملکی مذہبی اکثریت کے شدید جذبات کی روشنی میں وہی فیصلہ کرے گی جو سیاسی لحاظ سے قابل قبول ہو۔ ا س معاملہ میں اصول کوئی اہمیت نہیں رکھتے اور نہ ہی یہ پہلو قابل غور ہوتا ہے کہ ملک کا آئین عقیدہ ونسل، ذات پات کی تخصیص کے بغیر پاکستان کے سب شہریوں کو مذہبی عقائد رکھنے کا حق دیتا ہے۔ ریاست پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اقلیتوں کی حفاظت کو یقینی بنائے۔ پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق کی بات کرنے کے باوجود کوئی حکومت اس حوالے سے ٹھوس اقدامات کرنے کا حوصلہ نہیں کرتی۔

    یوں تو تمام مذہبی اقلیتوں کو تعصب، امتیازی سلوک، تشدد اور غیر قانونی اقدامات کا سامنا کرنا پڑتا ہے لیکن احمدیوں کو خاص طور سے ملک کے مذہبی گروہ نشانہ بناتے رہے ہیں۔ ختم نبوت کے نام پر شروع کی گئی تحریک کے تحت احمدیوں کو معاشرے میں مسترد کرنے کی باقاعدہ مہم جوئی کی جاتی ہے اور عوام کو ان کا سماجی بائیکاٹ کرنے پر اکسایا جاتا ہے۔ سادہ لوح مسلمانوں کو یہ یقین دلا دیا گیا ہے کہ کسی احمدی کے ساتھ میل جول یا مراسم سے کسی بھی مسلمان کا عقیدہ خطرے میں پڑ جاتا ہے۔ احمدی املاک پر حملے اور ان کے قبرستانوں میں قبروں کی بے حرمتی روز کا معمول ہے۔ عام طور سے پولیس اس قسم کی قانون شکنی کرنے والوں کی گرفت کرنے میں ناکام رہتی ہے۔ احمدیوں کے خلاف کھلے عام نفرت کا اظہار کرنے اور اشتعال پر اکسانے والے کسی مذہبی لیڈر کی کبھی گرفت نہیں ہوسکی۔

    اس ماحول میں ملک میں آباد احمدی آبادی بنیادی انسانی حقوق سے محروم ہے اور انہیں معاشرہ سے الگ تھلگ کردیا گیا ہے۔ احمدیوں کے مساوی حقوق کی بات تو کجا ان کے خلاف نفرت کے اظہار کو مسلمانوں کے لئے ایمان کا تقاضہ بنا دیا گیا ہے۔ کسی مذہبی عالم کو اس صورت حال پر آواز اٹھانے اور اس صریح ناانصافی کے خلاف بولنے کی توفیق نہیں ہوتی۔ سیاست دان اور حکمران بھی اسی سماجی رویہ پر عمل پیرا ہونے میں ہی عافیت سمجھتے ہیں اور احمدیوں کو تمام مسائل کا سبب قرار دے کر ان کے خلاف نفرت میں اضافہ کرتے ہیں۔ اس کا اظہار چوہدری شجاعت حسین کے انٹرویو اور وزیر برائے مذہبی امور کے بیان سے بھی ہو رہا ہے۔

    وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نورالحق قادری کے وضاحتی بیان میں احمدیوں کے لئے ’ قادیانی‘ کا لفظ استعمال کرکے واضح سماجی تفریق اور کسی ایک عقیدہ یا گروہ کے لئے نفرت وتعصب کا اظہار کیا گیا ہے۔ احمدی خود کو احمدی مسلمان کہتے ہیں۔ تاہم ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں 1974 میں کی گئی آئینی ترمیم کے تحت انہیں غیر مسلم قرار دیا گیا تھا۔ اقوام عالم کی تاریخ میں یہ اپنی نوعیت کی انوکھی آئینی ترمیم تھی جس میں ریاست یہ فیصلہ کررہی تھی کہ ایک خاص عقیدہ کے لوگ درحقیقت کیا ہیں۔ عام طور سے ہر عقیدہ کے ماننے والے خود یہ طے کرتے ہیں کہ وہ کس عقیدہ پر عمل پیرا ہیں اور انہیں کس نام سے بلایا جانا چاہئے۔ غیر مسلم قرار دینے کے بعد اگرچہ احمدیوں سے مسلمان کہلانے کا حق چھین لیا گیا لیکن پھر بھی اس اقلیتی گروہ کو یہ حق حاصل ہونا چاہئے کہ وہ اپنے لئے جو نام مناسب سمجھے، اسے کسی حیل و حجت کے بغیر قبول کرلیا جائے۔ وہ خود کو احمدی کہلوانا چاہتے ہیں لیکن پاکستان میں سماجی و سیاسی سطح پر انہیں قادیانی کہنے پر اصرار کیا جاتا ہے ۔

    احمدیوں کے لئے قادیانی لفظ کا استعمال شدید نفرت اور سماجی دوری کے اظہار کے طور پر کیا جاتا ہے۔ ان حالات میں اندازہ کیاجاسکتا ہے کہ ملک میں آباد لگ بھگ چالیس لاکھ احمدی کن سنگین حالات کا سامنا کررہے ہیں۔ لیکن کوئی حکومت ان کی داد رسی کے لئے کوئی قدم اٹھانے کی سکت نہیں رکھتی۔ جیسا کہ اقلیتی کمیشن میں احمدی نمائندے کی نامزدگی کی تجویز پر حکومت کی پسپائی سے اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ ا س معاملہ کو سیاسی اور سماجی طور سے کس قدر نازک اور حساس بنا دیا گیاہے۔ ملک میں تعصب کے خاتمہ اور سب عقائد کو مساوی شہری حقوق دینے کے لئے لازم ہے کہ ایک اقلیت کے بارے میں اس مزاج اور لب و لہجہ کو تبدیل کیا جائے۔ ورنہ ایک گروہ کے خلاف نفرت پیدا کرنے کا یہ رویہ پورے معاشرے کو ٹکڑوں میں بانٹ کر فساد اور انتشار کی طرف لے جائے گا۔

    وزیر مذہبی امور کے وضاحتی بیان سے پہلے یہ خبریں سامنے آچکی تھیں کہ کابینہ نے اقلیتی کمیشن کی تنظیم نو کی منظوری دیتے ہوئے 7 سرکاری اور 8 غیر سرکاری ارکان کو اس میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ کابینہ نے وزیر اعظم کی خواہش کے مطابق طے کیا تھا کہ احمدیوں کو 1974 کی آئینی ترمیم میں چونکہ اقلیت قرار دیا جاچکا ہے اس لئے ان کا ایک نمائندہ بھی اس کمیشن میں شامل کیا جائے۔ ا س طرح 46 برس قبل ہونے والی اس ترمیم کے بعد پہلی مرتبہ قومی اقلیتی کمیشن میں کسی احمدی کو نمائندگی مل سکتی تھی۔ لیکن اب حکومت اس مؤقف سے پسپا ہو رہی ہے۔ حالانکہ اگر پاکستان کا آئین ، عوام اور حکومت احمدیوں کو مسلمان نہیں مانتے تو ان کی حیثیت ’اقلیت‘ کے سوا کیا ہے؟ کیا یہ اتنا مشکل سوال ہے جس کا جواب نور الحق قادری اور حکومت کے زعما یا اس ملک کی عدالتوں کے پاس موجود نہ ہو۔ یا تعصب کی پٹی اتنی موٹی ہے کہ اس کی اوٹ سے سچ اور حقیقت کی پہچان ناممکن بنا دی گئی ہے۔ نیا پاکستان بنانے کے دعوے دار عمران خان اور ان کے ’روشن خیال ‘ ساتھی بھی اگر یہ اہم کام کرنے میں ناکام رہتے ہیں تو وہ کس منہ سے اقلیتوں کو تحفظ اور مساوی مواقع و احترام فراہم کرنے کا دعوی کرسکتے ہیں۔

    یہ بھی سوچنا چاہئے کہ پندرہ رکنی کمیشن میں ایک احمدی نمائندہ کیا کردار ادا کرسکتا ہے۔ ایک تنہا آواز قانون سازی کے عمل یا سماجی رویوں میں کون سی اہم تبدیلی لانے کے قابل ہوسکتی ہے۔ کمیشن میں بیوروکریسی اور حکومت کے نمائندے لمحہ بھر میں کسی بھی اختلافی آواز کو نظر انداز کرنے اور دبانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ یوں بھی کسی ایک مذہبی اکثریت کے مفادات پر استوار کسی معاشرے میں اقلیتی کمیشن کی حیثیت نمائشی سے زیادہ نہیں ہوتی۔ اس کمیشن میں اسلامی نظریاتی کونسل کے چئیرمین اور سرکاری نمائندے بھی شامل ہوں گے۔ احمدی تو کیا کسی بھی اقلیتی نمائندے کو کوئی ایسا مؤقف سامنے لانے کا حوصلہ نہیں ہوسکتا جو ملکی اکثریت کے مزاج نازک پر گراں گزرنے کا اندیشہ ہو۔

    اقلیتی کمیشن میں احمدی نمائندہ شامل ہونے کی خبر عام ہونے پر سب سے سخت رد عمل حکومت کی حلیف جماعت مسلم لیگ (ق) کے صدر چوہدری شجاعت حسین کی طرف سے سامنے آیا تھا۔ ایک ٹی وی پروگرام میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا تھا کہ ’ اس وقت احمدیوں کا پنڈورا باکس کھولنا ناقابل فہم ہے۔ احمدی خود کو غیر مسلم نہیں مانتے اور نہ ہی پاکستان کے آئین کو تسلیم کرتے ہیں۔ ان حالات میں احمدیوں کی حمایت میں فیصلے کرنا ناقابل قبول ہے‘۔ حیرت ہے چوہدری شجاعت جیسا جہاں دیدہ سیاست دان جو ملک کے وزیر اعظم بھی رہ چکے ہیں، اس نازک معاملہ کو قومی حمیت کا سوال بنا کر سامنے لائے ہیں۔ حالانکہ یہ بات بلاجواز ہے کہ احمدی ملکی آئین کو نہیں مانتے۔ پاکستان میں رہتے ہوئے تمام احمدی ملکی آئین اور مروجہ قوانین کی پابندی کا اعلان کرتے ہیں۔ اگر ان کی طرف سے 1974 کی آئینی ترمیم کے حوالے سے سوال اٹھائے جاتے ہیں تو اس سے یہ اخذ نہیں کیا جاسکتا کہ وہ ملکی آئین کو تسلیم نہیں کرتے۔ موجودہ حکومت آئین کی اٹھارویں ترمیم کے متعلق تحفطات رکھتی ہے اور متعدد بار اس میں تبدیلی کے اشارے دے چکی ہے۔ کیا اس سے یہ مان لیا جائے کہ وزیر اعظم سمیت وہ تمام لوگ جو اٹھارویں ترمیم کے خلاف بات کرتے ہیں، وہ دراصل ملکی آئین کونہیں مانتے۔ قومی لیڈروں کو اس قسم کے متعصبانہ اور خود ساختہ بیانات سے پرہیز کرنے کی ضرورت ہے ورنہ پاکستان کبھی بھی مذہبی انتہا پسندی اور تعصب سے نجات حاصل نہیں کرسکے گا۔

    پاکستانی عوام اور حکومت، بھارت میں مسلمانوں کے ساتھ ہونے والے سلوک، متعصبانہ قوانین اور سماجی رویوں کے خلاف آواز بلند کرتے رہتے ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان بھارت میں ہندو انتہا پسندی کو نازی نظریہ کے مماثل قرار دے کر متنبہ کرتے رہتے ہیں کہ مودی حکومت مسلمانوں کی نسل کشی کے منصوبے پر عمل پیرا ہے۔ سوچنا چاہئے اپنے ملک کی ایک امن پسند اقلیت کے ساتھ برتے جانے والے سماجی اور سرکاری سلوک کی روشنی میں کون سا ملک پاکستانی لیڈروں کی باتوں کو اہمیت دے گا؟
     
  19. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,266
    مولویوں کا چیخنا تو بنتا ہے جب قادیانی جماعت کورونا وائرس ریلیف میں قوم اور حکومت کے شانہ بشانہ کام کر رہی ہوگی۔

     
  20. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,146
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    حقیقت یہ ہے کہ پاکستان میں دائیں بازو کی اسلام پسند جماعتوں اور بائیں بازو کی لبرل جماعتوں ہی کا قادیانیوں کے بارے میں دو ٹوک موقف ہے۔ اسلام پسند جماعتوں کا موقف سخت موقف ہے جس میں وہ قادیانیوں کو کافر اور قابلِ گردن زدنی سمجھتے ہیں۔ دوسری جانب بائیں بازو کی جماعتوں پی پی پی اور اے این پی کا موقف اس کے برعکس یہ ہے کہ انہیں اس سے کوئی غرض نہیں کہ قادیانی کافر ہیں یا مسلمانوں کا کوئی فرقہ، وہ تو بغیر کسی جنسی و مذہبی و معاشرتی تفریق کے تمام پاکستانیوں کو برابر سمجھتے ہیں۔

    اب بچیں موقعہ پرست جماعتیں جن میں نون لیگ اور پی ٹی آئی شامل ہیں وہ موقع کے لحاظ سے اپنا موقف تبدیل کرلیتی ہیں، یعنی میٹھا میٹھا ہپ ہپ، کڑوا کڑوا تھو تھو۔ موجودہ حکومت کا شروع سے یہی طور رہا ہے۔ پہلے کچھ قادیانیوں کو اپنی کور ٹیم میں شامل کیا۔ اسلام پسندوں کی جانب سے پریشر آیا تو فوراً یو ٹرن لے لیا۔ یوتھیوں نے ہر موقع پر عمران نیازی کے ہر فیصلے اور ہر یوٹرن پر تعریفوں کے پل باندھ دئیے۔

    اس مسئلے میں یہی دیکھنے کو مل رہا ہے اور یوتھیوں کا طرزِ عمل بھی پیشن گوئی کے عین مطابق ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر