ابن انشا نظم - فروگذاشت - ابنِ انشا

Saraah نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 18, 2009

  1. Saraah

    Saraah محفلین

    مراسلے:
    608
    فروگذاشت

    درد رسوا نہ تھا زمانے میں
    دل کی تنہائیوں میں بستا تھا
    حرف ناگفتہ تھا فسانہ دل
    ایک دن جو انہیں خیال آیا

    پوچھ بیٹھے : " اداس کیوں ہو تم " ؟
    " بس یونہی " مسکرا کے میں نے کہا
    دیکھتے دیکھتے سر مژگاں
    ایک آنسو مگر ڈھلک آیا

    عشق نورس تھا- خام کار تھا دل ؛
    بات کچھ بھی نہ تھی مگر ہمدم
    اب محبت کا وہ نہیں عالم
    آپ ہی آپ سوچتا ہوں میں
    دل کو الزام دے رہا ہوں میں
    درد بے وقت ہوگیا رسوا

    ایک آنسو تھا پی لیا ہوتا
    حسن محتاط ہوگیا اس دن
    عشق توقیر کھوگیا اس دن
    ہائے کیوں اتنا بے قرار تھا دل


    چاند نگر۔۔۔۔۔ ابن انشاء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
    • زبردست زبردست × 2
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,034
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    شکریہ آپ کا خوبصورت نظم شیئر کرنے کیلیے!
     
  3. امیداورمحبت

    امیداورمحبت محفلین

    مراسلے:
    3,065
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
  4. شاہ حسین

    شاہ حسین محفلین

    مراسلے:
    2,901
    بہت خوب محترمہ اچھی نظم ہے شریک محفل کرنے کا شکریہ ۔
     
  5. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,240
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    کیا کہنے!

    اللہ رب العزت کروٹ کروٹ سُکھ عطا فرمائے ابنِ انشاء کو۔ آمین۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر